سر ورق / افسانہ / ریڈ کارپٹ ۔ پروفیسر نعیمہ راءو

ریڈ کارپٹ ۔ پروفیسر نعیمہ راءو

میری نظریں ٹی وی سکرین پر متحرک بہت سی تصویروں کو دیکھ رہی تھیں۔۔۔۔۔۔ایک کے بعد ایک تصویر ، ایک چہرہ ، ایک وجود ، ایک انگ ، ایک ڈھنگ اور ۔۔۔۔۔بے بہا ادائیں۔۔۔۔۔۔!میری آنکھیں کُھلی تھیں۔۔۔۔۔۔اور لب ساکِت۔۔۔۔اور دل کی دھڑکن تھی تو ۔۔۔۔۔مگر! جیسے خوف سے بند ہونے والی ہو۔۔۔۔۔۔کیسا خوف ؟ حقیقی خوف؟۔۔۔۔ایسا جس نے کمزور انسانی ہیولوں کو اتنا بے خوف کر دیا کہ۔۔۔۔؟
میڈیا جو آج ہر میدان کا سر خیل بنا ہوا ہے۔۔۔۔۔جس نے دنیا گلوبل عیلج بنانے میں ستون کا کام کیا ہے۔۔۔۔۔۔شہر گاﺅں، دور ُافتادہ علاقے جہاں تک ممکن ہو سکا اپنی رَسائی سے سب کو وہ کچھ دکھا رہا ہے۔۔۔۔۔جس سے ناواقف رہ کر بھی زندگی سہل گزر سکتی تھی۔۔۔۔۔کیا ہی اچھا ہوتا۔۔۔۔۔یہ سب اچھا اچھادِکھاتا ۔۔۔۔میری سوچ نے فکر کو پرواز دی کہ کاش میڈیا کامیاب انسان (وہ انسان جو اللہ سبحان و تعالیٰ کا پسندیدہ بندہ ہے) بنانے کا گُر بھی بتا دے۔۔۔۔۔اپنا قِبلہ درست کر لے۔
ہم آج کل چینل کی دنیا میں سانس لے رہے ہیں ۔۔۔۔یہ دنیا ہماری ہتھیلی پر سجی ہے ۔ ایک انگھوٹھے کے ہلکے سے دباﺅ سے (اللہ سبحان و تعالیٰ نے کوئی عُضو بے کار یا فالتو نہیں بنایا ۔۔۔۔مگر انگھوٹھے کی طاقت مُسلّم ہے۔۔۔۔قلم پکڑنے سے لے کر موبائل فون پر لکھے چند حروف کا استعمال ہو یا ہاتھ میں پکڑے ریموٹ کنٹرول، کہ جس کے بٹن کو یہ جس سلیقے سے دباتا ہے وہی ہم دیکھ سکتے ہیں۔)
میڈیا کے ڈریعے ہم اُس دنیا کا سفر آسانی سے کر لیتے ہیں جہاں ہماری جسمانی رسائی ناممکن ہو ۔۔۔۔۔ایسے ہی سکرین چینیلائز کرتے کرتے ایک پروگرام (جیسے اکثر دیکھنے کا اتفاق ہوا)پر رُک سی گئی۔۔۔۔گو ہمیشہ ہی دیکھ لیتی تھی۔۔۔۔مگر ”لمحہ گرفت“ کا تھا۔۔۔۔۔اور میں پکڑی گئی۔۔۔۔اور ڈر گئی ۔۔۔۔ڈرنے خوف کہ جگہ لے لی۔۔۔۔!
جِھلملاتی روشنیوں میں سجی سنوری کمپئیرنگ لہک لہک کر آنے والے مہمانوں کو انتہائی بے باکی و ادندازِ گراوٹ سے خوش آمدید کہتی مصنوعی مسکراہٹ کے جلوے بکھرتی، ہر آنے والے سے چند سوال کرتی اور آنے والے مہمان صد ہزار جلوے بکھیرتے آگے بڑھتے جا رہے تھے۔۔۔۔یہ تھا”ریڈ کارپٹ“ ریڈ کارپٹ آج کے دور کی میڈیا ئی اصطلاح ۔۔۔۔وہاں بچھایا جاتا ہے۔جہاں کسی نے ایوارڈ لینا ہو ۔۔۔۔دنیا میں کامیابی کا ایوارڈ ۔۔۔اس پر پاﺅ ںرکھنے والے اپنے آپ کو رشکِ بریں میں سمجھتے ہیں۔۔۔۔۔اس کی رنگت، اس کی نرمی ، اس کی دبازت جب ایوارڈ یافتہ اپنے قدموں کے نیچے محسوس کرتے ہیں تو تخیل کی اُڑان ان معزز مہمانوں کو ہوا کے دوش پر اُس جہاں کی سیر کرواتی ہے جس کو فتح کرنے کے نشے میں چُور یہ لہکتے بہکتے اُس کارپٹ کو روندتے۔۔۔۔۔یہ فنکار نیم عریاں لباس (”لباس“لفظ کی بے حرمتی ہوتی ہے ان کے لیے ”لباس“ لکھتے)پہنے طرح دار مردو زن ، ازخود رفتگی میں مگن ،بے بازو، گہرے گلے (کہیں گلا بھی نہیں) آرپار ہوتی حریری دھجیاں ۔۔۔۔ایک ٹانگ دکھاتا فیشن کی ننگی پنڈلیاں (یہ اتنے غریب ہوتے ہیں کہ پانچ میٹر کپڑا نہیں خرید سکتے)نامزدگی ہے ان کے اعلیٰ ایوارڈ کی ۔۔۔۔۔اپنے ڈیزائنر پر بھی فخر (اس اعلیٰ ڈیزائنر کو بھول گئے جس نے دُنیا میں بھیجا) بیوٹیشن کے کمال پر نازاں ایک دوسرے کے نامحرم، بانہوں میں بانہیں ڈالے تھرکتے مستانہ وار چلتے چند لفظ بولتے ، اپنی پرفارمنس پر تفاخر سے اَکڑی گردن لہرا کر پردے کے پیچھے غائب ہو رہے تھے۔۔۔۔اور۔۔۔۔!
میں نے ایک جُھرجُھری سی لی۔۔۔۔۔۔میری حس بیدار ہو چکی تھی۔۔۔۔۔۔جو مجھے میرے زندہ ہونے کا احساس دلا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔میرا پورا وجُود پسینہ پسینہ ہو گیا۔۔۔۔۔۔۔آنکھیں نجانے کس لمحے بند ہو گئیں ۔۔۔۔۔۔۔دل کی ہر دھڑکن سماعت بن گئی۔۔۔۔۔ میں لرز رہی تھی۔۔۔۔۔۔لب ساکت مگر ان میں مقیدّ زبان تیزی سے ایک ہی لفظ کا ورد کر رہی تھی۔ میں ”استغفار“ کی تسبیح کیے جا رہی تھی۔۔۔۔۔۔!
میری کُھلی آنکھوں نے جو نظارے دیکھے (آنکھ کا زنا) وہ میری آنکھیں پھوڑنے کے قابل تھے۔۔۔۔۔۔۔میری بند آنکھ جو دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔!
یومِ آخرت !اللہ سبحان کے سامنے بھی ایسا ہی ایک سماں ۔۔۔۔۔۔نہیں معلوم کون کون سے بہترین فنکار وہاں سے گزریں گے۔۔۔۔ ۔۔۔تاحدِ نظر سب فنکار اپنی فنکارانہ صلاحیتوں کے ساتھ وہاں موجود ہیں کوئی ، کوئی بھی غیر حاضر نہیں ۔۔۔۔۔۔تن بدن شرمندہ۔۔۔۔۔آنکھیں نمدیدہ ۔۔۔۔۔دل غم دیدہ ۔۔۔۔۔۔ہاتھ پاﺅں لرزیدہ ۔۔۔۔۔اُمید و نااُمید کی کشمکش سے چہرے دردیدہ”بے لباس“ (کوئی کسی کو نہ دیکھ رہا ہو گا) اپنی ہی فکر کے دامن گیر ۔۔۔۔کوئی کمپئیر نہیں، کائی ایڈمائر نہیں (Admire) کوئی ڈیزائنر(Designer) کوئی بیوٹیشن نہیں۔۔۔۔۔اور کوئی پوچھنے والا بھی نہیں ۔۔۔۔۔کہ کون ہو؟سب نپے تلے قدموں سے رُک رُک کر ڈرے سہمے ۔۔۔۔۔۔آہستہ آہستہ چل رہے ہیں۔۔۔۔۔مگر سوال سب سے پوچھے جا رہے ہیں۔ کون سے سوال؟ ۔۔۔۔۔ وہی پانچ سوال جن کے جواب دئیے بغیر کوئی انسان اس کارپٹ سے اُترا نہیں سکے گا۔۔۔۔۔اعمال کی جوابدہی کے ۔۔۔۔۔۔ زمینی کارپٹ پر تو کروفر سے گزر گئے ۔۔۔۔۔فحاشی کا اشتہار بنے ۔۔۔۔۔۔دنیاوی سٹیج پر کارکردگی کا ایوارڈ لہرا لہرا کر سب کو دکھایا ۔۔۔۔۔ یہاں۔۔۔۔۔کیا دکھائیں؟ کیا بتائیں۔۔۔۔۔۔!عمر کہاں گزری ؟ ریڈ کارپٹ ۔۔۔۔جوانی کہاں گزری ؟ ریڈ کارپٹ۔۔۔۔۔مال کہاں سے کمایا ؟ ریڈ کارپٹ ۔۔۔۔۔کس پر خرچ کیا۔۔۔۔۔؟ ریڈ کارپٹ ۔۔۔۔۔اپنے علم پر کیا عمل کیا؟۔۔۔۔۔۔ ریڈ کارپٹ اور آج اس ریڈ کارپٹ ۔۔۔۔۔۔پر حاضر ہونے کی تیاری کس کس کی ہے ؟ ان سوالوں کے جواب ہیں؟ کوئی دے گا صحیح جواب ؟۔۔۔۔۔ جو دے گا۔۔۔۔۔۔۔انہی کے بارے میں اللہ سبحان و تعالیٰ نے فرمایا ہے کہ یہی وہ لوگ ہوں گے جو کامیاب ہو ں گے ۔۔۔۔۔ ہیرے یاقوت ان کے پیروں کی دھول ہوں گے، حُورُ غِلمان ان کے منتظر ہوں گے۔۔۔۔۔ ارغوانی مشروب ہوں گے۔۔۔۔۔۔ جنہیں گاﺅ تکئیے لگے مَسندّوں پر بٹھایا جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔ جن کے نیچے نہریں بہتی ہوں گی۔۔۔۔۔۔۔ اور وہ اپنے رب کی تسبیح بیان کر رہے ہوں گے۔۔۔۔۔۔۔۔یہی ”حقیقی ایوارڈ“ ہے جس کے یہ مستحق ہیں اور دنیاوی کارپٹ پر چلنے والے رزقِ نار ہوں گے۔۔۔۔۔۔ چنگھاڑتی دھاڑتی آگ ان کی منتظر ہو گی۔۔۔۔۔۔اور وہ موت مانگیں گے اور یہاں موت بھی نہ ہو گی۔۔۔۔۔۔۔یہ وہ خوف ۔۔۔۔۔ جس نے مجھے جگادیا۔۔۔۔۔۔۔پناہاے رب العالمین پناہ۔۔۔۔۔۔استغفراللہ

- admin

admin

یہ بھی دیکھیں

"میں اور وہ” …عظمیٰ طور

"میں اور وہ” عظمیٰ طور وہ اکیلا اسکے سرہانے کھڑا تھا – کفن میں لپٹی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے