سر ورق / شاعری / نادیہ عنبر لودھی..اسلام آباد پاکستان

نادیہ عنبر لودھی..اسلام آباد پاکستان

نادیہ عنبر لودھی

اسلام آباد پاکستان

تعارف

نام نادیہ عنبر لودھی

اسلام آباد سے تعلق

ریذیڈنٹ مدیرہ : خبریں مانچسٹر یو کے (بر طانیہ )فرام اسلام آباد پاکستان

تعلیم : ایم اردو:  پنجاب یونیورسٹی لاہور

کتاب شاعری زیر طبع : "خاکی "

کتاب مضامین :زیر طبع  "حرف مکرر نہیں ہوں  میں "

صنف سخن :غزل ،نظم ،رباعی ،قطعہ

نثر :     مضامین نگاری سماجی موضوعات  خواتین اور بچوں کے مسائل

‫نادیہ عنبر لودھی شاعری اور نثر کی جاندار آواز ہیں۔ آپ بر طانیہ کے اردو

‎‫ اخبارات سے شہرت حاصل کرنے والی پاکستانی لکھاری ہیں۔ جنہیں ادبی ایوارڈ 2017 سے بر طانیہ میں نوازا گیا۔ جو بچوں اور خواتین کے مسائل پہ لکھتی ہیں۔

‎آپ خواتین اور بچوں کی بے بسی پہ قلم اٹھاتی ہیں

‫—————————

غز ل ۔۱

سیم وزر کی  کوئی تنویر  نہیں  چاہتی میں

کسی  شہزادی   سی تقدیر نہیں چاہتی میں

مکتبِ عشق سے وابستہ ہوں کافی ہے مجھے

داد  ِ غالب  ، سند ِ میر   نہیں  چاہتی  میں

فیض یابی تری صحبت ہی سےملتی ہےمجھے

کب ترے عشق کی تاثیر نہیں  چاہتی  میں

قید اب وصل کے زنداں میں تو کر لے مجھ کو

یہ ترے ہجر کی زنجیر   نہیں   چاہتی   میں

مجھ کو اتنی بھی نہ سکھلا تُو  نشانہ بازی

تجھ پہ چل جاۓ مرا تیر نہیں  نہیں چاہتی میں

اب تو آتا  نہیں عنبر وہ کبھی سپنے میں

اب کسی خواب کی تعبیر نہیں  چاہتی  میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل–۲

وہ گھر تنکوں سے بنوایا  گیا ہے

وہاں ہر خواب دفنایا  گیا  ہے

مری الفت کو کیا سمجھے گا کوئی

سبق نفرت کا دہرایا  گیا  ہے

مرے اندر کا چہرہ مختلف ہے

بدن پر اور کچھ  پایا  گیا  ہے

ہوئی ہے زندگی افتاد ایسے

ہوس  میں ہر مزا پایا  گیا  ہے

کہی ایسی ہے عنبر اس کی ہر بات

شکستہ دل کو تڑپایا گیا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔غزل ۔۔۳

ہم کو آغاز ِ سفر مارتا ہے

مرتا کوئی نہیں ڈر مارتا ہے

زندگی ہے مری مشکل میں پڑی

عشق مجھ کو  بے خبر مارتا ہے

تری مجھ سے نہیں قربت نہ سہی

مجھ کو تو حسن ِ نظر مارتا ہے

زندگی اس کی ہے محتاج مگر

دے بھی سکتا ہے مگر مارتا ہے

اک ہنسی گونجی تھی گھر میں مرے

مجھ کو یادوں کا اثر مارتاہے

۔۔غزل ۔۔۴

کیوں میں بار ِدگر جاؤں

پھر سے اس کے در جاؤں

تجھ آنکھوں سے جہاں دیکھوں

بے رنگی سے ڈر جاؤں

تُو چاہے تو جی اٹھوں

تو چاہے تو مر جاؤں

میں بے انت سمندر ہوں

کیسے دریا میں اتر جاؤں

چادر ِشب ہوں میں تیری

تو اوڑھے تو سنور جاؤں

خواب نہ دیکھوں تو عنبر

شاید میں بھی مر جاؤں

۔۔۔۔۔۔

۔۔۔غزل ۔۔۔۵

۔۔۔

توُ تو کرشمہ ساز ہے کوئی کمال کر

اک دل ہی بنانے اپنے سانچے میں ڈھال کر

ترتیب دھڑ کنوں  کی کسی شب اُجال  کر

فرقت سے ُپر ہیں ساعتیں تُو  پُر وصال کر

آنکھوں میں جھلملائیں گے یہ خواب کب تلک

تعبیر کے بھی روشن  ابھی  خدوخال کر

قائل ہے وہ تو عشق میں بھی احتیاط کا

دیکھے گا میری سمت مگر دیکھ بھال کر

ہوں احترام عشق میں عنبر حضور یار

کرتی ہوں لب کشائی زباں کو سنبھال کر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔غزل۔۔۔۔۶

آنکھوں کو اک خواب دکھایا جا سکتا ہے

قصہ یوسف کا دہرایا جا سکتا ہے

ہا ں !  اس دنیا کو ٹھکرایا جا سکتا ہے

حسن اور عشق  دعا سے پایا جا سکتا ہے

جو مجھ میں ہو زلیخا تجھ میں یوسف کوئی

عمروں کا سرمایہ لایا جا سکتا ہے

اسُ کو کہنا مری آنکھوں کے کا سے میں

دید کا اک سکہ تو دکھایا جا سکتا ہے

ناداں اتنا مت سمجھو تم دل کو عنبر

کب یاد وں سے اسے بہلایا جا سکتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔غزل۔۷

خاص کو عام  کر دیا میں نے

اُس کو  بے نام  کردیا میں نے

میں پلٹ کر نہیں دیکھ پائی ُاسے

خواب نیلام کردیا میں نے

جو یقیں تم نے مجھ کو بخشا تھا

وقفِ ِاوہام کردیا میں نے

اب نہ فصلی پرند پھڑ کے گا

اُس کو تہہ دام کر دیا میں نے

اُکھڑی سانسوں کو کیا رخصت

کیسا  یہ کام کر دیا میں نے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔غزل..۸

گرداب ،کنارہ اور دریا

پھر ساتھ تمہارا اور دریا

آباد کنارے آنکھوں کے

اک آنسو کھارا  اور دریا

دونوں شب ِہجر کے مارے ہوۓ

وحشت کا دھارا  اور دریا

کسی موج ِ فنا میں ڈوب گئے

وہ خواب ہمارا  اور  دریا

عنبر کا ساتھ کہاں دے پاۓ

شب کا نظارہ اور دریا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔

۔غزل۹

راستہ نکلے گا محبت میں

تُو جلا تو دیا محبت میں

دودھ کی نہر تک نکالے گا

تیشہ ِ با وفا محبت میں

شاعرانہ مزاج ہے اُس کا

اُس کو غزلیں سُنا محبت میں

پیار میں اُس نے پھول بھیجا تھا

میں نے خط لکھ دیا محبت میں

عشق کس نے کیا زلیخا  سا

کون ہے پارسا محبت میں

کب سے میں بیٹھی  ہوئی ہوں خود کو

کر کے آراستہ محبت میں

کس طرح جانے لوگ کرتے ہیں

کوئی شکوہ ، گلہ  محبت میں

گنگناتی ہے پیار کے نغمے

امن کی فاختہ محبت میں

عشق میں تُو زلیخا ہو کہ نہ ہو

نادیہ  بن کر آ محبت میں

۔۔۔۔۔۔۔۔ ۱۰

۔غزل۔

دار پر حد سے سِوا یار آئی

اس بشر کو تو وفا یاد آئی

گُل کی خوشبو تھی جہاں پر ناپید

اُس گلی باد ِ صبا یاد آئی

بجھ گئی شب میں مری خواہش ِدل

چارہ گر تجھ کو دوا یاد آئی

چلتے چلتے جو جلاتے گئے دیپ

ظلمتِ شب کی ادا یاد آئی

جیتے جیتے رہے عنبر مدہوش

مرنے والے  کو قضا یاد آئی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔غزل۔۔۔۱۱

نہ اُسے زیست میں ہارا ہوتا

پاس قسمت کا جو تارا ہوتا

ہم بھی منزل سے شناسا ہوتے

وہ سفینہ جو ہمارا ہوتا

اپنے موقف سے نہ ہٹتے پیچھے

اُس سے ملنا جو دوبارہ ہوتا

کیا تھا ُاس کو بھی وفا کرلیتا

دل نے جب اس ُکو پکارا ہوتا

ہم دیا تھام کر تنہا لڑتے

گو ہواؤں کا اشارا ہو تا

۔۔۔۔۔۔۔۔

۔غزل۔۔۔۱۲

بعد ُاس کے نہ مسکرا یا چاند

یوں گگن پہ ہوا بے مایہ چاند

چاندنی شہر ِجاں تلک پھیلی

دشتِ دل میں جو میں نے پایا چاند

کہکشاں میری خاک سے روشن

میری مٹی سے جگمگایا چاند

زخم اپنوں نے اس کو بخشے ہیں

کچھ ستاروں کا ہے ستایا چاند

لوگ وہ کاش قدر کرتے جنہیں

مل گیا تھا بنا بنایا چاند

اپنا عنبر چراغ کافی ہے

کیا کروں میں بھلا پرا یا چاند

۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نظمیں

۔

"مقدر”۱۳

مقدر بنانے والے!

توُ نے کس برتے  پر

ہم فانی انسانوں کو

اس آزمائش کے قابل جانا

بہشت کا مزہ چکھا کر

اس فانی دنیا میں لا پھینکا

مقدر بنانے والے!

کاش کہ تُو نے بنایا ہوتا

مرا مقدر بھی

مرے سراپے جیسا  بھر پُور

مری آنکھوں جیسا پُر نور

مری قامت جیسا سرو قامت

مری خرام جیسا دلنشیں

سیمیں  بدن جیسا مرُمریں

کاش کہ تُو نے بنا یا  ہوتا

مرے سراپے کی جگہ

مرا مقدر حسین !!

—————————–

(نظم )۱۴

"امید” ..

۔۔۔۔۔۔

تم ٹھہرو ذرا!

میں آتی ہوں

سورج سے نُور  کی کر نیں لے کر

کسی معصوم طفل کے لبوں سے ہنسی لےکر

کسی خُو شبو بھرے جنگل سے

تتلیاں پکڑ کر لاتی ہوں

تم ٹھہرو!

میں آتی ہوں

شام کے ڈھلتے منظر نامے میں

چند جنگو پکڑنے

میں تو ہمیشہ تنہا ہی جاتی ہوں

رات آۓ تو مت ڈرنا!

ستاروں سے رستے پوچھ کر

تم کو بتاتی ہوں

خواب بھری  ان آنکھوں کے واسطے

نیند بھی لاتی ہوں

تم ٹھہرو میں آتی ہوں !

تم ٹھہرو میں آتی ہوں!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نظم ۔

۱۵

"عورت”

تم مری آواز دبا نہیں سکتے

مرے لکھے ہوۓ الفاظ مٹا نہیں سکتے

نہیں رکھ سکتے مجھے پابند سلاسل

تم مری آواز دبا نہیں سکوگے

ناخنِ شوق سے روزانہ کرید ونگی

میں ایک نئی دیوار

طاقتٰ پرواز سے مسخر کرونگی

نئے جہان

پر کاٹ کر مرے

پنجرے میں مقید نہیں کر سکتے تم

خواب نوچ کر مری آنکھیں تسخیر نہیں کر سکتے تم

عورت ہوں میں

صاحب ِعقل وفہم ہوں

بہتا ہوا پانی ہوں

ہر صدی کی میں ہی کہانی ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔

نظم ۱۶

۔

"ہجرت”

۔۔۔۔۔

تم ہجرت کا کرب نہیں جانتے

تم نے انتظار حسین کے افسانے نہیں پڑھے

ناصر کاظمی کے اشعار میں چھپے ہوۓ نوحے نہیں سُنے

جو ہندوستان کو بنتے دیکھا ہوتا

گھروں کو جلتے دیکھا ہوتا

عصمتوں لٹتی ،گردنیں کٹتی

زندگی بکھرتی دیکھی ہوتی

تو شاید تم ہجرت کا کرب جان لیتے

فاسٹ فوڈ کے شوقین

اپنے حال میں گم

تمہارا کوئی مذہب کوئی نظریہ نہیں ہے

پیٹ کی بھوک سے جنس کی آسودگی تک

حیوانی فطرت

اس ہجرت کے درد کو کیسے محسوس کر سکتی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نظم

"گناہ”۱۷

۔۔۔

زانیوں کے پاس نئی نئی دلیلیں ہیں

نئے نئے الفاظ ہیں

بے شمار جواز ہیں

بدلے وقت کی نبض پر ہاتھ رکھ کر

یہ نئے قصے سناتے ہیں

سوچ کے نئے زاویے تلاش  کرتے ہیں

اضطراب کا ایک ہی حل سوچتے ہیں

بدبودار لمحات کو

بستر کی سلو ٹوں میں

پوشیدہ تجربات کو

شراب کے بُو میں گھول لیتے ہیں

پھر اسُ لمحے تھوڑ ا سا سچ  بھی بول لیتے ہیں

گزرے لذت آشنا تجربات کا بھید بھی  کھول لیتے ہیں

کسی نئے بدن کی خوشبو میں گمُ

میقاس الشباب سے

پُر کیف لمحات تک

شراب کے جام سے ناف تک

راستہ ڈھونڈ لیتے ہیں

دلدل میں اُترتے قدموں کے واسطے

جواز بھی  سوچ لیتے ہیں

حوا کے بیٹے

بنت ِ حوا سے کھیل لیتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نظم

"فردوس ِ اعلی ” ۱۸

۔۔۔

کیا خوب ہے تیری سجائی ہوئی  جنت مرے مولا

تیری جنت میں

مرے مولا !

مرَدوں  کے لیے  تو حُوریں ہیں

اور عورتوں کے واسطے ہیں مجازی خُدا

ہم عورتیں !

دھتکاری ہوئی

پَیروں  کی جُوتیاں !

وہ جنت کہاں کی ہے  فردوسِ اعلی

جہاں مرَدوں  کی ہوں محکوم عورتیں !

جہاں آدم کو عشق ِ حوا کے جرم میں نوازا جاۓ

حوا کےمساوی حقوق کو نا مانا جاۓ

ایسی فردوس ِبریں کے اشتیاق میں

ان مرَدوں کو ہی بے قرار رہنے دو!

۔۔۔۔۔

- admin

admin

یہ بھی دیکھیں

شام میری دلہن بنتی ہے …ریحانہ ستار ہاشمی

            ریحانہ ستار ہاشمی             فیصل آباد سے تعلق ہے              بطور اسسٹنٹ رجسٹرار کے …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے