سر ورق / افسانہ / ایک لکھاری۔۔۔ دو افسانے۔۔ مریم تسلیم کیانی

ایک لکھاری۔۔۔ دو افسانے۔۔ مریم تسلیم کیانی

عورت کتها

۔ مریم تسلیم کیانی ۔

 "کاش میں رک جاتی ۔۔۔

 ” وہ جب سے آئی تھی ایک ہی رٹ لگا رہی تھی ۔۔۔۔ ۔ اس اولڈ ہوم میں صرف خواتین تھیں مگر اولڈ ہوم آنے کا صدمہ بہت ہوتا ہے ۔ وہ چونکہ نئی نئی تھی اور سب کے سامنے بولنا نہیں چاہتی تھی اس لیے میں نے ایک دن اس سے اکیلے میں اس کی کہانی پوچھی ۔۔ تب وہ ٹھنڈی سانس لینی لگی اور وہ ہی جملہ دہرانے لگی ۔۔۔ "کاش میں رک جاتی ۔۔۔۔ تو آج اپنے گھر میں ہوتی ۔۔۔۔” "”اب یہ ہی اپنا گھر ہے ۔ ہم بوڑھی عورتیں ایک دوسرے کو اپنے دکھڑے سنا کے جی ہلکا کیے لیتی ہیں ۔ تم بھی سنا دو ۔ کیسے پہنچی یہاں ۔۔۔؟؟ ” "مجھے سوتیلے بچوں نے پھنکوا دیا ۔ یہاں ۔ ۔۔ ۔اپنے باپ کے انتقال کے بعد ۔۔۔ "وہ کہہ کر آنسو پینے لگی ۔ ” برا ہوا ۔ ” میں بولی ۔ "برا ہونا چاہیئے تھا میرے ساتھ ۔۔۔ میں ہوں بھی اس کے لائق ۔۔۔ ۔ ایک عورت ہو کر شادی کے بعد بھی محبت کر بیٹھی تھی ۔۔۔ اور اس محبت کو پانے کی ٹھان بھی لی تھی۔۔۔ نہ اس وقت اپنا گھر دیکھا اور نہ اپنے بچے ۔۔۔۔۔ طلاق لے کر سب چھوڑ کر ، محبوب کے پاس چلی آئی ۔ ۔۔ ساری عمر اس کے بن ماں کے بچوں کو اپنا سمجھ کے پالا ۔۔۔۔ مگر اس کے مرتے ہی انہوں نے، مجھ کو ہی گھر سے نکال باہر کیا ۔۔۔۔۔ کاش میں رک جاتی ۔۔۔ اس وقت ۔۔۔۔ اپنے بچوں کے پاس ۔۔۔۔۔۔۔ ” وہ زور زور سے رونے لگی ۔۔۔۔۔۔ پھر سنبھلی ۔ مجھے دیکھا ۔۔۔ اور پوچھا "تم ۔ کیسے آئیں ۔ ؟” میں نے آہ بھری ۔ اور کہا ۔ "میں رک گئی تھی ۔۔۔ "

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔ فُسُوں گر

۔ مریم تسلیم کیانی ۔

مجھے دور سے آتی ہوئی ٹرین کا شور سنائی دیتا ہے ۔۔۔ خود کو ایک سنسان پلیٹ فارم کی بینچ پر بیٹھا ہوا پاتی ہوں ، سرمئی اور ہلکی نیلگوں دھند میں ۔۔۔ ایک سفید چھتری لیے ، بالکل اکیلی اور تنہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے دور تک صرف پٹریاں دکھائی دیتی ہیں میں شدید دھند میں خود کو مشکل سے ڈھونڈتی ہوں ۔ میرے ہاتھ میں چھتری ہے ۔۔۔۔۔۔۔کیوں کہ میں بھیگنے سے ڈرتی ہوں ۔ ہر طرف بے حد گہرا بادل آکر جیسے ٹھہرا ہوا ہے ۔۔ ۔۔۔ روح چیر دینے والا ٹرین کا شور اور سناٹا ۔۔ ایک دوسرے میں مدغم ہے ۔۔ نہ شور کم ہوتا ہے ۔ نہ سناٹا ہار مانتا ہے ۔۔۔۔۔۔ تنہائی میری جسم کو نگل رہی ہے ۔ اور ٹرین کا شور میری روح کو اندر ہی اندر دفن کر رہاہے۔۔۔۔۔۔ اچانک سناٹے کا شور اتنا بڑھا کہ میرے اوپر سے گزر گیا اور میں لہو لہان ،کٹی پھٹی اپنے ہی وجود کو ریزہ ریزہ اٹھانے کی کوشش کرتی ہوں ۔۔ اچانک میرے بایئں جانب ۔ پیچھے سے آواز آتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔ اور جب میں مڑتی ہوں تو تم مسکرا رہے ہوتے ہو ۔۔ سنو !!مجهے اس پلیٹ فارم سے نکال دو۔۔۔۔۔۔۔ اس دھند اور اس سناٹے سے۔۔۔۔۔۔۔ ٹرین کے شور سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیاہ نیلگوں گہرے بادلوں سے ۔۔۔۔ بھیگنے کے خوف سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اکیلی بنچ پر اپنے ثابت جسم کے اندر ٹوٹتے بکھرتے وجود کو جوڑنے کے تکلیف دہ عمل سے روز گزرتے ہوئے لمحوں سے ۔۔۔۔۔۔ تم مجھے حیرت سے تکتے ہو۔۔۔۔ اور یہ کہتے ہو ئے آگے چلے جاتے ہو ۔۔ "چائے والا ۔۔۔ چائے لے لو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ” ……………………………………….

- admin

admin

یہ بھی دیکھیں

اختری…نادیہ عنبر لودھی 

اختری نادیہ عنبر لودھی اسلام آباد —— اختری نے گھر کا کام ختم کیا اور سفید تکیہ پوش پر رنگ برنگے  چھوٹے چھوٹے  پھول کاڑ ھنے لگی – اس کے ہاتھ تیزی سے چل رہے تھے ۔ اسے یہ کام جلدی مکمل کرنا تھا اس کے بعد بستر کی چادر مکمل کر ناتھی – اختری یتیم تھی اس کا بچپن بہت کسمپرسی کے عالم میں گزرا تھا -باپ اس کی پیدائش کے چند ماہ بعد چل بسا ۔ ایک بڑ ی بہن تھی اور ایک ماں -ماں محنت مزدوری کر کے ان دونوں کو پال رہی تھی -اکثر گھر میںکھانے کے لیے صرف روٹی ہوتی جب وہ ماں سے پوچھتی اماں !روٹی کس کے ساتھ کھائیں ؟ ماں جواب دیتی :منہ کے ساتھ ۔ جیسے تیسے کرکے اس کا بچپن گزر گیا -وہ بھی ماں کا ہاتھ بٹانے کو سلائی کڑھائی کرنے لگی -لیکن یہ چادر اور تکیے اس کے جہیز کے تھے ان پر لگے ہر ٹانکے میں اس کے ارمان پروۓ ہوۓ تھے ۔ ان کے رنگوںمیں اس کے خواب سجے تھے ۔کنواری آنکھوں میں  سجے ایک شہزادے کے خواب – جس کا ساتھ اس کی زندگی کو دل کش بنادے گا۔ اس کا تعلق مشترکہ ہندوستان کے گاؤں گورداسپور سے تھا -یہ جنوری ۱۹۴۷کا زمانہ تھا – جنگ آزادی کی شدت میں اضافہ ہوتا جارہا تھا -اکثر گلی میں سے گزرتے جلوسوں کے نعرے سنتی اختری مستقبل کے اندیشوںسے لاعلم تھی -اس کی عمر چودہ سال تھی -اس نے ہوش سنبھالنے کے بعد صرف گھر کی چار دیواری دیکھی تھی -سیاست کی موجودہ صورت حال سے وہ بے خبر تھی -کبھی اماں سے پوچھتی کہ جلوس کیوں نکلتےہیں تو وہ جواب دیتی :یہ انگریز سرکار سے آزادی مانگتے ہیں – آزادی کیا ہوتی ہے یہ سوال اس کے لیے عجیب تھا کیونکہ وہ ان پڑھ تھی -قرآن اور نماز کی تعلیم ماں نے دی تھی اس کے نذدیک دین کا علم ہی کل علم تھا -دنیاوی علم سے وہ بے بہرہ تھی – دو ماہ بعد اس کی شادی طےتھی – شادی کا دن آپہنچا -ماں نے اپنی حیثیت کے مطابق اسے رخصت کردیا – سسرال میں ساس ،شوہر اور دیور تھے -نئی نئی شادی میں دہکتے جاگتے ارمانوں کا ایک جہان آباد تھا -یہ دنیا اتنی خوبصورت تھی کہ وہ ماضیکی سب محرومیاں بھول گئی -اس کا شریک ِحیات اس کے مقابلے میں بہت بہتر تھا پڑ ھا لکھا اور وجیہہ-اس کا شوہر سرکاری ملازم تھا -وہ ایف۔اے پاس تھا او ر محکمہ ڈاک میں کلرک تھا -خوابوں کے ہنڈولے میںجھولتے چند ماہ لمحوں کی طرح سے گزر گئے – ملک میں فسادات پھوٹ پڑے -حالات دن بدن خراب ہوتے جارہے تھے -ان کے سارے خاندان نے ہجرت کی ٹھانی -ضرورت کے چند کپڑے گھٹریوں میں باندھے -وہ جہیزجو اس نے بہت چاؤ سے بنایا تھا حسرت بھری نظر اس پر ڈالی اور رات کی تاریکی میں سسرال والوں کے ساتھ گلی کی طرف قدم بڑ ھا دیے -وہ لوگ چھپتے چھپاتے شہر سے باہر جانے والی سڑک کی طرف قدم بڑھنے لگے – دبے پاؤں چلتے چلتے وہ شہر سے باہر نکلے -آبادی ختم ہوگئی تو قدموں کی رفتار بھی تیز ہو گئی -درختوں کے اوٹ میں ایک قافلہ ان کا منتظر تھا – جس میں زیادہ تر خاندان ان کی برادری کے تھے -قافلےچلنے میں ابھی وقت تھا کیونکہ  کچھ اور خاندانوں کا انتظار باقی تھا – اس کی ماں اور بہن پہلے ہی پہنچ چکی تھی – اگست کا مہینہ تھا ساون کا موسم تھا گزشتہ رات ہونے والی بارش کی وجہ سے میدانی علاقہ کیچڑ زدہ تھا -اسی گرمی ، حبس اور کیچٹر میں سب لوگ ڈرے سہمے کھڑ ےتھے -گھٹریاں انہوں نے سروں پہ رکھی ہوئی تھیں اتنے میں گھوڑوں کے ٹاپوں کی آواز سنائی دینے لگی -اللہ خیر کرے -قافلے والوں کی زبان سے پھسلا -چشم زدن میں گھڑ سوار قافلے والوں کے سروں پر تھے – انکے ہاتھوں میں کرپانیں اور سروں پر پگھڑیاں تھیں یہ سکھ حملہ آور تھے -کاٹ دو مُسلوں کو کوئی نہ بچے -صدا بلند ہوئی -لہو کا بازار گرم ہوگیا مسلمان کٹ کے گرنے لگے ان کے پاس نہ تو ہتھیار تھے نہ ہی گھوڑے- جان بچا کے جس طرف بھاگتے کوئی گھڑ سوار گھوڑے کو ایڑ لگاتا اور سر پہ جا پہنچتا – اختری کا شوہر اور دیور بھی مارے گئے ۔چند عورتیں رہ گئی باقی سب مار ے گئے – ان عورتوں کو گھڑ سواروں نے اپنے اپنے گھوڑوں پہ لادا اور رات کی تاریکی میں گم ہوگئے -شوہر کو گرتا  دیکھ کے اختری ہوشوحواس گم کر بیٹھی اور بے ہوش ہوگئی -رات گزر گئی دن کا اجالا نکلا گرمی کی شدت سے اختری کو ہوش آیا تو چاروں طرف لاشیں بکھری پڑی تھیں اور وہ اکیلی زندہ تھی -اختری نے واپسی کے راستے کی طرفجانے کا سوچا اور شہر کی طرف چل پڑی -وہ ہندوؤں اور سکھوں سے چھپتی چھپاتی اپنے گھر کی طرف جانے لگی – گلی سے اندر داخل ہوئی تو گھر سے دھواں  نکلتے دیکھا – دشمنوں ے گھر کو لوٹ کے بقیہ سامانجلایا تھا نہ مکین رہے نہ گھر – وہ اندر داخل ہوئی اور ایک کونے میں لیٹ گئی – گزرا وقت آنکھوں کے سامنے پھرنے لگا اس کی آنکھوں سے آنسو گرنے لگے وقت نے کھل کے رونے بھی نہ دیا -زندگی کیا سے کیاہوگئی -انہی سوچوں میں غلطاں تھی کہ قدموں کی چاپ سنائی دی -آج یہاں جشن مناتے ہیں – تین ہندو ہاتھ میں شراب کی بوتل لیے گھر میں داخل ہوۓ – اختری نے ارد گرد نظر دوڑائی اپنی حفاظت کے لیے کوئی چیزنظر نہ آئی -وہ برآمدے میں بیٹھ گئے اور شراب پینے لگے اختری اندر کمرے کے دروازے کی درز سے انہیں دیکھنے لگی -ان میں سے ایک اٹھا اور بولا :تھک گیا ہوں آرام کرلوں ۔وہ اختری والے کمرے کی طرف بڑھا اختری پیچھے ہٹی اور کسی برتن سے جا ٹکرائ۔ اندر جانے والے نے چاقو نکال لیا – شور کی آواز سے باقی دونوں بھی اٹھ کھڑے ہوئے :کوئی ہے -یہاں کوئی ہے – لڑکی ہے :پہلے والا بولا باقی دو کے منہ سے نکلا – لڑ کی پہلے والا ہاتھ میں چاقو لے کر اختری کی سمت بڑ ھا اختری پیچھے ہٹتے ہٹتے دیوار سے جا لگی باقی دو بھی پہنچ گئے ایک نے چھپٹا مار کے اختری کو پکڑ نے کی کوشش کی ۔اختری نے چاقو والے سے چاقو چھینااور چشم زدہ میں اپنے پیٹ میں مار لیا ۔خون  کا فوارہ ابل پڑا -اختری نیچے بیٹھتی گئی فرش پہ خون پھیلنے لگا اور اس کی گردن ڈھلک گئی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے