سر ورق / شاعری / شام میری دلہن بنتی ہے …ریحانہ ستار ہاشمی

شام میری دلہن بنتی ہے …ریحانہ ستار ہاشمی

            ریحانہ ستار ہاشمی

            فیصل آباد سے تعلق ہے

             بطور اسسٹنٹ رجسٹرار کے طور پر گورنمنٹ کالج یونیورسٹی فیصل آباد میں اپنے فرائض سرانجام دے رہی ہے۔

            تعلیم ۔ ایم اے ایم ایڈ

             انتخاب۔ © ،، شام میری دلہن بنتی ہے،،

            شاعرہ کے علاوہ افسانہ نگار اور ناول نگار ہیں

            شام میری دلہن بنتی ہے

            شام میری دلہن بنتی ہے

            ناامیدی کے اداس چہرے پر

            طویل مسافتیں لکھتی ہے

            سکوت کے دامن میں

            اس کی دلفریب یادوں میں

            میری آرزوں کی بارات اترتی ہے

            اسکی تنہائیاں شرماتی ہیں

            ایسے میں وہ میری ہمنوا بن کی

            زرتار آنچل اوڑھے

            درد کا ساغر

            اپنے مر مریں ہاتھوں سے

            مجھے نوش کراتی ہے

            میرے ارمان دربان بن کر

            میری آنکھوں کے اشکو ں کو قبا دیتے ہیں

            خلوتوں میں سب مل کر

            میری دلہن سجاتے ہیں

………………….

            تمہارے ساتھ ایسا ہو

            سنو تمہارے ساتھ ایسا ہو

            گئی رتیں تمہیں یاد آئیں

            تمہارے دل کو ستائیں

            تم پکڑنا چاہو انہیں

            تمہارے ہاتھ کچھ نہ آئے

            جتنا بھی بھلانا چاہو

            زہن سے اتارنا چاہو

            یادوں کے تسلسل سے

            تنگ آکر اکثر

            خودی سے اندھیروں میں چلاﺅ

            ہاتھ خالی ہو

            بے بسی کا آنکھوں میں پانی ہو

………………..

دکھوں کی بوندیں

میری اداس آنکھوں میں

ابھی کچھ دیپ جلنے تھے

میری بے خواب آنکھوں میں

ابھی کچھ خواب سجنے تھے

ان پر خار ر ہوں پر

ابھی کچھ پھول کھلنے تھے

لیکن دکھوں کی بوندیں

وقت سے پہلے برسی ہیں

نہ جانے کب تلک اب ہم

درد کو لفظوں میں ڈھالیں گے

…………………….

سادہ سی لڑکی

ان سرد گرم ہواﺅں میں

زیست کے کٹھن سفر میں

خود غرضی کے گھنے جنگل میں

بے آسرا مجبور سی لڑکی

ہزار چہرے رکھنے والوں کو

کون سے آئینے میں دیکھے گی

یہاں رستے سارے چھوٹ گئے

مان کے موتی سارے ٹوٹ گئے

دوا درد جانا تھا جن کو

وہ بیگانے بن بن لوٹ گئے

اس نگر کے سنگ دلوں

ہو سکے تو اتنا کرنا

میں ہوں اک سادہ سی لڑکی

سراب حقیقیت کو جان لونگی

فریب میں زندگی گزار لونگی

اذیت کا زہر پلاتے رہنا

جو دکھ دیئے ان کے بدلے

فقط اک۔۔

پہلا اور آخری سکھ دیتے جانا

………………………..

میری سوچوں کے محور

میری سوچوں کے محور

آس کا ننھا سا جگنو

میری مٹھی میں تھما کر

میرے دل کو بے آس کرنے والے

کبھی کبھی میرا دل چاہتا ہے۔

تیرے دیئے ہوئے تما غم بھلا کر

تجھ سے باتیں کروں

اور

تمام اناﺅں کی دیواریں گرا دوں

لیکن پھر سوچتی ہوں

خود کو ریزہ ریزہ کرکے

تمہیں متبعر کیسے بنا دوں

بھرم کی چھاﺅں

کہیں دھوپ نہ بخش دے

………………..

میرے ہمدم

مجھے تجھ سے چاہت تھوڑی تھی

تجھے مجھ سے چاہت تھوڑی تھی

ہماری راہوں میں دوری تھی

چاہت کے گلشن میں

پھولوں میں نہ خوشبو تھی

ہماری باتیں ادھوری تھیں

ہم اک ساتھ ہنستے تھے

اک ساتھ روتے تھے

لیکن۔۔

نصیب میں اس لئے

تیری میری دوری تھی

……………….

وقت کے سکھ

وقت کی تیز آندھیاں

اور حسرتوں کی بوندیں

کل نہ جانے مجھے

کس سمت اڑا لے جائیں

ہوسکتا ہے سکھوں کی جانب

کیونکہ ۔۔

ہار ماننا میں نے

کبھی نہیں سیکھا

…………………….

شام غریباں

جو لوگ من کو سندر لگتے ہیں

اپنے اپنے سے لگتے ہیں

اتنے حسین چہرے

پھر دل کیوں تو ڑ دیتے ہیں

سانسیں بکھیر دیتے ہیں

سوکھی آنکھوں میں

چمکتے کاجل پر

اشک رکھ دیتے ہیں

انتظار کی منڈیروں پراکثر

بے خودی میں سوچیں سوچتی ہیں

لوٹ کے آنے والے لوٹ آتے ہیں

ورنہ شام غریباں کر دیتے ہیں

- admin

admin

یہ بھی دیکھیں

شوبز سے تازہ ترین۔۔ اشفاق حسین

 خلیل الرحمن قمر کے الزامات ،عروہ حسین کا جواب  اداکارہ عروہ حسین رائٹر وڈائریکٹر خلیل …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے