سر ورق / افسانہ / ایک لکھاری۔۔۔ دو افسانے۔۔ مریم تسلیم کیانی

ایک لکھاری۔۔۔ دو افسانے۔۔ مریم تسلیم کیانی

عورت کتها

۔ مریم تسلیم کیانی ۔

 "کاش میں رک جاتی ۔۔۔

 ” وہ جب سے آئی تھی ایک ہی رٹ لگا رہی تھی ۔۔۔۔ ۔ اس اولڈ ہوم میں صرف خواتین تھیں مگر اولڈ ہوم آنے کا صدمہ بہت ہوتا ہے ۔ وہ چونکہ نئی نئی تھی اور سب کے سامنے بولنا نہیں چاہتی تھی اس لیے میں نے ایک دن اس سے اکیلے میں اس کی کہانی پوچھی ۔۔ تب وہ ٹھنڈی سانس لینی لگی اور وہ ہی جملہ دہرانے لگی ۔۔۔ "کاش میں رک جاتی ۔۔۔۔ تو آج اپنے گھر میں ہوتی ۔۔۔۔” "”اب یہ ہی اپنا گھر ہے ۔ ہم بوڑھی عورتیں ایک دوسرے کو اپنے دکھڑے سنا کے جی ہلکا کیے لیتی ہیں ۔ تم بھی سنا دو ۔ کیسے پہنچی یہاں ۔۔۔؟؟ ” "مجھے سوتیلے بچوں نے پھنکوا دیا ۔ یہاں ۔ ۔۔ ۔اپنے باپ کے انتقال کے بعد ۔۔۔ "وہ کہہ کر آنسو پینے لگی ۔ ” برا ہوا ۔ ” میں بولی ۔ "برا ہونا چاہیئے تھا میرے ساتھ ۔۔۔ میں ہوں بھی اس کے لائق ۔۔۔ ۔ ایک عورت ہو کر شادی کے بعد بھی محبت کر بیٹھی تھی ۔۔۔ اور اس محبت کو پانے کی ٹھان بھی لی تھی۔۔۔ نہ اس وقت اپنا گھر دیکھا اور نہ اپنے بچے ۔۔۔۔۔ طلاق لے کر سب چھوڑ کر ، محبوب کے پاس چلی آئی ۔ ۔۔ ساری عمر اس کے بن ماں کے بچوں کو اپنا سمجھ کے پالا ۔۔۔۔ مگر اس کے مرتے ہی انہوں نے، مجھ کو ہی گھر سے نکال باہر کیا ۔۔۔۔۔ کاش میں رک جاتی ۔۔۔ اس وقت ۔۔۔۔ اپنے بچوں کے پاس ۔۔۔۔۔۔۔ ” وہ زور زور سے رونے لگی ۔۔۔۔۔۔ پھر سنبھلی ۔ مجھے دیکھا ۔۔۔ اور پوچھا "تم ۔ کیسے آئیں ۔ ؟” میں نے آہ بھری ۔ اور کہا ۔ "میں رک گئی تھی ۔۔۔ "

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔ فُسُوں گر

۔ مریم تسلیم کیانی ۔

مجھے دور سے آتی ہوئی ٹرین کا شور سنائی دیتا ہے ۔۔۔ خود کو ایک سنسان پلیٹ فارم کی بینچ پر بیٹھا ہوا پاتی ہوں ، سرمئی اور ہلکی نیلگوں دھند میں ۔۔۔ ایک سفید چھتری لیے ، بالکل اکیلی اور تنہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے دور تک صرف پٹریاں دکھائی دیتی ہیں میں شدید دھند میں خود کو مشکل سے ڈھونڈتی ہوں ۔ میرے ہاتھ میں چھتری ہے ۔۔۔۔۔۔۔کیوں کہ میں بھیگنے سے ڈرتی ہوں ۔ ہر طرف بے حد گہرا بادل آکر جیسے ٹھہرا ہوا ہے ۔۔ ۔۔۔ روح چیر دینے والا ٹرین کا شور اور سناٹا ۔۔ ایک دوسرے میں مدغم ہے ۔۔ نہ شور کم ہوتا ہے ۔ نہ سناٹا ہار مانتا ہے ۔۔۔۔۔۔ تنہائی میری جسم کو نگل رہی ہے ۔ اور ٹرین کا شور میری روح کو اندر ہی اندر دفن کر رہاہے۔۔۔۔۔۔ اچانک سناٹے کا شور اتنا بڑھا کہ میرے اوپر سے گزر گیا اور میں لہو لہان ،کٹی پھٹی اپنے ہی وجود کو ریزہ ریزہ اٹھانے کی کوشش کرتی ہوں ۔۔ اچانک میرے بایئں جانب ۔ پیچھے سے آواز آتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اور جب میں مڑتی ہوں تو تم مسکرا رہے ہوتے ہو ۔۔ سنو !!مجهے اس پلیٹ فارم سے نکال دو۔۔۔۔۔۔۔ اس دھند اور اس سناٹے سے۔۔۔۔۔۔۔ ٹرین کے شور سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیاہ نیلگوں گہرے بادلوں سے ۔۔۔۔ بھیگنے کے خوف سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اکیلی بنچ پر اپنے ثابت جسم کے اندر ٹوٹتے بکھرتے وجود کو جوڑنے کے تکلیف دہ عمل سے روز گزرتے ہوئے لمحوں سے ۔۔۔۔۔۔ تم مجھے حیرت سے تکتے ہو۔۔۔۔ اور یہ کہتے ہو ئے آگے چلے جاتے ہو ۔۔ "چائے والا ۔۔۔ چائے لے لو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ” ……………………………………….

- admin

admin

یہ بھی دیکھیں

لچھی کی کرسی ابصار فاطمہ جعفری سکھر ۔ پاکستان

عالمی افسانہ میلہ 2019 افسانہ نمبر ۔62 لچھی کی کرسی ابصار فاطمہ جعفری سکھر ۔ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے