سر ورق / افسانہ / خاکی لفافہ۔۔۔ عمارہ الطاف

خاکی لفافہ۔۔۔ عمارہ الطاف

۔۔۔خاکی لفافہ۔۔۔

عالیہ۔۔۔عالیہ۔۔۔بیٹی دیکھ ۔۔تو اتنی دیر سے دروازہ کون پیٹ رہا ہے۔۔۔۔جی اماں بی ۔۔۔

کون ہے عالیہ۔۔۔؟اماں ۔۔اماں ۔۔دیکھیں تو کون آیا ہے۔!

ماشااللہ۔۔ماشااللہ۔۔۔کیسی ہو ذبیدہ۔۔ارے آج تو ثریا بیٹی کو بھی خالہ کی یاد آگٸ ۔۔کیسی ہو بیٹی؟

جی خالہ میں ٹھیک ہوں آپ کیسی ہیں۔۔۔؟بہت دل تھا آپ سے اور عالیہ سے ملاقات کا۔۔ارے رہنے دے بچی تیری ماں کو کہاں فرصت مسلم لیگ کے کاموں سے۔۔۔کوٸی بہن بھی ہے اسکی ۔۔یہ توبھول بھال گٸ۔۔۔

ارے آپا بی ۔۔آپ ایسا کیوں سوچتی ہیں۔۔۔آپ اماں ابا کے بعد میرے لیے سب کچھ ہیں۔۔۔بیٹی ثریا تمہیں کوٸی بات کرنی تھی نا عالیہ سے۔۔۔۔جاو تم دونوں باتیں کرو۔۔۔ارے خالہ باتیں تو ہوتیں رہیں گی ۔۔پہلے آپ کے لیے چاۓ بنا کر لاٸی۔۔۔عالیہ۔۔۔میں بھی چلتی ہوں تمہارے ساتھ۔۔۔ہاں ضرور ثریا۔۔۔آ جاو۔۔دونوں ہنستی ہوٸی اندر باورچی خانے کی طرف مڑ گٸیں۔۔۔۔

اے زبیدہ بہت اچھا کیا تم خود ہی آگٸیں۔۔صبح ہی اکبر کو بول رہی تھی تمہاری طرف چلنے کا۔۔۔

بس آپا بی شہر کے حالات تو آپکے سامنے ہی ہیں۔۔۔مسلم لیگ ہنگامی جلسے کر رہی ہے۔۔۔ثریا کے ابا کچھ اشتہارات لکھنے کے لیے لا دیتےہیں ۔۔ہم دونوں ماں بیٹی۔۔۔ارے بس بس ۔۔رہنے دو زبیدہ تم ۔۔تم سب کی تو مت ماری گٸ ہے۔۔ارے میں کہتی ہوں کیا ضرورت ہے بٹوارے کی۔۔۔دیکھ لینا یہ پاکستان نام کا مچھر بھی نہیں بننے والا اور تمہارا جناح ملک بنانے کا سوچ رہا ہے۔۔۔۔

آپا بی ۔۔۔آپ ایسے کیوں بول رہی ہیں ۔۔؟مسلمانوں کی قربانیاں آپ کے لیے کوٸی معنی نہیں رکھتیں۔۔۔؟کیا آپ لا علم ہیں ؟

جن علاقوں میں مسلمان اکثریت میں نہیں ہیں۔۔۔وہاں سے مسلمانوں کے نشان تک مٹا دیے گۓ ہیں۔۔۔اُن کا قصور صرف اتنا کہ وہ مسلمان ہیں۔۔۔۔؟

                            **********

اکبر اپنی مہربان خالہ کو دیکھ کر لحظہ بھر کو رُکتا ہے۔۔اسلام و علیکم ۔۔خالہ بی۔۔۔۔واسلام ۔۔اکبر میرے بچے۔۔۔کیسے ہو؟۔۔۔میں بلکل ٹھیک ہوں خالہ جان۔۔آپ کیسی ہیں ۔۔؟اور تم سناو ثریا۔۔ارے آپ اندر تو چلے خالہ۔۔۔نہیں ،نہیں بیٹا۔۔کافی دیر ہوگٸ۔۔

اکبر خالہ کے چہرے پر پریشانی دیکھ کر بے قرار ہوتا ہے۔۔۔خیریت تو ہے نا خالہ۔۔؟ آپ پریشان لگ رہی ہیں۔۔ارے ہاں میری جان ۔۔سب خیریت ہے۔۔تم کہو ۔آپا بی بتا رہی تھیں۔۔کافی محنت ہو رہی ہے۔۔جی خالہ بس آپ تو جانتی ہیں۔۔الیکشن ہونے والے ہیں۔۔۔انہی کی تیاریوں میں مصروف ہوں۔۔آپ دعا کیجیے۔۔خدا ہماری مدد کرے۔۔انشااللہ۔۔خدا تمہیں تمہارے نیک مقاصد میں کامیاب کرے۔۔۔میرے لال میرا خدا تمہیں سُر خرو کرے۔۔۔اچھا اب میں چلتی ہوں۔۔۔نہیں آپ میرے ساتھ اندر چلیں گی اور ہم ساتھ میں چاۓ پیے گے۔۔بیٹا پھر کبھی۔۔کافی وقت ہو گیا۔۔ثریا کے ابا پریشان ہو رہے ہوں گے۔۔۔خدا حافظ میرے بچے۔۔۔

خدا حافظ خالہ بی۔۔۔

اسلام و علیکم اماں بی۔۔۔۔واسلام آگیا میرا لال۔۔۔

عالیہ۔۔۔عالیہ ۔۔بھاٸی کے لیے کھانا گرم کر لا۔۔۔

اماں بی۔۔۔زبیدہ خالہ آیٸں تھیں۔۔؟باہر ملا میں اُن سے ۔۔پریشان معلوم ہورہیں تھیں۔۔سب ٹھیک تو ہے نا۔۔؟۔۔ارے جانے دے۔۔بیٹا۔۔دماغ خراب ہوگیا ہے زبیدہ کا۔۔۔ہوا کیا ہے۔اماں بی۔۔۔؟

کہتی ہے عالیہ کو بھیجو۔۔۔ثریا اور عالیہ گھر گھر جا کر جناح کا منشور سمجھاٸیں گی مسلمانوں کو۔۔۔

اماں بی۔۔۔کیا غلط ہے اِس میں۔۔۔۔؟ اور جناح کا منشور جناح کانہیں ہے اماں بی۔۔راہِ حق کا منشور ہے۔۔مسلمانوں کی سالمیت کا ہے۔۔اُنکی آبرو کا،اُنکی بقا کا ہے۔۔۔کیا جناح پاکستان اپنے لیے چاہتے ہیں؟وہ دن رات مسلمانوں کا مقدمہ لڑ رہے ہیں۔۔۔تو صرف مسلمانوں کے لیے۔۔۔۔۔اماں بی۔

اکبر مجھے یہ بتا کیاگھول کر پلا دیا ہے جناح نے تمہیں۔۔۔؟ اقبال کو مسلم لیگ کی قیادت کے لیے یہ آدھا انگریز ہی ملا تھا؟۔۔جو صیح سے اُردونہیں بول سکتا۔۔جو تمہاری زبان نہیں سمجھ پاتا وہ تمہارے جذبات خاک سمجھ سکتاہے؟ جسے نماز پڑھنا نہیں آتی۔۔ وہ مسلمانوں کے تحافظ کی بات کرتا ہے؟۔۔بولو بتاو مجھے۔۔۔

تو اماں بی کیا آپ زبان والوں کی غلامی برداشت کر لیں گی۔؟بے شک جناح کو اُردو صیح سے بولنی نہیں آتی۔۔مگر اُنکو اپنےدلاٸل ثابت کرنے کے لیے گاندھی کی طرح ننگا نہیں گھومنا پڑتا۔۔۔کبھی آپ نے اُنہیں سنا ہے۔۔۔جب وہ بات کرتے ہیں تو کوٸی بات کرنے کی جرات نہیں کرتا۔جناح کے دلاٸل پر کوٸی دلیل نہیں دے سکتا۔۔۔اور اماں بی۔۔کیا دین دیکھاوا ہے؟کیا خدا نے بروز قیامت بہت سے نمازیوں کو صرف نماز پر  ہی بخش دینا ہے؟ نہیں اماں بی ۔۔۔یہ اُسی خدا نے کہا ہے کہ ”وہ نیتوں کو دیکھتا ہے“ ۔۔۔بہت سے بد نیتوں کے منہ پر نمازیں بھی مار دی جایٸں گی۔۔۔اماں بی ہمارے قاٸد نے تو مسلمانوں کے وقار و سلامتی کی نیت کی ہے۔۔۔

اماں بی ۔۔۔۔کو لگتا ہے وہ اکبر کو کبھی سمجھا نہیں سکتیں۔۔۔وہ تھکے ہوۓ انداز میں اپنے جوان بیٹے کو دیکھتیں ہیں اور اپنے کمرے میں چلی جاتی ہیں۔۔

                                 ****************

 یہ میرے لوگوں کو کیا ہو گیا ہے مالک !یہ کیوں ایک دوسرے کی جان کے پیاسے ہوگۓ ہیں۔۔۔؟

عالیہ۔۔یہ ہماراشہر ہے ۔۔ہم برسوں سے یہیں رہے ہیں۔۔میرا بچپن ۔۔لڑکپن سب یہی گزرا ہے بیٹی۔۔

۔۔سُنا تم نے عشرت باجی سب جا رہے ہیں دلّی چھوڑ کر۔۔۔عباس چاچا بھی چلے گۓ۔۔۔

دروازے پر دستک ہوتی ہے۔۔۔

اماں بی آپ بیٹھے میں دیکھتی ہوں۔۔۔تم رہنے دو میری بچی۔۔حالات اچھے نہیں شہر کے۔۔۔اماں بی کچھ نہیں ہوگا۔۔۔عالیہ۔۔۔عالیہ۔۔اماں بی کے اُٹھنے سے پہلے ہی عالیہ دروازے پر پہنچ جاتی ہے۔۔۔

اماں بی ۔۔۔خط آیا ہے۔۔۔۔خط ؟ کس کا خط آیا ہے اس وقت۔۔۔پتہ نہیں اماں بی ۔۔۔مجھے کون سا پڑھنا آتا ہے۔۔۔

جانتی ہوں ۔۔۔لا اٍدھر دے میرا اکبر آے گا تو پڑھ کر سناۓ گا ماں کو۔۔۔

اماں بی۔۔۔کاش میں پڑھ سکتی ۔۔۔جیسے ثریا پڑھتی ہے۔۔۔تو میں سب پڑھتی۔۔اکبر بھاٸی کیا لکھتے ہیں وہ بھی۔۔اور ۔۔اور یہ خط بھی سُنا دیتی۔۔۔آپکو۔۔

اے لڑکی ۔۔بس کر مجھے لڑکیوں کے منہ سے یہ پڑھاٸی لِکھاٸی کی باتیں پسند نہیں ہیں۔۔جا یہاں سے۔۔اور سُن اکبر کو بولنا۔۔۔صبح ماں سے مل کر جاۓ۔۔۔

جی اماں بی۔۔۔اماں بی خط کو گھورتی اپنے کمرے میں چلی جاتی ہیں۔۔اور دروازہ صبح تک کے لیے بند ہو جاتا ہے۔۔۔

                         *************

اسلام وعلیکم بڑے ابّا ۔۔۔

واسلام عالیہ میری بچی ۔۔۔بھاٸی آگیا؟ نہیں بڑے ابّا ۔۔بھاٸی کو دیر ہو جاۓ گی آج بول کر گۓ تھے۔۔۔آپ کھانا ابھی کھاٸیں گے کہ عشإ کی نماز کے بعد۔۔۔نہیں بیٹا ۔۔۔رہنے دو آج بھوک نہیں۔۔میں لے لوں گا جب جی کیا۔۔۔تم بھی جاو نماز پڑھو۔۔اور اُس پروردگار سے دعا کرو کہ مسلمانوں کو یا تو خیر و عافیت سے پاکستان پہنچا دے۔۔یا پھر پاکستان کے لیے شہید ہونا نصیب کر دے۔۔۔جاو میری بچی۔۔۔دعا کرو۔۔۔بہت سخت امتحان ہے مسلمانوں کا۔۔اب تو کچھ وقت رہ گیا بس۔”۔۔ پاکستان بننے والا ہے۔۔“میری پاک سر زمین بسنے والی ہے ۔۔انشااللہ۔۔۔ابا بی۔۔عالیہ اُٹھ کھڑی ہوتی ہے۔۔۔ابّا بی آپ آرام کریں۔۔۔اور سب اللہ پہ چھوڑ کر بے فکر ہو جاٸیں ۔۔۔ہاں میری بچی۔۔اللہ ہی ہمارا سہارا ہے وہ ہی ہمیں اس امتحان سے نکالے گا۔۔۔بڑے ابّا بستر پر لیٹے آنکھیں موند لیتے ہیں۔۔اور صدق دل سے دعا کرتے ہیں۔۔۔آنکھیں آنسووں سے تر ہو جاتی ہیں۔۔

”میرے اپنوں کی حفاظت کرنا۔۔۔۔اے پروردگار۔۔

 میرے لوگ جا رہے ہیں۔۔۔میرے مالک۔۔۔پاکستان کی حفاظت کرنا ۔۔۔۔میری جنت بسنے والی ہے میرے مالک۔۔۔۔میری جنت کی حفاظت کرنا۔۔۔ہمیں دشمنوں کی چالوں سے محفوظ رکھنا۔۔مسلمانوں کو اپنی پناہ میں رکھنا ۔۔پروردگار۔۔۔آمین۔“

                                ***************

  ابا جی ۔۔۔ شور سُن رہے ہیں آپ۔۔۔۔میرا دل بیٹھا جا رہا ہے۔۔۔بڑا وقت ہو چلا ۔۔۔اکبر نہیں آیا۔۔۔۔۔مجھے مل کر بھی نہیں گیا۔

عالیہ۔۔اے عالیہ۔۔۔جی اماں بی۔۔

تو نے کہا نہیں تھا بھاٸی کو مجھے مل کر جاۓ۔۔۔؟اماں بی کہا تھا۔۔۔پر صبح اُٹھتے ہی بھاٸی چلے گۓ۔۔۔اُنکے کچھ دوست آۓ تھے ۔۔ناشتہ بھی نہیں کیا۔۔

یا اللہ میرے اکبر کی حفاظت فرما۔

تم پریشان نہ ہو بیٹی۔۔تمہارا بیٹا مجاہد ہے وہ اللہ کی راہ میں نکلا ہے۔۔۔اللہ اُسکی حفاظت کرے گا۔۔۔عالیہ بڑے ابا کی دعا پر صدق دل سے آمین بولتی ہے۔۔۔

یہ شور ۔۔۔شور بڑھ رہا ہےابّاجی۔۔۔

۔۔یا اللہ میرا بچہ۔۔۔اللہ اُسکی حفاظت فرما۔۔۔پتہ نہیں کہاں ہوگا۔۔ابّا جی ۔۔۔میرے اکبر کو کچھ ہوگیا تو میں کیا کروں گی۔؟

تم ہمت سے کام لو۔۔ بیٹی۔۔۔میں ۔۔۔جا کر دیکھتا ہوں۔۔

نہیں ابا جی ۔۔۔آپ نا جاٸیں باہر ۔۔مار ڈالیں گے یہ درندے آپکو۔۔۔۔نا جاٸیں۔۔۔یہ انسان جانورکیوں بن گۓ ہیں آج۔۔؟؟

بڑے ابا نا جایٸں۔۔عالیہ پہلی دفعہ اپنی ماں کو کمزور دیکھتی ہے۔۔۔۔پاکستان زندہ آباد کے نعروں کی صداٸیں فضا میں گونجتیں ہیں۔۔۔۔

دروازہ زور زور سے بجتا ہے۔۔۔مفتی صاحب ۔ ۔مفتی صاحب پاکستان بن گیا۔۔۔بڑے ابا ۔۔۔دوڑ کر دروازہ کھولتے ہیں ۔۔۔اللہ اکبر۔۔یااللہ تیرا شکر ہے۔۔۔

مفتی صاحب اپنے گھر والوں کو لیجیے اور ہمارے ساتھ چلیے ۔۔ آج کی رات۔۔ہندوستان کے مسلمانوں کے لیے جتنی با برکت ہے۔۔اُتنی ہی خطرناک۔۔خطرہ بڑھ رہا ہے۔۔۔بھلا اِسی میں ہے مفتی صاحب ۔۔۔ہمارے ساتھ چلیے۔۔۔ہاں ۔۔ہاں ۔۔میرا بچہ اکبر نہیں آیا ابھی۔۔۔ھم آجاٸیں گے۔۔۔میرا بچہ آنے والا ہے۔۔۔

جی بہتر ۔۔اپنا خیال رکھیے گا۔۔۔مفتی صاحب۔۔۔خدا مہربان۔۔خدا حافظ۔۔۔

اکبر کی ماں۔۔۔۔عالیہ بیٹی ۔۔سُنا تم لوگو نے۔۔۔؟ پاکستان بن گیا ہے ۔۔اکبر کا پاکستان ۔۔مسلمانوں کا پاکستان بن گیا ہے۔۔۔مسلمانانِ ہند کو خدا نے اُنکی قربانیوں کا اجر دے دیا ہے۔۔۔

عالیہ ۔۔بڑے ابا ۔۔ہم بھی جاٸیں گے نا پاکستان؟ ۔۔ہاں  میری جان ۔۔اب ہمارا کیا کام ہے یہاں بھلا؟۔۔

آپ خوشی سے جاٸیں ابّا جی ۔۔میں نہیں جاٶں گی۔۔میں اپنا شہر ۔۔اپنا گھر نہیں چھوڑوں گی۔۔۔اکبر کی ماں سرد مہری سے کہتی ہے۔۔۔ایسا کیوں بولتی ہو۔۔۔اکبر کی ماں۔۔ہمارا گھر پاکستان ہے۔۔کیسی نا شکری ہو۔۔خدا نے تمہیں جنت بخشی ہے اور تم انکاری ہو۔۔۔؟ہمارے اپنے ۔۔ہمارے لوگ سب پاکستان جا چکے ہیں بیٹی۔۔۔

ابّا جی ۔۔آپ کن اپنوں کی بات کر رہے ہیں ۔۔۔اپنے ہوتے ۔۔تو جاتے وقت ساتھ لیتے ہمیں۔۔۔جانتی ہوں۔۔جمیل بھاٸی۔۔کلثوم خالہ اور ۔۔اور میری سگی بہن زبیدہ سب جا چکے۔۔۔

کیا ایک دفعہ اُنہیں ہمارا خیال نہیں آیا۔۔؟؟

میں کہیں نہیں جاٶں گی ابّا جی۔۔۔یہ لوگ ۔۔غصے میں ہیں ۔۔مگر شروع سے ہمارے خون کے پیاسے نہیں ہیں۔۔شانتی۔۔پارواتی ۔۔ہم سب بچپن سے ساتھ ہیں۔۔۔اور لالہ جی۔۔۔وہ مجھے اپنی بہن کہتے ہیں۔۔۔ھم ساتھ کھاتے نہیں ہیں بس۔۔۔۔ساتھ جیتےتو آۓ ہیں۔۔۔میں نہیں جاٶں گی اور یہ میرا آخری فیصلہ ہے۔

                        **************

عالیہ کی ماں ۔۔۔جو دروازے سے چمٹی اپنے بیٹے کا انتظار کر رہی تھی۔۔۔

رات کے اِس پہر اُٹھنے والے شور سے گھبرا جاتی ہے۔۔کسی کی درد ناک چیخیں فضا کا سکوت ٹوڑ جاتیں ہیں۔۔۔عالیہ جو آنگن کے کسی کونے میں بیٹھی بھاٸی کی سلامتی کی دعاٸیں مانگ رہی تھی ۔۔شور سے ڈر کر بڑے ابّا کے کمرے میں بھاگتی ہے۔۔۔بڑے ابّا پاکستان کے قیاٸم پر خدا کے حضور شکرانےکے نفل ادا کر رہے تھے۔۔

 عالیہ۔۔۔بس کچھ پل میری بچی۔۔اکبر آۓ گا تو تیری ماں اُسے انکار نہیں کر پاۓ گی۔۔۔ایسے نہیں روتے۔۔ سنو ۔۔پاکستان ۔۔ہمیں بُلا رہا ہے۔۔

دروازہ ایک بار پھر کسی کی دستک سے لرزاُٹھتا ہے۔۔اب کی بار دستک بہت تیز ہے۔۔جیسے دروازہ نا کھولا گیا تو ٹوٹ جاۓ گا۔۔۔بڑے ابّا ۔۔۔بہادر بنو عالیہ ۔۔تم ایک مسلمان گھرانے کی بیٹی ہو۔۔مسلمان کبھی مصیبت سے نہیں گھبراتا ۔۔ڈرو مت ۔۔اللہ پر یقین رکھو۔۔

رات کی وحشت سے شاٸد دروازہ بھی خوفزدہ تھا۔۔جو شور و زور سے ٹوٹ کر آنگن میں گر پڑتا ہے۔۔

اکبر ۔۔۔اکبر ۔۔میرا لال کیا ہوا ہے ۔۔۔کیا ہوا ہے۔۔۔کون ہو تم سب بولتے کیوں نہیں ہو۔۔۔کیا ہوا ہےمیرےبچے کو ۔۔؟؟

صبر کریں خالہ۔۔خدا کو یہی منظور تھا۔۔۔

ہاۓ میرے جگر کا ٹکڑا۔۔میں صبر کروں۔۔۔کوٸی مجھے بتا دے میں کیسے صبر کروں۔۔۔؟عالیہ جوان بھاٸی کے جسم کو خون میں لت پت دیکھ کر تڑپ اُٹھتی ہے۔۔۔اکبر بھاٸی۔۔اکبر بھاٸی۔۔۔۔پاکستان بن گیا ہے۔۔آپ نہیں جاسکتے۔۔۔اُٹھیں جناح نے اپنا وعدہ پورا کر دیا ہے ۔۔اُٹھیں۔۔بھاٸی ۔۔خدا کے لیے ۔۔اٹھیں۔۔

اکبر جانتا تھا۔بی بی۔۔۔خدا جانے اتنے چہروں میں یہ آواز کس کی تھی۔۔۔وہ سب کو محفوظ کررہا تھا۔ انتہا پسندی سے بچا کر پاکستان ہی تو بھیج رہا تھا۔۔۔ اوراُسی انتہا پسندی کا شکار کر دیاگیا ہےاِسے۔۔۔لالہ جی کے لڑکوں نے  مار ڈالا ہےہمارے مسیحا کو۔۔

نہیں ۔۔۔میرا اکبر کمزور نہیں ہے۔۔۔موت سے نہیں مرتا میرا لال۔۔۔سمجھے تم۔۔روکو اپنی زبان کو۔۔۔میں کہتی ہوں چپ ہو جاو۔

یہ سچ ہے خالہ۔۔آپکے لیے بہتر ہے آپ صبح ہونے سے پہلے ۔۔چلیں جاٸیں یہاں سے۔۔

چلے جاٸیں۔؟؟ہاں چلے جاٸیں گے۔۔اکبر میرے بچے اُٹھو ۔۔۔اُٹھ کیوں نہیں رہا اکبر ۔۔۔ابّا جی۔۔۔

غدار۔۔۔غداروں نے اُجاڑ ڈالا میرے گھر کو۔۔۔میں کیسے صبر کروں۔۔۔

بڑے ابّا اپنے کندھوں سے چادر اُتار کر اکبر کے زرد،بے جان اور خون سے نہلاۓ ہوۓ جسم کو ڈھانپ دیتے ہیں۔۔۔

عالیہ کی ماں پر سکتہ طاری ہو جاتا ہے۔۔۔

صحن میں کچھ دیر قبل جو لوگ موجود تھے۔وہ جا چکے ہیں۔۔۔

بڑے ابا کی آنکھیں تر ہیں۔مگر چہرے پر سکون ہے۔۔

اُٹھو اکبر کی ماں۔۔۔خدا کا شکر ادا کرو۔۔تم ایک شہید کی ماں ہو۔۔اور شہیدوں کی ماٸیں ۔۔یوں ماتم نہیں کرتیں۔۔

خدایا ۔۔میں۔۔۔میں یہ خون تیری راہ میں نچھواڑ کرتا ہوں۔میرے مالک ۔۔میرے بچے کی قربانی قبول کر۔۔۔

باہر شور بڑھتا جا رہا ہے۔۔۔

بڑے ابّا ۔۔آگ و خون کا یہ تماشہ کب تک چلے گا۔۔؟عالیہ بڑے ابّا کا ہاتھ پکڑ کر سسکتی ہے۔۔۔بیٹی۔۔

”قوموں کی بقا کے چراغ شہیدوں کے لہو سے جلا کرتے ہیں۔۔“

یہ شور سن رہی ہو۔۔۔یہ شور بڑھتا جاۓ گا۔۔یہ پاکستان کی بقا کا شور ہے۔۔میری بچی۔۔

عالیہ۔۔بڑے ابا کو اس شور میں گُم ہوتا دیکھتی ہے۔۔۔بڑے ابا کی آواز اس شور میں ہمیشہ کے لیےدب جاتی ہے۔۔

                              ***********

عالیہ ۔۔۔بیٹی۔۔عاٸشہ آٸی کیوں نہیں ہے ابھی تک۔۔؟

اماں بی ۔۔ابھی وقت ہے اُسکے آنے میں۔۔آپ پریشان کیوں ہوتیں ہیں۔۔؟میں آپ کے لیے کھانا لاتی ہوں۔۔ارے بیٹی رہنے دے۔۔وہ آۓ گی تو اُسی کے ساتھ کھاٶں گی۔۔

۔عالیہ۔۔۔دیکھو ۔۔ابھی بھی کہتی ہوں ۔۔نا بھیجو اُسے سکول۔بہت ہو گٸ پڑھاٸی۔۔گھر کے کام سیکھاو اُسے۔۔۔جب تم تھی اُسکی عمر میں۔۔تو سب آگیا تھا تمہیں۔۔۔اُسے تو تواے پر روٹی ڈالنی نہیں آتی۔۔۔

اماں بی چھوٹی ہے۔۔آۓ ہاۓ ۔۔تم بھی چھوٹی تھیں۔۔میں بھی کر لیتی تھی اس عمر میں چولہا چوکا۔۔۔نا بی بی تمہیں روکا تھا ۔۔نا بھیجو ۔۔لڑکی ذات کو۔۔۔کل بھوگتی تو مجھے نا کہنا۔۔۔

عالیہ ۔۔خاموشی سے اُٹھ جاتی ہے ۔۔راہ داری میں بیٹی اور شوہر کا انتظار کرتی ہے۔۔۔

کتنے برس گزر گۓ۔۔اماں بی۔۔۔آپ کا لہجہ آج بھی ویسا ہے۔۔۔

یا اللہ تیرا شکر کہ تو نے ہمیں وطن دیا۔۔عزت دی۔۔

پاکستان دیا۔۔۔عالیہ روز کی طرح راہ داری میں چلتے چلتے اُن دنوں کو یاد کرتی ہے۔۔۔اکبر بھاٸی۔۔بہت یاد آتے ہیں آپ۔۔بڑے ابّا ۔۔بھی نہیں رُکے ہمارے پاس۔۔

عالیہ۔۔۔۔عالیہ۔۔۔

جی اماں بی۔۔۔عالیہ ماضی کے پلوں کو جھٹکتی ہوٸی ماں کے کمرے میں دوڑتی ہے۔۔۔

اماں بی ۔۔۔کیا ہوا۔۔آپ ٹھیک ہیں۔۔۔

ارے میں ٹھیک ہوں۔۔یہ دیکھو۔۔یہ خاکی لفافہ مجھے اِس صندوق سے ملا ہے۔۔اِس صندوق سے۔۔؟ یہ تو ۔۔ہاں یہ میرے اکبر نے لا کر دیا تھا مجھے ممبٸ سے۔۔۔میرے اکبر نے۔۔۔بڑی چاہ سے لایا تھا میرا بچہ۔۔۔

تو یہ لفافہ اکبر بھاٸی نے دیا تھا آپکو۔۔۔؟؟

یاد نہیں ہے ۔۔وقت ہوگیا۔۔دیکھو تو کیا ہے اِس میں۔۔؟اماں کاش کہ میں۔۔۔ پڑھ پاتی۔۔۔۔

عالیہ کو لگا۔۔اِس لمحے کو وہ پہلے بھی جی چکی ہے۔۔۔اچھا تو۔۔تجھے کب بول رہی ہوں۔۔عاٸشہ سناۓ گی نانی کو۔۔۔

بیٹی کے نام سے عالیہ کے چہرے پر مسکراہٹ پھیل جاتی ہے۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پیاری آپا بی۔۔۔۔

                   اسلام و علیکم۔۔۔!

اُمید ہے آپ،تایا جان اور بچے خیریت سے ہوں گے۔۔۔

آپا بی ۔میں جانتی ہوں۔۔آپ مجھ سے خاٸف ہیں۔۔

پر آپا بی میں یہ بات پورے وثوق اور یقین سے کر سکتی ہوں ۔۔کہ اِس وقت مسلم لیگ اور جناح کے علاوہ مسلمانانِ ہند کو رہنماٸی کے لیے اور کوٸی نہیں ملے گا۔۔

آپا بی۔۔یہ بات ہندو بھی اچھی طرح سمجھتے ہیں کہ۔مسلمانوں کو بلا آخر ایک مرکز پہ اکٹھا ہونا ہے۔۔آپا بی۔۔پاکستان کا قیاٸم لازم و ملزوم ہے۔۔

پاکستان ہم مسلمانوں کے لیے حقیقی جنت ہے آپا بی۔۔اپنی جنت میں چلیے آپا بی۔۔

پاکستان بننے والا ہے۔۔

لاہور جانے والی آخری مسافر ٹرین کل صبح 5 بجے دلی سے روانہ ہو رہی ہے۔۔

آپا بی اِس دُنیا میں آپکے علاوہ میرا کوٸی نہیں ہے۔۔اپنے لیے نہیں تو بچوں کے لیے آپا بی اگر بچوں کو کچھ ہوگیا تو آپ یقیناً خود کو معاف نہیں کر پاٸیں گی۔۔عالیہ اور اکبر کے لیے ہمارے ساتھ چلیے۔۔۔

                                           آپکی منتظر۔۔۔

                                        آپکی بہن۔۔زبیدہ خانم۔۔

مورخہ:11  اگست 1947

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عاٸشہ ٹوٹے ہوۓ لفظوں سے خط مکمل کرتی ہے۔۔

- admin

admin

یہ بھی دیکھیں

*سسکیاں۔۔۔ روما رضوی

*سسکیاں* روما رضوی ریل کی سیٹی تهی یا ہارن اس کے  بجتے ہی ہجوم میں …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے