سر ورق / افسانہ / کہے فقیر۔سنے فقیر۔۔علی زیرک

کہے فقیر۔سنے فقیر۔۔علی زیرک

پلیٹ فارم

آج میں سالوں بعد ریل کاٹکٹ ہاتھ میں تھامے ٹنڈ منڈ درختوں سے گھرے ہوئے اجاڑ  پلیٹ فارم  پر  اکیلا گھوم رہا ہوں ۔ گاڑی آنے میں ابھی پون گھنٹہ باقی ہے اور میرے انتظار کے پہلو میں  بھادوں کی بارش کے بعد ہلکورے لینے والی سراب کی شیتل لہرگدگداہٹ  کے کومل سُر چھیڑ رہی ہے۔

سالوں پہلے وہ بھی اسی پلیٹ فارم  پر آتا تھا۔عربی نسل کے کڑیل گھوڑے ایسی کاٹھی اور لامبی گھنی بھنووءں کے نیچے دہکتے انگاروں کی سی موٹی موٹی آنکھیں اور ٹھوڑی میں گھمبیرتا کا  گھاوء اس کے باطنی حسن کا روشن استعارہ تھا لیکن وہ مسکراتا بھی تھا اور مسکرانے کے دوران اگر قہقہے کی صدا بلند ہوجائے تو جھینپ جاتا اور اپنے دانتوں کی ضوبارگی کو سات پردوں میں ملفوف کرلیتا لیکن تھا بڑا جاندار بندہ ۔۔۔۔

پلیٹ فارم  پر اکثر ٹہلنے والوں میں ہم دو  ہی ہوا کرتے  تھے اور کبھی کبھی پلیٹ فارم بھی ہمارے ساتھ ٹہلنے لگتا لیکن  اسٹیشن ماسٹر کو یہ بات بہت کھٹکتی تھی شاید اسی لیے اس نے ہمارے ساتھ ٹہلنا شروع کردیا وہ شاید بھانپ چکا تھا کہ ہم پلیٹ فارم کو وہاں سے اُڑا لے جانے والےتھے ۔

ہم دونوں نے کبھی ایک دوسرے کا نام جاننے کی کوشش نہیں کی اور نا ہی کبھی ایک دوسرے کے ذاتی معاملات میں دخل دیا البتہ اسٹیشن اور اس سے جڑی ہر چیز ہماری بحث اور گفتگو کے دائرے میں گھومتی رہتی تھی۔ وقت ہماری باتوں کے لچھوں میں الجھتا گیا اور دیکھتے ہی دیکھتے جاڑے کی نرم دھوپ  پلیٹ فارم کی اُکھڑی ہوئی اینٹوں سے چمٹنا شروع ہوگئی۔

اس دن جب وہ سفید نمدے کی ٹوپی  پہن کر پلیٹ فارم پر نمودار ہوا تو اس کے ہونٹوں پر مگھر  کی کسمساہٹ  تھی شاید وہ جان چکا تھا کہ میں کون ہوں اور شاید اسے خبر ہوچکی تھی کہ مجھے پلیٹ فارم سے زیادہ اس کی پوشاک سے اٹھنے والی عصفری خوشبو نے دیوانہ کر رکھا تھا لیکن اسٹیشن ماسٹر کی سیٹی نے اس کی حالت قدرے بحال کی اور مجھے بھی اپنے خیال کا دھارا موڑنا پڑا۔

جب میں نے اُس سے پوچھا کہ وہ روزانہ پلیٹ فارم پر تو آتا ہے لیکن ریل گاڑی میں سوار نہیں ہوتا  تو اس نے سرد پڑتے حلق  سے گرم  شبد وں کو نگلا اور مسکرا دیا پھر جب میں نے اصرار کیا تو اس نے بتایا کہ پلیٹ فارم کو اُڑا لے جانے کا خواب وہ مجھ سے پہلے دیکھ چکا تھا اور اس لیے پہلی بار ہی میری آنکھوں میں جھانک کر جان گیا تھا کہ وہ خواب میں بھی دیکھ چکا ہوں۔

یعنی  ہم دونوں ہی پلیٹ فارم پر آتے تو تھے لیکن کسی گاڑی پر سوار نہیں ہوتے تھے لیکن گاڑیوں کے آنے جانے اور ان سے اترنے  والے سینکڑوں مسافروں کے پلیٹ فارم پر موجود ہونے کے باوجود بھی ہم اکیلے کیسے ٹہلتے رہتے تھے  ۔۔۔۔آج سالوں بعد جب میں ٹکٹ ہاتھ میں تھامے اسی پلیٹ فارم پر ٹہل رہا ہوں جسے اڑالے جانے کا خواب میں نے اور میرے اجنبی رفیق نے دیکھا تھا  تو یہ سمجھنا ذرا بھی دشوار نہیں کہ میں پہلے اس پلیٹ فارم پر کبھی آیا ہی نہیں ہوں ورنہ ہر صبح دیر رات تک ٹہلنے اور  آنکھوں سے انجنوں کا دھواں پینے کی وجہ سے میری پنڈلیوں میں اینٹھن  محسوس ہوتی اور میرے سینے پر  بنجر سناٹے کی کپکپی طاری ہوجاتی لیکن ایسا نہیں تھا میں بہت تروتازہ جاگتا اور بہت زندہ دلی سے دن گزارتا تھا۔۔آج ٹکٹ ایک قسم کی گارنٹی ثابت ہوگا کہ میں پلیٹ فارم پر موجود ہوں۔

*******

کہے فقیر سنے فقیر

 “یار شاہ حسین ! آج کل کے عاشق بغلوں میں ہاتھ دبا کر باغیچوں میں کیوں گھومتے رہتے ہیں ؟کیا انہیں یقین ہے کہ جب یہ اپنے ہاتھ بغلوں سے نکالیں گے تو وہ سورج کی طرح  چمک اٹھیں گے؟”

شاہ حسین کا ماتھا ٹھنکا اور اس نے پوری قوت سے بلھے شاہ کے کندھوں کو جھٹکا دیا اور کہا :

 “دیکھو میرے پیارے بلھے! اگرتم رنگوں میں تمیز کرنا بھول چکے ہو تو یہ سہولت تمہاری خود ساختہ ہے جو تم سورج کو ماتھے کی بجائے بغلوں کی بھینٹ چڑھا رہے ہو۔ ٹھنڈے سانس لیا کرو اور پازیب کی جھنکار بجھنے سے پہلے دیا جلا لیا کرو ورنہ رات کا اندھیرا تمہارے سر کی چاندی پگھلا کر پی جائے گا اور پھر تمہارے پاس بھٹکنے اور دیوانگی کا نعرہ لگانے کے سوا کوئی چارہ نہیں رہے گا۔”

“ارے مرے دوست !میں واقعی سچ کہہ رہا ہوں تم نے شاید موسی کو طور پر خدا سے کلام کرتے ہوئے نہیں دیکھا ورنہ تمہاری آنکھیں بھی رنگوں میں تمیزکی صلاحیت کھوبیٹھتیں۔” بلھے کا لہجہ اس بار پراعتماد تھا جیسے وہ واقعی اپنی آنکھوں کے سرمے کی تاثیر محسوس کرچکاتھا۔

            "کیاریوں میں کھلنے والے پھول کی خوشبو اور درخت کے تنے کا سینہ پھاڑ کر نکلنے والی گوند میں کچھ زیادہ فرق نہیں تم بس ان دونوں کا درست استعمال کیا کرو باقی سائیں کے ہاتھ ہے کہ وہ گوند کو خوشبو کردے اور خوشبو کو گوند میں بدل دے۔”

 بلھے شاہ بے نیازی کی لے پر جھوم رہا تھا جب غلام فرید نے خانقاہ کے چبوترے پر دانہ چگتے لقے کبوتروں کو گھور کر دیکھا اورچیل کووں کی تعریف کرنا شروع کردی ۔

"کچھ دن پہلے میاں محمد بخش کہہ رہا تھا کہ  عشق زمین پر اپنی طبعی عمر پوری کرچکا ہے لہذا اب کسی کو عاشق کہنا شرک سے بھی بڑا گناہ تصور کیا جائے گا ۔۔۔اور جھیل پر اترنے والی ہر ایک پری کو اس کے وزن کے برابر بھاری پتھر سے باندھ کر پہاڑ کی دوسری جانب گہرے،تیزابی  دریا میں پھینک دیا جائے گا ۔”غلام فرید نے محمد بخش کی غیر موجودگی میں اس کی موجودگی کی خبر دیتے ہوئے انکشاف کیا۔

"چل محمد بخشا! تیرا قصہ بھی تمام "

بلھے شاہ نے بے نیازی سے کہا

بلھے کی آنکھوں میں جلال ہی جلال تھا اور شاہ حسین نے پہلی بار محمد بخش کی باتوں کو اہمیت دیتے ہوئے کہا:

"غلام فرید!زمین پر اصل مسئلہ عاشق نہیں بلکہ عاشق ہونے کے دعوے کی گرہ کھولنا ہے ۔اب دیکھو اتنی خانقاہوں سے اٹھنے والی ہو اللہ ہو کی صداوءں میں سے ایک بھی خدا تک نہیں پہنچ رہی ۔”

"لیکن وارث کی شاید تم تک خبر نہیں پہنچی شاہ حسین! ۔۔۔وہ بھاگ پری کی تلاش میں ملکہ ہنس کی طرف نکلا تھا لیکن راستے میں بیلے کے ہرے کچور حسن پر فریفتہ ہوگیااوراب اسے  ہرا ہی ہرا دکھائی دیتا ہے۔”

بلھے نے اپنے دوست وارث شاہ کا حوالہ دیا تو شاہ حسین نے بگڑ کر کہا:

"ہرا تو غلام فرید کو بھی دکھائی دیتا ہے تو کیا اس کا مطلب یہ ہے کہ فقر اپنی آنکھوں پر تکیہ کر لے ۔”

جب وہ مشترکہ خانقاہ کی عقبی دیوار کی عین سیدھ میں مغرب کی طرف رینگتی  ہوئی ٹیڑھی پگڈنڈیوں کی طرف سو سو  بل کھاتی ہوئی لامبی گھاس کو جڑ سے اُکھاڑنے میں جُت گئےتب  محمد بخش جو وہاں موجود نہ ہو کر بھی موجود تھا ،وارث شاہ کا بے صبری سے انتظار کر رہا تھا۔

شاہ حسین کے چٹختے ہاتھوں اور اُبلتی ہوئی آنکھوں کو ہوا کے گداز لمس نے بے کل کردیا جب بلھے نے آگے بڑھ کر اپنے گیروے لبادے کو جھاڑنا شروع کردیا اور اسی دوران غلام فرید نےاپنی مٹھیوں کو بھینچ کر ہو کی ضرب لگائی ۔

یہ باہو دکھائی نہیں دیتا آج کل؟

شاہ حسین کے لڑکھڑاتے سوال پر غلام فرید نے نفی اثبات میں سر ہلا دیا اور سوال نیستی کی ترازو کے کانٹے پر جھولنے لگا۔

باہو کو چنبیلی کی خوشبو نے دیوانہ کررکھا ہے فقیرو!

بلھے شاہ نے بلند آواز میں مناروں کی طرف گھورتے ہوئے آخری جواب دیا۔

آسمان پر نقرئی لکیریں ابھرتے ہی محمد بخش، بھربھری مٹی کے ٹیلے پر اکڑوں بیٹھ کرڈوبتے سورج کو قابو کرنے کی  کوشش کرنے لگا۔

بلھے نے محمد بخش کی کرنجی ساکت آنکھوں پر ہاتھ رکھ کر لمبی ہیک لگائی۔۔۔۔۔۔۔

لے او یار حوالے رب دے  ۔۔۔۔۔

کہتے ہیں کہ اب تینوں فقیر اپنی مشترکہ خانقاہ کے مرکزی چبوترے پر لمبی تان کر سو رہے ہیں۔۔۔ لیکن محمد بخش اکیلا بھربھری مٹی کے ٹیلے پر اکڑوں بیٹھا ڈوبتے سورج کو قابو کر رہا ہے ۔

*******

- admin

admin

یہ بھی دیکھیں

ولن۔۔ علی زیرک

اوئے۔۔۔۔ روہی میں آسمان کے کنگرے توڑتے  گنے کے  کھیت ہیں اورمیرے میں بھربھری مٹی …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے