سر ورق / کہانی / خوشی … شیکھا گپتا/عامر صدیقی

خوشی … شیکھا گپتا/عامر صدیقی

خوشی

شیکھا گپتا/عامر صدیقی

ہندی کہانی

…………….

آج جیسے ہی گھر سے آفس کے لئے نکلی اوربس اسٹاپ پر پہنچی ہی تھی کہ بس اسٹاپ پر ششانک کو دیکھ کر میں حیران ہو گئی ۔یادوں نے کروٹ لینی شروع کر دی۔

میں اکثر اپنے ننہال جایا کرتی تھی اور اُس دن اچانک ہی نانا کے ساتھ کسی کو دیکھا۔

نانی سے پوچھا۔” یہ کون ہے؟“

نانی جی نے بتایا،”دامودر تمہارے پاپا کے دوست ہے۔“

میرے والد گری راج داس، پرائیویٹ کمپنی میں کام کرتے تھے۔ ایک دن اچانک ان کی ملاقات اپنے اسکول کے دنوں کے ساتھی دامودر سنگھ سے ہو گئی۔ وہ اپنے بچپن کے ساتھی سے مل کر بہت خوش تھے۔ دامودر سنگھ کا اچھا خاصا بزنس تھا اور وہ اپنے اکلوتے بیٹے ششانک کے لئے ہم پلہ لڑکی کی تلاش میں تھے۔ ششانک کہیں اور شادی کرنا چاہتا تھا، لیکن والد کی ضد اور کروڑوں کی جائیداد کے لالچ کی وجہ سے شاید وہ لاچار تھا۔ دامودر سنگھ ایک دن گری راج داس کے گھر آئے اور جیا کو دیکھ کر بہت خوش ہوئے۔ وہ خوبصورت اور سلیقہ شعار لڑکی تھی، اس لئے انہوں نے اپنے دوست گری راج غلام سے جیا اور ششانک کی شادی کے بارے میں بات کی۔ پاپا کو پہلے تو جیاکی قسمت پر یقین نہیں ہوا۔ پھر انہیں یہ لگا، دہلی جیسے شہر میں رہنے والا ماڈرن خیالات والا لڑکا، کیا چھوٹے سے شہر میں رہنے والی جیا کوپسند کرے گا اور اس سے شادی کے لئے راضی ہوگا۔ لیکن دامودر سنگھ کی ضد کے آگے گری راج داس کی ایک نہ چلی۔ ہر باپ کی طرح وہ بھی بیٹی کے سنہرے مستقبل کا تصور کرتے۔ سواس طرح ششانک اور جیا کی شادی ہو گئی۔

ششانک اپنی شادی سے خوش تو نہیںتھا، پر والد صاحب کی جائیدادکے لالچ میں اس نے جیا سے شادی کر لی تھی، پر اندر ہی اندر وہ اپنے لئے ایک ماڈرن لڑکی کا تصور کرتا رہتا اور ادھر ادھر بھٹکتا رہتا۔ وہ جیا سے دور دور رہتا۔ اس سے سیدھے منہ بات تک نہیں کرتا۔ لیکن جیا ایک ہندوستانی لڑکی کی طرح ششانک کو ” شوہر میرا دیوتا“کے سمان سمجھتی رہی۔

”جیا، ششانک کے اس طرح کے رویے سے سوچنے لگی کہ شاید یہ کسی اور کو پسند کرتے ہیں مجھے نہیں۔ کیا میں ان کی محبت کے قابل نہیں ہوں؟ مجھے خود کو ان کی پسند ناپسند کے مطابق ڈھال لینا ہی ہوگا۔

جیانے شوہر کی پسند ناپسند کے مطابق خود کو ڈھالنا شروع کر دیا۔ کافی کم وقت میں جیا نے جدید رہن سہن اپنا لیا۔ پھر بھی ششانک اس سے اپنا رویہ نہیں بدلا تھا۔

جیا بہت دکھی ہوئی۔ اس نے سوچا کہ وہ ششانک سے پوچھے کہ کتنی چوٹ پہنچی ہے مجھے۔ اپنے اندرونی درد سے وہ چیخ سی اٹھتی تھی۔ ایک دن وہ ششانک سے پوچھ ہی بیٹھی،” کیا کمی ہے ۔۔۔ بتائیے تو؟ آپ جیسا چاہتے ہیں، میں ویسا ہی خودکو بنانے کی کوشش کروںگی۔“

ششانک کس طرح کہے کہ وہ اسے پسند نہیں ۔اس نے تو والد کی خوشی اور کروڑوں کی جائیدادکے لالچ میں اس سے شادی کی ہے۔ وہ تو ایک کھلے خیالات والی ماڈرن لڑکی سے شادی کرنا چاہتا تھا۔

شادی سے پہلے ششانک نے اپنے دوستوں سے لیٹ نائٹ پارٹیوں کے بارے میں سنا تھا۔ ان پارٹیوں میں کئی ایسے پروگرام ہوتے ہیں، جن سے زندگی میں نیاپن آتا ہے۔ ان پارٹیوں میں صرف شادی شدہ لوگ ہی شرکت کر سکتے ہیں۔ لیکن اس کی شادی کیونکہ گاو ¿ں کی ایک سیدھی سادی، شرمیلی لڑکی سے ہو ئی تھی، لہذا وہ کبھی ان پارٹیوں میں شرکت نہیں کر پائے گا۔ شادی کے چند ماہ بعد کافی سوچ بچار کرنے بعد بالآخر اس نے فیصلہ کیاکہ وہ جیاکو ان پارٹیوں میں کر لے جائے گا۔ پھر نتیجہ چاہے جو بھی ہو۔ دیکھا جائے گا۔

ایک شام ششانک نے جیا کو پارٹی میں چلنے کو کہا۔

جیا کی خوشی کی ٹھکانہ ہی نہیںتھا۔ آج پہلی بار اس کے شوہر نے اپنے ساتھ کسی پارٹی میں چلنے کو کہاتھا۔

ششانک اس کے لئے ایک ماڈرن ڈریس لے کر آیا اور تیار ہونے کا کہا۔ جیانے پہلے کبھی ایسا ڈریس نہیں پہنا تھا۔ لیکن ششانک کی خوشی کے لئے وہ تیار ہو گئی۔

جیا نے پہلی بار ایسی پارٹی دیکھی تھی۔ جیا کو سب کچھ بڑا عجیب سا لگ رہا تھا، وہ ڈرنے لگی تھی ، پر کیا کرے؟ ششانک نے اسے بھی ڈرنک لینے کو کہا، پر اس نے انکار کر دیا۔ ششانک دوسری عورتوں کی جانب بڑھ گیا۔ جیا دیکھ رہی تھی کہ وہاں موجود مرد، دوسری عورتوں میں زیادہ دلچسپی لے رہے تھے اور عورتیں بھی دوسرے مردوں میں۔ تبھی اچانک ششانک کے پھسپھساتے ا لفاظ جیا کے کانوں میں پڑے۔

” کہاں کھو گئی ہو۔“

” دیکھو اب اس پروگرام کا حقیقی کھیل شروع ہونے والا ہے۔“

جیا نے کہا ،” کون سا۔“

 ششانک بولا،” تم دیکھتی جاو ¿۔“

” کیوں؟“ جیا نے پوچھا،” یہ کھیل ہے اور اس کھیل کا حصہ ہر کسی کو بننا پڑتا ہے۔“

اس میں ایک مرد آکر پرچی اٹھاتا ہے اور اس درج نام کی عورت کو اس مرد کے ساتھ رات بھر رہنا ہوتا ہے۔ جیانے جیسے ہی یہ سنا اس کے پاو ¿ں کے نیچے کی زمین کھسک گئی۔ وہ سوچنے لگی، اپنے پورے وجود کو ششانک کو وقف کرکے بھی وہ اسے خوش نہیں کر پائی۔ میرے وجود پر ایسی گہری چوٹ! میری نسوانیت کی ایسی سخت توہین۔

” کیا کروں؟ کیسے اپنی شادی شدہ زندگی کو بچاﺅں؟ کیا میں ششانک کی بات مان لوں؟ آخر اسی کے ساتھ تو زندگی گزارنی ہے مجھے۔ کیا ایک مرد یا ایک شوہر اس عذاب کا مطلب سمجھ سکتا ہے؟“

” کیا ہم جانوروں ہو گئے ہیں، جہاں عورت بس عورت اور مرد صرف مرد۔ کیسے کوئی بِنا دل سے جڑے کسی کے ساتھ اپنا بدن بانٹ سکتا ہے؟ کیسے ہم صبح ہوتے ہی اسے بھول سکتے ہیں، جس کے ساتھ ہم نے رات گزاری ہو؟ میں نے کہیں پڑھا تھا کہ ہرربط روح کی کتاب میں درج ہو جاتا ہے اور انسان اسے جیتے جی نہیں بھول سکتا ہے۔ کیا جذبات کی کوئی اہمیت نہیں؟ ہم کہاں جا رہے ہیں؟ ششانک کو وہ کس طرح سمجھائے؟ کس طرح کہے کہ نفرت کی آگ میں جتنا گھی ڈالوگے، وہ اتنی ہی تیز بھڑکتی ہے۔ خواہشات کا کہیں کوئی سرا نہیں! کیوں مرد مختلف عورتوں کامزہ لینا چاہتا ہے؟ کیا تمام عورتیں جسم کے لحاظ سے ایک جیسی نہیں ہوتیں؟ الگ سامزہ، بس دماغ کا فتور ہے۔ اس کا یہ وہم توڑنا ہوگا۔ وہ بھول گیا ہے کہ مزہ بدن میں نہیں، ذہن میں ہوتا ہے۔ مزہ تبدیلی میں نہیں، تعلق کے احساس میں ہے۔“

انہی سوچوں کے درمیان گھری جیا، اپنی اس نئی زندگی کے بارے میں سوچنے لگی، جسے لے کر کچھ دنوں پہلے تک اس کے پاو ¿ں زمین پر نہیں پڑ رہے تھے اور وہ بغیر پر لگائے آسمانوں میں اڑرہی تھی۔ لیکن جب حقیقت سے سامنا ہوا تو نفرت ہوتی ہے ایسے ماحول سے۔ پر یہ سب ششانک کی خوشی کی خاطر کرنا ہی پڑے گا۔ اپنے متعلق سوچ کر ایک اداسی بھرا احساس اس کے اندر پیدا ہو گیا تھا۔ ٹھیک ہے جوہو گا دیکھا جائے گا۔

 جیانے اس کے سامنے آخر ہتھیار ڈال دیئے تھے۔ عورت،مرد کے خلاف کیسے جا سکتی ہے؟ ششانک اپنی جیت پر مسکرایا۔ اچانک اس نے ششانک کی طرف دیکھا۔ وہ اپنا ساتھی چن کر اس کی کمر میں ہاتھ ڈالے اس کے کمرے میں جا چکا تھا۔ جیا کو بھی نئے پارٹنر کے ساتھ جانا تھا۔ اس کی آنکھیں جیسے کچھ نہیں دیکھ رہی تھیں۔ ایسا لگ رہا تھا ،جیسے وہ خواب دیکھ رہی ہو یا پھر نیند میں چل رہی ہو۔ پہلی بار شراب کی ہلکی چسکی لی تھی اس نے۔ نشہ چڑھ رہا تھا۔ کسی نے بہت نرمی بھرے انداز سے اسے اپنی بانہوں میں باندھا۔ مانو کوئی بہت احتیاط سے زمین پر گرے مکھن کو بٹور رہا ہو۔ کیا ہو رہا ہے؟ جیا نے سوچنا چاہا۔ مگر دماغ نے کچھ بھی سوچنے سے انکار کر دیا۔ پھر اس نے محسوس کیا، اچانک ایک گھبراہٹ کی لہر سی اس کے اندر سے گزر گئی۔ ایک عجیب سے ڈر کا غلبہ ہونے لگا۔ کیوں ایسا لگ رہا ہے کہ میرے لئے بھی صرف مزہ نہیں ہے اس رات میں کچھ اور بھی ہے۔ کچھ ناپسندیدہ؟ کچھ نامعلوم سا؟ کوئی اسے پیار سے چھو رہا ہے۔ پر یہ کیا؟ یہ لمس تو اس کی روح کو چھو رہا ہے! یہ کیسا لمس ہے جو اس کے روم روم کو جگا رہا ہے! ایک انجان مزہ! کون ہے یہ شخص! یہ اس کا شوہر ششانک نہیں، اس کا پریمی نہیں، پھر بھی اس سے مزہ مل رہا ہے۔ یہ گناہ ہے؟ ششانک کے ساتھ تو اسے کبھی ایسا نہیں لگا۔ اس کی محبت، اس کا جسم، اس کی سانسیں، اس کی گند، تو کبھی اس طرح اس کی روح تک نہیں پہنچ سکی تھیں۔ پھر یہ کیسے؟ صرف رات بھر کا ساتھی! کل صبح کے ساتھ ان خوشیوں سے بھی ساتھ چھوٹ جائے گا۔ کاش! اس رات کی صبح نہیں ہو! کاش! یہ ساتھی اس کی ہر رات کا ساتھی ہو۔۔۔ کاش! ۔۔۔ جیا کے اندر کی بیوی ۔۔۔ جانے کب کی سوئی انجان عورت ۔۔۔دعا کرتی رہی ۔۔۔ اور صبح ہو گئی۔

سبھی جوڑے ہال میں جمع ہو گئے۔ اپنے اپنے ساتھی کے ساتھ۔ ششانک بہت خوش نظر آ رہا تھا، پر جیا ششانک سے آنکھیں نہیں ملا پا رہی تھی۔ اسے اپنے عورت ہونے پر دکھ اورپچھتاوا ہونے لگا ،کیسی پریت ہے ششانک کی؟ کیا ٹوٹ جائے گی کچے دھاگے سی؟ وہ یہی سوچتے سوچتے جیسے ہی وہ ششانک کے ساتھ گاڑی کی طرف بڑھی، ایک جانی پہچانی خوشبو جیا کو اپنے قریب آتی محسوس ہوئی۔ کسی نے جیا کا ہاتھ تھاما اور اسے چومتے ہوئے کہاتھا،” تھینک یو، یہ رات میں زندگی بھر نہیں بھول پاﺅںگا۔ اس خوشی کو جو آپ سے پہلی بار ملی۔“

وہ یہ کہہ کر اپنی گاڑی کی طرف بڑھ گیا، جیا کو وہ چہرہ یاد رہا نہ اس کا پہناوا یاد رہا۔ یاد رہی تو اس کی خوشبو،جو اسے اپنی سی لگ رہی تھی۔ اتنی اپنی جیسے صدیوں سے وہ اسی خوشبو کی تلاش میں بھٹک رہی ہو۔ خوشبو کا وہ جھونکا ایک گاڑی کی طرف بڑھ گیا۔ جیانے گھبرا کر ششانک کی طرف دیکھا۔ جانے کیوں اس کا چہرہ سرخ ہو رہا تھا! راستے بھر ششانک بے قراررہا۔ کیا اس لئے کہ جیا نے اس اجنبی کے ساتھ رات گزاری تھی؟ مگر ششانک نے بھی تو دوسری عورت کے ساتھ رات گزاری تھی۔ پھر یہ اسی کی ضد تھی۔

لیکن پھر بھی یہ بات ششانک کو چبھ رہی تھی۔

” کیا بات ہے؟“ جیانے پوچھا۔

” تم نے اس کے ساتھ ایسا کیا کیا کہ وہ کہہ رہا تھا کہ تمہیں بھول نہیں پائے گا؟“

” کیا کہہ رہے ہیں آپ؟ میں نے کچھ نہیں کیا۔ آپ نے جو چاہا وہ ہوا۔“ جیانے ناراضگی ظاہر کی۔

” اچھا، میرے ساتھ تو مردے کی طرح پڑی رہتی ہے اور اس سالے کو ایسے خوش کیا کہ کہہ رہا تھا کہ تجھے کبھی بھول نہیں پائے گا۔“ مارے غصے کے ششانک کانپنے لگا تھا۔

” بند کریں یہ سب!“ جیا چلائی۔

”اچھا۔ چلاتی ہے!“کہتے ہوئے ششانک نے جیا کے گال پر چانٹا مار دیا۔ جیا لڑکھڑا گئی۔

ششانک نے جیسے ہی دوبارہ ہاتھ اٹھایا، تو جیا نے اس کا ہاتھ پکڑ لیا اور چیخ کر بولی۔

” خبردار ششانک۔“

ششانک حیران تھا۔ پر اس کے اندر کا مرد ہار ماننے کو تیار نہیں تھا۔ وہ جیا کے کپڑے اتارنے کی کوشش کرنے لگا۔ جیا جم کرمزاحمت کرتی رہی۔ اسے لگتا ہے کسی کے مقدس لمس سے پوتر ہوئی اسکی روح ، انوکھی خوشی میں شرابور ہوئے اسکے جسم پر اب کوئی اجنبی حملے کر رہا ہے اور اس نے پورا زور لگا کر اپنا دفاع کیا۔ ششانک حیران رہ گیا۔ ذلت سے تلملا اٹھا۔

” میں تم کو چھوڑ دوں گا۔ جو دوسرے مردوں کو خوشیاں دیتی پھرتی ہو۔“

” ٹھیک ہے ۔۔۔ جیسا آپ مناسب سمجھیں۔ میں آپ کا گھر چھوڑنے کے لیے تیار ہوں۔ جانے سے پہلے میں ایک سچ کو بتا دینا چاہتی ہوں۔ میں نے اس پرائے مرد کو خوشی دی ہو یا نہ دی ہو، اس نے مجھے وہ خوشی دی ہے، جو آپ کبھی نہیں دے پائے۔ دے بھی کیسے پاتے؟ اپنی مردانگی کھو بیٹھے ہیں آپ۔ وہ تومیری اچھی تربیت تھی کہ میں آپ کی کمزوری کو سہلاتی رہی کہ آپ اندر سے مجروح نہ ہوں۔ عورت کی اسی شرافت کا فائدہ آپ مرد اٹھاتے ہیں، ورنہ عورتیں سچ بولنے لگیں تو آپ جیسے مرد منہ چھپاتے پھریں۔ مگر میں آپ کو معاف کرتی ہوں ۔کیونکہ آپ ہی کی وجہ سے میں نے عورت ہونے کا مطلب جانا، بھلے ایک رات کے لئے ہی سہی۔ آپ ضد نہ کرتے تو شاید میں زندگی بھر اس خوشی سے محروم رہتی۔ اب میں آپ کے ساتھ ایک لمحہ بھی نہیں رہ سکتی۔“

ششانک بھونچا سا جیا کو دیکھتا رہا۔ وہ تو خواب میں بھی نہیں سوچ سکتا تھا کہ اس عورت کے اندر اتنی آگ ہے۔ جیا سوچ رہی تھی کہ کیا حقیقی مرد کا کچھ گھنٹوں کا ساتھ بھی عورت کو اتنی خود اعتمادی سے بھر دیتا ہے؟کہاں چھپی تھی اس کے اندر کی یہ طاقت؟

” آپ نے تو مجھے پرائے مرد کے پاس بھیج دیا تھا۔ کل پھر کسی کے پاس بھیجیں گے۔ ایسے شخص کے ساتھ میں نہیں رہ سکتی۔“جیا آگے بڑھی،” اب میرا یہ بدن آپ کے لمس کو سہہ نہیں پائے گا۔“

 ”میںناطہ توڑتی ہوں ان وشواسوں سے ،ان عقیدوں سے جو آج بھی استحقاق کرتے ہیں عورت کا۔ جو ایک چھوٹی سی چوک ہونے پر عمر بھر سزا دیتے رہتے ہیں۔ کیونکہ خود کو تبدیل کر پانا، ہر انسان کے لئے بہت مشکل ہے اور ناطہ توڑتی ہوں اس خاموشی سے، جو عورت کو خود پر ہونے والے ظلم کو زبان نہیں دینے دیتی۔“

”اب مجھے اپنا بدن اپنا لگنے لگا ہے۔ اب کوئی ششانک اسے کسی کو سونپ نہیں سکتا تھا۔“

ششانک شکستہ سا راستے سے ہٹ گیا۔ جیا اسکے بنگلے سے باہر نکل گئی، شادی کے بعد دلہن بن کر، جہاں داخل ہوتے ہوئے کبھی اس نے خود کو خوش قسمت سمجھا تھا۔ مگر وہ خوش تھی۔ صبح کی پہلی کرن ایک نئی زندگی کی طرح، اس کے استقبال میں کھڑی تھی اور خوشبو کے ایک توانائی بھرا احساس اس کو مہکائے ہوئے تھا۔ اندر کا سارا شور پرسکون ہو چکا تھا۔

جیا کو لگا، اس کی زندگی کو صحیح سمت مل گئی ہے۔ اسکی صحیح ترتیب شروع ہو گئی ہے۔ کوئی فالتوکاتبصرہ کرنے والا نہیں ہو گا۔ کسی کا ڈر نہیں، کسی کی پرواہ نہیں! بس اپنے آپ زندگی کو جیو۔ واقعی بہت خوش قسمت ہوں، بہت ہی خوش قسمت۔ پتہ نہیں کس طرح مل گئی ایسی قسمت؟ لیکن اب بھی کئی راستے تلاش کرنے ہیں مجھے۔ جو آشیرواد ساتھ ہیں ،وہ ہوا کے جھونکے بن کر مجھے سہارا دیتے رہیں گے، میری رفتار میں اضافہ کرتے رہیں گے، کبھی پھولوں کی طرح میرا شررنگار بن جائیں گے، کبھی دیئے بن میرے من کوروشن کرتے رہیں گے۔ جو روڑے پتھر راستہ اٹکائیں گے، انہیں پار کر جاو ¿ں گی۔ رفتار تھمے گی نہیں۔ لافانی خوشی جو میرے ساتھ ہے۔

(اختتام)

پچاس کی دہائی کی بہترین ہندی کہانیاں

(۰۵۹۱ء تا ۰۶۹۱ئ)

انتخاب اور ترجمہ: عامر صدیقی

فہرست

 ۱۔ ڈپٹی کلکٹر۔۔۔۔ امرکانت

۲۔ گر میو ں کے دن۔۔۔۔ کملیشور

۳۔دادی اماں۔۔۔۔ کرشنا سوبتی

۴۔پرندے۔۔۔۔ نرمل ورما

۵۔ رسپریا۔۔۔۔ پھنیشورناتھ رینو

۶۔ وانگ چو۔۔ ۔۔بھیشم ساہنی

۷۔ہنستا جائے اکیلا۔۔۔۔ مارکنڈییہ

۸۔ ملبے کا مالک۔۔۔۔موہن راکیش

۹۔ابھیمنیو کی خودکشی۔۔۔۔ راجندر یادو

۰۱۔ داجیو۔۔۔۔ شیکھر جوشی

۱۱۔ بھولا رام کی روح۔۔۔۔ ہری شنکر پرسائی

٭٭٭

ڈپٹی کلکٹر

امرکانت/عامرصدیقی

ہندی کہانی

………………..

امرکانت،پیدائش: یکم جولائی ۵۲۹۱ ئ، بلِیا (اتر پردیش)۔ میدان: کہانی، ناول، یادداشتیں، بچوں کا ادب۔ اہم تخلیقات:ناول: سوکھا پتا، آکاشی پکشی، سکھ جیوی،بیچ کی دیوار، گرامسےوِیکا، سُنّر پانڈے کی پتو ہُو، کنٹیلی راہ کے پھول، انہیں ہتھیاروں سے، لہریں، بِدا کی رات۔ بچوں کے ناول: وانر سینا، نیعُر بھائی، منگری، سچا دوست، بابو کا فیصلہ، کھونٹوں میں دال ہے۔کہانیوں کے مجموعے: زندگی اور جونک، دیش کے لوگ، موت کا نگر،کُہاسا، طوفان، کلا پریمی، ایک دھنی ویکتی کا بیان، دکھ اورسکھ کا ساتھ،جانچ اور بچے، عورت کاکرودھ۔یادداشتیں: کچھ یادیں کچھ باتیں، دوستی۔متفرقات: سگی چاچی کا گاو ¿ں، ایک ستری کا سفر، جھگڈولال کا فیصلہ۔ایوارڈز:سوویت لینڈ نہرو ایوارڈ، مےتھلی شرن گپت شیکھر ایوارڈ، یشپال ایوارڈ، ساہتیہ اکادمی سمان، جنان پیٹھ ایوارڈ، انسٹی ٹیوٹ ایوارڈ (اتر پردیش ہندی انسٹی ٹیوٹ کی طرف سے)، مہاتما گاندھی اعزاز (اترپردیش ہندی انسٹی ٹیوٹ کی طرف سے)۔انتقال:۷۱ فروری۴۱۰۲ئ، الہ آباد(اتر پردیش)۔

…. …. ….

 شکلدیپ بابوقریب ایک گھنٹے بعد واپس لوٹے۔ گھر میں داخل ہونے کے بعد انہوں نے برآمدے کے کمرے میں جھانکا، کوئی موکل نہیں تھا اور محرر صاحب بھی غائب تھے۔ وہ اندر چلے گئے اور اپنے کمرے کے سامنے برآمدے میں کھڑے ہو کر بندر کی مانند آنکھیں ملکا ملکاکے انہوں نے باورچی خانے کی طرف دیکھا۔ ان کی بیوی جُمنا، چوکے کے پاس پیڑھی پر بیٹھی ،ہونٹ پر ہونٹ دبائے، منہ پھلائے ترکاری کاٹ رہی تھی۔ وہ ہولے ہولے مسکراتے ہوئے اپنی بیوی کے پاس چلے گئے۔ اِن کے چہرے پر غیر معمولی اطمینان، یقین اورجوش کے ملے جلے تاثرات رقم تھے۔ ایک گھنٹے پہلے ایسی بات نہیں تھی۔

بات کچھ اس طرح شروع ہوئی تھی۔

شکلدیپ بابو سویرے دانت صاف کرنے کے بعد اپنے کمرے میں بیٹھے ہی تھے کہ جمنا نے ایک طشتری میں دو جلےبیاں ناشتے کےلئے سامنے رکھ دیں۔ وہ بغیر کچھ بولے ناشتہ کرنے لگے۔ جمنا پہلے تو ایک آدھ منٹ چپ رہی۔ پھر شوہر کے چہرے کی جانب اچٹتی نظر وںسے دیکھنے کے بعد اس نے بات چھیڑی۔”دو تین دن سے ببُوابہت اداس رہتے ہیں۔“

”کیا؟“سر اٹھا کر شکلدیپ بابو نے پوچھا اور ان کی بھنویں تن گئیں۔

 جمنا نے بیکار میں مسکراتے ہوئے کہا۔”کل بولے، اس سال ڈپٹی کلکٹر کی بہت سی جگہیں ہیں، بابوجی سے کہتے ڈر لگتا ہے۔ کہہ رہے تھے، دو چار دن میں فیس جمع کروانے کی تاریخ گزر جائے گی۔“

 شکلدیپ بابو کا بڑا لڑکا نارائن، گھر میں ببُوا کے نام سے ہی پکارا جاتا تھا۔ عمر اس کی تقریباً چوبیس سال کی تھی۔ گزشتہ تین چار سال سے بہت سے امتحانوں میں بیٹھنے، ایم ایل اے لوگوں کے دروازوں کی چوکھٹیں پھلانگتے اور مزید اسی طرح کے الٹے سیدھے ہنر آزمانے کے باوجود اسے اب تک کوئی نوکری نہیں مل سکی تھی۔ دو بار ڈپٹی کلکٹر کے امتحان میں بھی وہ بیٹھ چکا تھا، لیکن بدقسمتی ہمراہ تھی۔ اب ایک موقع اسے اور ملنا تھا، جس کو وہ چھوڑنا نہ چاہتا تھا اور اسے یقین تھا کہ چونکہ اس بار جگہیںکافی ہیں اور وہ اب کے جی جان سے محنت بھی کرے گا، اس وجہ سے بہت ممکن ہے کہ اُسے چن لیا جائے۔

 شکلدیپ بابو مختار تھے۔ لیکن ادھر ڈیڑھ دو سال سے مختاری کی گاڑی ان سے چلائے نہیں چلتی تھی۔ بڑھوتری کی وجہ سے اب ان کی آواز میں نہ وہ تڑپ رہ گئی تھی، نہ جسم میں وہ طاقت اور نہ چال میں وہ اکڑ،اسی لئے موکل اب ان کے یہاں کم ہی پہنچتے۔ کچھ تو آکر بھی بھڑک جاتے۔ اس حالت میں وہ رام کا نام لے کر کچہری جاتے، اکثر کچھ پا جاتے، جس سے دونوں وقت کا چوکاچولہا چل جاتا۔

جمنا کی بات سن کر وہ ایک دم بگڑ گئے۔ غصے سے ان کا منہ ٹیڑھا ہو گیا اور وہ سر کو جھٹکتے ہوئے، کٹخنے کتے کی طرح بولے۔”تو میں کیا کروں؟ میں تو حیران پریشان ہو گیا ہوں۔ تم لوگ میری جان لینے پر تلے ہوئے ہو۔ صاف صاف سن لو، میں تین بار کہتا ہوں، مجھ سے نہیں ہو گا، مجھ سے نہیں ہو گا، مجھ سے نہیں ہو گا۔“

جمنا کچھ نہ بولی، کیونکہ وہ جانتی تھی کہ شوہر کا غصہ کرنا واجب ہے۔

 شکلدیپ بابو ایک دو لمحے خاموش رہے، پھر دائیں ہاتھ کو اوپر سے نیچے نچاتے ہوئے بولے۔”پھر اسکی ضمانت ہی کیا ہے کہ اس دفعہ بابو صاحب لے ہی لئے جائیں گے؟ معمولی اے جی آفس کی کلرکی میں تو پوچھے نہیں گئے، ڈپٹی کلکٹری میں کون پوچھے گا؟ آپ میں اب ایسی کیاخوبی ہے صاحب کہ آپ ڈپٹی کلکٹر ہو ہی جائیں گے؟ تھرڈ کلاس بی اے آپ ہیں، چوبیس گھنٹے مٹرگشتی آپ کرتے ہیں، دن رات سگریٹیں آپ پھونکتے ہیں۔ آپ میں کون سے سرخاب کے پر لگے ہیں؟، بڑے بڑے بہہ گئے، گدھا پوچھے کتنا پانی۔ پھر نصیب نصیب کی بات ہوتی ہے۔ بھائی، سمجھ لو، تمہارے نصیب میں نوکری لکھی ہی نہیں۔ اوہ ہاں، اگر تمام کتے کاشی ہی سدھاریں گے تو ہنڈیا کون چاٹے گا؟ ڈپٹی کلکٹر ، ڈپٹی کلکٹر ۔ سچ پوچھو تو ڈپٹی کلکٹر نام سے مجھے نفرت ہو گئی ہے۔“انکے ہونٹ تھرتھرا گئے۔

جُمنا نے اب مرے مرے لہجے میں ان کی بات کی مخالفت کی۔”ایسی منحوس بات منہ سے نہیں نکالنی چاہئے۔ ہمارے لڑکے میں نقص ہی کون سا ہے؟ لاکھوں میں ایک ہے۔ صبر کی سو دھار، میرا تو دل کہتا ہے اس بار ببُوا ضرور لے لئے جائیں گے۔ پھر پہلے ہی ترسا ہوا لڑکا ہے، ماں باپ کا سکھ تو جانتا ہی نہیں۔ اتنا بھی نہیں ہو گا، تو اس کا دل ٹوٹ جائے گا۔ ویسے بھی معلوم نہیں کیوں ہمیشہ اداس رہتا ہے، صحیح طریقے سے کھاتا پیتا نہیں، ٹھیک سے بولتا نہیں، پہلے کی طرح گاتا گنگناتا نہیں۔ نہ معلوم میرے لاڈلے کو کیا ہو گیا ہے۔“آخر میں اس کا گلا بھر آیا اور وہ دوسری طرف منہ کر کے آنکھوں میں آئے آنسوو ¿ں کو روکنے کی کوشش کرنے لگی۔

 جُمنا کو روتے ہوئے دیکھ کر شکلدیپ بابو آپے سے باہر ہو گئے۔ غصے اور طنز سے منہ چِڑھاتے ہوئے بولے۔”لڑکا ہے تو لے کر چاٹو۔ ساری خرافات کی جڑ تم ہی ہو، اور کوئی نہیں۔ تم مجھے زندہ رہنے دینا نہیں چاہتیں، جس دن میری جان نکلے گی، تمہاری چھاتی ٹھنڈی ہو گی۔“وہ ہانپنے لگے۔ انہوں نے جُمنا پر فیصلہ کن انداز میں ایسا زبردست وار کیا تھا، جسے وہ سہہ نہ سکی۔ روتی ہوئی بولی۔”اچھی بات ہے، اگر میں ساری خرافات کی جڑ ہوں، تو میں کمینی کی بچی، جو آج سے کوئی بات ۔۔۔“ رونے کے مارے وہ آگے نہ بول سکی اور تیزی سے کمرے سے باہر نکل گئی۔

 شکلدیپ بابو کچھ نہیں بولے، بلکہ وہیں بیٹھے رہے۔ منہ ان کاتنا ہوا تھا اور گردن ٹیڑھی ہو گئی تھی۔ ایک آدھ منٹ تک اسی طرح بیٹھے رہنے کے بعد وہ زمین پر پڑے اخبار کے ایک پھٹے پرانے ٹکڑے کو اٹھا کر اس استغراق سے پڑھنے لگے، جیسے کچھ بھی نہ ہوا ہو۔

لگ بھگ پندرہ بیس منٹ تک وہ اسی طرح پڑھتے رہے۔ پھر اچانک اٹھ کھڑے ہوئے۔ انہوں نے لنگی کی طرح لپٹی دھوتی کو کھول کر ٹھیک سے پہن لیا اور اوپر اپنا پارسی کوٹ پہن لیا، جو کچھ میلا ہو گیا تھا اور جس میں دو پیوند بھی لگے تھے، اور پرانا پمپ شو پہن کر، ہاتھ میں چھڑی لئے، ایک دو بار کھانس کر باہر نکل گئے۔

شوہر کی بات سے جُمنا کے دل کو گہرا جھٹکا پہنچا تھا۔ شکلدیپ بابو کو باہر جاتے ہوئے اس نے دیکھا، پر وہ کچھ نہیں بولی۔ وہ منہ پھلائے خاموشی گھر کے اٹرم سٹرم کام کرتی رہی۔ اور ایک گھنٹے بعد جب شکلدیپ بابو باہر سے لوٹ کر اس کے پاس آکر کھڑے ہوئے، تب بھی وہ کچھ نہ بولی، خاموشی سے ترکاری کاٹتی رہی۔

 شکلدیپ بابو نے کھنکھار کر کہا۔”سنتی ہو، یہ ڈیڑھ سو روپے رکھ لو۔ قریب سو روپے ببُوا کی فیس میں لگیں گے اور پچاس روپے الگ رکھ دینا، کوئی اور کام آ پڑے۔“

 جُمنا نے ہاتھ بڑھا کر روپے تو ضرور لے لئے، پر اب بھی کچھ نہیں بولی۔

لیکن شکلدیپ بابو بے انتہا خوش تھے اور انہوں نے جوش بھری آواز میں کہا۔”سو روپے ببُوا کو دے دینا، آج ہی فیس بھیج دیں۔ ہوں گے، ضرور ہوں گے، ببُوا ڈپٹی کلکٹر ضرور ہوں گے۔ کوئی وجہ ہی نہیں کہ وہ نہ لئے جائیں۔ لڑکے کے ذہن میں کوئی خرابی تھوڑی ہے۔ رام رام ۔۔۔۔ نہیں، فکر کی کوئی بات نہیں۔ نارائن جی اس بار بھگوان کی کرپا سے ڈپٹی کلکٹر ضرور ہوں گے۔“

 جُمنا اب بھی چپ رہی اور روپیوں کو ٹرنک میں رکھنے کے لئے اٹھ کر اپنے کمرے میں چلی گئی۔

 شکلدیپ بابو اپنے کمرے کی طرف لوٹ گئے۔لیکن کچھ دور جا کر پھر گھومے اور جس کمرے میں جُمنا گئی تھی، اس کے دروازے کے سامنے آکر کھڑے ہو گئے اور جُمنا کو ٹرنک میں روپے بند کرتے ہوئے دیکھتے رہے۔ پھر بولے۔”غلطی کسی کی نہیں۔ ساری غلطی تو میری ہے۔ دیکھو نہ، میں باپ ہوکر کہتا ہوں کہ لڑکا نالائق ہے۔ نہیں، نہیں، ساری خرافات کی جڑ میں ہی ہوں، اور کوئی نہیں۔“

ایک دو لمحے وہ کھڑے رہے، لیکن پھر بھی جُمنا نے کوئی جواب نہیں دیا تو کمرے میں جا کر وہ اپنے کپڑے اتارنے لگے۔

نارائن نے اسی دن ڈپٹی کلکٹر کی فیس اور فارم بھیج دیئے۔

دوسرے دن اپنی عادت کے بر خلاف ،صبح ہی شکلدیپ بابو کی نیند اچٹ گئی۔ وہ ہڑبڑاکر آنکھیں ملتے ہوئے اٹھ کھڑے ہوئے اور باہر برآمدے میں آکر ادھر ادھر دیکھنے لگے۔ گھر کے سبھی افراد نیند میں مگن تھے۔ سوئے ہوئے لوگوں کی سانسوں کی آوازیں اور مچھروں کی بھنبھناہٹ سنائی دے رہی تھیں۔ چاروں جانب اندھیرا تھا۔ لیکن باہری کمرے سے ہلکی ہلکی روشنی آ رہی تھی۔ شکلدیپ بابو چونک پڑے اور دبے پاﺅں کمرے کی طرف بڑھے۔

ان کی عمر پچاس سے اوپر ہوگی۔ وہ گورے، ناٹے اور دبلے پتلے تھے۔ ان کے چہرے پر بے شمار لکیروں کا جال بُنا ہوا تھا اور ان کے بازوﺅں اور گردن پر چمڑی جھول رہی تھی۔

دروازے کے قریب پہنچ کر، انہوں نے پنجوں کے بل کھڑے ہو، ہونٹ دبا کمرے کے اندر جھانکا۔ ان کا لڑکے نارائن میز پر رکھی لالٹین کے سامنے سر جھکائے بغور کچھ پڑھ رہا تھا۔ شکلدیپ بابو کچھ دیر تک آنکھوں کو حیرانگی سے پھیلا کر اپنے لڑکے کو دیکھتے رہے، جیسے کسی بہت ہی خوشیوں بھرے اسرار کا انہوں نے اچانک پتہ لگا لیا ہو۔ پھر وہ خاموشی سے آہستہ آہستہ پیچھے ہٹ گئے اور پھر وہیں کھڑے ہوکر ذرا سا مسکرائے اور پھر دبے پاو ¿ں واپس لوٹے اور اپنے کمرے کے سامنے برآمدے کے کنارے کھڑے ہو کر آسمان کو اشتیاق سے دیکھنے لگے۔

ان کی عادت چھ، ساڑھے چھ بجے سے پہلے اٹھنے کی نہیں تھی۔ لیکن آج اٹھ گئے تھے، تو دل ناخوش نہیں ہوا۔ آسمان میں ستارے اب بھی چٹک دکھائی دے رہے تھے، اور باہر کے درختوں کو ہلاتی ہوئی اور آنگن میں نہ معلوم کس سمت سے آتی جاتی ہوا ،ان کو مسرور کر رہی تھی اور ساتھ میں حوصلہ بھی دے رہی تھی۔ وہ دوبارہ مسکرا اٹھے اور انہوں نے آہستہ سے سرگوشی کی۔”چلو، اچھا ہی ہے۔“

اور اچانک ان میں معلوم نہیں کہاں کا جوش آ گیا۔ انہوں نے اسی وقت ہی دانت مانجھنے شروع کر دیئے۔ ان کاموں سے نمٹنے کے بعد بھی اندھیرا ہی رہا، تو بالٹی میں پانی بھرا اور اسے غسلخانے میں لے جاکر اشنان کرنے لگے۔ نہانے دھونے سے فراغت پا کر جب وہ باہر نکلے، تو ان کے جسم میں ایک عجیب سی تازگی اور من میں ایک نیاہی جوش و ولولہ تھا۔

اگرچہ انہوں نے اپنے تمام کام خاموشی سے کرنے کی کوشش کی تھی، پھر بھی جسم کی کمزوری کی وجہ سے کچھ کھٹ پٹ ہو ہی گئی، جس کے نتیجے میں ان کی بیوی کی نیند کھل گئی۔ جُمنا کو تو پہلے چور، وور کا شبہ ہوا، لیکن اس نے فوری طور پر جب آکر دیکھا، تو حیران ہو گئی۔ شکلدیپ بابو آنگن میں کھڑے کھڑے آسمان کو تک رہے تھے۔

 جُمنا نے پریشانی بھرے لہجے میں کہا۔”اتنی جلدی اشنان کی ضرورت کیا تھی؟ اتنا سویرے تو کبھی بھی نہیں اٹھا جایا جاتا تھا؟کچھ ہو ہوا گیا، تو؟“

 شکلدیپ بابو جھینپ گئے۔ مصنوعی ہنسی ہنستے ہوئے بولے۔”دھیرے دھیرے بولو، بھئی، ببُوا پڑھ رہے ہیں۔“

 جُمنا بگڑ گئی۔”دھیرے دھیرے کیوں بولوں، اسی لچھن سے پچھلے سال بھی بیمار پڑ گیا تھا۔“

 شکلدیپ بابو کو خدشہ ہوا کہ اس طرح بات چیت کرنے سے تکرار بڑھ جائے گی، شور شرابہ ہوگا، اس لئے انہوں نے بیوی کی بات کا کوئی جواب نہیں دیا۔ وہ پیچھے پلٹے اور اپنے کمرے میں آکر لالٹین جلا کر خاموشی سے رامائن کا پاٹھ کرنے لگے۔

پوجاختم کرکے جب وہ اٹھے تو اجالا ہو گیا تھا۔ وہ کمرے سے باہر نکل آئے۔ گھر کے بڑے لوگ تو جاگ گئے تھے، پر بچے ابھی تک سوئے ہوئے تھے۔ جُمنا بھنڈار گھر میں کچھ کھٹرپٹر کر رہی تھی۔ شکلدیپ بابو تاڑ گئے اور وہ بھنڈارگھر کے دروازے کے سامنے کھڑے ہو گئے اور کمر پر دونوں ہاتھ رکھ کرتجسس کے ساتھ اپنی بیوی کو کُنڈے میں سے چاول نکالتے ہوئے دیکھتے رہے۔

کچھ دیر بعد انہوں نے سوال کیا۔”نارائن کی اماں، آج کل تمہارا پوجا پاٹھ نہیں ہوتا کیا؟“پھر جھےنپ کر وہ مسکرائے۔

 شکلدیپ بابو اس سے پہلے ہمیشہ رادھاسوامیوں پر بگڑتے تھے اور موقع بے موقع ان پر سخت تنقید بھی کرتے تھے۔ اس کی وجہ سے عورتوں میں کبھی کبھی رونا پیٹنا تک بھی ہو جاتا تھا۔ اسی لئے جب آج بھی شکلدیپ بابو نے پوجا پاٹھ کی بات کی، تو جُمنا نے سمجھا کہ وہ طنز کر رہے ہیں۔ اس نے بھی جواب دیا۔”ہم لوگوں کو پوجا پاٹھ سے کیا مطلب؟ ہمیں تو نرکھ میں ہی جانا ہے۔ جنہیں سورگ جانا ہو، وہ کریں۔“

”لو بگڑ گئیں۔“ شکلدیپ بابو دھیمے دھیمے مسکرائے اور بولے،”ارے، میں مذاق تھوڑی کر رہا تھا۔ میں بڑی غلطی پر تھا، رادھاسوامی تو بڑے پربھاﺅ شالی دیوتا ہیں۔“

 جُمنا کو رادھاسوامی کو دیوتا کہنا بہت برا لگا اور وہ تنک کر بولی۔”رادھاسوامی کو دیوتا کہتے ہیں؟ وہ تو پِتاپر میشورہیں، ان کا لوک سب سے اوپر ہے، اس کے نیچے ہی برہما، وشنو اور مہیش کے لوک آتے ہیں۔“

”ٹھیک ہے، ٹھیک ہے، لیکن کچھ پوجا پاٹھ بھی کرو گی؟ سنتے ہیں سچے دل سے رادھاسوامی کی پوجا کرنے سے سبھی منورتھ سِدھ ہو جاتے ہیں۔“ شکلدیپ بابو جواب دے کر کانپتے لبوں سے مسکرانے لگے۔

 جُمنا نے فوراً ان کی غلطی کو ٹھیک کیا۔”اس میں دکھانا تھوڑے ہوتا ہے،من میں نام لے لیا جاتا ہے۔ سبھی منورتھ بن جاتے ہیں اور مرنے کے بعد آتما پِتا پرم پِتا میں مل جاتی ہے۔ پھر چوراسی نہیں بھگتنا پڑتا۔“

 شکلدیپ بابو نے خاطرجمعی سے کہا۔”ٹھیک ہے، بہت اچھی بات ہے۔ ذرا اور سویرے اٹھ کر نام لے لیا کرو۔ صبح نہانے سے طبیعت دن بھر ہلکی پھلکی رہتی ہے۔ کل سے تم بھی شروع کر دو۔ میں تو بدنصیب تھا کہ میری آنکھیں آج تک بند رہی۔ خیر کوئی بات نہیں، اب بھی کچھ نہیں بگڑا ہے، کل سے تم بھی سویرے چار بجے اٹھ جانا۔“

انہیں خوف محسوس ہوا کہ جُمنا کہیں ان کی تجویز کی مخالفت نہ کردے، اس لئے اتنا کہنے کے بعد وہ جلدی سے پلٹے اور کھسک گئے۔ لیکن پھر اچانک کچھ یاد کر کے وہ دوبارہ آئے۔ پاس آکر انہوں نے بیوی سے مسکراتے ہوئے پوچھا۔” ببُوا کےلئے ناشتے کا انتظام کیا کرو گی؟“

”جو روز ہوتا ہے، وہی ہوگا، اور کیا ہوگا؟“اداسی بھرے لہجے میں جُمنا نے جواب دیا۔

”ٹھیک ہے، لیکن آج حلوہ کیوں نہیں بنا لیتیں؟ گھر کا بنا اچھا ہوتا۔ اور کچھ میوے منگا لو۔“

”حلوے کے لئے گھی نہیں ہے۔ پھر اتنے پیسے کہاں ہیں؟“ جُمنا نے مجبوری ظاہر کی۔

”پچاس روپے تو بچے ہیں نہ، اس میں سے خرچ کرو۔ روکھی سوکھی سے بنا جسم، لڑکے کو مناسب طریقے سے کھانے پینے کا نہ ملے گا، تو وہ امتحان کیا خاک دے گا؟ روپے کی فکر نہ کرو، میں ابھی زندہ ہوں۔“اتنا کہہ کر شکلدیپ بابو قہقہہ لگا کر ہنس پڑے۔ پھروہاں سے ہٹنے سے پیشتر وہ بیوی کو یہ بھی ہدایت کرتے گئے۔”ایک بات اور کرو۔ تم لڑکے لوگوں سے ڈانٹ کر کہہ دینا کہ وہ باہر کے کمرے میں جا کر مچھلی بازار نہ لگائیں، نہیں تو مار پڑے گی۔ کیوںکہ پڑھنے میں رکاوٹ ہو گی۔ دوسری بات یہ کہ ببُوا سے کہہ دینا، وہ باہر والے کمرے میں بیٹھ کر آرام سے پڑھیں، میں باہر آنگن میں بیٹھ جاﺅں گا۔“

 شکلدیپ بابو سویرے ایک ڈیڑھ گھنٹے باہر والے کمرے میں بیٹھتے تھے۔ وہاں وہ موکلوں کے آنے کا انتظار کرتے اور انہیں سمجھاتے بجھاتے۔

اور وہ اس دن سچ مچ ہی مکان کے باہر پیپل کے درخت کے نیچے، جہاں کافی سایہ رہتا تھا، ایک میز اور کرسیاں لگا کر بیٹھ گئے۔ جان پہچان کے لوگ وہاں سے گزرے، تو انہیں وہاں بیٹھے دیکھ کر حیرت زدہ ہوئے۔ جب سڑک سے گزرتے ہوئے ببّن لال پیشکار نے ان سے پوچھا کہ ”بھائی صاحب، آج کیا بات ہے؟“تو انہوں نے زور سے چلا کر کہا کہ” اندر بڑی گرمی ہے۔“اور انہوں نے جوکر کی طرح منہ بنا دیا اور آخر میں قہقہہ مار کر ہنس پڑے، جیسے کوئی بہت بڑا مذاق کر دیا ہو۔

شام کو جہاں روز وہ پہلے ہی کچہری سے آ جاتے تھے، اس دن دیر سے واپس آئے۔ انہوں نے بیوی کے ہاتھ میں چار روپے تو دئیے ہی، ساتھ ہی دو سیب اورقینچی مارکہ سگریٹ کے پانچ پیکٹ بھی بڑھا دیے۔

”سگریٹ اب بھلا کیوں؟“ جُمنا نے تعجب سے پوچھا۔

” تمہارے لئے ہے۔“ شکلدیپ بابو نے آہستہ سے کہا اور دوسری طرف دیکھ کر مسکرانے لگے، لیکن ان کا چہرہ شرم سے کچھ تمتما گیا۔

 جُمنا نے پیشانی پر آئی ساڑی کو نیچے کھینچتے ہوئے کہا۔”کبھی سگریٹ پی بھی ہے کہ آج ہی پیوں گی۔ اس عمر میں مذاق کرتے لاج نہیں آتی؟“

 شکلدیپ بابو کچھ بولے نہیں اور تھوڑا سا مسکرا ادھر ادھر دیکھنے لگے۔ پھر سنجیدہ ہو کر انہوں نے دوسری طرف دیکھتے ہوئے آہستہ سے کہا۔” ببُوا کو دے دینا۔“ اور وہ فوری طور پر وہاں سے چلتے بنے۔

 جُمنا بھونچکی ہوکر کچھ دیر انہیں دیکھتی رہی، کیونکہ آج سے پہلے تو وہ یہی دیکھتی آئی تھی کہ نارائن کی تمباکو نوشی کے وہ سخت خلاف رہے ہیں اور اسی وجہ سے کئی بار لڑکے کو ڈانٹ ڈپٹ بھی کر چکے ہیں۔ اس کی سمجھ میں کچھ نہ آیا، تو وہ یہ کہہ کر مسکرا دی کہ بُڑھو سٹھیا گئے ہیں۔ نارائن دن بھر پڑھنے لکھنے کے بعد ٹہلنے گیا ہوا تھا۔ شکلدیپ بابو جلدی سے کپڑے بدل کر ہاتھ میں جھاڑو لے باہر والے کمرے میں جا پہنچے۔ انہوں نے آہستہ آہستہ کمرے کو اچھی طرح جھاڑا پونچھا، اس کے بعد نارائن کی میز کو صاف کیا اور میزپوش کو زور زور سے کئی بار جھاڑ پھٹک کر سلیقے کے ساتھ میزپر بچھا دیا۔ آخر میں نارائن کی چارپائی پر پڑے بچھونے کو کھول کر اس میں کی ایک ایک چیز کو جھاڑ پھٹکارکر قرینے سے بچھانے لگے۔

اتنے میں جُمنا نے آکر دیکھا تواپنائیت بھرے لہجے میں کہا۔”کچہری سے آنے پر یہی کام رہ گیا ہے کیا؟ بچھونا روز بچھ ہی جاتا ہے اور کمرے کی، مہرن صفائی کر ہی دیتی ہے۔“

”اچھا، ٹھیک ہے۔ میں اپنی مرضی سے کر رہا ہوں، کوئی زبردستی تھوڑی ہے۔“ شکلدیپ بابو کے چہرے پر ہلکی سی جھجک کے تاثرات نمایاں ہو گئے تھے اور وہ اپنی بیوی سے منہ موڑ تے ہوئے ایسی آواز میں بولے، جیسے انہوں نے اچانک یہ کام شروع کر دیا تھا ،” اور جب اتنا کر ہی لیا ہے، تو درمیان میں چھوڑنے سے کیا فائدہ، پورا ہی کر لیں۔“ ویسے کچہری سے آنے کے بعد ان کا روزانہ کا معمول یہ تھا کہ وہ کچھ ناشتہ پانی کرکے چارپائی پر لیٹ جاتے تھے۔اکثر انہیں نیند آ جاتی تھی اور وہ لگ بھگ آٹھ بجے تک سوتے رہتے تھے۔ اگر نیند نہ بھی آتی، تو بھی وہ اسی طرح خاموشی سے پڑے رہتے تھے۔

”ناشتہ تیار ہے۔“یہ کہہ کر جُمنا وہاں سے چلی گئی۔

 شکلدیپ بابو کمرے کو چمکانے، بچھونا لگانے اور کرسیاں ترتیب سے سجانے کے بعد آنگن میں آکر کھڑے ہو گئے اور بغیر کسی وجہ کے ہنستے ہوئے بولے۔”اپنا کام ہمیشہ اپنے ہاتھ سے کرنا چاہئے، نوکروں کا کیا ٹھکانہ؟“

لیکن ان کی بات پر کسی نے توجہ نہیں دی اور نہ اس کا جواب ہی۔

آہستہ آہستہ دن گزرتے گئے اور نارائن محنت کرتا رہا۔ کچھ دنوں سے شکلدیپ بابو شام کو گھر سے تقریباً ایک میل کے فاصلے پر واقع شیو جی کے ایک مندر میں بھی جانے لگے تھے۔ وہ بہت چلتا ہوا مندر تھا اور اس میں بھکت جنوں کی بہت بھیڑ ہوتی تھی۔ کچہری سے آنے کے بعد وہ نارائن کے کمرے کو جھاڑتے پونچھتے، اس کا بچھونا لگاتے، میز کرسیاں سجاتے اور آخر میں ناشتہ کر کے مندر کے لئے روانہ ہو جاتے۔ مندر میں ایک ڈیڑھ گھنٹے تک رہتے اور لگ بھگ دس بجے گھر آتے۔ ایک دن جب وہ مندر سے واپس آئے، تو ساڑھے دس بج گئے تھے۔ انہوں نے دبے پاو ¿ں برآمدے میں قدم رکھا اور اپنی عادت کے مطابق کچھ دیر تک مسکراتے ہوئے جھانک کر کمرے میں نارائن کو پڑھتے ہوئے دیکھتے رہے۔ پھر اندر جاکر اپنے کمرے میں چھڑی رکھی، نل پر ہاتھ پیر دھوئے،اور کھانے کےلئے چوکے میں جاکر بیٹھ گئے۔

بیوی نے کھانا پروس دیا۔ شکلدیپ بابو نے منہ میں نوالہ چباتے ہوئے پوچھا۔” ببُوا کو میوے دے دیے تھے؟“

وہ آج شام جب کچہری سے واپس آئے تھے تو میوے لیتے آئے تھے۔ انہوں نے میوے کو بیوی کے حوالے کرتے ہوئے کہا تھا کہ اسے صرف نارائن کو ہی دینا، اور کسی کو نہیں۔

 جُمنا کو غنودگی ہو رہی تھی، لیکن اس نے شوہر کی بات سن لی، چونک کر بولی،”کہاں؟ میوہ ٹرنک میں رکھ دیا تھا، سوچا، ببُوا گھوم کر آئیں گے تو چپکے سے دے دیں گے۔ پر لڑکے تو شیطان بنے ہوئے ہیں، اونا کونا، انترا سنترا، سب جگہ پہنچ جاتے ہیں۔ ٹن ٹن نے کہیں سے دیکھ لیا اور اس نے سارے کا سارا کھا ڈالا۔“

ٹن ٹن، شکلدیپ بابو کا سب سے چھوٹا، بارہ سالہ انتہائی شرارتی لڑکا تھا۔

”کیوں؟“ شکلدیپ بابو چلا پڑے۔ ان کے منہ کھل گیا تھا اور ان کی زبان پر روٹی کا ایک چھوٹا سا ٹکڑا دکھائی دے رہا تھا۔ جُمناکچھ نہ بولی۔ اب شکلدیپ بابو نے غصے میں بیوی کو منہ چڑھاتے ہوئے کہا۔”کھا گیا، کھا گیا۔ تم کیوں نہ کھا گئیں۔ تم لوگوں کے کھانے کےلئے ہی لاتا ہوں نہ؟ ہوں۔ کھا گیا۔“

 جُمنا بھی تنک اٹھی۔”تو کیا ہو گیا؟ کبھی میوہ مصری، پھل فروٹ تو ان کو ملتا نہیں، بیچاروں کو روکھی سوکھی جو کچھ ملتی ہے، اسی پر صبر باندھے رہتے ہیں۔ اپنے ہاتھ سے خرید کبھی کچھ دیا بھی تو نہیں۔ بچہ ہی تو ہے، من چل گیا، کھا لیا۔ پھر میں نے اسے بہت مارا بھی، اب اس کی جان تو نہیں لے لوں گی۔“

”اچھا تو کھاو ¿ تم اورتمہارے لڑکے۔ خوب مزے میں کھا لو۔ ایسے کھانے پر لعنت ہے۔“وہ غصے سے تھر تھر کانپتے ہوئے چلا اٹھے اور پھر چوکے سے اٹھ کر کمرے میں چلے گئے۔

 جُمنا خوف، ذلت اور غصے سے رونے لگی۔ اس نے بھی کھانا نہیں کیا اور وہاں سے اٹھ کر چارپائی پر منہ ڈھانک کر پڑگئی۔ لیکن دوسرے دن صبح بھی شکلدیپ بابو کا غصہ ٹھنڈا نہ ہوا اور انہوں نے نہانے دھونے اور پوجا پاٹھ کرنے کے بعد سب سے پہلا کام یہ کیا کہ جب ٹن ٹن بیدار ہوا، تو اسے اپنے پاس بلایا اور اس سے پوچھا کہ اس نے میوہ کیوں کھایا؟ جب اس کو کوئی جواب نہ سوجھا اور وہ ساکت ہو کر اپنے باپ کی طرف دیکھنے لگا، تو شکلدیپ بابو نے اسے بہت سے طمانچے جڑ دیے۔

ڈپٹی کلکٹر کا امتحان الہ آباد میں ہونے والا تھا اور وہاں کی روانگی کے دن آگئے۔ اس دوران نارائن نے اتنی زیادہ محنت کی کہ سبھی حیران تھے۔ وہ اٹھارہ انیس گھنٹے تک پڑھتا۔ اس کی پڑھائی میں کوئی رکاوٹ نہیں ہونے پاتی، صرف اسے پڑھنا تھا۔ اس کا کمرہ صاف ملتا، اس کو بچھونا بچھا ملتا، دونوں اوقات گاو ¿ں کے خالص گھی کے ساتھ دال چاول، روٹی، ترکاری ملتی۔ جسم کی طاقت اور دماغ کی تازگی کو برقرار رکھنے کےلئے ناشتے میں سویرے حلوہ دودھ اور شام کو میوے یا پھل۔ اور تو اور، لڑکے کی طبیعت نہ بیزار ہو،اس لئے سگریٹ کا بھی مناسب بندوبست تھا۔ جب سگریٹ کے پیکٹ ختم ہوتے، تو جُمنا اس کے پاس چار پانچ پیکٹ اور رکھ آتی۔

جس دن نارائن کو الہ آباد جانا تھا، شکلدیپ بابو کی چھٹی تھی اور وہ سویرے ہی گھومنے نکل گئے۔ وہ کچھ دیر تک کمپنی باغ میں گھومتے رہے، پھر وہاں طبیعت نہ لگی، تو دریا کے کنارے پہنچ گئے۔ وہاں بھی دل نہ لگا، تو اپنے خاص دوست کیلاش بہاری مختار کے یہاں چلے گئے۔ وہاں بہت دیر تک گپیں لڑاتے رہے، اور جب گاڑی کا وقت قریب آیا تو جلدی جلدی گھر لوٹ آئے۔

گاڑی نو بجے چلنی تھی۔ جُمنا اور نارائن کی بیوی نرملا نے سویرے ہی اٹھ کر جلدی جلدی کھانا بنا لیا تھا۔ نارائن نے کھانا کھایا اور سب کو پرنام کرکے اسٹیشن کےلئے چل پڑا۔ شکلدیپ بابو بھی اس کے ساتھ اسٹیشن گئے۔ نارائن کو رخصت کرنے کےلئے اسکے چار پانچ دوست بھی اسٹیشن پر پہنچے تھے۔ جب تک گاڑی نہیں آئی تھی، نارائن پلیٹ فارم پر ان دوستوں سے باتیں کرتا رہا۔ شکلدیپ بابو الگ کھڑے چاروں طرف اس طرح دیکھتے رہے، جیسے نارائن سے ان کی کوئی جان پہچان نہ ہو۔ اور جب گاڑی آئی اور نارائن اپنے والد اور دوستوں کے تعاون سے گاڑی میں تمام لوازمات کے ساتھ چڑھ گیا، تو شکلدیپ بابو وہاں سے آہستہ سے کھسک گئے اور وِہیلر کے بک اسٹال پر جا کھڑے ہوئے۔ بک اسٹال والاآدمی جان پہچان کا تھا، اس نے سلام کر کے پوچھا۔”کہیے، مختار صاحب، آج کیسے آنا ہوا؟“

 شکلدیپ بابو نے تفاخرانہ انداز میں مسکراتے جواب دیا۔”لڑکا الہ آباد جا رہا ہے، ڈپٹی کلکٹر کا امتحان دینے۔ شام تک پہنچ جائے گا۔ ڈیوڑھے درجے کے پاس جو ڈبا ہے نہ، اسی میں ہے۔ نیچے جو چار پانچ لڑکے کھڑے ہیں، وہ اسکے دوست ہے۔ سوچا بھائی کہ ہم لوگ بوڑھے ٹھہرے، لڑکے امتحان ومتحان کی بات کر رہے ہوں گے، کیا سمجھیں گے، لہٰذا ادھر چلا آیا۔“ان کی آنکھیں مزاحیہ انداز میںاکٹھا ہو گئیں۔

وہاں وہ تھوڑی دیر تک رہے۔ اس کے بعد جا کر گھڑی میں وقت دیکھا، کچھ دیر تک تارگھر کے باہر تار بابو کو کھٹرپٹر کرتے ہوئے دیکھا اور پھر وہاں سے ہٹ کر ٹرینوں کے آنے جانے کا ٹائم ٹےبل پڑھنے لگے۔ لیکن ان کا دھیان شاید گاڑی کی طرف ہی تھا، کیونکہ جب ٹرین چلنے کی وسل بجی، تو وہاں سے بھاگ کر نارائن کے دوستوں کے پیچھے آ کھڑے ہوئے۔

نارائن نے جب انہیں دیکھا، تو اس نے فوراً نیچے اترکر پاو ¿ں چھوئے۔ ”خوش رہو، بیٹا،بھگوان تمہاری منوکامنا پوری کرے۔“انہوں نے لڑکے سے بدبداکر کہا اور دوسری طرف دیکھنے لگے۔

نارائن بیٹھ گیا اور اب گاڑی چلنے ہی والی تھی۔ اچانک شکلدیپ بابو کا داہنا ہاتھ اپنے کوٹ کی جیب میں گیا۔ انہوں نے جیب سے کوئی چیز لگ بھگ باہر نکال لی، اور وہ کچھ آگے بھی بڑھے، لیکن پھر نہ معلوم کیا سوچ کر رک گئے۔ ان کا چہرہ تمتما سا گیا اور جلدبازی میں وہ ادھر ادھر دیکھنے لگے۔ گاڑی وسل دے کر چلنے لگی تو شکلدیپ بابو چونک اٹھے۔ انہوں نے جیب سے وہ چیز نکال کر مٹھی میں دبا لی اور اسے نارائن کو دینے کے لئے دوڑ پڑے۔ وہ کمزور اور بوڑھے آدمی تھے، لہٰذا ان سے تیز کیا دوڑا جاتا، وہ پیروں میں تیزی لانے کےلئے اپنے ہاتھوں کو اس طرح لہرارہے تھے، جیسے کوئی روگی، مریل لڑکا اپنے ساتھیوں کے بیچ، کھیل کود کے دوران کوئی ہلکی پھلکی شرارت کرنے کے بعد تیزی سے بھاگنے کے دوران گردن کو جھکا کر ہاتھوں کو گول گول گھماتا ہے۔ ان کے پاو ¿ں تھپ تھپ کی آواز کے ساتھ پلیٹ فارم پرپڑ رہے تھے اور ان کی حرکتوں کا انکی صورت پر کوئی خاص اثر ظاہرنہیں ہو رہا تھا، بس یہی معلوم ہوتا کہ وہ کچھ پریشان ہیں۔ پلیٹ فارم پر جمع لوگوں کا دھیان ان کی طرف ہو گیا۔ کچھ لوگوں نے موج میں آکر زور سے للکارا، کچھ نے کلکاریاں ماریں اور کچھ لوگوں نے دوڑ تے ہوئے پیدا ہوئی ان کی بے ہنگم حالت کو دیکھ کر بے تحاشہ ہنسنا شروع کردیا۔ لیکن یہ ان کی خوش قسمتی ہی تھی کہ گاڑی ابھی ہی چلی تھی اور رفتار میں تیزی نہیں آئی تھی۔ نتیجے میں انکی یہ ظریفانہ کوشش کامیاب ہوئی اور انہوں نے ڈبے کے سامنے پہنچ کر جوش اور فکر مندی کے ملے جلے جذبات کے ساتھ ڈبے سے سر نکال کر جھانکتے ہوئے نارائن کے ہاتھ میں ایک پڑیا دیتے ہوئے کہا۔”بیٹا، اسے شردھا کے ساتھ کھا لینا، بھگوان شنکر کا پرشاد ہے۔“

پڑیا میں کچھ بتاشے تھے، جو انہوں نے کل شام کو شیو جی کو چڑھائے تھے اور جسے پتہ نہیں کیوں، نارائن کو دینا بھول گئے تھے۔ نارائن کے دوست استعجاب سے مسکراتے ان کی طرف دیکھ رہے تھے اور جب وہ پاس آ گئے، تو ایک نے پوچھا۔”بابو جی، کیا بات تھی، ہم کہہ دیتے۔“ شکلدیپ بابو یہ کہتے ہوئے کہ” کوئی بات نہیں، کچھ روپے تھے، سوچا، میں ہی دے دوں۔“ تیزی سے آگے بڑھ گئے۔

امتحان ختم ہونے کے بعد نارائن گھر واپس آ گیا۔ اس نے واقعی پرچے بہت اچھے کئے تھے اور اس نے گھر والوں سے صاف صاف کہہ بھی دیاتھا کہ اگر کوئی بے ایمانی نہ ہوئی، تو وہ انٹرویو میں ضرور بلایا جائے گا۔ گھر والوں کی بات تو دوسری تھی، لیکن جب محلے اور شہر کے لوگوں نے یہ بات سنی تو انہوں نے یقین نہیں کیا۔ لوگ مذاق میں کہنے لگے۔” ہر سال تو یہی کہتے ہو بچُّو۔ وہ کوئی دوسرے ہی ہیں جو انٹرویو میں بلائے جاتے ہیں۔“

لیکن بات نارائن نے جھوٹ نہیں کہی تھی، کیونکہ ایک دن اس کے پاس اطلاع آئی کہ اس کو الہ آباد میں علاقائی پبلک سروس کمیشن کے سامنے انٹرویو کےلئے حاضر ہونا ہے۔ یہ خبر بجلی کی طرح سارے شہر میں پھیل گئی۔ بہت سال بعد اس شہر سے کوئی لڑکا ڈپٹی کلکٹری کے انٹرویو کےلئے بلایا گیا تھا۔ لوگوں کی حیرت کا ٹھکانا نہ رہا۔

شام کے وقت کچہری سے پہنچ کر شکلدیپ بابو سیدھا آنگن میں جا کھڑے ہوگئے اور زور سے ٹھٹھامارکر ہنس پڑے۔ پھر کمرے میں جا کر کپڑے اتارنے لگے۔ شکلدیپ بابو نے کوٹ کو کھونٹی پر ٹانگتے ہوئے، لپک کر آتی ہوئی جُمنا سے کہا۔”اب کرو نہ راج۔ ہمیشہ شور مچائے رہتی تھی کہ یہ نہیں ہے، وہ نہیں ہے۔ یہ معمولی بات نہیں ہے کہ ببُوا انٹرویو میں بلائے گئے ہیں، آیا ہی سمجھو۔“

”جب آ جائیں، تبھی نہ۔” جُمنا نے کنجوسی سے مسکراتے ہوئے کہا۔

 شکلدیپ بابو تھوڑا ہنستے ہوئے بولے۔ ”تمہیں اب بھی شک ہے؟ لو میں کہتا ہوں کہ ببُوا ضرور آئیں گے، ضرور آئیں گے۔ نہیں آئے، تو میں اپنی مونچھ منڈوا دوں گا۔ اور کوئی کہے یا نہ کہے، میں تو اس بات کو پہلے ہی جانتا ہوں۔ ارے، میں ہی کیوں، سارا شہر یہی کہتا ہے۔ امبیکا بابو وکیل مجھے مبارکباد دیتے ہوئے بولے۔”انٹرویو میں بلائے جانے کا مطلب یہ ہے کہ اگر انٹرویو تھوڑا بھی اچھا ہو گیا، تو انتخاب لازمی ہے۔“میری ناک میں دم تھا، جو بھی سنتا، مبارک دینے چلا آتا۔“

”محلے کے لڑکے مجھے بھی آکر مبارکباد دے گئے ہیں۔ جانکی، کمل اور گوری تو ابھی ابھی گئے ہیں۔“ جُمنا نے خواب بھری آنکھوں سے اپنے شوہر کو دیکھتے ہوئے اطلاع دی۔

”تو تمہاری کوئی معمولی ہستی ہے۔ ہیں۔۔ تم ڈپٹی کلکٹر کی ماں ہو نہ، جی۔“اتنا کہہ کر شکلدیپ بابو قہقہہ مار کر ہنس پڑے۔ جُمنا کچھ نہیں بولی، بلکہ اس نے مسکرانا چھوڑ کر ساڑی کا پلو سر کے آگے تھوڑا سا کھینچا اورمنہ ٹیڑھا کر لیا۔ شکلدیپ بابو نے جوتے اتار کر چارپائی پر بیٹھتے ہوئے آہستہ سے کہا۔”ارے بھئی، ہمیں تمہیں کیا لینا ہے، ایک کونے میں پڑے رام نام جپا کریں گے۔ لیکن میں تو ابھی یہ سوچ رہا ہوں کہ چند سال تک اور مختاری کروں گا۔ نہیں، یہی ٹھیک رہے گا۔“انہوں نے گال پھلا کر ایک دو بار مونچھوں کو تاو ¿ دیا۔

 جُمنا نے اس کی مخالفت کی۔”لڑکا مانے گا تھوڑی، کھینچ لے جائے گا۔ ہمیشہ یہ دیکھ کر اسکی چھاتی پھٹتی رہتی ہے کہ بابو جی اتنی محنت کرتے ہیں اور وہ کچھ بھی مدد نہیں کرتا۔“

”کچھ کہہ رہا تھا کیا؟“ شکلدیپ بابو نے آہستہ سے پوچھا اور بیوی کی جانب سے نظریں ہٹاکر دروازے کے باہر منہ بنا کر دیکھنے لگے۔

 جُمنا نے یقین دہانی کرائی۔”میں جانتی نہیں کیا؟ اس کا چہرہ بتاتا ہے۔ باپ کو اتنا کام کرتے دیکھ کر اس کو کچھ اچھا تھوڑی لگتا ہے۔“آخر میں اس نے ناک سُڑک لی۔

نارائن پندرہ دن بعد انٹرویو دینے گیا۔ اور اس نے انٹرویو بھی بہت اچھا کیا۔ وہ گھر واپس آیا تو اس کے من میں بے حد جوش و خروش تھا اور جب اس نے یہ بتایا کہ جہاں اور لڑکوں کا پندرہ بیس منٹ تک انٹرویو ہوا، اس کا پورے پچاس منٹ تک انٹرویو چلتارہا اور اس نے تمام سوالوں کے تسلی بخش جوابات دئیے، تو اب یہ سب نے مان لیا کہ نارائن کا چن لیا جانا یقینی ہے۔

دوسرے دن کچہری میں پھر وکیلوں اور مختاروں نے شکلدیپ بابو کو مبارک بادیں دیں اور اپنایقین ظاہر کیا کہ نارائن ضرور منتخب کر لیا جائے گا۔ شکلدیپ بابو مسکرا تے ہوئے شکریہ اداکرتے رہے اور لگے ہاتھوں نارائن کی نجی زندگی کی ایک دو باتیں بھی بتا تے رہے اور آخر میں سر کو آگے بڑھا کر سرگوشی کے اندازمیں دل کا راز ظاہرکیا۔”آپ سے کہتا ہوں، پہلے میرے من میں شک تھا، شک کیا سولہ آنے شک تھا، لیکن آپ لوگوں کی دعاﺅں سے اب وہ دور ہوگیا ہے۔“

جب وہ گھر واپس آئے، تو نارائن، گوری اور کمل دروازے کے سامنے کھڑے باتیں کر رہے تھے۔ نارائن انٹرویو کے سلسلے میں ہی کچھ بتا رہا تھا۔ وہ اپنے پتا جی کو آتا دیکھ کر آہستہ آہستہ بولنے لگا۔ شکلدیپ بابو خاموشی کے ساتھ وہاں سے گزر گئے، لیکن دو تین گز ہی آگے گئے ہوں گے کہ گوری کی آواز انہیں سنائی پڑی۔”ارے تمہارا ہو گیا، اب تم موج کرو۔“اتنا سنتے ہی شکلدیپ بابو پلٹ گئے اور لڑکوں کے پاس آکر انہوں نے پوچھا،” کیا؟“ان کی آنکھیں پھٹ گئی تھیں اور ان کی حالت ایسی ہو گئی تھی، جیسے کسی نجی محفل میں وہ زبردستی گھس آئے ہوں۔

لڑکے ایک دوسرے کو دیکھ کر شائستگی سے مسکرائے۔ پھر گوری نے اپنی بات کی وضاحت کی۔”میں کہہ رہا تھا نارائن سے، بابو جی، کہ ان کا چنا جانا یقینی ہے۔“

 شکلدیپ بابو نے سڑک سے گزرتی ہوئی ایک موٹر کو غور سے دیکھنے کے بعد دھیرے دھیرے کہا۔” ہاں ، دیکھئے نہ، جہاں ایک سے ایک تیز طرار لڑکے پہنچتے ہیں، سب سے تو بیس منٹ ہی انٹرویو ہوتا ہے، پر ان سے پورے پچاس منٹ۔ اگر نہیں لینا ہوتا تو پچاس منٹ تک تنگ کرنے کی کیا ضرورت تھی، پانچ دس منٹ پوچھ تاچھ کر کے ۔۔۔“

گوری نے سر ہلا کر اس بات کی حمایت کی اور کمل نے کہا۔”پہلے کا زمانہ ہوتا تو کہا بھی نہیں جا سکتا، لیکن اب تو بے ایمانی اتنی نہیں ہوتی ہو گی۔“

 شکلدیپ بابو نے آنکھیں کھولیں کرکے ہلکی پھلکی آواز میں پوچھا۔”بے ایمانی نہیں ہوتی نہ؟“

” ہاں ، اب اتنی نہیں ہوتی۔ پہلے بات دوسری تھی۔ وہ زمانہ اب لد گیا۔“گوری نے جواب دیا۔

 شکلدیپ بابو اچانک اپنی آواز پر زور دیتے ہوئے بولے،”ارے، اب کیسی بے ایمانی صاحب، گولی ماریئے، اگر بے ایمانی ہی کرنی ہوتی تو اتنی دیر تک ان کا انٹرویو ہوتا؟ انٹرویو میں بلایا ہی نہ ہوتا اور بلاتے بھی تو چار پانچ منٹ پوچھ تاچھ کرکے رخصت کر دیتے۔“

اس کا کسی نے جواب نہیں دیا، تو وہ مسکراتے ہوئے گھوم کر گھر میں چلے گئے۔ گھر میں پہنچنے پر جُمنا سے بولے۔” ببُوا ابھی سے ہی کسی افسر کی طرح لگتے ہیں۔ دروازے پر ببُوا ، گوری اور کمل باتیں کر رہے ہیں۔ میں نے دور ہی سے غور کیا، جب نارائن بابو بولتے ہیں، تو ان کے بولنے اور ہاتھ ہلانے سے ایک عجیب ہی شان ٹپکتی ہے۔ ان کے دوستوں میں ایسی بات کہاں؟“

”آج دوپہر میں مجھے کہہ رہے تھے کہ تمہیںموٹر میں گھماﺅںگا۔“ جُمنا نے خوش خبری سنائی۔

 شکلدیپ بابو خوش ہوکر ناک سڑکتے ہوئے بولے،”ارے، تو اس کو موٹر کی کمی ہو گی، گھومنا جتنا چاہو۔“وہ اچانک خاموش ہو گئے اور کھوئے کھوئے سے اس طرح مسکرانے لگے، جیسے کوئی مزیدار چیز کھانے کے بعد دل ہی دل میںاس کا مزہ لے رہے ہوں۔

کچھ دیر بعد انہوں نے بیوی سے سوال کیا۔”کیا کہہ رہا تھا، موٹر میں گھماﺅںگا؟“ جُمنا نے پھر وہی بات دہرا دی۔

 شکلدیپ بابو نے آہستہ سے دونوں ہاتھوں سے تالی بجاتے ہوئے مسکرا کرکہا۔”چلو، اچھا ہے۔“ان کے چہرے پر اطمینان کے تاثرات رقم تھے۔

سات آٹھ دنوں میں نتیجہ نکلنے کا اندازہ لگاگیا تھا۔ سب کو یقین ہو گیا تھا کہ نارائن چن لیا جائے گا اور سبھی نتیجے کا شدت سے انتظار کر رہے تھے۔

اب شکلدیپ بابو اور بھی مصروف رہنے لگے۔ پوجاپاٹھ کا ان کا پروگرام لگاتار جاری تھا۔ لوگوں سے بات چیت کرنے میں ان کو کافی مزا آنے لگا تھااور وہ گفتگو کے دوران ایسی صورت پیدا کر دیتے کہ لوگوں کو کہنا ہی پڑتا کہ نارائن کو ضرور ہی چن لیا جائے گا۔ وہ اپنے گھر پر جمع ہوئے نارائن اور اس کے دوستوں کی باتیں چھپ کر سنتے اور کبھی کبھی اچانک ان کی مجلس میں گھس جاتے اور زبردستی باتیں کرنے لگتے۔ کبھی کبھی نارائن کو اپنے باپ کی یہ حرکت بہت بری لگتی اور وہ غصے میں دوسری طرف دیکھنے لگتا۔ رات میں شکلدیپ بابو چونک کر اٹھ بیٹھتے اور باہر آکر کمرے میں لڑکے کو سوتے ہوئے دیکھنے لگتے یا آنگن میں کھڑے ہو کر آسمان کو تکنے لگتے۔

ایک دن انہوں نے سویرے ہی سب کو سنا نے کے لئے بلند آواز میں کہا۔”نارائن کی ماں، میں نے آج خواب دیکھا ہے کہ نارائن بابو ڈپٹی کلکٹر ہو گئے۔“

 جُمنا باورچی خانے کے برآمدے میں بیٹھی چاول پھٹک رہی تھی اور اسی کے پاس نارائن کی بیوی، نرملا، گھونگھٹ کاڑھے دال بِین رہی تھی۔

 جُمنا نے سر اٹھا کر اپنے شوہر کی طرف دیکھتے ہوئے سوال کیا۔”خواب سویرے دکھائی پڑا تھا کیا؟“

”سویرے کے نہیں تو شام کے خواب کے بارے میں تم سے کہنے آو ¿ں گا؟ ارے، ایکدم حقیقت میں دیکھا تھا۔ دیکھتا ہوں کہ اخبار میں نتیجہ نکل گیا ہے اور اس میں نارائن بابو کا بھی نام ہے ،اب یہ یاد نہیں کہ کون نمبر تھا، پر اتنا کہہ سکتا ہوں کہ نام کافی اوپر تھا۔“

”اماں جی، سویرے کا خواب تو ایک دم سچا ہوتا ہے نہ۔“نرملا نے آہستہ سے جُمنا سے کہا۔

 شاید نرملا کی آواز شکلدیپ بابو نے سن لی تھی، کیونکہ انہوں نے ہنس کر سوال کیا۔”کون بول رہا ہے، ڈِپٹائن ہیں کیا؟“آخر میں وہ قہقہہ مار کر ہنس پڑے۔

” ہاں ، کہہ رہی ہیں کہ سویرے کا خواب سچا ہوتا ہے۔ سچا ہوتا ہی ہے۔“ جُمنا نے مسکرا کربتایا۔

نرملا لاج سے سمٹ گئی۔ اس نے اپنے بدن کو سمٹایا اور پیٹھ کو نیچے جھکا کر اپنے منہ کو اپنے دونوں گھٹنوں کے درمیان چھپا لیا۔

اگلے دن بھی سویرے شکلدیپ بابو نے گھر والوں کو اطلاع دی کہ انہوں نے آج بھی ہو بہو ویسا ہی خواب دیکھا ہے۔

 جُمنا نے اپنی ناک کی طرف دیکھتے ہوئے کہا۔”سویرے کا خواب تو ہمیشہ ہی سچا ہوتا ہے۔ جب بہو کو لڑکا ہونے والا تھا، میں نے سویرے سویرے خواب دیکھا کہ کو ئی سورگ کی دیوی ہاتھ میں بچہ لئے آسمان سے آنگن میں اتر رہی ہے۔ بس، میں نے سمجھ لیا کہ لڑکا ہی ہے۔اور لڑکا ہی نکلا۔“

 شکلدیپ بابو نے جوش میں آ کر کہا۔”اور مان لو کہ جھوٹ ہے، تو یہ خواب ایک دن دکھائی پڑتا، دوسرے دن بھی ہو بہو وہی خواب کیوں دکھائی دیتا، پھر وہ بھی حقیقت جیسا۔“

”بہو نے بھی ایسا ہی خواب آج سویرے دیکھا ہے۔“

”ڈپٹائن نے بھی؟“ شکلدیپ بابو نے مسکراہٹ روکتے ہوئے کہا۔

” ہاں ، ڈپٹائن نے ہی۔ ٹھیک سویرے انہوں نے دیکھا کہ ایک بنگلے میں ہم لوگ رہ رہے ہیں اور ہمارے دروازے پر موٹر کھڑی ہے۔“ جُمنا نے جواب دیا۔

 شکلدیپ بابو کھوئے کھوئے سے مسکراتے رہے۔ پھر بولے۔”اچھی بات ہے، اچھی بات ہے۔“

ایک دن رات کو تقریباً ایک بجے شکلدیپ بابو نے اٹھ کر بیوی کو جگایا اور اسکو الگ لے جاتے ہوئے بے شرمی سے اونچا قہقہہ لگا کر سوال کیا۔”کہو بھئی، کچھ کھانے کو ہو گا؟ بہت دیر سے نیند ہی نہیں آرہی ہے، پیٹ کچھ مانگ رہا ہے۔ پہلے میں نے سوچا، جانے بھی دو، یہ کوئی کھانے کا وقت ہے، لیکن اس سے کام بنتے نہ دکھا، توتمہیں جگایا۔ شام کو کھایا تھا،سب ہضم ہو گیا۔“

 جُمنا تعجب کے ساتھ آنکھیں پھاڑ پھاڑ کر اپنے شوہر کو دیکھ رہی تھی۔ ازدواجی زندگی کے اتنے طویل عرصے میں کبھی بھی، یہاں تک کہ شادی کے ابتدائی دنوں میں بھی، شکلدیپ بابو نے رات میں اس کو جگاکر کچھ کھانے کو نہیں مانگا تھا۔ وہ جھنجھلا گئی اور اس نے غیر یقینی کا اظہار کیا۔”ایسا پیٹ تو کبھی بھی نہیں تھا۔ معلوم نہیں، اس وقت باورچی خانے میں کچھ ہے بھی یا نہیں۔“

 شکلدیپ بابوکھسیاکر مسکرانے لگے۔

جند لمحوں بعد جُمنانے آنکھیں ملکر پوچھا۔” ببُوا کے میوے میں سے تھوڑا سا دوں کیا؟“

 شکلدیپ بابو جھٹ سے بولے،”ارے، رام رام۔ میوہ تو، تم جانتی ہو، مجھے بالکل پسند نہیں۔ جاو ¿، تم سوجاﺅ، بھوک وھوک تھوڑی ہے، مذاق تھا۔“

یہ کہہ کر وہ دھیرے سے اپنے کمرے میں چلے گئے۔ لیکن وہ لیٹے ہی تھے کہ جُمنا کمرے میں ایک پلیٹ میں ایک روٹی اور گڑ لے کر آئی۔ شکلدیپ بابو قہقہہ لگا کر اٹھ بیٹھے۔

 شکلدیپ بابو پوجا پاٹھ کرتے، کچہری جاتے، دنیا بھر کے لوگوں سے دنیا بھر کی بات کرتے، ادھر ادھر مٹرگشت کرتے اور جب فارغ ہوتے، تو کچھ نہ کچھ کھانے کو مانگ بیٹھتے۔ وہ چٹورے ہو گئے اور ان کو جب دیکھو، بھوک لگ جاتی۔ اس طرح کبھی روٹی گڑ کھا لیتے، کبھی آلو بھنواکر چکھ لیتے اور کبھی ہاتھ پر چینی لے کر پھانک جاتے۔ کھانے میں بھی وہ تبدیلی چاہنے لگے۔ کبھی کھچڑی کی فرمائش کر دیتے، کبھی ستّوپیاز کی، کبھی صرف روٹی دال کی، کبھی مکھنی اور کبھی صرف دال چاول کی ہی۔ ان سے وقت کٹتا ہی نہ تھا اور وہ وقت کاٹنا چاہتے تھے۔

ان بد پرہیزیوں اور ذہنی دباو ¿ کا نتیجہ یہ نکلا کہ وہ بیمار پڑ گئے۔ انہیں بخار ہوگیا اور دست بھی آنے لگے۔ ان کی بیماری سے گھر کے لوگوں کو بڑی تشویش ہوئی۔

 جُمنا نے روہانسی آواز میں کہا۔”بار بار کہتی تھی کہ اتنی محنت نہ کیجیے، پر سنتا ہی کون ہے؟ اب جھیلنا پڑا نہ۔“

پر شکلدیپ بابو پر اس کا کوئی اثر نہ ہوا۔ انہوں نے بات ہوا میں اڑا دی، ”ارے، میں تو کچہری جانے والا تھا، پر یہ سوچ کر رک گیا کہ اب مختاری تو چھوڑنی ہی ہے، تھوڑا آرام کر لیں۔“

”مختاری جب چھوڑنی ہوگی، تب ہوگی، اس وقت تو دونوں وقت کی روٹی دال کا انتظام کرنا ہے۔“ جُمنا نے فکرمندی سے کہا۔

”ارے،تم کیسی بات کرتی ہو؟ بیماری تو سب کو ہوتی ہے، میں مٹی کا ڈھیلا تو ہوں نہیں کہ گھل جاو ¿ں گا۔ بس، ایک آدھ دن کی بات ہے، اگر بیماری سخت ہوتی تو میں اس طرح ٹنک ٹنک کر بولتا؟“ شکلدیپ بابو نے سمجھایا اور آخر میں ان کے ہونٹوں پر ایک لاغر مسکراہٹ کھیل گئی۔

وہ دن بھر بے چین رہے۔ کبھی لیٹتے، کبھی اٹھ بیٹھتے اور کبھی باہر نکل کر ٹہلنے لگتے۔ لیکن کمزور اتنے ہو گئے تھے کہ پانچ دس قدم چلتے ہی تھک جاتے اور پھر کمرے میں آکر لیٹے جاتے۔ کرتے کرتے شام ہوئی اور جب شکلدیپ بابو کو یہ بتایا گیا کہ کَےلاشبہاری مختار ان کی خیر خبر لینے آئے ہیں، تو وہ اٹھ بیٹھے اور فوراًچادر اوڑھ کر، ہاتھ میں چھڑی لے کر، بیوی کے لاکھ منع کرنے پر بھی باہر نکل آئے۔دست تو بند ہوگئے تھے، پر بخار ابھی بھی تھا اور اتنے وقت میں ہی وہ چڑچڑے ہو گئے تھے۔

 کَےلاشبہاری نے ان کو دیکھتے ہی فکرمندلہجے میں کہا۔”ارے، تم کہاں باہر آ گئے، مجھے ہی اندر بلا لیتے۔“

 شکلدیپ بابو چارپائی پر بیٹھ گئے اور کمزور سی ہنسی ہنستے ہوئے بولے،”ارے، مجھے کچھ ہوا تھوڑی ہے، سوچا، آرام کرنے کی عادت ہی ڈال لوں۔“یہ کہہ کر وہ معنی خیزنظروں سے اپنے دوست کو دیکھ کر مسکرانے لگے۔

سب حال چال پوچھنے کے بعد کَےلاشبہاری نے سوال کیا۔”نارائن بابو کہیں دکھائی نہیں دے رہے، کہیں گھومنے گئے ہیں کیا؟“

شکلدیپ بابو نے مصنوعی بیزاری ظاہر کرتے ہوئے کہا،” ہاں ، گئے ہوں گے کہیں، لڑکے ان کو چھوڑتے بھی تو نہیں، کوئی نہ کوئی آکر ساتھ لے جاتا ہے۔“

 کَےلاشبہاری نے تعریف کی۔”خوب ہوا، صاحب۔ میں جب بھی اس لڑکے کو دیکھتا تھا، دل میں سوچتا تھا کہ یہ آگے چل کر کچھ نہ کچھ ضرور بنے گا۔ وہ تو، صاحب، دیکھنے سے ہی پتہ لگ جاتا ہے۔ چال ڈھال میں اور بولنے چالنے کے انداز میں کچھ ایسا ہے کہ ۔۔۔ چلئے، ہم سب ان معنوں میں بہت خوش قسمت ہیں۔“

 شکلدیپ بابو ادھر ادھر دیکھنے کے بعد سر کو آگے بڑھا کر صلاح مشورے کے انداز میں بولے،”ارے بھائی صاحب، کہاں تک بتاو ¿ں اپنے منہ سے کیا کہنا، پر ایسا سیدھا سادہ آدمی تو میں نے دیکھا نہیں، پڑھنے لکھنے کا تو اتنا شوق کہ چوبیس گھنٹے پڑھتا رہے۔ منہ کھول کر کسی سے کوئی بھی چیزمانگتا نہیں۔“

 کَےلاشبہاری نے بھی اپنے لڑکے کی تعریف میں کچھ باتیں گوش گذارکر دیں۔”لڑکے تو میرے بھی سیدھے ہیں، منجھلا لڑکاشِوناتھ جتنا سادہ ہے ، اتنا کوئی نہیں۔ ٹھیک نارائن بابو ہی کی طرح ہے۔“

”نارائن تو اس زمانے کا کوئی رشی منی معلوم پڑتا ہے۔“ شکلدیپ بابو نے سنجیدگی سے کہا۔”بس، اس کی ایک ہی عادت ہے۔ میں اس کی ماں کو میوہ دے دیتا ہوں اور نارائن رات میں اپنی ماں کو جگاکر کھاتا ہے۔ بھلی بری اس کی صرف ایک یہی عادت ہے۔ ارے بھیا، تمہیں بتاتا ہوں، لڑکپن میں ہم نے اس کا نام پنّالال رکھا تھا، پر ایک دن ایک مہاتما گھومتے ہوئے ہمارے گھر آئے۔ انہوں نے نارائن کا ہاتھ دیکھا اور بولے، اس کا نام پنّالال، سنّالال رکھنے کی ضرورت نہیں، بس آج سے اسے نارائن کہا کرو، اس کے کرم میں بادشاہ ہونا لکھا ہے۔ پہلے زمانے کی بات دوسری تھی، لیکن آج کل بادشاہ کا مطلب کیا ہے؟ ڈپٹی کلکٹر تو ایک معنی میں بادشاہ ہی ہوا۔“آخر میں آنکھیں مٹکاکر انہوں مسکرانے کی کوشش کی، پر ہانپ گئے۔

دونوں دوست بہت دیر تک بات چیت کرتے رہے، اور زیادہ تر وقت وہ اپنے اپنے لڑکوں کی ستائش ہی کرتے رہے۔

گھر کے لوگوں کو شکلدیپ بابو کی بیماری کی فکر تھی۔ بخار کے ساتھ اسہال بھی تھا، اسی لئے وہ بہت کمزور ہو گئے تھے، لیکن وہ بات کو یہ کہہ کر اڑا دیتے۔”ارے، کچھ نہیں، ایک دو دن میں ،میں اچھا ہو جاو ¿ں گا۔“اور ایک حکیم کی کوئی معمولی، سستی دوا کھا کر دو دن بعد وہ اچھے بھی ہو گئے، لیکن ان کو کمزوری مستقل تھی۔

جس دن ڈپٹی کلکٹر کا نتیجہ نکلا، اتوار کا دن تھا۔

 شکلدیپ بابو نے سویرے سویرے رامائن کا پاٹھ کیا ،پھر ناشتے کے بعد مندر چلے گئے۔ چھٹی کے دنوں میں وہ مندر پہلے ہی چلے جاتے اور وہاں دو تین گھنٹے، اور کبھی کبھی تو چار چار گھنٹے بیٹھے رہتے ہیں۔ وہ آٹھ بجے مندر پہنچ گئے۔ جس گاڑی سے نتیجہ آنے والا تھا، وہ دس بجے آتی تھی۔

 شکلدیپ بابو پہلے تو بہت دیر تک مندر کی سیڑھی پر بیٹھ کر سستاتے رہے، وہاں سے اٹھ کر اوپر آئے تو نندلال پانڈے نے، جو صندل رگڑ رہا تھا، نارائن کے نتیجے کے بابت استفسار کیا۔ شکلدیپ بابو وہاں پر کھڑے ہو کر مکمل تفصیل کے ساتھ سب کچھ بتانے لگے۔ وہاں سے جب انہیں چھٹی ملی تو دھوپ کافی چڑھ گئی تھی۔ انہوں نے اندر جا کر بھگوان شِو کے بت کے سامنے اپنا ماتھا ٹیک دیا۔ کافی دیر تک وہ اسی طرح پڑے رہے۔ پھر اٹھ کر انہوں نے چاروں جانب گھوم گھوم کر مندر کے گھنٹے بجا کر منتر ویچارن کئے اور گال بجائے۔ آخر میں بھگوان کے سامنے دوبارہ ماتھا ٹیک کر باہر نکلے ہی تھے کہ جنگ بہادر سنگھ ماسٹر مندر میں داخل ہوئے اور انہوں نے شکلدیپ بابو کو دیکھ کر حیرت کا اظہار کیا۔”ارے، مختار صاحب۔ گھر نہیں گئے؟ ڈپٹی کلکٹر کا نتیجہ تو نکل آیا۔“

 شکلدیپ بابو کا دل دھک سے کر گیا۔ ان کے ہونٹ کانپنے لگے اور انہوں نے مشکل سے مسکرا کرپوچھا۔”اچھا، کب آیا؟“

 جنگ بہادر سنگھ نے بتایا۔”ارے، دس بجے کی گاڑی سے آیا۔ نارائن بابو کا نام تو ضرور ہے، لیکن۔۔۔“وہ کچھ آگے نہ بول سکے۔

 شکلدیپ بابو کا دل زوروں سے دھک دھک کر رہا تھا۔ انہوں نے اپنے خشک ہونٹوں کو زبان سے گیلا کرتے ہوئے انتہائی دھیمی آواز میں پوچھا۔”کیا کوئی خاص بات ہے؟“

”کوئی خاص بات نہیں ہے۔ ارے، ان کا نام تو ہے ہی، یہ ہے کہ ذرا نیچے ہے۔ دس لڑکے لئے جائیں گے، لیکن میرا خیال ہے کہ ان کا نام سولہواںسترہواں پڑے گا۔ لیکن کوئی تشویش کی بات نہیں، کچھ لوگ تو کلکٹری میں چلے جاتے ہیں کچھ میڈیکل میں ہی نہیں آتے اور اس طرح پوری پوری امید ہے کہ نارائن بابو لے ہی لئے جائیں گے۔“

 شکلدیپ بابو کا چہرہ پھیکا پڑ گیا۔ ان کے پاو ¿ں میں زور نہیں تھا اور معلوم پڑتا تھا کہ وہ گر جائیں گے۔ جنگ بہادر سنگھ تو مندر میں چلے گئے۔

 وہ کچھ دیر تک وہیں سر جھکائے کچھ اس طرح کھڑے رہے، جیسے کوئی بھولی بات یاد کر رہے ہوں۔ پھر وہ چونک پڑے اور اچانک انہوں نے تیزی سے چلنا شروع کر دیا۔ ان کے منہ سے دھیمی آواز میں تیزی سے شِیو،شِیو نکل رہا تھا۔ آٹھ دس گز آگے بڑھنے پر انہوں نے رفتار اور تیز کر دی، پر جلد ہی تھک گئے اور ایک نیم کے درخت کے نیچے کھڑے ہو کر ہانپنے لگے۔ چار پانچ منٹ سستانے کے بعد انہوں نے پھر چلنا شروع کر دیا۔ وہ چھڑی کو اٹھاتے گراتے، سینے پر سرٹکائے اورشِیو، شیِوکا جاپ کرتے، ہوا کے ہلکے جھونکے سے دھیرے دھیرے آڑا تیڑا اڑتے سوکھے پتے کی مانند ڈگ مگ ڈگ مگ چلے جا رہے تھے۔ کچھ لوگوں نے ان کو نمستے کیا، تو انہوں نے دیکھا نہیں، اور کچھ لوگوں نے ان کو دیکھ کر مسکرا کر آپس میں الٹی سیدھی باتیں شروع کر دی، اس وقت بھی انہوں نے کچھ نہیں دیکھا۔ لوگوں نے اطمینان سے، ہمدردی سے اور افسوس سے دیکھا، پر انہوں نے کوئی توجہ نہیں دی۔ ان کی بس ایک ہی دھن تھی کہ وہ کسی طرح گھر پہنچ جائیں۔

گھر پہنچ کر وہ اپنے کمرے میں چارپائی پر دھم سے بیٹھ گئے۔ ان کے منہ سے صرف اتنا ہی نکلا۔”نارائن کی اماں۔“

سارے گھر میں مردنی چھائی ہوئی تھی۔ چھوٹے سے آنگن میں گندا پانی، مٹی، باہر سے اڑ کر آئے ہوئے سوکھے پتے اور گندے کاغذ پڑے تھے، اور موری سے بدبو آ رہی تھی۔ برآمدے میں پڑی پرانی بنس کھٹ پر بہت سے گندے کپڑے پڑے تھے اور باورچی خانے سے اس وقت بھی دھواں اٹھ اٹھ کر سارے گھر کی سانس کو گھوٹ رہا تھا۔

کہیں کوئی کھٹرپٹر نہیں ہو رہی تھی اور معلوم ہوتا تھا کہ گھر میں کوئی ہے ہی نہیں۔

جلد ہی جُمنا نہ معلوم کدھر سے نکل کر کمرے میں آئی اور شوہر کو دیکھتے ہی اس نے گھبرا کر پوچھا۔”طبیعت تو ٹھیک ہے؟“

 شکلدیپ بابو نے جھنجھلاکر جواب دیا۔”مجھے کیا ہوا ہے، جی؟ پہلے یہ بتاو ¿، نارائن جی کہاں ہیں؟“

 جُمنا نے باہر والے کمرے کی جانب اشارہ کرتے ہوئے بتایا۔”اسی میں پڑے ہے۔، نہ کچھ بولتے ہیں اور نہ کچھ سنتے ہیں۔ میں پاس گئی، تو گم صم رہے۔ میں تو ڈر گئی ہوں۔“

 شکلدیپ بابو نے مسکرا کر یقین دلایا۔”ارے کچھ نہیں، سب بھلا ہوگا، فکر کی کوئی بات نہیں۔ پہلے یہ تو بتاﺅ، ببُوا کو تم نے کبھی یہ تو نہیں بتایا تھا کہ ان کی فیس اور کھانے پینے کے لیے میں نے چھ سو روپے قرض لیے ہیں۔ میں نے تم کو منع کر دیا تھا کہ ایسا کسی بھی صورت میں نہ کرنا۔“

 جُمنا نے کہا۔”میں ایسی بیوقوف تھوڑی ہوں۔ لڑکے نے ایک دو بار کھود کھود کر پوچھا تھا کہ اتنے روپے کہاں سے آتے ہیں؟ ایک بار تو اس نے یہاں تک کہا تھا کہ یہ پھل میوہ اور دودھ بند کر دو، بابو جی بیکار میں اتنی فضول خرچی کر رہے ہیں۔ پر میں نے کہہ دیا کہ تجھے فکر کرنے کی ضرورت نہیں، تم بغیر کسی فکر کے محنت کرو، بابو جی کو ادھر بہت مقدمے مل رہے ہیں۔“

 شکلدیپ بابو بچے کی طرح خوش ہوتے ہوئے بولے۔”بہت اچھا۔ کوئی تشویش کی بات نہیں۔ بھگوان سب بھلا کرے گا۔ ببُوا کمرے ہی میں ہیں نہ؟“

 جُمنا نے اقرار میں سرہلا دیا۔

 شکلدیپ بابو مسکرا کر اٹھے۔ ان کا چہرہ سوکھ گیا تھا، آنکھیں دھنس گئی تھیں اور چہرے پر مونچھیں جھاڑو کی مانند تھرک رہی تھیں۔ وہ جُمنا سے یہ کہہ کر کہ ”تم اپنا کام دیکھو، میں ابھی آیا“ قدموںکو اٹھاتے ہوئے باہر والے کمرے کی طرف بڑھے۔ ان کے پاو ¿ں کانپ رہے تھے اور ان کا سارا جسم بھی کانپ رہا تھا، ان کی سانس حلق میں پھنس پھنس جا رہی تھی۔

انہوں نے پہلے برآمدے ہی میں سے سرآگے بڑھا کمرے میں جھانکا۔ باہری دروازہ اور کھڑکیاں بند تھیں، نتیجے میں کمرے میں اندھیرا تھا۔ پہلے تو کچھ نہ دکھائی دیا اور ان کا دل دھک دھک کرنے لگا۔ لیکن انہوں نے تھوڑا سا آگے بڑھ کر غور سے دیکھا، تو چارپائی پر کوئی شخص سینے پر دونوں ہاتھ باندھے چت پڑا تھا۔ وہ نارائن ہی تھا۔ وہ آہستہ سے چور وںکی مانند دبے پاو ¿ں کمرے کے اندر داخل ہوئے۔

ان کے چہرے پر غیر فطری اعتماد کی مسکراہٹ تھرک رہی تھی۔ وہ میز کے پاس پہنچ کر خاموشی سے کھڑے ہو گئے اور اندھیرے ہی میں کتابیں الٹنے پلٹنے لگے۔لگ بھگ ڈیڑھ دو منٹ تک وہیں اسی طرح کھڑے رہنے پر وہ سرہانے پھرتی سے مڑ کر نیچے بیٹھ گئے اور کھسک کر چارپائی کے پاس چلے گئے اور چارپائی کے نیچے جھانک جھانک کر دیکھنے لگے، جیسے کوئی چیز تلاش کر رہے ہوں۔

اس کے بعد پاس میں رکھے نارائن کے موزے کو اٹھا لیا اور ایک دو لمحے اسے الٹنے پلٹنے کے بعد اس کو آہستہ سے وہیں رکھ دیا۔ آخر میں وہ سانس روک کر آہستہ آہستہ اس طرح اٹھنے لگے، جیسے کوئی چیز تلاش کرنے آئے تھے، لیکن اس میں ناکام ہو کر چپ چاپ واپس لوٹ رہے ہوں۔ کھڑے ہوتے وقت وہ اپنا سر نارائن کے چہرے کے قریب لے گئے اور انہوں نے نارائن کو آنکھیں پھاڑ پھاڑ کر غور سے دیکھا۔ اس کی آنکھیں بند تھیں اور وہ چپ چاپ پڑا ہوا تھا، لیکن کسی قسم کی آہٹ، کسی قسم کا کوئی لفظ سنائی نہیں دے رہا تھا۔ شکلدیپ بابو ایکدم ڈر گئے اور انہوں نے کانپتے دل سے اپنا بایاں کان نارائن کے چہرے کے بالکل قریب کر دیا۔ اور اس وقت ان کی خوشی کا ٹھکانا نہ رہا، جب انہوں نے اپنے لڑکے کی سانس کو باقاعدگی سے چلتے پایا۔

وہ خاموشی سے جس طرح آئے تھے، اسی طرح باہر نکل گئے۔ پتہ نہیں کب سے، جُمنا دروازے پر کھڑی تشویش کے ساتھ اندر جھانک رہی تھی۔ اس نے شوہر کا منہ دیکھا اور گھبرا کر پوچھا۔”کیا بات ہے؟ آپ ایسا کیوں کر رہے ہیں؟ مجھے بڑا ڈر لگ رہا ہے۔“

 شکلدیپ بابو نے اشارے سے اسے بولنے سے منع کیا اور پھر اس کو اشارہ سے بلاتے ہوئے اپنے کمرے میں چلے گئے۔ جُمنا نے کمرے میں پہنچ کر شوہر کو فکر مندی اور تجسس بھری نظروں سے دیکھا۔

 شکلدیپ بابو نے بھیگے لہجے میں کہا۔” ببُوا سو رہے ہیں۔“

وہ آگے کچھ نہ بول سکے۔ ان کی آنکھیں بھر آئی تھیں۔ وہ دوسری طرف دیکھنے لگے۔

٭٭٭

گرمیوں کے دن

 کملیشور/عامر صدیقی

ہندی کہانی

…………….

کملیشور،پیدائش: ۶ جنوری۲۳۹۱ ء، مین پوری، اتر پردیش۔میدان: کہانی،اسکرین پلے برائے ہندی سنیما/ٹی وی۔ اہم تخلیق: ناول ” کتنے پاکستان” ۔ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ ، پدم بھوشن ۔ انتقال: ۷۲ جنوری ۷۰۰۲ ئ، فرید آباد۔

…………

چنگی دفتر خوب رنگ برنگا، چھیل چھبیلاہے۔ اس کے دروازے پرقوس و قزح جیسے سائن بورڈ لگے ہوئے ہیں۔ سید علی پینٹر نے اپنے بڑے مشاق ہاتھوں سے ان بورڈوں کو بنایا ہے۔ دیکھتے دیکھتے شہر میں بہت سی ایسی دکانیں ہو گئی ہیں، جن پر سائن بورڈ لٹکنے شروع ہوگئے ہیں۔ سائن بورڈ کا لگنا یعنی اوقاتِ کار کا بڑھنا۔ بہت دنوں پہلے جب دینا ناتھ حلوائی کی دوکان پر پہلا سائن بورڈ لگا تھا تو وہاں دودھ پینے والوں کی تعداد اچانک بڑھ گئی تھی۔ پھر سیلاب سا آ گیا اور نئے نئے طریقے اور بےل بوٹے ایجاد کئے گئے۔ ”اوم“ یا”جے ہند“ سے شروع کرکے ”ایک بار ضرور ہمیں آزمائیں“ یا پھر”ملاوٹ ثابت کرنے والے کو سو روپیہ نقد انعام“ کے دعووں یا للکاروں پر تحریر ختم ہونے لگی۔

چنگی دفتر کا نام تین زبانوں میں لکھا ہے۔ چےئرمےن صاحب بڑی بدھی کے آدمی ہیں، ان کی سوجھ بوجھ کا ڈنکا بج رہا ہے، اس لئے ہر سائن بورڈ ہندی، اردو اور انگریزی میں لکھا جاتا ہے۔ دور دور سے لیڈر حضرات تقریریں کرنے آتے ہیں، دیسی اور بدیسی لوگ آگرے کا تاج محل دیکھ کر مشرق کی طرف جاتے ہوئے یہیں سے ہو کر گزرتے ہیں۔ان پر اثر پڑتا ہے، بھائی۔ اور پھر موسم کی بات، میلے ٹھیلوںتماشوں کے دنوں میں حلوائیوں، جولائی، اگست میں کتاب ،کاغذ والوں،شادی کے سیزن میں کپڑے والوں اور خراب موسم میں ویدوںحکیموں کے سائن بورڈوں پر نیا روغن چڑھتا ہے۔ شدھ دیسی گھی والے سب سے اچھے رہے، جو چھپروں کے اندر دیوار پر گیرو یا کوئلے سے لکھ کر کام چلا لیتے ہیں۔ اسکے بغیر کام نہیں چلتا۔ اہمیت بتاتے ہوئے وےدجی نے کہا۔”بغیر پوسٹر چپکائے سنیما والوں کا بھی کام نہیں چلتا۔ بڑے بڑے شہروں میں جائیے، گھانس لیٹ بیچنے والے کی دکان پر سا ئن بوٹ مل جائے گا۔ بڑی ضروری چیز ہے۔ بال بچوں کے نام تک کے سائن بوٹ ہیں، نہیں تو نام رکھنے کی ضرورت کیا ہے؟ سائن بوٹ لگاکے سکھ دیو بابو کمپوڈر سے ڈاکٹر ہو گئے، بیگ لے کے چلنے لگے۔“

پاس بیٹھے رام چرن نے ایک اور نئے کرشمے کی خبر دی ۔” انہوں نے بدھیو والا اِکّا گھوڑا خرید لیا ۔۔۔“

”ہانکے گا کون؟“ٹین کی کرسی پر یوگا کا آزمودہ یام ا ٓسن جمائے بیٹھے پنڈت نے پوچھا۔

” یہ سب جیب کترنے کا طریقہ ہے۔“وےدجی کی توجہ اِکّا گھوڑے کی جانب مرکوز تھی۔”مریض سے کرایہ وصول کریں گے۔ سائیس کو بخشش دلائیں گے، بڑھکے شہروں کے ڈاکٹروں کی طرح۔ اسی سے پیشے کی بدنامی ہوتی ہے۔ پوچھو بھلا، مریض کا علاج کرنا ہے کہ رعب و دبدبہ کا مظاہرہ کرنا ہے۔ انگریزی آلے دکھا کے مریض کی آدھی جان پہلے ہی خشک کر ڈالتے ہیں۔آئیوروےدی، نبض دیکھنا تو دور، چہرہ دیکھ کر بیماری بتادے ۔ اِکّا گھوڑا اس میں کیا کرے گا؟ تھوڑے دن بعد دیکھنا، ان کا سائیس کمپوڈر ہو جائے گا۔“ کہتے کہتے وےدجی بڑی گھسی ہوئی ہنسی میں ہنس پڑے۔ پھر بولے۔” کون کیا کہے بھائی؟ ڈاکٹری تو تماشا بن گئی ہے۔ وکیلوں مختاروں کے لونڈے بھی ڈاکٹر ہونے لگے۔ خون اور سنسکار سے بات بنتی ہے، ہاتھ میںجب آتا ہے، ویدیہ کا بیٹا ویدیہ ہوتا ہے۔ آدھی ودیہ لڑکپن میں جڑی بوٹیاںکوٹتے پیستے آ جاتی ہے۔ تولہ، ماشہ ، رتی کا ایسا انداز ہو جاتا ہے کہ دوائیاں غلط ہو ہی نہیں سکتی ہےں۔ دوائیوں کا چمتکار اس کو بنانے کی ترکیبوںمیں ہے۔ دھنونتر۔۔۔ ۔“وےدجی آگے کہنے جا ہی رہے تھے کہ ایک آدمی کو دکان کی طرف آتے دیکھ کر خاموش ہو گئے اور بیٹھے ہوئے لوگوں کی طرف کچھ اس طرح دیکھنے ، جانچنے لگے کہ جیسے یہ گپ لڑانے والے فالتو کے آدمی نہ ہوں بلکہ ان کے مریض ہوں۔

آدمی کے دکان پرچڑھتے ہی وید جی نے بھانپ لیا۔ مایوس ہو کر انہوں نے اسے دیکھا اور لاتعلق سے ہو گئے۔ لیکن دنیا دکھاوا بھی کچھ ہوتا ہے۔ ہو سکتا ہے، کل یہی آدمی بیمار پڑ جائے یا اسکے گھر میں کسی کو بیماری گھیر لے۔ اس لئے اپنا رویہ اور پیشے کا وقار ایک دم چوکس رہنا چاہئے۔ خود کو بٹورتے ہوئے انہوں نے کہا،”کہو بھائی، راضی خوشی۔“

 اس آدمی نے جواب دیتے ہوئے شیرے کی ایک کنستریا سامنے کر دی،”یہ ٹھاکر صاحب نے رکھوائی ہے۔ منڈی سے لوٹتے ہوئے لیتے جائیں گے۔ ایک ڈیڑھ بجے کے قریب۔“

”اس وقت دکان بند رہے گی۔“وےدجی نے بیکار کے کام سے اوبتے ہوئے کہا۔“ حکیم وےدوں کی دکانیں دن بھر نہیں کھلی رہتیں۔ بیوپاری تھوڑے ہی ہیں، بھائی۔“لیکن پھر کسی دوسرے دن اور موقع کی امید نے جیسے زبردستی کہلوایا۔“خیر، انہیں دقت نہیں ہوگی، ہم نہیں ہوں گے تو برابروالی دکان سے اٹھا لیں۔ میں رکھتا جاو ¿ں گا۔“

اس آدمی کے جاتے ہی ویدجی بولے ۔”شراب بندی سے کیا ہوتا ہے؟ جب سے ہوئی ،اسکے بعد سے کچی شراب کی بھٹیا ںگھر گھر چالو ہو گئیں۔ سیرا گھی کے بھاﺅ بکنے لگا۔ اور ان ڈاکٹروں کو کیا کہیے۔انکی دکانیں ہولی بن گئی ہیں۔ لیسنس ملتا ہے دوا کی طرح استعمال کرنے کا، پر کھلے عام جنجر بکتا ہے۔ کہیں کچھ نہیں ہوتا۔ ہم بھنگ افیون کی ایک پڑیا چاہیں تو تفصیل دینی پڑتی ہے۔ “

” ذمہ داری کی بات ہے۔“پنڈت جی نے کہا۔

” اب ذمہ دار ویدہی رہ گئے ہیں۔ سب کی رجسٹری ہو چکی، بھائی۔ ایسے غیر پنچ کلیانی جتنے گھس آئے تھے، ان کی صفائی ہو گئی۔ اب جس کے پاس رجسٹری ہوگی وہی وےدیہ کر سکتا ہے۔ چورن والے بھی وید بن بیٹھے تھے۔سب ختم ہو گئے۔ لکھنو ¿ میں سرکاری جانچ پڑتال کے بعد سند ملی ہے ۔“

وید جی کی بات میں چاشنی کا مزہ نہ پا کر پنڈت اٹھ گئے۔ وید جی نے اندر کی جانب قدم بڑھائے اور دواخانے کا بورڈ لکھتے ہوئے چندر سے بولے ،”سفےدا گاڑھا ہے بابو، تارپین ملا لو۔“پھروہ ایک بوتل اٹھا لائے جس پر اشوکارِشٹ کا لیبل لگا تھا۔

اسی طرح نہ جانے کون کون سی دواﺅں کی بوتلوں میں کس کس اقسام کی آتمائیں بھری ہےں۔ سامنے کی اکلوتی الماری میں بڑی بڑی بوتلیں رکھی ہےں۔ جن پر طرح طرح کے ارشٹوں اورآسوﺅں کے نام چپکے ہیں۔ صرف پہلی قطار میں یہ شیشیاں کھڑی ہیں۔ان کے پیچھے ضرورت کا کا دوسرا سامان ہے۔ سامنے کی میز پر سفید شیشیوں کی ایک قطار ہے، جس میں کچھ مزیدار چورن، نمک بھاسکر وغیرہ ہےں، باقیوں میں جو کچھ بھرا ہوا ہے، اسے صرف وید جی ہی جانتے ہیں۔

تارپین کا تیل ملا کر چندر آگے لکھنے لگا۔ ”پروفیسرکوی راج نتیانند تیواری “،اوپر کی عبارت” شری دھنونتر ی دواخانہ“ خود وید جی لکھ چکے تھے۔ سفےدے کے وہ الفاظ ایسے لگ رہے تھے جیسے روئی کے پھاہے چسپاں کر دیے ہوں۔ اوپر جگہ خالی دیکھ کر وید جی بولے،”بابو، اوپر جے ہند لکھ دینا اور یہ جو جگہ بچ رہی ہے، اس میں ایک طرف دوائی کی بوتل، دوسری طرف کھرل کی تصویر۔آرٹ ہمارے پاس مڈل تک تھا ،لیکن یہ تو ہاتھ سدھنے کی بات ہے۔“

چندر کچھ اونگھ رہا تھا۔ خواہ مخواہ پکڑا گیا۔خوش خطی اچھی ہونے کا یہ انعام اسکو سمجھ نہیں آ رہا تھا۔ بولا،”کسی پینٹر سے بنواتے ۔۔اچھا خاصا لکھ دیتا، وہ بات نہیں آئے گی ۔“اپنا پسینہ پونچھتے ہوئے اس نے کُوچی نیچے رکھ دی۔

”پانچ روپے مانگتا تھا بابو۔دو لائنوں کے پانچ روپے۔ اب اپنی محنت کے ساتھ یہ سائن بوٹ دس بارہ آنے کا پڑا۔ یہ رنگ ایک مریض دے گیا۔ بجلی کمپنی کا پینٹر بدہضمی سے پریشان تھا۔ دو خوراکیں بنا کر دے دیں، پیسے نہیں لئے۔ سو وہ دو تین رنگ اور تھوڑی سی وارنش دے گیا۔ دو بکسے رنگ لگ گئے ۔ اوریہ بوٹ بن گیا اور باقی سے کرسی رنگ جائے گی۔تم بس اتنا لکھ دو،لال رنگ کے شیڈ ہم دیتے رہیںگے۔ حاشیہ ترِنگا کھِلے گا؟“ وید جی نے پوچھا اور خودہی قبولیت کی سند بھی دے دی۔

چندر گرمی سے پریشان تھا۔ جیسے جیسے دوپہرنزدیک آتی جا رہی تھی، سڑک پر دھول اور لو کا زور بڑھتا جا رہا تھا، نتیجے میں چندر انکار نہیں کر پایا۔ پنکھے سے اپنی پیٹھ کھجلاتے ہوئے وید جی نے اجرت کے کام والے، پٹواریوں کے بڑے بڑے رجسٹر نکال کر پھیلانا شروع کئے۔

سورج کی تپش سے بچنے کے لئے دکان کا ایک کِواڑ بھےڑکر وید جی خالی رجسٹر پر خسراکھتونیوں سے نقل کرنے لگے۔

 چندر نے اپنا پنڈ چھڑانے کےلئے پوچھا،”یہ سب کیا ہے وید جی ؟“

وید جی کا چہرہ اتر گیا، بولے،”خالی بیٹھنے سے بہتر ہے کچھ کام کیا جائے، نئے لیکھ پالوں کو کام دھام آتا نہیں، روز قانون گو یا نائب صاحب سے جھاڑیں پڑتی ہیں۔ جھک مارکے ان لوگوں کو یہ کام اجرت پر کرانا پڑتا ہے۔ اب پرانے گھاگ پٹواری کہاں رہے، جن کے پیٹ میں قانون بستا تھا۔ روٹیاں چھن گئیں بے چاروں کی؛ لیکن صحیح پوچھو تو اب بھی سارا کام پرانے پٹواری ہی ڈھو رہے ہیں۔ نئے لیکھ پالوں کی تنخواہ کا سارا روپیہ اسی کی اجرت میں نکل جاتا ہے۔ پیٹ اُن کا بھی ہے۔ تیاپانچا کرکے کسانوں سے نکال لاتے ہیں۔ لائیں نہ تو کھائیں کیا۔ دو تین لیکھ پال اپنے ہیں، انہی سے کبھی کبھار ہلکا بھاری کام مل جاتا ہے۔ نقل کاکام، رجسٹر بھرتے ہیں۔“

باہر سڑک ویران ہوتی جا رہی تھی۔ دفتر کے بابو لوگ جا چکے تھے۔ سامنے چنگی میں خس کی ٹٹّیوں پر چھڑکاﺅ شروع ہو گیا۔ دور ہرہراتے پیپل کا شور لو کے ساتھ آ رہا تھا۔ تبھی ایک آدمی نے کواڑ سے اندر جھانکا۔ وید جی کی گفتگو، جو شاید لمحے دو لمحے بعد درد سے بوجھل ہو جاتی، رک گئی۔ ان کی نگاہ نے آدمی کو پہچانا اور وہ محتاط ہو گئے۔ فوراً بولے،”ایک بوٹ آگرے سے بنوایا ہے، جب تک نہیں آتا، اسی سے کام چلے گا۔ فرصت کہاں ملتی ہے جو ان سب میں سرکھپائیں۔“اور ایک دم مصروف ہوتے ہوئے انہوں نے اس آدمی سے سوال کیا،”کہو بھائی، کیا بات ہے؟“

 ”ڈاکٹری سرٹیفیکیٹ چاہئے۔کوسما ٹےشن پر خلاصی ہیں گے صاحب۔“ریلوے کی نیلی وردی پہنے وہ خلاصی بولا۔

اسکی ضرورت کا پورا اندازہ لگاتے ہوئے وید جی بولے،” ہاں ، کس تاریخ سے کب تک کا چاہئے۔“

 ”پندرہ دن پہلے آئے تھے صاحب، سات دن کو اور چاہئے۔ “

کچھ حساب جوڑ کر وید جی بولے،”دیکھو بھائی، سرٹیفیکیٹ پکا کرکے دیں گے، حکومت کا رجسٹر نمبر دیں گے، روپےا چار لگیں گے۔“ وید جی نے جیسے کھٹ سے چار روپے پر اسکے بھڑک جانے کا احساس کرتے ہوئے کہا،”اگر پچھلا نہ لو تو دو روپے میں کام چل جائے گا۔“

خلاصی مایوس ہو گیا۔ لیکن اسکی مایوسی سے زیادہ بڑی مایوسی وید جی کے پسینے سے نم چہرے پرنمودار ہو گئی۔ بڑی بد لحاظی کے انداز سے خلاصی بولا،”سوبرن سنگھ نے آپ کے پاس بھیجا تھا۔“ اسکے کہنے سے کچھ ایسا لگا ،جیسے یہ اس کا کام نہ ہو بلکہ سوبرن سنگھ کا کام ہو۔ پر وید جی کے ہاتھ میںنبض آگئی ، بولے،”وہ ہم پہلے ہی سمجھ رہے تھے۔ بغیر جان پہچان کے ہم کرتے نہیں، عزت کا سوال ہے۔ ہمیں کیا معلوم تم کہاں رہے، کیا کرتے رہے؟ اب سوچنے کی بات ہے۔ اعتبار پر جوکھم اٹھا لیں گے۔ پندرہ دن پہلے آپکا نام رجسٹر میں چڑھائیں گے، بیماری لکھیں گے۔ہر تاریخ پر نام چڑھائیں گے،تب کہیں کام بنے گا۔ ایسے گھر کی کھیتی نہیں ہے۔“کہتے کہتے انہوں نے چندر کی طرف مدد کےلئے دیکھا۔ چندر نے ساتھ دیا،”اب انہیں کیا پتہ کہ تم بیمار رہے کہ ڈاکہ ڈالتے رہے ۔ سرکاری معاملہ ہے۔“

” پانچ سے کم میں دنیا چھور کا ڈاکٹر نہیں دے سکتا۔“کہتے کہتے وید جی نے سامنے رکھا لیکھ پال والا رجسٹر کھسکاتے ہوئے جوش سے کہا،”ارے، دم مارنے کو فرصت نہیں ہے۔ یہ دیکھو، دیکھتے ہو نام۔ ایک ایک مریض کا نام، مرض، آمدنی۔۔۔ انہی میں آپکا نام چڑھانا پڑے گا۔ اب بتاﺅ کہ مریضوں کو دیکھنا زیادہ ضروری ہے کہ دو چار روپے کے لئے سرٹیفیکیٹ دے کر اس سرکاری لفڑے میں پھنسیں۔“کہتے ہوئے انہوں نے تحصیل والا رجسٹر ایک دم بند کر کے سامنے سے ہٹا دیا اور صرف احسان کرسکنے کےلئے تیار ہونے جیسی صورت بنا کر قلم سے کان کرودنے لگے۔

ریلوے کا خلاصی ایک منٹ تک بیٹھا کچھ سوچتا رہا۔ اور پھر وید جی کو سر جھکائے اپنے کام میں مشغول دیکھ کر دکان سے نیچے اتر گیا۔ ایک دم وید جی نے اپنی غلطی محسوس کی، لگا انہوں نے بات غلط جگہ منقطع کر دی اور ایسی منقطع کہ ٹوٹ ہی گئی۔ اچانک کچھ سمجھ میں نہ آیا، تو اسے پکار کر بولے،”ارے سنو، ٹھاکر سوبرن سنگھ سے ہماری، جے رام جی کی ،کہہ دینا۔ان کے بال بچے تو راضی خوشی ہےں؟“

” ہاں سب ٹھیک ٹھاک ہیں۔“خلاصی نے رک کر کہا۔

 اسے سناتے ہوئے وید جی ،چندر سے بولے،” شہر”دس گاو ¿ں“ کے ٹھاکر سوبرن سنگھ علاج کےلئے یہیں آتے ہیں۔ بھئی، ان کےلئے ہم بھی ہمیشہ حاضر رہے ۔“

چندر نے بورڈ پر آخری الفاظ ختم کرتے ہوئے پوچھا،”چلا گیا۔“

” لوٹ پھر کے آئے گا۔“وےد جی نے جیسے خود کو سمجھایا،لیکن اس کے واپس آنے کی بات پر یقین کرتے ہوئے بولے،” گاو ¿ں کے وید اور وکیل ایک ہی ہوتے ہیں۔ سوبرن سنگھ نے اگر ہمارا نام اس سے کہا ہے تو ضرور واپس آئے گا۔ گاو ¿ں والوں کی سمجھ ذرا مشکل سے کھلتی ہے۔ کہیں بےٹھ کے سوچے سمجھے گا، تب آئے گا ۔۔۔“

”اور کہیں سے لے لیا، تو؟“ چندر نے کہا تو وید جی نے بات کاٹ دی۔” نہیں، نہیں بابو۔“کہتے ہوئے انہوں نے بورڈ کی طرف دیکھا اور تحسین بھرے انداز سے بولے۔“واہ بھئی چندر بابو۔ سائن بوٹ جچ گیا۔کام چلے گا۔ یہ پانچ روپے پینٹر کو دے کر مریضوں سے وصول کرنا پڑتا۔ اِکّا گھوڑا اور یہ خرچہ۔ بات ایک ہے۔ چاہے ناک سامنے سے پکڑ لو، چاہے گھماکر۔ سید علی کے ہاتھ کا لکھا بوٹ مریضوں کو چنگا تو کر نہیں دیتا۔ اپنی اپنی سمجھ کی بات ہے۔“کہتے ہوئے وہ دھیرے سے ہنس پڑے۔ پتہ نہیں، وہ اپنی بات سمجھ کر خود پر ہنسے تھے یا دوسروں پر۔

تبھی ایک آدمی اندر داخل ہوا۔ایک بار تولگا کہ خلاصی آ گیا۔ پر وہ پانڈو روگی تھا۔ دیکھتے ہی وید جی کے چہرے پر طمانیت چھلک آئی۔ وہ اندر گئے۔ ایک تعویز لاتے ہوئے بولے،”اب اس کا اثر دیکھو۔ بیس پچیس روز میں اس کا چمتکار دکھائی دے گا۔“پانڈو روگی کے بازو میں تعویز باندھ کر اور اس کے کچھ آنے پیسے جیب میں ڈال کر وہ سنجیدہ ہو کر بیٹھ گئے۔ مریض چلا گیا تو بولے،”یہ ودیا بھی ہمارے والد صاحب کے پاس تھی۔ انکی لکھی کتابیں پڑی ہیں۔ کئی بار سوچتا ہوں، انہیں دوبارہ نقل کر لوں۔ بڑے تجربے کی باتیں ہیں۔ وشواس کی بات ہے، بابو۔ ایک چٹکی دھول سے آدمی چنگا ہو سکتا ہے۔ ہومیوپیتھک اور بھلا کیا ہے؟فقط ایک چٹکی چینی۔ جس پر وشواس جم جائے، بس۔“

چندر نے چلتے ہوئے کہا۔” اب تودکان بند کرنے کا وقت ہو گیا، کھانا کھانے نہیں جائیے گا؟“

”تم چلو، ہم پانچ منٹ بعد آئیں گے۔ “وےدجی نے تحصیل والا کام اپنے آگے سرکا لیا۔ دکان کا کواڑ ادھ کھلا کرکے بیٹھ گئے۔ باہر دھوپ کی طرف دیکھ کر نظر چوندھیا جاتی تھی۔

برابر والے دکاندار بچن لال نے دکان بند کر کے، گھر جاتے ہوئے وید جی کی دکان کھلی دیکھ کر پوچھا۔” آپ کھانا کھانے نہیں گئے ۔“

”ہاں ایسے ہی، ایک ضروری کام ہے۔ ابھی تھوڑی دیر میں چلے جائیں گے۔“وےدجی نے کہا اور زمین پر چٹائی بچھالی۔ رجسٹر میز سے اٹھا کر نیچے پھیلا لئے۔ لیکن گرمی تو گرمی تھی۔ پسینہ تھمتا ہی نہ تھا۔ رہ رہ کر پنکھا جھلتے، پھر نقل کرنے لگتے۔ کچھ دیر من مار کے کام کیا، پر ہمت چھوٹ گئی۔ اٹھ کر دھول پڑی پرانی شیشیاں جھاڑنے لگے۔ انہیں قطار سے لگایا۔ لیکن گرمی کی دوپہر یا۔۔۔ وقت رکا سا لگتا تھا۔ ایک بار انہوں نے کواڑوں کے درمیان سے منہ نکال کر سڑک کی طرف غور سے دیکھا۔ ایک آدھ لوگ نظر آئے۔ ان آتے جاتے لوگوں کی موجودگی سے بڑا سہارا مل گیا۔اندر آئے، بورڈ کا تار سیدھاکیا اور دکان کے سامنے لٹکا دیا۔ دھنونتری دواخانے کا بورڈ دکان کی گردن میں تعویز کی طرح لٹک گیا ہے۔

کچھ وقت اور گزرا۔ آخر انہوں نے ہمت کی۔ ایک لوٹا پانی پیا اور جانگھوں تک دھوتی سرکا کر مستعدی سے کام میں جٹ گئے۔ باہر کچھ آہٹ ہوئی۔ فکر سے انہوں نے دیکھا۔

”آج آرام کرنے نہیں گئے حکیم جی۔“گھر جاتے ہوئے ایک جان پہچان کے دکاندار نے پوچھا۔

”بس جانے کی سوچ رہا ہوں۔ کچھ کام نکل آیا تھا، سوچا، کرتا چلوں ۔“وید جی دیوار سے پیٹھ ٹکا کر بیٹھ گئے۔ کرتا اتار کر ایک طرف رکھ دیا۔ اِکہری چھت کی دکان بھٹی سی تپ رہی تھی۔ وید جی کی آنکھیں بری طرح نیند سے بوجھل ہو رہی تھیں۔ ایک جھپکی آگئی ۔۔کچھ وقت ضرور گزر گیا تھا۔ رہانہیں گیا تو رجسٹر کا تکیہ بناکر انہوں نے پیٹھ سیدھی کی۔ پر نیند۔۔آتی اور چلی جاتی، نہ جانے کیا ہو گیا تھا۔

دفعتاً ایک آہٹ نے انہیں چونکا دیا۔ آنکھیں کھولتے ہوئے وہ اٹھ کر بیٹھ گئے۔ بچن لال دوپہر بِتا کر واپس آ گیا تھا۔

”ارے، آج آپ ابھی تک گئے ہی نہیں ۔“اس نے کہا۔

وید جی زور زور سے پنکھا جھلنے لگے۔ بچن لال نے دکان سے اترتے ہوئے پوچھا،”کسی کا انتظار ہے کیا؟“

”ہاں ، ایک مریض آنے کو کہہ گیا تھا ۔ ابھی تک آیا نہیں۔“وےد جی نے بچن لال کو جاتے دیکھا تو بات درمیان میں ہی منقطع کرکے خاموش ہو گئے اور اپنا پسینہ پونچھنے لگے۔

٭٭٭

دادی اماں

کرشنا سوبتی/عامر صدیقی

ہندی کہانی

………………..

کرشنا سوبتی،پیدائش :۸۱ فروری ۵۲۹۱ ئ، گجرات، ہند۔میدان:ناول، کہانی۔ اہم تخلیقات:ناول: ڈار سے بچھڑی،مترو مرجانی، یاروں کے یار تن پہاڑ، سورج مکھی اندھیرے کے، سوبتی ایک صحبت،زندگی نامہ، اے لڑکی،سمیہ سرگم، جینی مہربان سنگھ،کہانیوں کے مجموعے: بادلوں کے گھیرے، نفیسہ،سکہ بدل گیا،۔ایوارڈ، اعزازات:ساہتیہ اکادمی ایوارڈ، شرومنی ایوارڈ، شلاکا ایوارڈ، مےتھلی شرن گپت سمان وغیرہ۔ حال مقیم نئی دہلی، ہند۔

…………

بہار پھر آ گئی۔ بسنت کی روشن ہوائیں پت جھڑ کے پھیکے ہونٹوں کو چپکے سے چوم گئیں۔ جاڑے نے سکڑے سکڑے پنکھ پھڑپھڑائے اور سردی دور ہو گئی۔ آنگن میں پیپل کے درخت پر نئے پات کِھل کِھل آئے۔ خاندان کے ہنسی خوشی میں تیرتے دن رات مسکرا اٹھے۔

بھرا بھرایا گھر۔ سنبھلی سنوری سی خوبصورت سلونی بہویں۔ شوخیوں سے کھلکھلاتی بیٹیاں۔ مضبوط بازووالے نوجوان بیٹے۔ گھر کی مالکن مےہراں اپنے ہرے بھرے خاندان کو دیکھتی ہے اورمسرت میں بھیگ جاتی ہیں، یہ پانچوں بچے اسکی عمر بھر کی کمائی ہیں۔

اسے وہ دن نہیں بھولتے، جب بیاہ کے بعد چھ سالوں تک اس کی گود نہیں بھری تھی۔ اٹھتے بیٹھتے ساس کی گھمبیر کٹھور نظریں، اسکے پورے بدن کو ٹٹولتی رہتیں۔ رات کو تکیے پر سر رکھے رکھے وہ سوچتی کہ شوہر کی محبت کے سائے میں لپٹے لپٹے بھی اس میں کچھ مہمل سا ہو گیا ہے، قابل عمل نہیں رہ گیا ہے۔ کبھی ہچکچاتی سی سسر کے پاس سے گزرتی تو لگتا کہ اس گھر کی دہلیز پر پہلی بار پاو ¿ں رکھنے پر جو آشیش اسے ملی تھی، وہ اس کی قدر نہیں کر پائی۔ وہ سسر کے چرنوں میں جھکی تھی اور انہوں نے سر پر ہاتھ رکھ کر کہا تھا،”بہورانی، پھولو پھلو۔“ کبھی آئینے کے سامنے کھڑی کھڑی وہ بانہیں پھیلا کر دیکھتی۔کیا ان بانہوں میں اپنے پیدا ہوئے کسی ننھے منے کو بھر لینے کی صلاحیت نہیں؟

چھ سالوں کے طویل انتظار کے بعد سردیوں کی ایک لمبی رات میں کروٹ بدلتے بدلتے میہراں کو پہلی بار لگا تھا کہ جیسے نرم نرم لحاف میں وہ سکڑی پڑی ہے، ویسے ہی اس میں، اس کے تن من کے نیچے گہرائی میں کوئی دھڑکن اس سے لپٹی ہوئی ہے۔ اس نے اندھیرے میں ایک بار سوئے ہوئے شوہر کی طرف دیکھا اور خود ہی سے شرماکر اپنے ہاتھوں سے آنکھیں ڈھانپ لی تھیں۔ بند پلکوں کے اندر سے دو چمکتی آنکھیں تھیں، دو ننھے ننھے ہاتھ تھے، دو پاو ¿ں تھے۔ صبح اٹھ کر کسی میٹھے اطمینان میں گھری گھری سی انگڑائی لی تھی۔ آج اس کا دل بھرا ہوا ہے۔ ساس نے بھانپ کرپیار برسایا تھا۔ ”بہو،خود کو تھکاﺅ مت، جوآرام آرام سے کر سکو، کرو۔ باقی میں سنبھال لوں گی۔ “

وہ مضبوطی سے مسکرا دی تھی۔ کام پر جاتے شوہر کو دیکھ کردل میں آیا تھا کہ کہے۔ ”اب تم باہر ہی نہیں، میرے اندر بھی ہو۔“

دن میں ساس آ بیٹھی، ماتھا سہلاتے سہلاتے بولی۔ ”بہورانی،بھگوان میرے بچے کو تم سا روپ دے اور میرے بیٹے سا جگرا۔“

بہو کی پلکیں جھک گئیں۔

”بیٹی، اس مالک کا نام لو، جس نے بیج ڈالا ہے۔ وہ پھل بھی دے گا۔ “

مےہراں کو ماں کا گھر یاد آگیا۔ پاس پڑوس کی عورتوں کے درمیان ماں ،بھابھی کا ہاتھ آگے کر کہہ رہی ہے،”بابا، یہ بتاو ¿، میری بہو کی قسمت میں کتنے پھل ہیں؟“

پاس کھڑی میہراں سمجھ نہیں پائی۔ ہاتھ میں پھل؟

”ماں، ہاتھ میں پھل کب ہوتے ہیں؟ پھل کسے کہتی ہو ماں؟“

ماں لڑکی کی بات سن کر پہلے ہنسی، پھر ناراض ہو کر بولی،”دور ہو میہراں ، جا، بچوں کے ساتھ کھیل۔“

اس دن میہراں کا چھوٹا سا دماغ یہ سمجھ نہیں پایا تھا، لیکن آج تو ساس کی بات وہ سمجھ ہی نہیں، بوجھ بھی رہی تھی۔ بہو کے ہاتھ میں پھل ہوتے ہیں، بہو کی قسمت میں پھل ہوتے ہیں اور خاندان کی بیل بڑھتی ہے۔

مےہراں کی گود سے اس کے خاندان کی بیل بڑھی ہے۔ آج گھر میں تین بیٹے ہیں، اُن کی بہویں ہیں۔ بیاہ کے لائق دو بیٹیاں ہیں۔ ہلکے ہلکے کپڑوں میں لپٹی اسکی بہویں جب اس کے سامنے جھکتی ہیں، تو لمحے بھر کےلئے میہراں کے دماغ میں گھر کی مالکن ہونے کا غرور ابھر آتا ہے۔ وہ بیٹھے بیٹھے انہیں آشیش دیتی ہے اور مسکراتی ہے۔ ایسے ہی، جیسے وہ کبھی اپنی ساس کے سامنے جھکتی تھی۔ آج تو وہ تیکھی نگاہوں والی مالکن، بچوں کی دادی اماں بن کر رہ گئی ہے۔ پچھواڑے کے کمرے میں سے جب دادا کے ساتھ بولتی ہوئی اماں کی آواز آتی ہے، تو پوتے لمحے بھر ٹھٹک کرسنی ان سنی کر دیتے ہیں۔ بہویں ایک دوسرے کو دیکھ کر دل ہی دل میں ہنستی ہیں۔ لاڈلی بیٹیاں سر ہلا ہلا کر کھلکھلاتی ہوئی کہتی ہیں،”دادی اماں بوڑھی ہوگئیں، پر دادا سے جھگڑنا نہیں چھوڑا۔“

مےہراں بھی کبھی کبھار شوہر کے قریب کھڑی ہو کہہ دیتی ہے،”اماں ناحق باپو کے پیچھے پڑی رہتی ہیں۔ بہو بےٹیوںوالا گھر ہے، کیا یہ اچھا لگتا ہے؟“

شوہرصاحب ایک بار پڑھتے پڑھتے آنکھیں اوپر اٹھاتے ہیں۔ لمحے بھر کےلئے بیوی کی طرف دیکھتے ،پھر دوبارہ صفحے پر نظریں گڑا دیتے ہیں۔ ماں کی بات پر شوہر کی خاموش بھری سنجیدگی میہراں کو نہیں بھاتی۔ لیکن لاکھ کوشش کرنے پر بھی وہ کبھی شوہر کو کچھ کہہ دینے تک، اکسا نہیں پائی۔ بیوی پر ایک اچٹتی نگاہ، اور بس۔ کسی کو حکم دیتی میہراں کی آواز سن کر کبھی انہیں وہم ہوجاتا ہے۔ وہ میہراں کی نہیں اماں کی رعب دار آواز ہے۔ ان کے ہوش میں اماں نے کبھی ڈھیلاپن جانا ہی نہیں۔ یاد نہیں آتا کہ کبھی ماں کے کہنے کو وہ جانے انجانے میں ٹال سکے ہوں۔ اور اب جب ماں کی بات پر بیٹیوں کو ہنستے سنتے ہیں، تو یقین نہیں آتا۔ کیا واقعی ماں آج ایسی باتیں کیا کرتی ہیں کہ جن پر بچے ہنس سکیں۔

اور اماں تو سچ مچ اٹھتے بیٹھتے بولتی ہے، جھگڑتی ہے، جھکی کمر پر ہاتھ رکھ کر وہ چارپائی سے اٹھ کر باہر آتی ہے، تو جو سامنے ہو ،اس پر برسنے لگتی ہے۔ بڑا پوتا کام پر جا رہا ہے۔ دادی اماں پاس آ کھڑی ہوئی۔ ایک بار اوپر تلے دیکھا اور بولی،”کام پر جا رہے ہو بیٹے، کبھی دادا کی طرف بھی دیکھ لیا کرو، کب سے ان کا جی اچھا نہیں۔ جس گھر میں بھگوان کے دئیے بیٹے پوتے ہوں، وہ اس طرح بغیر دوا دارو کے پڑے رہتے ہیں۔ ”

بیٹا دادی اماں سے نظر بچاتا ہے۔ دادا کی خبر کیا گھر بھر میں اسے ہی رکھنی ہے۔ چھوڑو، کچھ نہ کچھ کہتی ہی جائیں گی اماں، مجھے دیر ہو رہی ہے۔ لیکن دادی اماں جیسے راہ روک لیتی ہے،”ارے بیٹا، کچھ تو لحاظ کرو، بہو بیٹے والے ہوئے، میری بات تم کو اچھی نہیں لگتی۔“

مےہراں ،منجھلی بہو سے کچھ کہنے جا رہی تھی، لوٹتی ہوئی بولی،”اماں کچھ تو سوچو، لڑکا بہو بےٹوںوالا ہے۔ تو کیا اس پر آپ اس طرح برستی رہو گی؟“

دادی اماں نے اپنی بوڑھی آنکھوں سے میہراں کو دیکھا اور جل کر کہا،”کیوں نہیں بہو، اب تو بیٹوں کو کچھ کہنا تم سے پوچھ کرہوگا۔ یہ بیٹے تمہارے ہیں، گھر بار تمہارا ہے، حکم کا حق تمہارا ہے۔ “

مےہرا ںپر ان سب کا کوئی اثر نہیں ہوا۔ ساس کو وہیں کھڑا چھوڑ کروہ بہو کے پاس چلی گئی۔ دادی اماں نے اپنی بوڑھی آنکھوں سے بہو کی یہ رعب دار چال دیکھی اور اونچی آواز میں بولی،”بہورانی، اس گھر میں اب میرا اتنا سا، مان رہ گیا ہے۔ تمہیں اتنا گھمنڈ ۔۔۔“

 میہراں کو ساس کے پاس لوٹنے کی خواہش نہیں تھی، پر گھمنڈ کی بات سن کر لوٹ آئی،”گھمنڈ کی بات کرتی ہو اماں؟ تو آئے دن چھوٹی چھوٹی بات لے کر جلنے جلانے سے کسی کا مان نہیں رہتا۔“

اس الٹی بات نے دادی اماں کومزید جلا دیا۔ ہاتھ ہلا ہلا کر غصے میں رک رک کر بولی،”بہو، یہ سب تمہارے اپنے سامنے آئے گا۔ تم نے جو میرا جینا دوبھر کر دیا ہے، تمہاری تینوں بہویں بھی تمہیں اسی طرح سمجھےں گی،کیوں نہیں، ضرور سمجھےںگی۔ “

یہ کہتے کہتے دادی اماں جھکی کمر سے چھوٹے چھوٹے قدم اٹھاتی اپنے کمرے کی طرف چل دی۔ راستے میں بیٹے کے کمرے کا دروازہ کھلا دیکھا تو بولی،”جس بیٹے کو میں نے اپنا دودھ پلا کر پالا، آج اسے دیکھے مجھے مہینوں گزر جاتے ہیں، اس سے اتنا نہیں ہو پاتا کہ بوڑھی اماں کو یاد کرے۔“

 میہراں منجھلی بہو کو گھر کے کام دھندے کےلئے حکم دے رہی تھی۔ پر کان ادھر ہی تھے۔ ”بہویں اسے بھی سمجھےں گی۔“ اس بددعاکو وہ تلخ گھونٹ سمجھ کر پی گئی تھی، پر شوہر کےلئے ساس کی یہ ملامت سن کر نہ رہا گیا۔ دور سے ہی بولی،”اماں، میری بات چھوڑو، پرائے گھر کی ہوں، پر جس بیٹے کو گھر بھر میں سب سے زیادہ تمہارا خیال ہے، اس کےلئے یہ کہتے تمہیں شرم نہیں آتی؟ پھر کون ماں ہے، جو بچوں کو پالتی پوستی نہیں۔“

اماں نے اپنی جھریوں بھری گردن پیچھے کی۔ پیشانی پر پڑے تیوروں میں اس بار غصہ نہیں قیامت تھی۔ چہرے پر وہی پراناانداز لوٹ آیا،”بہو، کس سے کیا کہا جاتا ہے، یہ تم بڑے سمدھیوں سے ماتھا لگا کر سب کچھ بھول گئی ہو۔ماں اپنے بیٹے سے کیا کہے، یہ بھی کیا اب مجھے بیٹے کی بہو سے ہی سیکھنا پڑے گا؟ سچ کہتی ہو بہو،سب مائیں بچوں کو پالتی ہیں۔ میں نے کوئی انوکھا بیٹا نہیں پالا تھا، بہو۔ پھر تمہیں تو میں پرائی بیٹی ہی مانتی رہی ہوں۔ تم نے بچے خود جنے، خود ہی وہ دن کاٹے، خود ہی بیماریاں جھےلیں۔ “

 میہراں نے کھڑے کھڑے چاہا کہ ساس ان سب کے بعد کچھ اور بھی کہتی۔ وہ اتنی دور نہیں اتری کہ ان باتوں کا جواب دے۔ خاموشی سے شوہر کے کمرے میں جا کر ادھر ادھر بکھرے کپڑے بچانے لگی۔

دادی اماں کڑوے دل سے اپنی چارپائی پر جا پڑی۔ بڑھاپے کی عمر بھی کیسی ہوتی ہے۔ جیتے جی دل سے سنگ ٹوٹ جاتا ہے۔ کوئی پوچھتا نہیں، جانتا نہیں۔ گھر کے پچھواڑے جسے وہ اپنی چلتی عمر میں کوٹھری کہا کرتی تھی، اسی میں آج وہ اپنے شوہر کے ساتھ رہتی ہے۔ ایک کونے میں اس کی چارپائی اور دوسرے کونے میں شوہر کی، جس کے ساتھ اس نے ان گنت بہاریں اور پت جھڑ گزار دیئے ہیں۔ کبھی گھنٹوں وہ خاموشی سے اپنی اپنی جگہ پر پڑے رہتے ہیں۔ دادی اماں بیچ بیچ میں کروٹ بدلتے ہوئے گہری سانس لیتی ہے۔ کبھی کچی نیند میں پڑی پڑی سالوں پہلے کی کوئی بھولی بسری بات کرتی ہے، پر بچوں کے دادا اُسے سنتے نہیں۔ دور کمروں میں بہوو ¿ں کی میٹھی دبی دبی ہنسی ویسے ہی چلتی رہتی ہے۔ بیٹیاں کھل کھل کر کھلکھلاتی ہیں۔ بیٹوں کے قدموں کی بھاری آواز کمرے تک آکر رہ جاتی ہے اور دادی اماں اور پاس پڑے دادا میں جیسے گزر گئے برسوں کی دوری جھولتی رہتی ہے۔

آج دادا جب گھنٹوں دھوپ میں بیٹھ کر اندر آئے تو اماں لیٹی ہوئی نہیں، چارپائی کی پٹی پر بیٹھی تھی۔ گاڑھے کی دھوتی سے پورا تن نہیں ڈھکا تھا۔ پلّو کندھے سے گر کر ایک طرف پڑا تھا۔سینہ کھلا تھا۔ آج سینے میں ڈھکنے کو رہ بھی کیا گیا تھا؟گلے اور گردن کی جھریاں ایک جگہ آکر جمع ہو گئی تھیں۔ بوڑھے سینے پر کئی تل چمک رہے تھے۔ سر کے بال بے ترتیبی سے پیشانی کے اوپر بکھرے تھے۔

دادا نے دیکھ کر بھی نہیں دیکھا۔اپنے جیسا ہی پرانا کوٹ اتار کر کھونٹی پر لٹکایا اور چارپائی پر لیٹ گئے۔ دادی اماں دیر تک بغیر ہلے ڈلے جوں کی توں بیٹھی رہی۔ سیڑھیوں پر چھوٹے بیٹے کے قدموں کی امنگوں بھری سی آہٹ ہوئی۔ امنگ کی چھوٹی سی گنگناہٹ دروازے تک آکر لوٹ گئی۔ بیاہ کے بعد کے وہ دن، میٹھی مدھر دن۔ پاو ¿ں بار بار گھر کی طرف لوٹتے ہیں۔ پیاری سی بہو آنکھوں میں محبت بھر بھر دیکھتی ہے، لجاتی ہے، ہچکچاتی ہے اور شوہر کی بانہوں میں لپٹ جاتی ہے۔ ابھی کچھ مہینے ہوئے، یہی چھوٹا بیٹا پیشانی پر پھولوں کا سہرا لگا کر بارات لے گیا تھا۔ باجے گاجے کے ساتھ جب لوٹا تو سنگ میں دلہن تھی۔

سب کے ساتھ دادی اماں نے بھی بہو کا ماتھا چوم کر اسے ہاتھ کا کنگن دیا تھا۔بہو نے جھک کر دادی اماں کے پاو ¿ں چھوئے تھے اور اماں لین دین پر میہراں سے لڑائی جھگڑے کی بات بھول کر بہت پلوں تک دلہن کے مکھڑے کی طرف دیکھتی رہی تھی۔ چھوٹی بیٹی نے چنچل پن سے ہنس کر کہا تھا،”دادی اماں سچ کہو بھیا کی دلہن تمہیں پسند آئی؟ کیا تمہارے دنوں میں بھی شادی بیاہ میں ایسے ہی کپڑے پہنے جاتے تھے؟“

یہ کہہ کر چھوٹی بیٹی نے دادی کے جواب کا انتظار نہیں کی۔ ہنسی ہنسی میں کسی دوسری جانب پلٹ گئی۔ میہراں، بہو بیٹے کوگھیر کر اندر لے چلی۔ دادی اماں بھٹکی بھٹکی نظر سے لوگوں کے چہرے دیکھتی رہی۔ کوئی پاس پڑوسن اسے مبارکباد دے رہی تھی،”مبارک ہو اماں، سونے سی بہو آئی ہے شکر ہے اس مالک کا، تم نے اپنے ہاتھوں چھوٹے پوتے کا بھی کاج سنوارا۔“

اماں نے سر ہلایا۔واقعی آج اس جیسا کون ہے۔ پوتوں کی اسے ہونس تھی، آج پوری ہوئی۔ پر کاج سنوارنے میں اس نے کیا کیا، کسی نے کچھ پوچھا نہیں تو کرتی کیا؟ سمدھیوں سے بات چیت، لین دین، دلہن کے کپڑے گہنے، یہ سب میہراں کے ہنرمند ہاتھوں سے ہوتا رہا ہے۔ گھر میں پہلے دو بیاہ ہو جانے پر اماں سے صلاح مشورہ کرنا بھی ضروری نہیں رہ گیا۔ صرف کبھی کبھی کوئی نیا گہنا گڑھوانے پر یا نیا جوڑا بنوانے پر میہراں اسے ساس کو دکھا تی رہی ہے۔

بڑی بیٹی دیکھ کہتی ہے،”ماں، اماں کو دکھانے جاتی ہو، وہ تو کہیں گی کہ یہ گلے کا گہنا ہاتھ لگاتے اڑتا ہے۔ کوئی بھاری ٹھوس کنٹھا بنواﺅ، سر کی سنگار پٹی بنواﺅ۔ میرے اپنے بیاہ میں میکے سے پچاس تولے کا رانی ہار چڑھا تھا۔ تمہیں یاد نہیں، تمہارے سسر کو کہہ کر اسی کے بھاری جڑاﺅ کنگن بنوائے تھے تمہارے بیاہ میں۔ ”

 میہراں ، بیٹی کی طرف لاڈ سے دیکھتی ہے۔ لڑکی جھوٹ نہیں کہتی۔ بڑے بیٹوں کی سگائی میں، بیاہ میں، اماں بیسیوں بار یہ دہرا چکی ہیں۔ اماں کو کون سمجھائے کہ یہ پرانی باتیں پرانے دنوں کے ساتھ گئیں۔ اماں ناطے رشتوں کی بھیڑ میں بیٹھی بیٹھی اونگھتی رہی۔ اچانک آنکھ کھلی تو نیچے لٹکتے پلو سے سر ڈھک لیا۔ ایک بے خبری کہ بغیر سرڈھانکے بیٹھی رہی۔ پر دادی اماں کو اس طرح خود کو سنبھالتے کسی نے دیکھا تک نہیں۔ اماں کی جانب دیکھنے کا خیال بھی کسے ہے؟

بہو کو نیا جوڑا پہنایا جا رہا ہے۔ روشنی میں دلہن شرما رہی ہے۔ نندیں مسخرہ پن کر رہی ہیں۔ میہراں گھر میں تیسری بہو کو دیکھ کر دل ہی دل میں سوچ رہی ہے کہ بس، اب دونوں بیٹیوں کو ٹھکانے لگا دے تو سرخ رُو ہو۔

بہو کا سنگھار دیکھ دادی اماں بیچ بیچ میں کچھ کہتی ہیں،”لڑکیوں میں یہ کیسا چلن ہے آج کل؟ بہو کے ہاتھوں اور پیروں میں مہندی نہیں رچائی ۔ یہی تو پہلا شگن ہے۔“ دادی اماں کی اس بات کو جیسے کسی نے سنا نہیں۔

سنگھار میں چمکتی بہو کو گھیر کر میہراں دولہا کے کمرے کی طرف لے چلی۔ رشتے ناتے کی لڑکیاں مسکرا مسکراکر شرمانے لگیں، دولہے کے دوست ،بھائی آنکھوں میں نہیں، بانہوں میں نئی نئی تصویریں بھرنے لگے اور میہراں بہوپر آشیرواد برساکر لوٹی تو دہلیز کے ساتھ لگی ہے دادی اماں کو دیکھ کر پیار جتاکر بولی،” آﺅ اماں، شکر ہے بھگوان کا، آج ایسی میٹھی گھڑی آئی۔“

اماں سر ہلاتی ہلاتی ،میہراں کے ساتھ ہو لی، پر آنکھیں جیسے سالوں پیچھے گھوم گئیں۔ ایسے ہی ایک دن وہ میہراں کو اپنے بیٹے کے پاس چھوڑ آئی تھی۔ وہ اندر جاتی تھی، باہر آتی تھی۔ وہ اِس گھر کی مالکن تھی۔

پیچھے مزید پیچھے، باجے گاجے کے ساتھ اس کا اپنا ڈولا اس گھر کے سامنے آ کھڑا ہوا۔گہنوں کی چھنکار کرتی وہ نیچے اتری۔ گھونگھٹ کی اوٹ سے مسکراتی، نیچے جھکتی اور شوہر کی بوڑھی پھوپھی سے آشیرواد پاتی۔

دادی اماں کو اونگھتے دیکھ کر بڑی بیٹی ہلا کر کہنے لگی،”اٹھو اماں، جاکر سو جاﺅ، یہاں تو ابھی دیر تک ہنسی مذاق ہوتا رہے گا۔“ دادی اماں موندی آنکھوں سے پوتی کی جانب دیکھتی ہے اور جھکی کمر پر ہاتھ رکھ کر اپنے کمرے کی طرف لوٹ جاتی ہے۔

اس دن اپنی چارپائی پر لیٹ کر دادی اماں سوئی نہیں۔ آنکھوں میں نہ اونگھ تھی، نہ نیند۔ ایک دن وہ بھی دلہن بنی تھی۔ بوڑھی پھوپھی نے سجاکر اسے بھی شوہر کے پاس بھیجا تھا۔ تب کیا اس نے یہ کوٹھری دیکھی تھی؟ بیاہ کے بعد برسوں تک اس نے جیسے یہ جانا ہی نہیں کہ پھوپھی دن بھر کام کرنے کے بعد رات کو یہاں سوتی ہے۔ آنکھیں مند جانے سے پہلے جب پھوپھی بیمار ہوئی تو دادی اماں نے سعادت مند بہو کی طرح اس کی خدمت کرتے کرتے پہلی بار یہ جانا تھا کہ گھر میں اتنے کمرے ہوتے ہوئے بھی پھوپھی اس پچھواڑے میں اپنے آخری برس کاٹ گئی ہے۔ پر یہ دیکھ کر، جان کر اسکو حیرت نہیں ہوئی تھی۔

گھر کے پچھواڑے میں پڑی پھوپھی کا بدن چھاﺅںدار درخت کے پرانے تنے کی طرح لگتا تھا، جس کے پتوں کی چھاﺅں اس سے الگ، اس سے آگے، گھر بھر میں پھیلی ہوئی تھی۔ آج تو دادی اماں خود پھوپھی بن کر اس کوٹھری میں پڑی ہے۔ بیاہ کے ہنگامے سے نکل کر جب دادا تھک کر اپنی چارپائی پر لیٹے ،تو ایک لمبی چین کی سی سانس لے کر بولے،”کیا سو گئی ہو؟ اس بار کی رونق، لین دین تو منجھلے اور بڑے بیٹے کے بیاہ کو بھی پار کر گئی۔ سمدھیو ںکا بڑا گھر ٹھہرا۔“

دادی اماں لین دین کی بات پر کچھ کہنا چاہتی تھی پر بولی نہیں بولی۔ خاموشی سے پڑی رہی۔ دادا سو گئے،آوازیں دھیمی ہو گئیں۔ برآمدے میں میہراں کا رعب دار لہجہ ،نوکروں چاکروں کو صبح کےلئے ا حکامات دے کر خاموش ہو گیا۔ دادی اماں پڑی رہی اور کچی نیند سے گھری آنکھوں سے نئی پرانی تصویریں دیکھتی رہی۔ اچانک کروٹ لیتے لیتے، دو چار قدم اٹھائے اور دادا کی چارپائی کے پاس آ کھڑی ہوئی۔ جھک کر بہت دیر تک دادا کی طرف دیکھتی رہی۔ دادا نیند میں بے خبر تھے اور دادی جیسے کوئی پرانی شناسائی کر رہی ہو۔ کھڑے کھڑے کتنے لمحے گزر گئے۔ کیا دادی نے دادا کو پہچانا نہیں؟ چہرہ اس کے شوہر کا ہے پر دادی تو اس چہرے کو نہیں، چہرے کے نیچے شوہر کو دیکھنا چاہتی ہے۔ ان بچھڑ گئے سالوں کو واپس لوٹا لینا چاہتی ہے۔

سرہانے پر موجود دادا کا سر بالکل سفید تھا۔ بند آنکھوں کے ارد گرد جھریاں ہی جھریاں تھیں۔ ایک سوکھا ہاتھ کمبل پر سکڑا سا پڑا تھا۔ یہ نہیں ۔۔یہ تو نہیں۔۔ دادی اماں جیسے سوتے سوتے جاگ پڑی تھی، ویسے ہی اس بھولے بھٹکے بھنور میں اوپر سے نیچے ہوتی چارپائی پر جا پڑی۔

اس دن صبح اٹھ کر جب دادی اماں نے دادا کو باہر جاتے دیکھا تو لگا کہ رات بھر کی بھٹکی بھٹکی تصویروں میں سے کوئی بھی تصویر اس کی نہیں تھی۔ وہ اس سوکھے بدن اور جھکے کندھوں میں کسے ڈھونڈ رہی تھی؟ دادی اماں چارپائی کی بانہوں سے اٹھی اور لیٹ گئی۔ اب تو اتنے سے ہی معمولات باقی رہ گئے ہیں۔ بیچ بیچ میں کبھی اٹھ کر بہوو ¿ں کے کمروں کی جانب جاتی ہے تو لڑ جھگڑکر لوٹ آتی ہے، کیسے ہیں اس کے پوتے جو عمر کی مستی میں کسی کی بات نہیں سوچتے؟ کسی کی طرف نہیں دیکھتے؟ بہو اور بیٹا، انہیں بھی کہاں فرصت ہے؟ میہراں تو کچھ نہ کچھ کہہ کر چوٹ کرنے سے بھی نہیں چوکتی۔ لڑنے کو تو دادی بھی کم نہیں، پر اب تیز اونچی آواز میں بات کرنے پر جیسے وہ تھک کر چور چور ہو جاتی ہے۔ بولتی ہے، بولے بغیر رہ نہیں سکتی، بعد میں گھنٹوں بیٹھی سوچتی رہتی ہے کہ وہ کیوں ان سے متھا لگاتی ہے، جنہیں اسکی پروا نہیں۔ میہراں کی تو اب چال ڈھال ہی بدل گئی ہے۔ اب وہ اس کی بہو نہیں، تین بہوو ¿ں کی ساس ہے۔ ٹھہری ہوئی سنجیدگی سے گھر کی حکومت چلاتی ہے۔ دادی اماں کا بیٹا اب زیادہ دوڑ دھوپ نہیں کرتا۔ میل ملاقات سے زیادہ اب بہوو ¿ں کی جانب سے سسر کا مان سمان ہی زیادہ ہوتا ہے۔ کبھی اندر باہر جاتے اماں مل جاتی ہے تو جھک کر بیٹا ماں کو پرنام ضرور کرتا ہے۔ دادی اماں گردن ہلاتے ہلاتے آشیرواد دیتی ہے،”جیو بیٹا، جیو۔“

کبھی میہراں کی جلی کٹی باتیں سوچ کربیٹے پر غصہ کرنے اورڈانٹنے کو د ل کرتا ہے، پر بیٹے کو پاس دیکھ کر دادی اماں سب بھول جاتی ہے۔ ممتا بھری بوڑھی آنکھوں سے بغور دیکھ کر بار بارآشیرباد برساتی چلی جاتی ہے،”سکھ پاﺅ،بھگوان بڑی عمر دے۔۔“ کتنا سنجیدہ اور سعادت مند ہے اس کا بیٹا۔ ہے تو اس کا نہ؟ پوتوں کو ہی دیکھ سکتے ہیں، کبھی جھک کر دادا کے پاو ¿ں تک نہیں چھوتے۔ آخر ماں کا اثر کیسے جائے گا؟ ان دنوں بہو کی بات سوچتے ہی دادی اماں کو لگتا ہے کہ اب میہراں اس کے بیٹے میں نہیں اپنے بیٹوں میں لگی رہتی ہے۔ دادی اماں کو وہ دن بھول جاتے ہیں جب بیٹے کے بیاہ کے بعد بہو بیٹے کے لاڈ پیار میں اسے شوہر کے کھانے پینے کا خیال تک نہ رہتا تھا اور جب لاکھ لاکھ منتیں کرنے پر پہلی بار میہراں کی گود بھرنے والی تھی تو دادی اماں نے آکر دادا سے کہا تھا،”بہو کے لئے اب یہ کمرہ خالی کرنا ہوگا۔ ہم لوگ پھوپھی کے کمرے میں جاکر رہیں گے۔“

دادا نے بھرپور نظروں سے دادی اماں کی طرف دیکھا تھا، جیسے وہ گزرے سالوں کو اپنی نظروں سے ٹٹولنا چاہتے ہوں۔ پھر سر پر ہاتھ پھیرتے پھیرتے کہا تھا،”کیا بیٹے والا کمرہ بہو کے لئے ٹھیک نہیں؟ ناحق کیوں یہ سب کچھ الٹا سیدھا کرواتی ہو؟“

دادی اماں نے ہاتھ ہلا کر کہا،”اوہ ہو، تم سمجھو گے بھی۔ بیٹے کے کمرے میں بہو کو رکھوں گی تو بیٹا کہاں جائے گا؟ الٹے سیدھے کی فکرتم کیوں کرتے ہو، میں سب ٹھیک کر لوں گی۔“

اور بیوی کے چلے جانے پر دادا بہت دیر بیٹھے بھاری دل سے سوچتے رہے کہ جن سالوں کابیتنا انہوں نے آج تک نہیں جانا، انہی پر بیوی کی امید پہاڑ بن کر آج کھڑی ہو گئی ہے۔ آج سچ مچ ہی اسے اس الٹ پھیر کی پروا نہیں۔

اس کمرے میں بڑی پھوپھی انکی دلہن کو چھوڑ گئی تھی۔ اس کمرے کو چھوڑ کر آج وہ پھوپھی کے کمرے میں جا رہے ہیں۔ لمحے بھر کے لئے، صرف لمحے بھر کے لئے انہیں بیٹے سے جلن ہوئی اور بے حسی میں بدل گئی اور پہلی رات جب وہ پھوپھی کے کمرے میں سوئے تو رات گئے تک بھی بیوی، بہو کے پاس سے نہیں لوٹی تھی۔ کچھ دیر انتظار کرنے کے بعد ان کی پلکیں جھپکیں تو انہیں لگا کہ ان کے پاس بیوی نہیں پھوپھی کا ہاتھ ہے۔ دوسرے دن میہراں کی گود بھرائی تھی، بیٹا ہوا تھا۔ گھر کی مالکن شوہر کی بات جاننے کے لئے بہت زیادہ مصروف تھی۔

کچھ دن سے دادی اماں کا جی اچھا نہیں۔ دادا دیکھتے ہیں، پر بڑھاپے کی بیماری سے کوئی دوسری بیماری بڑی نہیں ہوتی۔ دادی اماں بار بار کروٹ بدلتی ہے اور پھر کچھ کچھ دیر کے لئے ہانپ کر پڑی رہ جاتی ہے۔ دو ایک دن سے وہ باورچی خانے کی طرف بھی نہیں آئی، جہاں میہراں کا قبضہ رہتے ہوئے بھی وہ کچھ نہ کچھ نوکروں کو سنانے میں چوکتی نہیں ہے۔ آج دادی کو نہ دیکھ کر چھوٹی بیٹی ہنس کر منجھلی بھابھی سے بولی،”بھابھی، دادی اماں کے پاس اب شاید کوئی لڑنے جھگڑنے کی بات نہیں رہ گئی، نہیں تو اب تک کئی بار چکر لگاتی۔“

دوپہر کو نوکر جب اماں کے یہاں سے ان چھوئی تھالی اٹھا لایا تو میہراں کا ماتھا ٹھنکا۔ اماں کے پاس جا کر بولی،”اماں، کچھ کھا لیا ہوتا، کیا جی اچھا نہیں؟“

 اماں کچھ بولی نہیں۔ لمحے بھر رک کر آنکھیں کھولیںاور میہراں کو دیکھتی رہ گئی۔

”کھانے کو دل نہ ہو تو اماں دودھ ہی پی لو۔“

اماں نے ہاں ،نہ کچھ نہیں کہا۔ نہ پلکیں ہی جھپکیں۔ ان نظروں سے میہراں بہت سالوں کے بعد آج پھر ڈری۔ ان میں نہ غصہ تھا، نہ تحقیر تھی، نہ بیزاری تھی۔ ایک گہری ملامت پہچاننے میں میہراں کو دیر نہیں لگی۔

ڈرتے ڈرتے ساس کے ماتھے کو چھوا۔ ٹھنڈے پسینے سے بھیگا تھا۔ پاس بیٹھ کر آہستہ سے پیار بھرے لہجے میں بولی،”اماں، جو کہو، بنا لاتی ہوں۔“

اماں نے پڑے پڑے سر ہلایا، نہیں، کچھ نہیں اور بہو کے ہاتھ پر سے اپنا ہاتھ کھینچ لیا۔

 میہراں لمحے بھر کچھ سوچتی رہی اور بغیر آہٹ کئے باہر چلی گئی۔ بڑی بہو کے پاس جا کر فکر مند لہجے میں بولی،”بہو، اماں کچھ زیادہ بیمار لگتی ہیں، تم جا کر پاس بیٹھو تو میں کچھ بنا لاو ¿ں۔“

بہو نے ساس کی آواز میں آج پہلی بار دادی اماں کےلئے گھبراہٹ دیکھی۔ دبے پاو ¿ں جاکر اماں کے پاس بیٹھ کر ہاتھ پاو ¿ں دبانے لگی۔ اماں نے اس بار ہاتھ نہیں کھینچے۔ نڈھال سی لیٹی رہی۔

 میہراں نے باورچی خانے میں جا کر دودھ گرم کیا۔ اوٹانے لگی تو اچانک ہاتھ اٹک گیا،کیا اماں کےلئے یہ آخری بار دودھ لئے جا رہی ہے؟

دادی اماں نے مد ہوشی میں دو چار گھونٹ دودھ پی کر چھوڑ دیا۔ چارپائی پر پڑی اماں چارپائی کے ساتھ لگی دیکھتی تھیں۔ کمرے میں کچھ زیادہ چیزیں نہیں تھا۔ سامنے کے کونے میں دادا کا بچھونا بچھا تھا۔

شام کو دادا آئے تو اماں کے پاس بہو اور بیٹی کو بیٹھے دیکھ کر پوچھا،”اماں تمہاری روٹھ کر لیٹی ہے یا۔۔۔۔؟“

 میہراں نے اماں کا بازو آگے کر دیا۔ دادا نے چھوکر ہولے سے کہا،”جاو ¿ بہو، بیٹا آتا ہی ہوگا۔ اسے ڈاکٹر کولانے بھیج دینا۔ ” میہراں سسر کے الفاظ کی سنجیدگی کو جانتے ہوئے خاموشی سے باہرنکل گئی۔ بیٹے کے ساتھ جب ڈاکٹر آیا تو دادی اماں کے تینوں پوتے بھی پیچھے آ کھڑے ہوئے۔ ڈاکٹر نے ماہر ہاتھوں سے دادی کی جانچ کی۔ جاتے جاتے دادی کے بیٹے سے کہا،”کچھ ہی گھنٹے اور۔۔“ میہراں نے بہوو ¿ں کو دھیمے لہجے میں حکم دیئے اور بیٹوں سے بولی،”باری باری کھا پی لو، پھر باپ اور دادا کو بھیج دینا۔“ اماں کے پاس سے ہٹنے کی والد اور دادا کی باری نہیں آئی اس رات۔ دادی نے بہت جلدی کی۔ ڈوبتے ڈوبتے ہاتھ پاﺅں سے چھٹپٹاکر ایک بار آنکھیں کھولیں اور بیٹے اور شوہر کے آگے بانہیں پھیلا دیں۔ جیسے کہتی ہو، ”مجھے تم پکڑ کے رکھو۔“

اماں کا سانس اکھڑا، دادا کاگلا جکڑا اور بیٹے نے ماں پر جھک کر پکارا،”اماں ۔۔۔اماں۔“

”سن رہی ہوں بیٹا، تمہاری آواز پہچانتی ہوں۔“

 میہراں ،ساس کی جانب بڑھی اور ٹھنڈے پڑتے پاو ¿ں چھوکر التجا بھری نظروں سے دادی اماں کو بچھڑتی آنکھوں سے دیکھنے لگی۔ بہو کو روتے دیکھ کر اماں کی آنکھوں میں لمحے بھر کو اطمینان جھلکا، پھر سالوں کی لڑائی جھگڑے کا تاثر ابھرا۔ دروازے سے لگی تینوں پوتوں کی بہویں کھڑی تھیں۔ میہراں نے ہاتھ سے اشارہ کیا۔ باری باری دادی اماں کے قریب تینوں جھکیں۔ اماں کی پتلیوں میں زندگی بھر کا موہ اتر گیا۔ میہراں سے الجھا کڑواپن معدوم ہو گیا۔ چاہا کہ کچھ کہے ۔۔کچھ۔۔ پر چھوٹتے تن سے دادی اماں، ہونٹوں پر کوئی لفظ نہیں کھینچ پائی۔

”اماں، بہوو ¿ں کو آشیرواد دیتی جاﺅ۔“ میہراں کے گیلے سے لہجے میں اصرار تھا،گذارش تھی۔

اماں نے آنکھوں کے جھلملاتے پردے میں سے اپنے پورے خاندان کی طرف دیکھا بیٹا ۔۔بہو ۔۔شوہر۔۔پوتی بہو۔۔پوتیاں۔ چھوٹی پوتی بہو کی گلابی اوڑھنی جیسے دادی کے تن من پر بکھر گئی۔ اس اوڑھنی سے لگے گورے گورے لال لال بچے، ہنستے کھیلتے، بھولی کلکاریاں۔۔۔

دادی اماں کی دھندلی آنکھوں میں سے اور سب مٹ گیا، سب اڑ گیا، صرف ڈھیر سارے ان گنت بچے کھیلتے رہ گئے ۔۔۔۔

اس کے پوتے، ان کے بچے ۔۔۔

باپ اور بیٹے نے ایک ساتھ دیکھا، اماں جیسے ہلکے سے ہنسی، ہلکے سے۔۔۔

 میہراں کو لگا، اماں بالکل ویسے ہنس رہی ہے جیسے پہلی بار بڑے بیٹے کی پیدائش پر وہ اسے دیکھ کر ہنسی تھی۔ سمجھ گئی-بہوو ¿ں کوآشیرواد مل گیا۔ دادا نے اپنے سوکھے ہاتھ میں نانی کا ہاتھ لے کر آنکھوں سے لگایا اور بچوں کی طرح بلک بلک کر رو پڑے۔ رات گزر جانے سے پہلے دادی اماں گزر گئی۔ اپنے بھرے پورے خاندان کے بیچ وہ اپنے شوہر، بیٹے اور پوتوں کے ہاتھوں میں آخری بار گھر سے اٹھ گئی۔ انتم سنسکارہوا اور دادی اماں کا بوڑھا بدن خاک ہوگیا۔

دیکھنے سننے والے بولے،”قسمت ہو تو ایسی، پھلتا پھولتا خاندان۔“

 میہراں نے اداس اداس دل سے سب کے لئے نہانے کا سامان جٹایا۔ گھر باہر دھلایا۔ عزیز رشتہ دار، پاس پڑوس، اب تک لوٹ گئے تھے۔ موت کے بعد روکھی سہمی سی دوپہر۔ اَن چاہے دل سے کچھ کھا پی کر گھر والے خاموشی سے بیٹھ گئے۔ اماں چلی گئی، پر خاندان بھراپورا ہے۔ پوتے تھک کراپنے اپنے کمروں میں جا لیٹے۔ بہوئیں اٹھنے سے پہلے ساس کا فرمان لینے کے لیے بیٹھی رہیں۔ دادی اماں کا بیٹا نڈھال ہوکر کمرے میں جا لیٹا۔ اماں کی خالی کوٹھری کا دھیان آتے ہی من بہہ آیا۔ کل تک اماں تھی تو سہی اس کوٹھری میں۔ روہانسی آنکھیں برس کر جھک آئیں تو خواب میں دیکھا، دریا کنارے گھاٹ پر اماں کھڑی ہے،اپنی چتا کو جلتے دیکھ کر کہتی ہے۔”جاو ¿ بیٹا، دن ڈھلنے کو آیا، اب گھر لوٹ چلو، بہو راہ دیکھ رہی ہوگی۔ ذرا سنبھل کر جانا۔ بہو سے کہنا، بیٹیوں کو اچھے ٹھکانے لگائے۔“

منظر بدلا، اماں دروازے پر کھڑی ہے۔ جھانک کر اس کی طرف دیکھتی ہے۔”بیٹا، اچھی طرح کپڑا اوڑھ کر سو۔ ہاں بیٹا، اٹھو تو۔کوٹھری میں باپو کو مل آو ¿، یہ دکھ ان سے نہ جھیلا جائے گا۔ بیٹا، باپو کو دیکھتے رہنا۔ تمہارے باپو نے میرا ہاتھ پکڑا تھا، اسے آخر تک نبھایا، پر میں ہی چھوڑ چلی۔“ بیٹے نے ہڑبڑاکر آنکھیں کھولیں۔ بہت دیر دروازے کی طرف دیکھتے رہے۔ اب کہاں سے آئے گی اماں اس دہلیز پر۔۔۔

بغیر آہٹ کئے میہراں آئی۔ روشنی کی۔ چہرے پر اماں کی یاد نہیں، اماں کا دکھ تھا۔ شوہر کو دیکھ کر ذرا سی روئی اور بولی،”جا کر سسرجی کو تو دیکھو۔ پانی تک منہ نہیں لگایا۔“

شوہر کھڑکی میں سے کہیں دور دیکھتے رہے۔ جیسے دیکھنے کے ساتھ کچھ سن بھی رہے ہوں۔ ”بیٹا، باپو کو دیکھتے رہنا، تمہارے باپو نے تو آخر تک ساتھ نبھایا، پر میں ہی چھوڑ چلی۔“

”اٹھو۔“ میہراں کپڑا کھینچ شوہر کے پیچھے ہو لی۔ اماں کی کوٹھری میں اندھیرا تھا۔ باپو اسی کوٹھری کے کونے میں اپنی چارپائی پر بیٹھے تھے۔ نظریں دادی اماں کی چارپائی والی خالی جگہ پر گڑی تھی۔ بیٹے کو آیا دیکھ کر بھی ہلے نہیں۔

”باپو، اٹھو، چل کر بچوں میں بیٹھو، جی سنبھلے گا۔“

باپو نے سر ہلا دیا۔

 میہراں اور بیٹے کی بات باپو کوگویا سنائی نہیں دی۔ پتھر کی طرح بغیر ہلے ڈلے بیٹھے رہے۔ بہو ،بیٹا، بیٹے کی ماں۔۔۔خالی دیواروں پر اماں کی تصویریں اوپر سے نیچے ہوتی رہیں۔ دروازے پر اماں گھونگھٹ نکالے کھڑی ہے۔ باپو کو اندر آتے دیکھ کر شرماتی ہے اور پھوپھی کی آڑ میں ہو جاتی ہے۔ پھوپھی پیار سے ہنستی ہے۔ پیٹھ پر ہاتھ پھیر کر کہتی ہے۔”بہو، میرے بیٹے سے کب تک شرماﺅگی؟“

اماں بیٹے کو گود میں لیے دودھ پلا رہی ہیں، باپو گھوم پھر کر پاس آ کھڑے ہوتے ہیں۔ تیور چڑھے۔ بکھرے بال پھیلائے کہتے ہیں۔”میری دیکھ بھال اب سب بھول گئی ہو۔ میرے کپڑے کہاںڈال دیئے؟ ” اماں بیٹے کے سر کو سہلاتے سہلاتے مسکراتی ہے۔ پھر باپو کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر کہتی ہے۔”اپنے ہی بیٹے سے محبت کا بٹوارہ کرکے اوپر سے جھنجھلانے لگے۔“

باپو اس بار جھنجھلاتے نہیں، جھجکتے ہیں، پھر اچانک دودھ پیتے بیٹے کو اماں سے لے کر چوم لیتے ہیں۔ منے کے نازک نرم ہونٹوں پر دودھ کی سفیدی اب بھی چمک رہی ہے۔ باپو اندھیرے میں اپنی آنکھوں پر ہاتھ پھیرتے ہیں۔ ہاتھ گیلے ہو جاتے ہیں۔ ان کے بیٹے کی ماں آج نہیں رہی۔

تینوں بیٹے دبے قدموں جاکر دادا کو جھانک آئے۔ بہوئیںساس کا حکم پاکر اپنے اپنے کمروں میں جا کر لیٹ گئیں۔ بیٹیوں کو سوتا جان میہراں شوہر کے پاس آئی تو سر دباتے دباتے پیار سے بولی،”اب حوصلہ کرو۔“ ۔۔۔ لیکن اچانک کسی کی گہری سسکی سن کے چونک پڑی۔ شوہر پر جھک کر بولی،”باپو کی آواز لگتی ہے، دیکھو تو۔“

بیٹے نے جاکر باہروالا دروازہ کھول دیا، پیپل سے لگا جھکا سا سایا۔ بیٹے نے کہنا چاہا۔”باپو۔“ پر بیٹھے گلے سے آواز نکلی نہیں۔ ہوا میں پتے کھڑکھڑائے،ٹہنیاں ہلیں اور باپو کھڑے کھڑے سسکتے رہے۔

”باپو۔“

اس بار باپو کے کانوں میں بڑے پوتے کی آواز آئی۔ سر اونچا کیا، تو تینوں بیٹوں کے ساتھ دہلیز پر جھکی میہراں دکھائی پڑی۔ آنسوو ¿ں میں دھند بہہ گئی تھی۔ میہراں اب گھر کی بہو نہیں، گھر کی اماں لگتی ہے۔ بڑے بیٹے کا ہاتھ پکڑ کر باپو کے قریب آئی۔ جھک کر بڑے پیار سے بولی،”باپو، اپنے ان بیٹوں کی طرف دیکھو، یہ سب اماں کا ہی تو کروفرہے۔ مہینے بھر کے بعد بڑی بہو کی جھولی بھرے گی، اماں کا خاندان اور پھولے پھلے گا۔“

باپو نے اس بار سسکی نہیں بھری۔ آنسوو ¿ں کو کھل کر بہہ جانے دیا۔ درخت کے سخت تنے سے ہاتھ اٹھاتے اٹھاتے سوچا ،دور تک زمین میں بیٹھی بے شمار جڑیں اندر ہی اندر اس بڑے پرانے پیپل کو تھامے ہوئے ہیں۔ دادی اماں اسے مسلسل پانی دیا کرتی تھی۔ آج وہ بھی زمین میں مل گئی ہے۔ اسکے تن سے ہی تو بےٹے پوتے کا یہ خاندان پھیلا ہوا ہے۔پیپل کی گھنی چھاﺅں کی طرح یہ اور پھےلے گا۔ بہو سچ کہتی ہے۔ یہ سب اماں کا ہی کروفر ہے۔ وہ مری نہیں۔ وہ تو اپنے بدن پر موجود کپڑے بدل گئی ہے، اب وہ بہو میں جئے گی، پھر بہو کی بہو میں۔۔۔

٭٭٭

 پرندے

نرمل ورما/عامر صدیقی

ہندی کہانی

…………….

 نرمل ورما،پیدائش، ۳ اپریل ۹۲۹۱ ء،شملہ، ہماچل پردیش۔ میدان:ناول، کہانی،نقاد وغیرہ۔ اہم تخلیقات :ناول،انتم ارنیہ، رات کا رپورٹر، ایک چتھڑا سکھ، لال ٹین کی چھت، وہ دن۔کہانیوں کے مجموعے: پرندے، کوے اورکالا پانی،سوکھا اور دیگر کہانیاں، بیچ بحث میں، جلتی جھاڑی،پچھلی گرمیوں،دھاگے۔رپورتاژ، سفرنامے: ہر بارش میں، چہروں پر چاندنی۔ڈرامہ: تین ایکانت۔مضامین اور تنقید:ڈھلان سے اترتے ہوئے،بھارت اور یورپ وغیرہ۔ایوارڈز، اعزازات:پدم بھوشن،ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈسمیت دیگر کئی ایوارڈز۔انتقال :۵۲ اکتوبر ۵۰۰۲ئ۔

…………

اندھیرے گلیارے میں چلتے ہوئے لتیکا ٹھٹک گئی۔ دیوار کا سہارا لے کر اس نے لیمپ کی لوبڑھا دی۔ سیڑھیوں پر اسکا سایہ ایک بے ڈول کٹی پھٹی صورت اختیار کرنے لگا۔ سات نمبر کمرے میں لڑکیوں کی بات چیت اور ہنسی مذاق کی آواز ابھی تک سنائی دے رہی تھی۔ لتیکا نے دروازہ کھٹکھٹایا۔ شور اچانک بند ہو گیا۔ ”کون ہے؟“

لتیکا خاموش کھڑی رہی۔ کمرے میں کچھ دیر تک کانا پھوسی ہوتی رہی، پھر دروازے کی چٹخنی ،کھلنے کی آوازآئی۔ لتیکا کمرے کی دہلیز سے کچھ آگے بڑھی، لیمپ کی جھپکتے شعلے میں لڑکیوں کے چہرے ،سنیما کے پردے پر ٹھہرے ہوئے کلوز اپ کی مانند ابھرنے لگے۔

”کمرے میں اندھیرا کیوں کر رکھا ہے؟“لتیکا کے لہجے میں ہلکی سی جھڑکی کا تاثر تھا۔

”لیمپ میں تیل ہی ختم ہو گیا، میڈم۔“یہ سُدھا کا کمرہ تھا، اس لئے اسے ہی جواب دینا پڑا۔ہوسٹل میں شاید وہ سب سے زیادہ مقبول تھی، کیونکہ ہمیشہ چھٹی کے وقت یا رات کو ڈنر کے بعد آس پاس کے کمروں میں رہنے والی لڑکیوں کا جمگھٹا اسی کے کمرے میں لگ جاتا تھا۔ دیر تک گپ شپ، ہنسی مذاق چلتا رہتا۔

”تیل کےلئے کریم الدین سے کیوں نہیں کہا؟“

”کتنی بار کہا میڈم، لیکن اسے یاد رہے تب تو۔“

کمرے میں ہنسی کی پھوار ایک کونے سے دوسرے کونے تک پھیل گئی۔ لتیکا کے کمرے میں آنے سے نظم و ضبط کی جو گھٹن گِھر آئی تھی، وہ اچانک بہہ گئی۔ کریم الدین ہوسٹل مین تھا۔ اس کی کاہلی اور کام میں ٹال مٹول کرنے کے قصے ،ہوسٹل کی لڑکیوں میں پیڑھی در پیڑھی چلے آتے تھے۔ لتیکا کواچانک کچھ یاد آگیا۔ اندھیرے میں لیمپ گھماتے ہوئے چاروں جانب نگاہیں دوڑائیں۔ کمرے میں چاروں طرف گھیرا بنا کر وہ بیٹھی تھیں ،پاس پاس ایک دوسرے سے چپک کر۔ سب کے چہروں سے واقفیت تھی، لیکن لیمپ کی پیلی مدھم روشنی میں گویا کچھ بدل گیا تھا، یا جیسے وہ انہیں پہلی بار دیکھ رہی تھی۔

”جولی، اب تک تم اس بلاک میں کیا کر رہی ہو؟“

جولی کھڑکی کے پاس پلنگ کے سرہانے بیٹھی تھی۔ اس نے خاموشی سے آنکھیں نیچی کر لیں۔ لیمپ کی روشنی چاروں طرف سے سمٹ کر اب صرف اس کے چہرے پر مرکوزہو رہی تھی۔

 ”نائٹ رجسٹر پر دستخط کر دیے؟“

” ہاں ، میڈم۔“

” پھر ۔۔۔؟“ لتیکا کا لہجہ سخت ہو گیا۔ جولی گھبراکر کھڑکی سے باہر دیکھنے لگی۔ جب سے لتیکا اس اسکول میں آئی ہے، اس نے محسوس کیا ہے کہ ہوسٹل کے اس اصول پر عمل، ڈانٹ پھٹکار کے باوجود نہیں ہوتا۔

 ”میڈم، کل سے چھٹیاں شروع ہوجائیں گی،اس لئے آج رات ہم سب نے مل کر ۔۔۔“ اورسُدھا پوری بات مکمل کئے بغیر، ہےمنتی کی جانب دیکھتے ہوئے مسکرانے لگی۔ پھر گویا ہوئی،”ہےمنتی کے گانے کا پروگرام ہے، آپ بھی کچھ دیر بیٹھیں نہ۔“

 لتیکاکو الجھن محسوس ہوئی۔ اس وقت یہاں آکر اِس نے، انکے مزے کو کرکرا کر دیاتھا۔ اس چھوٹے سے ہل اسٹیشن پر رہتے ہوئے اسے خاصا عرصہ ہو گیا، لیکن وقت کب، گرمیوں اورخزاں کا گھیرا پار کرکے سردی کی چھٹیوں کی گود میں سمٹ جاتا ہے، اسے کبھی یاد نہیں رہتا۔ چوروں کی طرح خاموشی سے وہ دہلیز سے باہر گئی۔ اس کے چہرے کی کشیدگی میں کمی آ گئی تھی ۔ وہ مسکرانے لگی۔ ”میرے ساتھ سنو فال دیکھنے کوئی نہیں ٹھہرے گا؟“

” میڈم، چھٹیوں میں کیا اپنے گھر نہیں جا رہی ہیں؟“سبھی لڑکیوں کی نگاہیں اس پر جم گئیں۔

 ”ابھی کچھ پکا نہیں ہے،آئی لو دی سنوفال۔“

 لتیکا کو لگا کہ یہی بات اس نے گزشتہ سال بھی کہی تھی اور شاید گزشتہ سے گزشتہ سال بھی۔ اسے لگا شاید لڑکیاں اسے شکوک بھری نظروں سے دیکھ رہی ہیں،گویا انہوں نے اس بات پر یقین نہیں کیا۔ اس کا سر چکرانے لگا، گویا بادلوں کا سیاہ جھرمٹ کسی انجانے کونے سے اٹھ کر اسے خود میں ڈوبا لے گا۔ وہ ہولے سے ہنسی، پھر آہستہ سے اس نے سر کو جھٹک دیا۔ ”جولی، تم سے کچھ کام ہے،اپنے بلاک میں جانے سے پہلے مجھ سے مل لےنا،ویل گڈ نائٹ۔“ لتیکا نے اپنے پیچھے دروازہ بند کر دیا۔

”گڈ نائٹ میڈم، گڈ نائٹ، گڈ نائٹ ۔۔۔“

لتیکاگلیارے کی سیڑھیاں نہیں اتری، بلکہ ریلنگ کے سہارے کھڑی ہو گئی۔ لیمپ کی بتی کو نیچے گھما کر کونے میں رکھ دیا۔ باہردھند کی نیلی تہیں بہت گہری ہو چلی تھیں۔ لان پر لگے ہوئے چیڑ کے پتوں کی سرسراہٹ ،ہوا کے جھونکوں کے ساتھ کبھی تیز، کبھی دھیمی ہو کر اندر بہہ آتی تھی۔ ہوا میں سردی کا ہلکا سا احساس پاکر لتیکا کے دماغ میں کل سے شروع ہونے والی چھٹیوں کا خیال کہیں سے بھٹک آیا۔ اس نے آنکھیں موند لیں ۔ اسے لگا کہ جیسے اس کی ٹانگیں بانس کی کھپچیوں کی طرح اس کے جسم سے بندھی ہیں، جس کی گانٹھیں آہستہ آہستہ کھلتی جا رہی ہیں۔ سر کا گھومنا ابھی مِٹا نہیں تھا، مگر اب جیسے وہ اندرسے نکل کر باہر پھیلی دھند کا حصہ بن گئی تھی۔

سیڑھیاں پر باتوں کاشور سن کر لتیکا جیسے سوتے سے جاگی۔ شال کو کندھوں پر سمیٹا اور لیمپ اٹھا لیا۔ ڈاکٹر مکرجی،ایم ہیوبرٹ کے ساتھ ایک انگریزی دھن گنگناتے ہوئے اوپر آ رہے تھے۔ سیڑھیاں پر اندھیرا تھا اور ہیوبرٹ کو بار باراپنی چھڑی سے راستہ ٹٹولنا پڑرہا تھا۔ لتیکا نے دو چار سیڑھیاں اتر کر لیمپ کو نیچے جھکا دیا۔ ”گڈ ایوننگ ڈاکٹر، گڈ ایوننگ ایم ہیوبرٹ ۔“

” تھینک یو مس لتیکا۔“ہیوبرٹ کے لہجے میںتشکر تھا۔ سیڑھیاں چڑھنے سے ان کی سانس تیز ہو رہی تھی اور وہ دیوار سے لگے ہوئے ہانپ رہے تھے۔ لیمپ کی روشنی میں ان کے چہرے کا پیلاپن کچھ تانبے کے رنگ جیسا ہو گیا تھا۔

”یہاں اکیلی کیا کر رہی ہو مس لتیکا ؟“ ڈاکٹر نے ہونٹوں کے اندر سے سیٹی بجائی۔

 ”چیکنگ کرکے لوٹ رہی تھی۔ آج اس وقت اوپر کیسے آنا ہوا مسٹر ہیوبرٹ ؟“

 ہیوبرٹ نے مسکراکر اپنی چھڑی ڈاکٹر کے کندھوں سے چُھلا دی،” انہی سے پوچھو، یہی مجھے زبردستی گھسیٹ کرلائے ہیں۔“

”مس لتیکا ، ہم آپ کو دعوت دینے آ رہے تھے۔ آج رات میرے کمرے میں ایک چھوٹا سا کنسرٹ ہوگا جس میں ایم ہیوبرٹ ، شوپاں اور چائیکووسکی کی کمپوزیشن بجائیں گے اور پھر کریم کافی پی جائے گی۔ اور اسکے بعد اگر وقت رہا، تو گزشتہ سال ہم نے جو گناہ کئے ہیں، انہیں ہم سب مل کر کنفینس کریں گے۔“ڈاکٹر مکرجی کے چہرے پر گہری مسکراہٹ کھیل گئی۔

”ڈاکٹر، مجھے معاف کریں، میری طبیعت کچھ ٹھیک نہیں ہے۔“

”چلئے، یہ ٹھیک رہا۔ پھر تو آپ ویسے بھی میرے پاس آتیں۔“ڈاکٹر نے آہستہ سے لتیکا کے کندھوں کو پکڑ کر اپنے کمرے کی جانب موڑ دیا۔ ڈاکٹر مکرجی کاکمرہ بلاک کے دوسرے سرے پر چھت سے جڑا ہواتھا۔ وہ آدھے برمی تھے، اسکی جھلک ان کی تھوڑی دبی ہوئی ناک اور چھوٹی چھوٹی چنچل آنکھوں سے صاف عیاں ہوتی تھی۔ برما پر جاپانیوں کا قبضہ ہونے کے بعد وہ اس مختصر سے پہاڑی شہر میں آ بسے تھے۔ پرائیویٹ پریکٹس کے علاوہ وہ کانوینٹ اسکول میں ہائی جن،فزیالوجی بھی پڑھایا کرتے تھے اور اس وجہ سے ان کو اسکول کے ہوسٹل میں ہی ایک کمرہ رہنے کےلئے دے دیا گیا تھا۔ کچھ لوگوں کا کہنا تھا کہ برما سے آتے ہوئے راستے میں ان کی بیوی کی موت واقع ہو گئی تھی، لیکن اس سلسلے میں یقینی طور پر کچھ نہیں کہا جا سکتا ،کیونکہ ڈاکٹر کبھی اپنی بیوی کے متعلق بات نہیں کرتے تھے۔

گفتگوکے دوران ڈاکٹر اکثر کہا کرتے ہیں۔ ”مرنے سے پہلے میں ایک دفعہ برما ضرور جاو ¿ں گا۔“اور پھر ایک لمحے کےلئے ان کی آنکھوں میں ایک نمی سی چھا جاتی۔ لتیکا چاہنے پر بھی ان سے کچھ پوچھ نہیں پاتی۔ اسے لگتا کہ ڈاکٹر نہیں چاہتے کہ کوئی ماضی کے تعلق کے بارے میں ان سے کچھ بھی پوچھے یا ہمدردی دکھلائے۔ دوسرے ہی لمحے اپنی سنجیدگی کو دور دھکیلتے ہوئے وہ ہنس پڑتے۔ ایک خشک، بوجھی ہوئی ہنسی۔

ہوم سکنےس ہی ایک ایسی بیماری ہے، جس کا علاج کسی ڈاکٹر کے پاس نہیں ہے۔ چھت پر میز کرسیاں ڈال دی گئیں اور اندر کمرے میں پرکولےٹر میں کافی کا پانی چڑھا دیا گیا۔

 ”سنا ہے اگلے دو تین برسوں میں یہاں پر بجلی کا بھی انتظام ہو جائے گا۔“ ڈاکٹر نے اسپرٹ لیمپ جلاتے ہوئے کہا۔

 ”یہ بات تو گزشتہ دس سالوں سے سننے میں آ رہی ہے۔ انگریزوں نے بھی کوئی لمبی چوڑی اسکیم بنائی تھی، پتہ نہیں اس کا کیا ہوا۔“ ہیوبرٹ نے کہا۔ وہ آرام کرسی پر لیٹا ہوا باہر لان کی جانب دیکھ رہا تھا۔

 لتیکا کمرے سے دو موم بتیاں لے آئی۔ میز کے دونوں سروں پر ٹکاکر انہیں جلا دیا گیا۔ چھت کا اندھیرا موم بتی کی پھیکی روشنی کے ارد گرد سمٹنے لگا۔ ایک گنجان اداسی چاروں جانب گھرنے لگی۔ ہوا میں چیڑ کے درختوں کی سائیں سائیں، دور دور تک پھیلی پہاڑیوں اور وادیوں میں سیٹیوں کی گونج سی چھوڑتی جا رہی تھی۔

”اس بار شاید برف جلدی گرے گی، ابھی سے ہوا میں ایک سرد خشکی سی محسوس ہونے لگی ہے۔“ ڈاکٹر کا سگار اندھیرے میں سرخ شعلے سا چمک رہا تھا۔

 ”پتہ نہیں، مس ووڈ کو اسپیشل سروس کا گورکھ دھندہ کیوں پسند آتا ہے۔ چھٹیوں میں گھر جانے سے پہلے، کیا یہ ضروری ہے کہ لڑکیوں فادر اےلمنڈ کا سرمن سنیں؟“ ہیوبرٹ نے کہا۔

ڈاکٹر کو فادر اےلمنڈ ایک آنکھ نہیںبھاتے تھے۔ لتیکا کرسی پر آگے جھک کر پیالوں میں کافی انڈےلنے لگی۔ ہر سال اسکول بند ہونے کے دن یہی دو پروگرام ہوتے ہیں ،چیپل میں اسپیشل سروس اور اسکے بعد دن میں پکنک۔ لتیکا کو پہلا سال یاد آیا ،جب پکنک کے بعد وہ ڈاکٹر کے ساتھ کلب گئی تھی۔ ڈاکٹر بار میں بےٹھے تھے۔ بار روم کماﺅ رجمنٹ کے افسروں سے بھرا ہوا تھا۔ کچھ دیر تک بلیئرڈ کاکھیل دیکھنے کے بعد، جب وہ واپس بار کی جانب آ رہے تھے، تب اس نے دائیں جانب کلب کی لائبریری میں دیکھا، مگر اسی دوران ڈاکٹر مکرجی پیچھے سے آ گئے تھے۔

” مس لتیکا ، یہ میجر گریش نیگی ہے۔“

بلیئرڈ روم سے آتے ہوئے ہنسی مذاق کے بیچ وہ نام دب سا گیا تھا۔ وہ کسی کتاب کے بیچ، انگلی رکھ کر لائبریری کی کھڑکی سے باہر دیکھ رہا تھا۔ ”ہیلو ڈاکٹر۔“ وہ پیچھے مڑا۔ تب اس لمحے ۔۔۔

اس لمحے نہ جانے کیوں لتیکا کا ہاتھ کانپ گیا اور کافی کے کچھ گرم قطرے اس کی ساڑی پر چھلک گئے۔ اندھیرے میں کسی نے نہیں دیکھا کہ لتیکا کے چہرے پر ایک سپاٹ سا احساس گِھر آیا ہے۔ ہوا کے جھونکے سے موم بتیوں کی لو تھرتھرانے لگی۔ چھت سے بھی بلند کاٹھگودام جانے والی سڑک پر یو پی روڈویز کی آخری بس، ڈاک لے کر جا رہی تھی۔ بس کی ہیڈ لائٹس میں آس پاس پھیلی ہوئی جھاڑیوں کے سائے ،گھر کی دیوار پر سرکتے ہوئے غائب ہونے لگے۔

”مس لتیکا ، آپ اس سال بھی چھٹیوں میں یہیں رہیں گی؟“ڈاکٹر نے پوچھا۔

ڈاکٹر کا سوال ہوا میںمعلق رہا۔ اسی لمحے پیانو پر شوپاں کا نوکٹرن ،ہیوبرٹ کی انگلیوں کے نیچے سے پھسلتا ہوا آہستہ آہستہ چھت کے اندھیرے میں گھلنے لگا،جیسے پانی پرکومل خوابیدہ لہریں، بھنوروں کا جھلملاتا جال بنتی ہوئیں، دور دور کناروں تک پھیلتی جا رہی ہوں۔ لتیکا کو لگا کہ جیسے کہیں بہت دور برف کی چوٹیوں سے پرندوں کے جھنڈ نیچے انجان دیشوں کی جانب اڑے جا رہے ہیں۔ ان دنوں اکثر اس نے اپنے کمرے کی کھڑکی سے انہیں دیکھا ہے۔دھاگے میں بندھے چمکیلے لٹوﺅں کی طرح وہ ایک لمبی، ٹیڑھی میڑھی قطار میں اڑے جاتے ہیں، پہاڑوں کی سنسان اداسیوں سے پرے، ان عجیب شہروں کی جانب جہاں شاید وہ کبھی نہیں جائے گی۔

 لتیکا آرام کرسی پر اونگھنے لگی۔ ڈاکٹر مکرجی کا سگار اندھیرے میں چپ چاپ جل رہا تھا۔ ڈاکٹر کو تعجب ہوا کہ لتیکا نہ جانے کیا سوچ رہی ہے اور لتیکا سوچ رہی تھی،”کیا وہ بوڑھی ہوتی جا رہی ہے؟“ اس کے سامنے اسکول کی پرنسپل مس ووڈ کا چہرہ گھوم گیا،پوپلا منہ، آنکھوں کے نیچے جھولتی ہوئی گوشت کی تھےلیاں، ذرا ذرا سی بات پر چڑ جانا، کرخت آواز میںچیخنا۔سب اس ”اولڈمےڈ“ کہہ کر پکارتے ہیں۔ چند سالوں بعد وہ بھی ہو بہو ویسی ہی بن جائے گی ۔ لتیکا کے پورے جسم میں جھرجھری سی دوڑ گئی،مانو جیسے انجانے میںاس نے کسی غلیظ چیز کو چھو لیا ہو۔ اسے یاد آیا، چند مہینے پہلے اچانک اسے ہیوبرٹ کا محبت نامہ ملا تھا ،جذباتی التجا ﺅںسے بھرا ہوا ایک خط، جس میں اس نے نہ جانے کیا کچھ لکھا تھا، جو کبھی اس کی سمجھ میں نہیں آیا۔ اسے ہیوبرٹ کی اس بچکانہ حرکت پر ہنسی آئی تھی، لیکن اندرہی اندر خوشی بھی محسوس ہوئی تھی۔ اس کی عمر ابھی بیتی نہیں ہے، اب بھی وہ دوسروں کو اپنی جانب متوجہ کر سکتی ہے۔ ہیوبرٹ کا خط پڑھ کر اسے غصہ نہیں آیا، آئی تھی تو صرف ممتا۔ وہ چاہتی تو اسکی غلط فہمی کو دور کرنے میں دیر نہ لگتی، لیکن کوئی طاقت اُسے روکے رہتی ہے، اس کی وجہ سے خود پر یقین رہتا ہے، اپنی خوشیوں کابھرم گویا ہیوبرٹ کی غلط فہمی سے جڑاہے ۔

 ہیوبرٹ ہی کیوں، وہ کیا کسی کو چاہ سکے گی، اس آگاہی کے سنگ، جو اب نہیں رہی، جو سائے سی اس پر منڈراتی رہتی ہے، نہ خود مٹتی ہے، نہ اسے نجات دے پاتی ہے۔ اسے لگا، جیسے بادلوں کا جھرمٹ پھر اسکے ذہن پر آہستہ آہستہ چھانے لگا ہے، اس کی ٹانگیں پھرسُن اور یخ بستہ سی ہو گئی ہیں۔ وہ جھٹکے سے اٹھ کھڑی ہوئی ۔

 ”ڈاکٹر معاف کرنا، مجھے بہت تھکاوٹ سی لگ رہی ہے ۔۔۔۔۔“بات مکمل کئے بغیر ہی وہ چلی گئی۔ کچھ دیر تک ٹےرس پرمردنی چھائی رہی۔ موم بتیاں بجھنے لگی تھیں۔ ڈاکٹر مکرجی نے سگار کا نیاکش لیا۔ ”سبھی لڑکیاں ایک جیسی ہوتی ہے،بیوقوف اور سےنٹی مینٹل۔“

ہیوبرٹ کی انگلیوں کا دباو ¿ پیانو پر ڈھیلا پڑتا گیا، آخری بار سروں کی جھجکی سی باز گشت کچھ لمحوں تک ہوا میں تیرتی رہی۔

”ڈاکٹر، آپ کو معلوم ہے، مس لتیکا کا رویہ گزشتہ کچھ عرصے سے عجیب سا لگتا ہے۔“ ہیوبرٹ کے انداز میں لاپرواہی کا تاثر تھا۔ وہ نہیں چاہتا تھا کہ ڈاکٹر کو لتیکا کے تئیں اس کے اندرونی جذبات کا رتی برابر بھی اندازہ ہو سکے۔ جس کومل احساس کو وہ اتنے عرصے سے سیج رہا ہے، ڈاکٹر اسے ہنسی کے ایک قہقہے میں مضحکہ خیز بنا دے گا۔

 ”کیا تم قسمت میں یقین رکھتے، ہیوبرٹ ؟“ڈاکٹر نے کہا۔ ہیوبرٹ دم روکے انتظار کرتا رہا۔ وہ جانتا تھا کہ کوئی بھی بات کہنے سے پہلے ڈاکٹر کوفلاسوفائز کرنے کی عادت تھی۔ ڈاکٹر ٹےرس کے جنگلے سے چپک کر کھڑا ہو گیا۔ پھیکی سی چاندنی میں، چیڑ کے پےڑو ںکے سائے، لان پر پھیل رہے تھے۔ کبھی کبھی کوئی جگنو اندھیرے میں سبز روشنی چھڑکتا ،فضا میں غائب ہو جاتا تھا۔

”میں کبھی کبھی سوچتا ہوں، انسان زندہ کس لئے رہتا ہے۔کیا اسے کوئی اور بہتر کام کرنے کو نہیں ملا؟ ہزاروں میل اپنے ملک سے دور میں یہاں پڑا ہوں۔ یہاں کون مجھے جانتا ہے، یہیں شاید مر بھی جاو ¿ں گا۔ ہیوبرٹ ، کیا تم نے کبھی محسوس کیا ہے کہ ایک اجنبی کی حیثیت سے پرائی زمین پر مر جانا کافی خوفناک خیال ہے ۔۔۔۔“

 ہیوبرٹ حیران سا ڈاکٹر کو دیکھنے لگا۔ اس نے پہلی بار ڈاکٹر مکرجی کے اس پہلو کو دیکھا تھا۔اپنی بابت وہ اکثر خاموش رہتے تھے۔

”کوئی پیچھے نہیں ہے، یہ بات مجھ میں ایک عجیب قسم کی بے فکری پیدا کر دیتی ہے۔ لیکن کچھ لوگوں کی موت آخر دم تک پہیلی بنی رہتی ہے، شاید وہ زندگی سے بہت امید لگاتے تھے۔ اسے ٹریجک بھی نہیں کہا جا سکتا، کیونکہ آخری دم تک انہیں مرنے کا احساس نہیں ہوتا۔“

” ڈاکٹر، آپ کس کا ذکر کر رہے ہیں؟“ ہیوبرٹ نے پریشان ہوکر پوچھا۔ ڈاکٹر کچھ دیر تک خاموشی سے سگار پیتا رہا۔ پھر مڑ کر وہ موم بتیوں کی بجھتی ہوئی لو کو دیکھنے لگا۔

”تمہیں معلوم ہے، کسی وقت لتیکا بلا ناغہ کلب جایا کرتی تھی۔ گریش نیگی سے اس کا تعارف وہیں ہوا تھا۔ کشمیر جانے سے ایک رات پہلے اس نے مجھے سب کچھ بتا دیا تھا۔ میں اب تک لتیکا سے اس ملاقات کے بارے میں کچھ نہیں کہہ سکا ہوں۔ لیکن اس رات کون جانتا تھا کہ وہ واپس نہیں لوٹے گا۔ اور اب۔۔اب کیا فرق پڑتا ہے۔ لیٹ دی ڈیڈ۔ ڈائی ۔۔۔“ڈاکٹر کی خشک اور سرد ہنسی میں خالی پن بھرا تھا۔

”کون گریش نیگی؟“

” کماﺅ رجمنٹ میں کیپٹن تھا۔“

” ڈاکٹر، کیا لتیکا ۔۔۔“ ہیوبرٹ سے مزید کچھ نہیں کہا گیا۔ اسے یاد آیا وہ خط، جو اس نے لتیکا کو بھیجا تھا، کتنا بے معنی اور احمقانہ، جیسے اس کا ایک ایک لفظ اس کے دل کو کچوٹ رہا ہو۔ اس نے آہستہ سے پیانو پر سر ٹکا لیا۔ لتیکا نے اسے کیوں نہیں بتایا، کیا وہ اس قابل بھی نہیں تھا؟

 ” لتیکا ۔۔۔ وہ تو بچی ہے، پاگل۔ مرنے والے کے ساتھ خود تھوڑے ہی مرا جاتا ہے۔“

کچھ دیر خاموش رہ کر ڈاکٹر نے اپنے سوال کو دوبارہ دہرایا۔ ”لیکن ہیوبرٹ ، کیا تم قسمت پر یقین رکھتے ہیں؟“

ہوا کے ہلکے جھونکے سے موم بتیاں ایک بارٹمٹماکر بجھ گئیں۔ ٹےرس پر ہیوبرٹ اور ڈاکٹر اندھیرے میں ایک دوسرے کا چہرہ نہیں دیکھ پا رہے تھے، پھر بھی وہ ایک دوسرے کی طرف دیکھ رہے تھے۔ کانوےنٹ اسکول سے کچھ دور میدانوں میں بہتے پہاڑی نالے کی آواز آ رہی تھی۔ اب بہت دیر بعدکماﺅ رجمنٹ سےنٹر کا بگل سنائی دیا، تو ہیوبرٹ ہڑبڑاکر کھڑا ہو گیا۔ ”اچھا، چلتا ہوں، ڈاکٹر، گڈ نائٹ۔“

”گڈ نائٹ ہیوبرٹ ۔۔۔معاف کرنا، میں سگار ختم کرکے اٹھوںگا ۔۔۔“

صبح کی بدلی چھائی تھی۔ لتیکا کے کھڑکی کھولتے ہی دھندکابادل سا اندر گھس آیا، جیسے رات بھر دیوار کے سہارے سردی میں ٹھٹھرتا ہوا وہ اندر آنے کا انتظار کر رہا ہو۔ اسکول سے اوپر چیپل جانے والی سڑک بادلوں میں چھپ گئی تھی، بس چیپل کا ”کراس“ دھند کے پردے پر ایک دوسرے کو کاٹتی ہوئی پنسل کی لکیروں جیسا دکھائی دے جاتا تھا۔

 لتیکا نے کھڑکی سے آنکھیں ہٹائیں، تو دیکھا کہ کریم الدین چائے کی ٹرے لئے کھڑا ہے۔ کریم الدین ملٹری میںاردلی رہ چکا تھا،اسی لئے ٹرے میز پر رکھ کر ”اٹےنشن“کی حالت میں کھڑا ہو گیا۔ لتیکا جھٹکے سے اٹھ بیٹھی۔ صبح سے آلسی کرکے کتنی بار جاگ کر وہ سو چکی ہے۔اپنا کھسیاناپن مٹانے کےلئے لتیکا نے کہا ،”بڑی سردی ہے آج، بستر چھوڑنے کو جی نہیں چاہتا۔“

”اجی میم صاحب، ابھی کیا سردی آئی ہے۔ بڑے دنوں میں دیکھنا کیسے دانت کٹکٹاتے ہیں۔“اورکریم الدین اپنے ہاتھوں کو بغلوں میں ڈالے ہوئے اس طرح سکڑ گیا ،جیسے ان دنوں کے محض تصور سے ہی اسے جاڑا لگنا شروع ہو گیا ہو۔ گنجے سر پر دونوں اطراف موجود اسکے بال خضاب لگانے سے کتھئی رنگ کے بھورے ہو گئے تھے۔ بات چاہے کسی موضوع پر ہو رہی ہو، وہ ہمیشہ کھینچ تان کر اسے ایسے مقام پر گھسیٹ لاتا تھا، جہاں وہ بلا جھجھک اپنے خیالات کا ا ظہار کر سکے۔

”ایک دفعہ تو یہاں لگاتار اتنی برف گری تھی کہ بھوالی سے لے کر ڈاک بنگلے تک کی ساری سڑکیں جام ہو گئیں۔ اتنی برف تھی میم صاحب کہ درختوں کی ٹہنیاں تک سکڑ کر تنوں سے لپٹ گئی تھی ،بالکل ایسے۔“اور کریم الدین ،نیچے جھک کرمرغا سا بن گیا۔

 ”کب کی بات ہے؟“ لتیکا نے پوچھا۔

”اب یہ تو حساب جوڑ کرکے ہی پتہ چلے گا، میم صاحب، لیکن اتنا یاد ہے کہ اس وقت انگریز بہادر یہیں تھے۔ کنٹونمنٹ کی عمارت پر قومی جھنڈا نہیں لگا تھا۔ بڑے زبردست تھے یہ انگریز، دو گھنٹوں میں ہی ساری سڑکیں صاف کروا دیں۔ ان دنوں ایک سیٹی بجاتے ہی پچاس گھوڑسوار جمع ہو جاتے تھے۔ اب تو سارے شیڈز خالی پڑے ہیں۔ وہ لوگ اپنی خدمت بھی کروانا جانتے تھے، اب توسب اجاڑ ہو گیا ہے۔“کریم الدین اداسی بھرے انداز سے باہر دیکھنے لگا۔ آج یہ پہلی دفعہ نہیں ہے جب لتیکا، کریم الدین سے اُن دنوں کی باتیں سن رہی ہے ،جب انگریز بہادر نے اس جگہ کو جنت بنا رکھا تھا۔

 ”آپ چھٹیوں میں اس سال بھی یہی رہیں گی میم صاحب؟“

” لگتا تو کچھ ایسا ہی ہے کریم الدین ، تمہیں پھر تنگ ہونا پڑے گا۔“

” کیا کہتی ہیں میم صاحب۔ آپ کے رہنے سے ہمارا بھی من لگ جاتا ہے، ورنہ چھٹیوں میں تو یہاں کتے لوٹتے ہیں۔“

”تم ذرا مستری سے کہہ دینا کہ اس کمرے کی چھت کی مرمت کر جائے۔ گئے سال برف کا پانی دراڑوں سے ٹپکتا رہتا تھا۔“ لتیکا کو یاد آیا کہ پچھلی سردیوں میں جب کبھی برف گرتی تھی، تو اسے پانی سے بچنے کے لئے رات بھر کمرے کے کونے میں سمٹ کر سونا پڑتا تھا۔

 کریم الدین چائے کی ٹرے اٹھاتا ہوا بولا۔ ” ہیوبرٹ صاحب تو شاید کل ہی چلے جائیں، کل رات ان کی طبیعت پھر خراب ہو گئی۔ آدھی رات کے وقت مجھے جگانے آئے تھے۔ کہتے تھے،چھاتی میں تکلیف ہے۔ انہیں یہ موسم راس نہیں آتا۔ کہہ رہے تھے، لڑکیوں کی بس میں وہ بھی کل ہی چلے جائیں گے۔“ کریم الدین دروازہ بند کرکے چلا گیا۔ لتیکا کی خواہش ہوئی کہ وہ ہیوبرٹ کے کمرے میں جا کر ان کی طبیعت کے بارے میں پوچھ آئے۔ لیکن پھر نہ جانے کیوں سلیپر پیروں میں ٹنگے رہے اور وہ کھڑکی کے باہر بادلوں کو اڑتا ہوا دیکھتی رہی۔ ہیوبرٹ کا چہرہ، جب اسے دیکھ کر سہما سا ،قابلِ رحم ساہو جاتا ہے، تب لگتا ہے کہ وہ اپنی خاموشی بھری معصوم التجاﺅں میں اسے کوس رہا ہے ۔ نہ وہ اس کی غلط فہمی کو دور کرنے کی کوشش کر پاتی ہے، نہ اسے اپنی مجبوریوں کی صفائی دینے کی ہمت ہوتی ہے۔ اسے لگتا ہے کہ اس جال سے باہر نکلنے کے لئے وہ دھاگے کے جس سرے کوبھی پکڑتی ہے، وہ خود ایک گرہ بن کر رہ جاتا ہے۔

باہر بونداباندی ہونے لگی تھی، کمرے کی ٹین کی چھت ٹن ٹن بولنے لگی۔ لتیکا پلنگ سے اٹھ کھڑی ہوئی۔ بستر کو صاف کرکے بچھایا۔ پھر پیروں میں سلیپروں کو گھسیٹتے ہوئے وہ بڑے آئینے تک آئی اور اسکے سامنے پڑے اسٹول پر بیٹھ کر بالوں کو کھولنے لگی۔ مگر کچھ دیر تک کنگھی بال میں ہی الجھی رہی اور وہ گم صم ہوئی شیشے میں اپنا چہرہ تکتی رہی۔ کریم الدین کو یہ کہنا یاد ہی نہیں رہا کہ دھیرے دھیرے آگ جلانے کی لکڑیاں جمع کر لے۔ ان دنوں سستے داموں سوکھی لکڑیاں مل جاتی ہیں۔ پچھلے سال تو کمرہ دھوئیں سے بھر جاتا تھا، جس کی وجہ سے کپکپاتے جاڑے میں بھی اسے کھڑکی کھول کر ہی سونا پڑتا تھا۔

آئینے میں لتیکا نے اپنا چہرہ دیکھا ۔ وہ مسکرا رہی تھی۔پچھلے سال اپنے کمرے کی سیلن اور ٹھنڈ سے بچنے کےلئے کبھی کبھی وہ مس ووڈ کے خالی کمرے میں چوری چپکے سونے چلی جایا کرتی تھی۔ مس ووڈ کا کمرہ بغیر آگ کے بھی گرم رہتا تھا، ان کے گدیلے سوفے پر لیٹتے ہی آنکھ لگ جاتی تھی۔ کمرہ چھٹیوں میں خالی پڑا رہتا ہے، لیکن مس ووڈ سے اتنا نہیں ہوتا کہ دومہینوں کےلئے اسکے حوالے کر جائیں۔ ہر سال کمرے میں تالا مار کر جاتی ہیں۔ وہ تو پچھلے سال غسل خانے میں اندرونی کنڈی لگانا بھول گئی تھیں، جسے لتیکا چور دروازے کے طور پر استعمال کرتی رہی تھی۔

پہلے سال اکیلے میں اسے بڑا ڈر سا لگتا تھا۔ چھٹیوں میں سارے اسکول اور ہوسٹل کے کمرے سائیں سائیں کرنے لگتے ہیں۔ ڈر کے مارے اسے جب کبھی نیند نہیں آتی تھی، تب وہ کریم الدین کو رات گئے تک باتوں میں الجھائے رکھتی۔ باتوں میں جب کھوئی سی وہ سو جاتی، تب کریم الدین خاموشی سے لیمپ بجھا کر چلا جاتا۔ کبھی کبھی بیماری کا بہانہ کر کے وہ ڈاکٹر کو بلا بھیجتی تھی اور بعد میں بہت ضد کرکے دوسرے کمرے میں ان کا بستر لگوا دیتی۔

 لتیکانے کندھے سے بالوں کا گچھا نکالا اور اسے باہر پھینکنے کےلئے وہ کھڑکی کے پاس آ کھڑی ہوئی۔ باہر چھت کی ڈھال سے بارش کے پانی کی موٹی سی دھار مسلسل لان پر گر رہی تھی۔ بادلوں سے بھرے آسمان میں سرکتے ہوئے بادلوں کے پیچھے پہاڑیوں کے جھنڈ کبھی ابھر آتے تھے، کبھی چھپ جاتے تھے، گویا چلتی ہوئی ٹرین سے کوئی انہیں دیکھ رہا ہو۔ لتیکا نے کھڑکی سے سر باہر نکال لیا ،ہوا کے جھونکے سے اس کی آنکھیں بند ہو گئیں۔ اسے جتنے کام یاد آتے ہیں، اتنی ہی کاہلی بڑھ جاتی ہے۔ بس کی سیٹیں ریزرو کروانے کے لئے چپراسی کو روپے دینے ہیں۔ جو سامان ہوسٹل کی لڑکیاں پیچھے چھوڑے جا رہی ہیں، انہیں گودام میں رکھواناہوگا۔ کبھی کبھی تو چھوٹی کلاس کی لڑکیوں کے ساتھ پیکنگ کروانے کے کام میں بھی اسے ہاتھ بٹانا پڑتا تھا۔

وہ ان کاموں سے اُوبتی نہیں۔ آہستہ آہستہ سب نمٹتے جاتے ہیں، کوئی غلطی ادھر ادھر رہ جاتی ہے، سو بعد میں سدھر جاتی ہے۔ ہر کام میں کھچ کھچ رہتی ہے، پریشانی اور دقت ہوتی ہے، لیکن دیر سویر اس سے چھٹکارا مل ہی جاتا ہے ۔لیکن جب لڑکیوں کی آخری بس چلی جاتی ہے، تب دل اچاٹ سا ہو جاتا ہے۔ خالی کاریڈور میں گھومتی ہوئی وہ کبھی اِس کمرے میں جاتی ہیں اور کبھی اُس میں۔ وہ نہیں جان پاتی کہ خود سے کیا کرے، دل کہیں بھی نہیں ٹک پاےا، ہمیشہ بھٹکابھٹکا سا رہتا ہے۔

ان سب کے باوجود جب کوئی سادگی میں پوچھ بیٹھتا ہے،”مس لتیکا ، چھٹیوں میں اپنے گھر نہیں جا رہیں؟“تب وہ کیا کہے؟

ڈنگ ڈانگ ڈنگ ۔۔۔ اسپیشل سروس کے لئے اسکول چیپل کے گھنٹے بجنے لگے تھے۔ لتیکا نے اپنا سر کھڑکی کے اندر کر لیا۔ اس نے جھٹپٹ ساڑی اتاری اور پیٹی کوٹ میں ہی کندھے پر تولیہ ڈالے غسل خانے میں گھس گئی۔ لیفٹ رائٹ۔ لیفٹ ۔۔۔لیفٹ ۔۔۔

کنٹونمنٹ جانے والی پکی سڑک پر چار چار کی قطاروں میں کماﺅ رجمنٹ کے سپاہیوں کی ایک ٹکڑی مارچ کر رہی تھی۔ فوجی بوٹوں کی بھاری کھردری آوازیں، اسکول چیپل کی دیواروں سے ٹکراکر اندر ”پریئر ہال“ میں گونج رہی تھیں۔

”بلےسڈ آر دی میک ۔۔۔“ فادر اےلمنڈ ایک ایک لفظ چباتے ہوئے کھنکھارتی آواز میں ”سرمن آف دی ماﺅنٹ“ پڑھ رہے تھے۔ عیسی مسیح کی مورتی کے نیچے ”کنےڈلابرَم’“ کے دونوں جانب موم بتیاں جل رہی تھیں، جنکی روشنی آگے والی بنچ پر بیٹھی ہوئی لڑکیوں پر پڑ رہی تھی۔ پچھلی لائنوں کی بینچیں اندھیرے میں ڈوبی ہوئی تھیں، جہاں لڑکیاں دعائیہ انداز میں بیٹھی ہوئی سر جھکائے ایک دوسرے سے سرگوشیاں کر رہی تھیں۔ مس ووڈ، اسکول سیزن کے کامیابی کے ساتھ اختتام پذیرہونے پراسٹوڈنٹس اور عملے کے ارکان کو مبارکبادپر مبنی تقریر دے چکی تھیں اور اب فادر کے پیچھے بیٹھی ہوئی کچھ بڑبڑا رہی تھیں، گویا دھیرے دھرے فادر کو ”پرومٹ“کی کر رہی ہوں۔

”آمین۔“ فادر اےلمنڈ نے بائبل میز پر رکھ دی اور ”دعائیہ کتاب“ اٹھا لی۔ ہال کی خاموشی لمحے بھر کےلئے بکھر گئی۔ لڑکیوں نے کھڑے ہوتے ہوئے جان بوجھ کر بینچوں کو پیچھے دھکیلا ۔بینچیں فرش پر رگڑ کھا کر سیٹی بجاتی ہوئی پیچھے کھسک گئیں۔ ہال کے کونے سے ہنسی پھوٹ پڑی۔ مس ووڈ کا چہرہ تن گیا، پیشانی کی تیوریاں چڑھ گئیں۔ پھر اچانک سکوت سا چھا گیا۔ ہال کے اس گھٹے ہوئے ملگجے ماحول میں فادر کی تیکھی پھٹی آواز سنائی دینے لگی۔ ”جیسز سےڈ، آئی ایم دی لائٹ آف دی ورلڈ، ہاﺅ ایورفالوزمی وِل نیور واک اِن دی ڈارکنس، بٹ وِل ہیو دا لائٹ آف دی لائف۔“

ڈاکٹر مکھرجی نے بوریت اور اکتاہٹ سے بھری جمائی لی،”کب یہ قصہ ختم ہو گا؟“انہوں نے اتنی اونچی آواز میں لتیکا سے پوچھا کہ وہ کھسیا کر دوسری طرف دیکھنے لگی۔ اسپیشل سروس کے وقت ڈاکٹر مکرجی کے ہونٹوں پر تمسخرانہ مسکراہٹ کھیلتی رہتی اور وہ آہستہ آہستہ اپنی مونچھوں کو کھینچتا رہتا۔ فادر اےلمنڈ کا گاﺅن دیکھ کر لتیکا کے دل میں گدگدی سی دوڑ گئی۔ جب وہ چھوٹی تھی، تو اکثر یہ بات سوچ کرششدر ہوا کرتی تھی کہ کیا واقعی پادری لوگ سفید گاﺅن کے نیچے کچھ نہیں پہنتے، اگر غلطی سے وہ اوپر اٹھ جائے تو؟

لیفٹ ۔۔۔لیفٹ ۔۔۔لیفٹ ۔۔۔ مارچ کرتے ہوئے فوجی بوٹ، چیپل سے دور ہوتے جا رہے تھے۔صرف انکی باز گشت ہوا میں باقی رہ گئی تھی۔

”پیج نمبر ۷۱۱“فادر نے دعا ئیہ کتاب کھولتے ہوئے کہا۔ ہال میں ہر لڑکی نے میز پر رکھی ہوئی کتاب کھول لی۔ صفحات کے الٹنے کی کھڑکھڑاہٹ پھسلتی ہوئی، ایک سرے سے دوسرے سرے تک پھیل گئی۔ آگے کی بینچ سے اٹھ کر ہیوبرٹ پیانو کے سامنے اسٹول پر بیٹھ گیا۔ موسیقی کا استاد ہونے کی وجہ سے ہر سال اسپیشل سروس کے موقع پر اسے ”کویر“ کے ساتھ پیانو بجانا پڑتا تھا۔ ہیوبرٹ نے اپنے رومال سے ناک صاف کی۔اپنی گھبراہٹ کو چھپانے کےلئے ہیوبرٹ ہمیشہ ایسا ہی کیا کرتا تھا۔کنکھیوں سے ہال کی طرف دیکھتے ہوئے اپنے کانپتے ہاتھوں سے کتاب کھولی۔لِیڈ کائنڈلی لائٹ ۔۔۔

پیانو کے سُر دبے،اور جھجکتے سے ملنے لگے۔ گھنے بالوں سے ڈھکیں ہیوبرٹ کی لمبی، پیلی انگلیاں کھلنے سمٹنے لگیں۔ ”کویر“ میں گانے والی لڑکیوں کے سُر ایک دوسرے سے گتھے اور کومل،نرم لہروں میں بندھ گئے۔ لتیکا کو لگا، اس کاجُوڑا ڈھیلا پڑ گیا ہے، شاید گردن کے نیچے جھول رہا ہے۔ مس ووڈ کی نظر بچا کر، لتیکا نے خاموشی سے بالوں میں لگے کلپوں کو کس کر کھینچ دیا۔

 ”بڑا جھکی آدمی ہے ۔۔۔صبح میں نے ہیوبرٹ کو یہاں آنے سے منع کیا تھا، پھر بھی چلا آیا۔“ ڈاکٹر نے کہا۔

 لتیکا کو کریم الدین کی بات یادآ گئی۔ رات بھر ہیوبرٹ کو کھانسی کا دورہ پڑا تھا، کل جانے کےلئے کہہ رہے تھے۔ لتیکا نے سرٹیڑھا کرکے ہیوبرٹ کے چہرے کی ایک جھلک پانے کی ناکام کوشش کی۔ اتنے پیچھے سے کچھ بھی دیکھ پانا ناممکن تھا، پیانو پر جھکا ہوا بس ہیوبرٹ کا سر دکھائی دیتا تھا۔

لِیڈ کائنڈلی لائٹ، سنگیت کے سُرمانو ایک اونچی پہاڑی پر چڑھ کرہانپتی ہوئی سانسوں کو آسمان کے لامحدود خلاﺅں میں بکھےرتے ہوئے نیچے اتر رہے ہیں۔ بارش کی نرم وملائم دھوپ، چیپل کے لمبے چوکور شیشوں پر جھلملا رہی ہے، جس کی ایک باریک چمکیلی لکیر عیسی مسیح کی مورتی پر ترچھی ہوکرپڑ رہی ہے۔ موم بتیوں کا دھواں دھوپ میں نیلی سی لکیر کھینچتاہوا، ہوا میںتیرنے لگا ہے۔ پیانو کے عارضی ”پوز“ میں لتیکا کو پتوں کی مانوس چرمراہٹ کہیں دور کسی انجانی سمت سے آتی ہوئی سنائی دے جاتی ہے۔ ایک لمحے کے لئے ایک وہم ہوا کہ چیپل کا پھیکا سا اندھیرا، اس چھوٹے سے ”پریئرہال“ کے چاروں کونوں سے سمٹتا ہوا، اس کے آس پاس گِھر آیا ہے،مانو کوئی اس کی آنکھوں پر پٹی باندھ کر اسے یہاں تک لے آیا ہو اور اچانک اس کی آنکھیں کھول دی ہوں۔ اسے لگا کہ جیسے موم بتیوں کی ملگجی روشنی میں کچھ بھی ٹھوس، حقیقی نہ رہاہو۔ چیپل کی چھت، دیواریں، ڈیسک پر رکھا ہوا ڈاکٹر کا ماہر سڈول ہاتھ اور پیانو کے سُر ماضی کی دھند کو منتشرکرتے ہوئے ،خودہی اس دھند کا حصہ بنتے جا رہے ہوں۔

ایک پاگل سی یاد، ایک بلبلے جیسا احساس۔چیپل کے شیشوں کے باہر پہاڑی پرخشک ہوا، ہوا میں جھکی ہوئی ویپنگ ویلوز کی کانپتی ٹہنیاں، پیروں تلے چیڑ کے پتوں کی مدھم سی چرمراہٹ،کھڑ۔۔کھڑ۔۔ وہیں پر گریش ایک ہاتھ میں ملٹری کا خاکی ہیٹ لئے کھڑا ہے۔چوڑے، اٹھے ہوئے، مضبوط کندھے، اپنا سر وہاں ٹکا دو، تو جیسے سمٹ کر کھو جائے گا، چارلس بوئیر، یہ نام اس نے رکھا تھا، وہ جھےنپ کر ہنسنے لگا۔ ”تمہیں آرمی میں کس نے چن لیا، میجر بن گئے ہو، لیکن لڑکیوں سے بھی گئے گزرے ہو، ذرا ذرا سی بات پر چہرہ لال ہو جاتا ہے۔“یہ سب وہ کہتی نہیں، صرف سوچتی بھر تھی، سوچا تھا کبھی کہوں گی، وہ ”کبھی“ کبھی نہیں آیا، بُروس کا سرخ پھول لائے ہو نہ جھوٹے، خاکی قمیض کی جس جیب پر بیج چپکے تھے، اس میں سے مسلا ہوابُروس کا پھول نکل آیا۔ چھی، بالکل مرجھا گیا، اب کِھلاکہاں ہے؟ اسکے بالوں میں گریش کا ہاتھ الجھ رہا ہے، پھول کہیں ٹک نہیں پاتا، پھر اسے کلپ کے نیچے پھنساکر اس نے کہا۔” دیکھو۔“

وہ مڑی اور اس سے پہلے کہ وہ کچھ کہہ پاتی، گریش نے اپنا ملٹری ہیٹ دھپ سے اس کے سر پر رکھ دیا۔ وہ مسحور سی ویسی ہی کھڑی رہی۔ اس کے سر پر گریش کا ہیٹ ہے۔ماتھے پر چھوٹی سی بندیا ہے۔ بندیا پر اڑتے ہوئے بال ہے۔ گریش نے اس بندیا کو اپنے ہونٹوں سے چھو لیا ہے، اس نے اس کے ننگے سر کو اپنے دونوں ہاتھوں میں سمیٹ لیا ہے۔” لتیکا۔“ گریش نے چڑاتے ہوئے کہا۔ ”مین اِیٹر آف کماﺅ (اس کا یہ نام گریش نے اسے تنگ کرنے کے لئے رکھا تھا)“ ۔۔۔ وہ ہنسنے لگی۔

 ” لتیکا سنو۔“گریش کالہجہ کیسا ہو گیا تھا۔

”نا، میں کچھ نہیں سن رہی۔“

” لتیکا ۔۔۔ میں چند ماہ میں واپس لوٹ آو ¿ں گا۔“

” نا ۔۔۔ میں کچھ بھی نہیں سن رہی۔“لیکن وہ سن رہی ہے۔ وہ نہیں جو گریش کہہ رہا ہے، لیکن وہ جو نہیں کہا جا رہا ہے، جو اس کے بعد کبھی نہیں کہا گیا ۔۔۔

لِیڈ کائنڈلی لائٹ ۔۔۔

لڑکیوں کی آوازپیانو کے سُروں میں ڈوب رہی ہے، اٹھ رہی ہے۔ ہیوبرٹ نے سر موڑ کر لتیکا کوپل بھرکو دیکھا، آنکھیں موندے مستغرق پتھر کی مورت سی بنی، وہ غیر متحرک اورمگر مستحکم کھڑی تھی۔ کیا یہ انداز اس کےلئے ہے؟ کیا لتیکا نے ایسے لمحات میں اسے اپنا ساتھی بنایا ہے؟ ہیوبرٹ نے ایک گہری سانس لی اور اس سانس میں ڈھیر سی تھکاوٹ امڈ آئی۔

 ”دیکھو ۔۔۔ مس ووڈ کرسی پر بیٹھے بیٹھے سورہی ہے۔ ”ڈاکٹر منہ ہی منہ میں پھسپھسایا۔ یہ ڈاکٹر کا پرانا مذاق تھا کہ مس ووڈ پریئر کے بہانے آنکھیں موندے ہوئے نیند کی جھپکیاں لیتی ہے۔

 فادر اےلمنڈ نے کرسی پر پھیلے اپنے گاو ¿ن کو سمیٹ لیا اور پریئربک بند کر کے مس ووڈ کے کانوں میں کچھ کہا۔ پیانو کی آوازترتیب سے مند پڑنے لگی، ہیوبرٹ کی انگلیا ںڈھیلی پڑنے لگی۔ سروس کے ختم ہونے سے پہلے مس ووڈ نے آرڈر پڑھ کر سنایا۔ بارش ہونے کے خدشہ سے آج کے پروگرام میں کچھ ضروری تبدیلیاں کرنی پڑی تھیں۔ پکنک کے لئے جھولا دیوی کے مندر جانا ممکن نہیں ہو سکے گا،اس لئے اسکول سے کچھ دور ”میڈوز“ میں ہی سب لڑکیاں ناشتے کے بعد جمع ہوں گی۔ تمام لڑکیوں کو دوپہر کا ”لنچ“ہوسٹل کچن سے ہی لے جانا ہوگا، صرف شام کی چائے ”میڈوز“ میں بنے گی۔

پہاڑوں کی بارش کابھلا کیا بھروسہ؟ کچھ دیر پہلے دھواںدھار بادل گرج برس رہے تھے، سارا شہر پانی میں بھیگا ٹھٹھر رہا تھا۔ اب دھوپ میں نہاتا نیلا آسمان، دھندکی اوٹ سے باہر نکلتا ہوا پھیل رہا تھا۔ لتیکا نے چیپل سے باہر آتے ہوئے دیکھا۔ویپنگ ویلوز کی بھیگی شاخوں سے دھوپ میں چمکتی ہوئی بارش کی بوندیں ٹپک رہی تھیں، لڑکیاں چیپل سے باہر نکل کر چھوٹے چھوٹے گروپ بناکر کاریڈور میں جمع ہو گئی ہیں، ناشتے کےلئے ابھی پون گھنٹہ پڑا تھا اور ان میں سے اب کوئی بھی لڑکی ہوسٹل جانے کی خواہاں نہیں تھی۔ چھٹیاں ابھی شروع نہیں ہوئی تھیں، لیکن شاید اسی لیے وہ ان چند بچے کچے لمحات میں، نظم و ضبط کے اندر رہتے ہوئے بھی ،بھرپورفائدہ اٹھا لینا چاہتی تھیں۔

مس ووڈ لڑکیوں کا یہ غل غپاڑہ ناگوار گذرا، لیکن فادر اےلمنڈ کے سامنے وہ انہیں ڈانٹ پھٹکار نہیں سکی۔ اپنی جھنجھلاہٹ دبائے وہ مسکراتے ہوئے بولی۔ ”کل سبھی چلی جائیں گی، سارا اسکول ویران ہو جائے گا۔“

 فادر اےلمنڈ کا لمبا،پرتاثر چہرہ ،چیپل کی گھٹی ہوئی گرمائش سے سرخ ہو اٹھا تھا۔ کاریڈور کے جنگلے پر اپنی چھڑی لٹکا کر وہ بولے۔ ”چھٹیوں میں پیچھے ہاسٹل میں کون رہے گا؟“

” پچھلے دو تین سالوں سے مس لتیکا ہی رہ رہی ہیں۔“

” اور ڈاکٹر مکرجی چھٹیوں میں کہیں نہیں جاتے؟“

” ڈاکٹر تو سردی گرمی یہیں رہتے ہیں۔“مس ووڈ نے حیرت سے فادر کی طرف دیکھا۔ وہ سمجھ نہیں سکی کہ فادر نے ڈاکٹرکا سیاق و سباق کیوں چھیڑ دیا ہے۔

”ڈاکٹر مکرجی چھٹیوں میں کہیں نہیں جاتے؟“

” دو ماہ کی چھٹیوں میں برما جانا کافی مشکل ہے، فادر۔“ مس ووڈ ہنسنے لگی۔

”مس ووڈ، پتہ نہیں آپ کیا سوچتی ہیں۔ مجھے تو مس لتیکا کا ہوسٹل میں اکیلے رہنا کچھ سمجھ میں نہیں آتا۔“

” لیکن فادر۔“مس ووڈ نے کہا،” یہ تو کانوےنٹ ا سکول کا اصول ہے کہ کوئی بھی ٹیچر چھٹیوں میں اپنے خرچے پر ہوسٹل میں رہ سکتاہے۔“

” میں اس وقت اسکول کے قوانین کی بات نہیں کر رہا۔ مس لتیکا، ڈاکٹر کے ساتھ یہاں اکیلی ہی رہ جائیں گی اور سچ پوچھئے مس ووڈ، ڈاکٹر کے بارے میں میری رائے کچھ بہت اچھی نہیں ہے۔“

” فادر، آپ کیسی بات کر رہے ہیں؟ مس لتیکا بچی تھوڑی ہی ہے۔“مس ووڈ کو ایسی امید نہیں تھی کہ فادر اےلمنڈ اپنے دل میں ایسی دقیانوسی سوچ کوجگہ دیں گے۔

 فادر اےلمنڈ کچھ حیران سے ہوگئے، بات پلٹتے ہوئے بولے۔ ”مس ووڈ، میرا مطلب یہ نہیں تھا۔ آپ تو جانتی ہیں، مس لتیکا اور اس ملٹری افسر کو لے کر ایک اچھا خاصا اسکینڈل بن گیا تھا، اسکول کی بدنامی ہونے میں کیا دیر لگتی ہے ۔“

” وہ بے چارہ تو اب نہیں رہا۔ میں اسے جانتی تھی فادر۔ایشور اس کی روح کو سکون دے۔“مس ووڈ نے آہستہ سے اپنی دونوں ہاتھوں سے کراس بنایا۔

 فادر اےلمنڈ کو مس ووڈ کی نافہمی پر اتنا زیادہ غضب ہوا کہ ان سے آگے اور کچھ نہیں بولا گیا۔ ڈاکٹر مکرجی سے ان کی کبھی نہیں پٹتی تھی،اس لئے مس ووڈ کی آنکھوں میں وہ ڈاکٹر کو نیچا دکھانا چاہتے تھے۔ لیکن مس ووڈ، لتیکا کا رونا لے بیٹھی۔ آگے بات بڑھانا بیکار تھا۔ انہوں نے چھڑی کو جنگلے سے اٹھایا اور اوپر صاف کھلے آسمان کو دیکھتے ہوئے بولے ،”پروگرام آپ نے یوں ہی بدلا، مس ووڈ، اب کیا بارش ہوگی۔“

 ہیوبرٹ جب چیپل سے باہر نکلا ،تو اس کی آنکھوں چندھیا سی گئیں۔ اسے لگا جیسے کسی نے اچانک ڈھیر سی چمکیلی ابلتی ہوئی روشنی، مٹھی میں بھر کر، اس کی آنکھوں میں جھونک دی ہو۔ پیانو کی موسیقی کے سُر، چھوئی موئی کے ریشوں کی مانند اب تک اسکے دماغ کی تھکی ماندی نسوں پر پھڑپھڑا رہے تھے۔ وہ کافی تھک گیا تھا۔ پیانو بجانے سے اسکے پھیپھڑوں پر ہمیشہ بھاری دباو ¿ پڑتا، دل کی دھڑکن تیز ہو جاتی تھی۔ اسے لگتا تھا کہ موسیقی کے ایک نوٹ کو دوسرے نوٹ میں اتارنے کی کوشش میں، وہ ایک اندھیری کھائی کو پار کر رہا ہے۔

”آج چیپل میں، میں نے جو محسوس کیا، وہ کتنا پراسرار، کتنا عجیب تھا۔“ ہیوبرٹ نے سوچا۔ ”مجھے لگا، پیانو کا ہر نوٹ ،عتیق خاموشی کی اندھیری کھوہ سے نکل کر باہر پھیلی نیلی دھند کو کاٹتا، تراشتا ہوا ،ایک بھُولا سا مفہوم کھینچ لاتا ہے۔گرتا ہوا ہر ”پوز“ ایک چھوٹی سی موت ہے، گویا گھنے سایہ داردرختوں کے کانپتے سایوں میں کوئی پگڈنڈی گم ہو گئی ہو، ایک چھوٹی سی موت ،جو آنے والے سروں کو، اپنی بچی کھچی گونجوں کی سانسیں وقف کر جاتی ہے، جو مر جاتی ہے، لیکن مٹ نہیں سکتی،مٹتی نہیں اس لئے مر کربھی زندہ ہے، اوردوسرے سُروں میں جذب ہو جاتی ہے۔ “

”ڈاکٹر، کیا موت ایسے ہی آتی ہے؟،اگر میں ڈاکٹر سے پوچھوں تو وہ ہنس کر ٹال دے گا۔ مجھے لگتا ہے، وہ پچھلے کچھ دنوں سے کوئی بات چھپا رہا ہے،اسکی ہنسی میں جو ہمدردی کا تاثر ہوتا ہے، وہ مجھے اچھا نہیں لگتا۔ آج اس نے مجھے اسپیشل سروس میں آنے سے روکا تھا۔ وجہ پوچھنے پر وہ چپ رہا تھا۔ کون سی ایسی بات ہے، جسے مجھ سے کہنے میں ڈاکٹر کتراتا ہے۔ شاید میں نک چڑھا ہوتا جا رہا ہوں۔ کوئی اور بات نہیں ہے۔ “

 ہیوبرٹ نے دیکھا، لڑکیوں کی قطاریں، اسکول سے ہوسٹل جانے والی سڑک پر نیچے اترتی جا رہی ہیں۔ اجلی دھوپ میں انکے رنگ برنگے ربن، ہلکی آسمانی رنگ کی فراکیں اور سفید پےٹیاں چمک رہی ہیں۔ سینئر کیمبرج کی کچھ لڑکیوں نے چیپل کی واٹیکا کے گلاب کے پھولوں کو توڑکر اپنے بالوں میں لگا لیا ہے، کنٹونمنٹ کے تین چار سپاہی، لڑکیوں کو دیکھتے ہوئے فحش مذاق کرتے ہوئے ہنس رہے ہیں اور کبھی کبھی کسی لڑکی کی طرف ذرا جھک کر سیٹی بجانے لگتے ہیں۔

”ہیلو ایم ہیوبرٹ ۔“ ہیوبرٹ نے چونک کر پیچھے دیکھا۔ لتیکا ایک موٹا سا رجسٹر بغل میں دبائے کھڑی تھی۔

”آپ ابھی یہیں ہیں؟“ ہیوبرٹ کی نظر لتیکا پر ٹکی رہی۔ وہ کریم کلر کی پوری آستینوں والی اونی جےکٹ پہنے ہوئی تھی۔ کماﺅ نی لڑکیوں کی طرح لتیکا کا چہرہ گول تھا، دھوپ کی شدت سے پکا گندمی رنگ کہیں کہیں سے ہلکا سا گلابی ہو گیا تھا،گویا بہت دھونے پر بھی گلال کے کچھ دھبے ادھر ادھر بکھرے رہ گئے ہوں۔

 ”ان لڑکیوں کے نام نوٹ کرنے تھے، جو کل جا رہی ہیں، سو پیچھے رکنا پڑا۔ آپ بھی تو کل جا رہے ہیں ایم ہیوبرٹ ؟“

” ابھی تک تو یہی ارادہ ہے۔ یہاں رک کر بھی کیا کروں گا۔ آپ اسکول کی طرف جا رہی ہیں؟“

 ”چلئے۔“

پکی سڑک پر لڑکیوں کی بھیڑ جمع تھی، اس لئے وہ دونوں پولو گراﺅنڈ کا چکر کاٹتے ہوئے پگڈنڈی سے نیچے اترنے لگے۔ہوا تیز ہو چلی تھی۔ چیڑ کے پتے ہر جھونکے کے ساتھ ٹوٹ ٹوٹ کر پگڈنڈی پر ڈھیر لگاتے جارہے تھے۔ ہیوبرٹ راستہ بنانے کےلئے اپنی چھڑی سے انہیں ہٹا کر دونوں جانب بکھیر دیتا تھا۔ لتیکا پیچھے کھڑی ہوئی دیکھتی رہتی تھی۔ الموڑا کی جانب سے آتے ہوئے چھوٹے چھوٹے بادل، ریشمی رومالوں کی مانند اڑتے ہوئے ، پہلے سورج کے منہ پر لپٹتے ، پھر ہوا میں بہہ نکلتے تھے۔ اس کھیل میں دھوپ کبھی مند، پھیکی سی پڑ جاتی تھی،تو کبھی اپنا اجلا آنچل کھول کر پورے شہر کو خود میں سمیٹ لیتی تھی۔

 لتیکا ذرا آگے نکل گئی۔ ہیوبرٹ کی سانس چڑھ گئی تھی اور وہ آہستہ آہستہ ہانپتا ہوا پیچھے پیچھے آ رہا تھا۔ جب وہ پولوگراﺅنڈ کے پویلین کو چھوڑ کر سمیٹری کے دائیںجانب مڑے، تو لتیکا، ہیوبرٹ کا انتظار کرنے کےلئے کھڑی ہو گئی۔ اسے یاد آیا، چھٹیوں کے دنوں میں جب کبھی کمرے میں اکیلے بیٹھے بیٹھے اس کا دل اوب جاتا تھا، تو وہ اکثر ٹہلتے ہوئے سمیٹری تک چلی جاتی تھی۔ اس سے ملحقہ پہاڑی پر چڑھ کر وہ برف میں ڈھکے دیودار کے درختوں کو دیکھا کرتی تھی۔ جنکی جھکی ہوئی شاخوں سے روئی کے گولوں سی برف نیچے گرا کرتی تھی، نیچے مارکیٹ جانے والی سڑک پر بچے سلیج پر پھسلا کرتے تھے۔ وہ کھڑی کھڑی برف میں چھپی ہوئی اس سڑک کا اندازہ لگایا کرتی تھی، جو فادر اےلمنڈ کے گھر سے گزرتے ہوئی ملٹری ہسپتال اور پوسٹ آفس سے ہوکر چرچ کی سیڑھیوں تک جاکر گم ہو جاتی تھی۔ جو تفریح ایک ناقابل تفہیم پہیلی کو سلجھانے میں ہوتی ہے، وہی لتیکا کو برف میں کھوئے رستوں کو کھوج نکالنے میں ہوتی تھی۔

”آپ بہت تیز چلتی ہیں، مس لتیکا۔“ تھکاوٹ سے ہیوبرٹ کا چہرہ کملا گیا تھا۔ پیشانی پر پسینے کی بوندیں چھلک آئی تھیں۔

”کل رات آپ کی طبیعت کیا کچھ خراب ہو گئی تھی؟“

” آپ نے کیسے جانا؟ کیا میں بیمار دکھ رہا ہوں؟“ ہیوبرٹ کے لہجے میں ہلکی سی جھلاہٹ کا تاثر تھا۔”سب لوگ میری صحت کو لے کر کیوں بات شروع کرتے ہیں۔“ اس نے سوچا۔

 ”نہیں، مجھے تو پتہ بھی نہیں چلتا، وہ تو صبح کریم الدین نے باتوں ہی باتوں میں ذکر چھیڑ دیا تھا۔“ لتیکا کچھ خجل سی ہوگئی۔

 ”کوئی خاص بات نہیں، وہی پرانا درد شروع ہو گیا تھا، اب بالکل ٹھیک ہے۔“اپنے بیان کی تصدیق کےلئے ہیوبرٹ چھاتی سیدھی کرکے تیز قدم بڑھانے لگا۔

 ”ڈاکٹر مکرجی کو دکھلایا تھا؟“

” وہ صبح آئے تھے۔ ان کی بات کچھ سمجھ میں نہیں آتی۔ ہمیشہ دو باتیں ایک دوسرے سے متضاد کہتے ہیں۔ کہتے تھے کہ اس بار مجھے چھ سات مہینوںکی چھٹی لے کر آرام کرنا چاہیے ، لیکن اگر میں ٹھیک ہوں، تو بھلا اس کی کیا ضرورت ہے؟“

 ہیوبرٹ کے لہجے میں درد کے سائے لتیکا سے چھپے نہ رہ سکے۔ بات کو ٹالتے ہوئے اس نے کہا ۔ ”آپ تو ناحق فکر کرتے ہیں، ایم ہیوبرٹ ۔ آج کل موسم بدل رہا ہے، اچھے بھلے آدمی تک بیمار ہو جاتے ہیں۔“ ہیوبرٹ کا چہرہ خوشی سے دمکنے لگا۔ اس نے لتیکا کو غور سے دیکھا۔ وہ اپنے دل کا شک مٹانے کےلئے پر یقین ہو جانا چاہتا تھا کہ کہیں لتیکا اسے صرف دلاسہ دینے کےلئے ہی تو جھوٹ نہیں بول رہی۔

”یہی تو میں سوچ رہا تھا، مس لتیکا ۔ ڈاکٹر کا مشورہ سن کر میں ڈر ہی گیا۔ بھلا چھ ماہ کی چھٹی لے کر میں اکیلا کیا کروں گا۔ اسکول میں تو بچوں کے ساتھ دل لگا رہتا ہے۔ سچ پوچھو تو دہلی میں یہ دو مہینوں کی چھٹیاں کاٹنا بھی دوبھر ہو جاتا ہے۔“

”ایم ہیوبرٹ،کل آپ دہلی جا رہے ہیں؟“ لتیکا چلتے چلتے اچانک ٹھٹک گئی۔ سامنے پولو گراﺅنڈ پھیلا تھا، جسکی دوسری طرف ملٹری کے ٹرک کنٹونمنٹ کی طرف جا رہے تھے۔ ہیوبرٹ کو لگا، جیسے لتیکا کی آنکھیںادھ کھلی رہ گئی ہیں،گویا پلکوں پر ایک بھولابسرا ساسپنا سرک آیا ہے۔

”ایم ہیوبرٹ ۔۔۔آپ دہلی جا رہے ہیں۔“اس بار لتیکا نے سوال نہیں دوہرایا۔ اس کے لہجے میں صرف ایک بڑی دوری کا تاثراتر آیا۔ ”بہت عرصہ پہلے میں بھی دہلی گئی تھی،ایم ہیوبرٹ ۔ تب میں بہت چھوٹی تھی، نہ جانے کتنے برس گزر گئے۔ ہماری خالہ کی شادی وہیں ہوئی تھی۔ بہت سی چیزیں دیکھی تھیں، لیکن اب تو سب کچھ دھندلا سا پڑ گیا ہے۔ اتنا یاد ہے کہ ہم قطب مینارپر چڑھے تھے۔ سب سے اونچی منزل سے ہم نے نیچے جھانکا تھا، نہ جانے کیسا لگا تھا۔ نیچے چلتے ہوئے آدمی چابی بھرے ہوئے کھلونوں سے لگتے تھے۔ ہم نے اوپر سے ان پر مونگ پھلیاں پھینکی تھیں، لیکن ہم بہت مایوس ہوئے تھے، کیونکہ ان میں سے کسی نے ہماری طرف نہیں دیکھا۔ شاید ماں نے مجھے ڈانٹا تھا اور میں بس نیچے جھانکتے ہوئے ڈر گئی تھی۔ سنا ہے، اب تو دہلی اتنا بدل گیا ہے کہ پہچانا نہیں جاتا۔“

وہ دونوں پھرسے چلنے لگے۔ ہوا کی رفتار دھیمی پڑنے لگی۔ اڑتے ہوئے بادل اب سستانے سے لگے تھے، انکے سائے نندا دیوی اور پنچولی کی پہاڑیوں پرپڑ رہے تھے۔ اسکول کے پاس پہنچتے پہنچتے چیڑ کے درخت پیچھے چھوٹ گئے، کہیں کہیں خوبانی کے درختوں کے آس پاس بروس کے سرخ پھول دھوپ میں چمک جاتے تھے۔ اسکول تک آنے میں انہوں نے پولوگراﺅنڈ کا لمبا چکر لگا لیا تھا۔

 ”مس لتیکا ، آپ کہیں چھٹیوں میں جاتی کیوں نہیں، سردیوں میں تو یہاں سب کچھ ویران ہو جاتا ہوگا؟“

”اب مجھے یہاں اچھا لگتا ہے۔“ لتیکا نے کہا،”پہلے سال تنہائی کچھ کھلی تھی، اب عادی ہو چکی ہوں۔ کرسمس سے ایک رات پہلے کلب میں ڈانس ہوتا ہے، لاٹری ڈالی جاتی ہے اور رات کو دیر تک ناچ گانا ہوتا رہتا ہے۔ نئے سال کے دن کماﺅ رجمنٹ کی جانب سے پریڈ گراﺅنڈ میںکارنیوال کیا جاتا ہے، برف پر اسکیٹنگ ہوتی ہے، رنگ برنگے غباروں کے نیچے فوجی بینڈ بجتا ہے، فوجی افسر فینسی کپڑوں میں حصہ لیتے ہیں، ہر سال ایسا ہی ہوتا ہے ، ایم ہیوبرٹ ۔ پھر کچھ دنوں بعد ونٹر اسپورٹس کےلئے انگریز سیاح آتے ہیں۔ ہر سال میں ان سے متعارف ہوتی ہوں، واپس لوٹتے ہوئے وہ ہمیشہ وعدہ کرتے ہیں کہ اگلے سال بھی آئیں گے، پر میں جانتی ہوں کہ وہ نہیں آئیں گے، وہ بھی جانتے ہیں کہ وہ نہیں آئیں گے، پھر بھی ہماری دوستی میں کوئی فرق نہیں پڑتا۔ پھر ۔۔۔پھر کچھ دنوں بعد پہاڑوں پر برف پگھلنے لگتی ہے، چھٹیاں ختم ہونے لگتی ہیں، آپ سب لوگ اپنے اپنے گھروں سے واپس لوٹ آتے ہیں اورایم ہیوبرٹ پتہ بھی نہیں چلتا کہ چھٹیاں کب شروع ہوئی تھیں، کب ختم ہو گئیں۔“

 لتیکا نے دیکھا کہ ہیوبرٹ اس کی طرف خوف بھری نظروں سے دیکھ رہا ہے۔ وہ سٹپٹاکر خاموش ہو گئی۔ اسے لگا، گویا وہ اتنی دیر سے پاگلوں سی،بے دھڑک، بے دریغ باتیں کر رہی ہے۔ ”مجھے معاف کرنا ایم ہیوبرٹ ، کبھی کبھی میں بچوں کی طرح باتوں میں بہک جاتی ہوں۔“

” مس لتیکا ۔۔۔“ ہیوبرٹ نے آہستہ سے کہا۔ وہ چلتے چلتے رک گیا تھا۔

 لتیکا، ہیوبرٹ کی بھاری آواز سے چونک سی گئی۔ ”کیا بات ہے ایم ہیوبرٹ ؟“

” وہ خط، اس کےلئے میں شرمندہ ہوں۔ اسے آپ واپس لوٹا دیں، سمجھ لیں کہ میں نے اسے کبھی نہیں لکھا تھا۔“

 لتیکا کچھ سمجھ نہ سکی، گم صم سی کھڑی ہوئی ہیوبرٹ کے زرد دھندلے چہرے کو دیکھتی رہی۔ ہیوبرٹ نے آہستہ سے لتیکا کے کندھے پر ہاتھ رکھ دیا۔ ”کل ڈاکٹر نے مجھے سب کچھ بتا دیا۔ اگر مجھے پہلے سے معلوم ہوتا تو ۔۔۔تو۔۔۔۔“ ہیوبرٹ ہکلانے لگا۔

”ایم ہیوبرٹ ۔۔۔“مگر لتیکا سے آگے کچھ بھی نہیں کہا گیا۔ اس کا چہرہ سفید پڑگیا تھا۔

دونوں چپ چاپ کچھ دیر تک اسکول کے گیٹ کے باہر کھڑے رہے۔ میڈوز۔۔پگڈنڈیوں، پتوں، چھایاﺅں سے گھرا چھوٹا سا جزیرہ، مانو کوئی گھونسلا دوہری وادیوں کے درمیان آ دبا ہو۔ اندرگھستے ہی پکنک کے، آگ سے جھلسے ہوئے کالے پتھر، ادھ جلی لکڑیاں، بیٹھنے کےلئے بچھائے گئے پرانے اخباروں کے ٹکڑے ادھر ادھر بکھرے ہوئے دکھائی دے جاتے ہیں۔ اکثر سیاح پکنک کےلئے یہاں آتے ہیں۔ میڈوز کو درمیان میں کاٹتا ہوا ٹیڑھا میڑھابرساتی نالہ بہتا ہے، جو دور سے دھوپ میں چمکتا ہوا سفید ربن سا دکھائی دیتا ہے۔

یہیں پر لکڑی کے تختوں سے بنا ہوا ٹوٹا سا پل ہے، جس پر لڑکیاں ہچکولے کھاتے ہوئے چل رہی ہیں۔

”ڈاکٹر مکرجی ، آپ تو سارا جنگل جلا دیں گے۔“ مس ووڈ نے اپنی اونچی ایڑی کے سینڈل سے جلتی ہوئی دیا سلائی کو دبا ڈالا، جو ڈاکٹر نے سگار سلگاکر چیڑ کے پتوں کے ڈھیر پر پھینک دی تھی۔ وہ نالے سے کچھ دور ہٹ کر چیڑ کے دو درختوں کے گتھے ہوئے سائے میں بیٹھے تھے۔ ان کے سامنے ایک چھوٹا سا راستہ نیچے پہاڑی گاو ¿ں کی طرف جاتا تھا، جہاں پہاڑ کی گود میں شکرپاروں کے کھیت ایک دوسرے کے نیچے بچھے ہوئے تھے۔ دوپہر کے سناٹے میں بھیڑ بکریوں کی گردنوں میں بندھی ہوئی گھنٹیوں کا شور ہوا میں بہتا ہوا سنائی دے جاتا تھا۔ گھاس پر لیٹے لیٹے ڈاکٹر سگار پیتے رہے۔ ”جنگل کی آگ کبھی دیکھی ہے، مس ووڈ ۔۔۔ایک بھرپور نشے کی طرح دھیرے دھیرے پھیلتی جاتی ہے۔“

”آپ نے کبھی دیکھی ہے ڈاکٹر؟“مس ووڈ نے پوچھا،” مجھے تو بڑا ڈر لگتا ہے۔“

”بہت سال پہلے شہروں کو جلتے ہوئے دیکھا تھا۔“ڈاکٹر لیٹے ہوئے آسمان کی طرف تک رہے تھے۔ ”ایک ایک مکان، تاش کے پتوں کی طرح گرتاجاتا ہے۔ بدقسمتی، ایسے موقع دیکھنے میں بہت کم آتے ہیں۔“

”آپ نے کہاں دیکھا، ڈاکٹر؟“

”جنگ کے دنوں میں اپنے شہر رنگون کو جلتے ہوئے دیکھا تھا۔“مس ووڈ کی روح کو ٹھیس لگی، لیکن پھر بھی ان کی بے چینی شانت نہیں ہوئی۔

”آپ کا گھر، کیا وہ بھی جل گیا تھا؟“

ڈاکٹر کچھ دیر تک خاموش لیٹا رہا۔

”ہم اسے خالی چھوڑ کر چلے آئے تھے، معلوم نہیں بعد میں کیا ہوا۔“اپنی ذاتی زندگی کے تعلق سے کچھ بھی کہنے میں ڈاکٹر کو مشکل محسوس ہوتی ہے۔

”ڈاکٹر، کیا آپ کبھی واپس برما جانے کی بات نہیں سوچتے؟“ڈاکٹر نے انگڑائی لی اور کروٹ بدل کر اوندھے منہ لیٹ گئے۔ ان کی آنکھیں مند گئیں اور پیشانی پر بالوں کی لٹیں جھول آئیں۔

”سوچنے سے کیا ہوتا ہے مس ووڈ ۔۔۔ جب برما میں تھا، تو کیا کبھی سوچا تھا کہ یہاں آکر عمر کاٹنی ہوگی؟“

”لیکن ڈاکٹر، کچھ بھی کہہ لو، اپنے ملک کا سکھ کہیں اور نہیں ملتا۔ یہاں آپ چاہے جتنے سال رہ لو، خود کو ہمیشہ اجنبی ہی پاو ¿ گے۔“

ڈاکٹر نے سگار کے دھوئیں کو آہستہ آہستہ ہوا میں چھوڑ دیا۔ ”دراصل اجنبی تو میں وہاں بھی سمجھا جاو ¿ں گا، مس ووڈ۔ اتنے سالوں بعد مجھے کون پہچانے گا۔ اس عمر میں نئے سرے سے تعلقات استوار کرنا کافی سر درد کا کام ہے، کم از کم میرے بس کی بات نہیں ہے۔“

”لیکن ڈاکٹر، آپ کب تک اس پہاڑی قصبے میں پڑے رہیں گے، اسی ملک میں رہنا ہے تو کسی بڑے شہر میں پریکٹس شروع کیجیے۔“

”پریکٹس بڑھانے کے لئے کہاں کہاں بھٹکتا پھروں گا، مس ووڈ۔ جہاں رہو، وہیں مریض مل جاتے ہیں۔ یہاں آیا تھا کچھ دنوں کےلئے، پھر مدت ہو گئی اورٹکا رہا۔ جب کبھی جی گھبرائے گا، کہیں چلا جاو ¿ں گا۔ جڑیں کہیں نہیںجمتی، تو پیچھے بھی کچھ نہیں چھوٹ جاتا۔ مجھے اپنے بارے میں کوئی غلط فہمی نہیں ہے مس ووڈ، میں خوش ہوں۔“

مس ووڈ نے ڈاکٹر کی بات پر خاص توجہ نہیں دی۔ دل میں وہ ہمیشہ ڈاکٹر کوسست، لاپرواہ اور سنکی سمجھتی رہی ہے، لیکن ڈاکٹر کے کردارپر انہیں پورا یقین ہے، نہ جانے کیوں، شاید ڈاکٹر نے جانے انجانے میں اس کا کوئی ثبوت دیا ہو، یہ انہیں یاد نہیں پڑتا۔

مس ووڈ نے ایک ٹھنڈی سانس بھری۔ وہ ہمیشہ یہ سوچتی تھی کہ اگر ڈاکٹر اتنا سست اور لاپرواہ نہ ہوتا، تو اپنی قابلیت کے بل پر کافی چمک سکتا تھا۔ اس لیے انہیں ڈاکٹر پر غصہ بھی آتا تھا اور دکھ بھی ہوتا تھا۔

مس ووڈ نے اپنے بیگ سے اون کا گولا اور سلائیاں نکالیں، پھر اس کے نیچے سے اخبار میں لپٹا ہوا چوڑا سا کافی باکس اٹھایا، جس میں انڈوں کی سینڈوچ اور ہیمبرگر بھرے ہوئے تھے۔ تھرماس سے پیالوں میں کافی انڈیلتے ہوئے مس ووڈ نے کہا ۔ ”ڈاکٹر، کافی ٹھنڈی ہو رہی ہے۔“

ڈاکٹر لیٹے لیٹے بڑبڑایا۔ مس ووڈ نے نیچے جھک کر دیکھا، وہ کہنی پر سر ٹکائے سو رہا تھا۔ اوپرکا ہونٹ ذرا سا پھیل کر مڑ گیا تھا،گویا کسی سے مذاق کرنے سے پہلے مسکرا رہا ہو۔

اسکی انگلیوں میں دبا ہوا سگار نیچے جھکا ہوا لٹک رہا تھا۔

 ”میری، میری، واٹ ڈو یو وانٹ، واٹ ڈو یو وانٹ؟“دوسرے اسٹےنڈرڈ میں پڑھنے والی میری نے اپنی چنچل، چست آنکھیں اوپر اٹھائیں، لڑکیوں کا دائرہ اسے گھیرے ہوئے کبھی پاس آتا تھا، کبھی دورہوتا چلا جاتا تھا۔

”آئی وانٹ ۔۔۔ آئی وانٹ بلیو۔“دونوں ہاتھ ہوا میں گھماتے ہوئے میری چلائی۔ دائرہ پانی کی طرح ٹوٹ گیا۔ سبھی لڑکیاں ایک دوسرے پر گرتی پڑتی کسی نیلی چیز کو چھونے کےلئے بھاگ دوڑ کرنے لگیں۔ دوپہر کے کھانے کے ختم ہو چکا تھا۔ لڑکیوں کے چھوٹے چھوٹے گروپ میڈوز میں بکھر گئے تھے۔ اونچی کلاس کی کچھ لڑکیاں چائے کا پانی گرم کرنے کےلئے درختوں پر چڑھ کر خشک ٹہنیاںتوڑ رہی تھیں۔

دوپہر کی اس گھڑی میں میڈوز سستاتا ،اونگھتا سا معلوم پڑتا تھا۔ ہوا کا کوئی بھولا بھٹکا جھونکاآتا تو، چیڑ کے پتے کھڑکھڑا اٹھتے تھے۔ کبھی کوئی پرندہ اپنی کاہلی مٹانے جھاڑیوں سے اڑ کر نالے کے کنارے بیٹھ جاتا تھا، پانی میں سر ڈبوتا تھا، پھر اکتا کرہوا میں دو چارمبہم سے چکر کاٹ کر دوبارہ جھاڑیوں میں دبک جاتا تھا۔

لیکن جنگل کی خاموشی شاید کبھی خاموش نہیں رہتی۔ گہری نیند میں ڈوبی خوابوں سی کچھ آوازیںسکوت کے ہلکے مہین پردے پر سلوٹیں بچھا جاتی ہیں، لہروں سی ہوا میں تیرتی ہیں،مانو کوئی دبے پاو ¿ں جھانک کر خفیہ سا اشارہ کر جاتا ہے۔

 ”دیکھو میں یہاں ہوں۔“ لتیکا نے جُولی کے ”باب ہیئر“ کو سہلاتے ہوئے کہا،”تمہیں کل رات بلایا تھا۔“

”میڈم، میں گئی تھی، آپ اپنے کمرے میں نہیں تھیں۔“ لتیکا کو یاد آیا کہ رات وہ ڈاکٹر کے کمرے کے ٹےرس پر دیر تک بیٹھی رہی تھی اور اندر ہیوبرٹ ،پیانو پر شوپاں کا نوکٹرن بجا رہا تھا۔

”جولی، تم سے کچھ پوچھنا تھا۔“اسے لگا، وہ جولی کی آنکھوں سے خودکو بچا رہی ہے۔

 جولی نے اپنا چہرہ اوپر اٹھایا۔ اسکی بھوری آنکھوں سے تجسس جھانک رہا تھا۔

”تم آفیسرز میس میں کسی کو جانتی ہو؟“جولی نے غیر یقینی سے سر ہلایا۔ لتیکا کچھ دیر تک جولی کوایک ٹک گھورتی رہی۔

”جولی، مجھے یقین ہے، تم جھوٹ نہیں بولوگی۔“کچھ لمحے پہلے جولی کی آنکھوں میں جوتجسس تھا، وہ خو ف میں تبدیل ہونے لگا۔ لتیکا نے اپنی جیکٹ کی جیب سے ایک نیلا لفافہ نکال کر جولی کی گود میں پھینک دیا۔

 ”یہ کس کی چٹھی ہے؟“

جولی نے لفافہ لینے کےلئے ہاتھ بڑھایا، لیکن پھر ایک لمحے کے لئے اس کا ہاتھ کانپ کر ٹھٹک گیا۔لفافے پر اس کا نام اور اسکے ہوسٹل کا پتہ لکھا ہوا تھا۔

”تھینک یو میڈم، میرے بھائی کا خط ہے، وہ جھانسی میں رہتے ہیں۔“جولی نے گھبراہٹ میں لفافے کو اپنے اسکرٹ کی تہوں میں چھپا لیا۔ ”جولی، ذرا مجھے لفافہ دکھاﺅ۔“ لتیکا کا لہجہ تیکھا،چڑچڑا سا ہوگیا۔

جولی نے بے کسی بھرے انداز سے لتیکا کو خط دے دیا۔ ”تمہارے بھائی جھانسی میں رہتے ہیں؟“جولی اس بار کچھ نہیں بولی۔ اس کی مضطرب اکھڑی سی آنکھیں لتیکا کو دیکھتی رہیں۔

”یہ کیا ہے؟“

جولی کا چہرہ سفید، پھک پڑ گیا۔ لفافے پرکماﺅ رجمنٹل سینٹر کی مہر اس کی طرف گھور رہی تھی۔

 ”کون ہے یہ؟“ لتیکا نے پوچھا۔ اس نے پہلے بھی ہوسٹل میں اڑتی ہوئی افواہ سنی تھی کہ جولی کو کلب میں کسی ملٹری افسر کے ساتھ دیکھا گیا تھا، لیکن ایسی افواہیں اکثر اڑتی رہتی تھیں اور اس نے ان پر یقین نہیں کیا تھا۔

”جولی، تم ابھی بہت چھوٹی ہو۔“ جولی کے ہونٹ کانپے،اس کی آنکھوں میں معصومیت کا تاثرابھر آیا۔

”اچھا اب جاو ¿، تم سے چھٹیوں کے بعد باتیں کروں گی۔“جولی نے للچائی نظروں سے لفافے کو دیکھا، کچھ بولنے کو تیار ہوئی، پھر بغیر کچھ کہے خاموشی سے واپس لوٹ گئی۔

 لتیکا دیر تک جولی کو دیکھتی رہی، جب تک وہ آنکھوں سے اوجھل نہیں ہو گئی۔ کیا میں کسی کھوسٹ بڑھیا سے کم ہوں؟ اپنی محرومی کا بدلہ کیا میں دوسروں سے لے رہی ہوں؟

شاید، کون جانے ۔۔۔ شاید جولی کی یہ پہلی ملاقات ہو، اس احساس سے، جسے کوئی بھی لڑکی بڑے شوق سے سنجوکر، سنبھال کر خود میں چھپائے رہتی ہے، ایک نرالا سکھ، جو دکھ رکھتا ہے، دکھ اور سکھ کو ڈبوتی ہوئی امنڈتے جذبے کی خماری، جو دونوں کو خود میں سمو لیتی ہے۔ ایک درد، جو خوشی سے حاصل ہوتا ہے اوردکھ دیتا ہے۔

یہیں اسی چیڑ کے نیچے اسے بھی یہی لگا تھا، جب گریش نے پوچھا تھا۔ ”تم خاموش کیوں ہو؟“

وہ آنکھیں موندے سوچ رہی تھی، سوچ کہاں رہی تھی، جی رہی تھی، اس لمحے کو جو ڈر اورتحیر کے بیچ پھنسا تھا،بہکا سا پاگل لمحہ۔ وہ ابھی پیچھے مڑے گی تو گریش کی ”نروس“ مسکراہٹ دکھائی دے گی، اُس دن سے آج دوپہر تک کا ماضی ایک ڈراو ¿نے خواب کی مانند ٹوٹ جائے گا۔ وہی چیڑ کا درخت ہے، جس پر اس نے اپنے بالوں کے کلپ سے گریش کا نام لکھا تھا۔ درخت کی چھال اترتی نہیں تھی، کلپ ٹوٹ ٹوٹ جاتا تھا، تب گریش نے اپنے نام کے نیچے اس کا نام لکھا تھا۔ جب کبھی کوئی حرف بگڑ کر ٹیڑھا میڑھا سا ہو جاتا تھا تو وہ ہنستی تھی اور گریش کا کانپتا ہاتھ اور بھی کانپ جاتا تھا۔

 لتیکا کو لگا کہ جو وہ یاد کرتی ہے، وہی بھولنا بھی چاہتی ہے، لیکن جب واقعی بھولنے لگتی ہے، تب اسے خوف آتا ہے کہ جیسے کوئی اس کی کسی چیز کو اس کے ہاتھ سے چھین کر لئے جا رہا ہے، ایسا کچھ جو ہمیشہ کےلئے کھو جائے گا۔ بچپن میں جب کبھی وہ اپنے کسی کھلونے کو کھو دیتی تھی، تو وہ گم صم سی ہوکر سوچا کرتی تھی، کہاں رکھ دیا میں نے۔ جب بہت دوڑ دھوپ کرنے پر کھلونا مل جاتا، تو وہ بہانہ کرتی کہ ابھی اسے تلاش کر ہی رہی ہے، کہ وہ اب ملا نہیں ہے۔ جس جگہ پر کھلونا رکھا ہوتا، جان بوجھ کر اسے چھوڑ کر گھر کے دوسرے کونے میں اسے تلاش کرنے کا عزم کرتی۔ تب کھوئی ہوئی چیز یاد رہتی، اس لئے بھولنے کا خوف نہیں رہتا تھا۔

آج وہ اُس بچپن کے کھیل کا بہانہ کیوں نہیں کر پاتی؟ ”بہانہ“شاید کرتی ہے، اسے یاد کرنے کا بہانہ، جو بھولتا جا رہا ہے ۔۔۔دن، مہینے بِیت جاتے ہیںاور وہ الجھی رہتی ہے، انجانے میں گریش کا چہرہ دھندلا پڑتا جاتا ہے، یاد وہ کرتی ہے، لیکن جیسے کسی پرانی تصویر کے دھول بھرے شیشے کو صاف کر رہی ہو۔ اب ویسا درد نہیں ہوتا، صرف اس کو یاد کرتی ہے، جو پہلے کبھی ہوتا تھا، تب اسے خود پر شرمندگی ہوتی ہے۔ وہ پھر جان بوجھ کر اس زخم کو کرےدتی ہے جو بھرتا جا رہا ہے، خود بخود، اس کی تمام ترکوششوں کے باوجود بھرتا جا رہا ہے۔ دیودار پر نقش ادھ مٹے نام لتیکا کی جانب معصومیت بھرے انداز سے دیکھ رہے تھے۔ میڈوز کے گھنے سناٹے میں نالے پار سے کھیلتی ہوئی لڑکیوں کی آوازیں گونج جاتی تھیں ۔۔۔

واٹ ڈو یو وانٹ؟ واٹ ڈو یو وانٹ؟

تتلیاں، جھینگر، جگنو۔۔۔میڈوز پر اترتی ہوئی سانجھ کی چھایاﺅں میں پتہ نہیں چلتا، کونسی آواز کس کی ہے؟ دوپہر کے وقت جن آوازوں کو الگ الگ شناخت کیا جا سکتا تھا، اب وہ ہم آہنگی کی دھارا میں گھل گئی تھیں۔ گھاس سے اپنے پیروں کو پونچھتا ہوا کوئی رینگ رہا ہے، جھاڑیوں کے جھرمٹ سے پروں کو پھڑپھڑاتا ہوا جھپٹ کر کوئی اوپر سے اڑ جاتا ہے ،لیکن اوپر دیکھو تو کہیں کچھ بھی نہیں ہے۔میڈوز کے جھرنے کا گنگناتا شور، جیسے اندھیری سرنگ میں جھپاٹے سے ٹرین گزر گئی ہو، اور دیر تک اس میں سیٹیوں اور پہیوں کی آواز گونج رہی ہو۔

پکنک کچھ دیر تک مزید چلتی، لیکن بادلوں کی تہیں ایک دوسرے پر چڑھتی جا رہی تھیں۔ پکنک کا سامان جمع کیا جانے لگا۔میڈوز کے آس پاس بکھری ہوئی لڑکیاں مس ووڈ کے ارد گرد جمع ہونے لگیں۔ اپنے ساتھ وہ عجیب و غریب چیزیں بٹورکر لائی تھیں۔ کوئی کسی پرندے کے ٹوٹے پنکھ کو بالوں میں لگائے ہوئے تھی، کسی نے درخت کی شاخ کو چاقو سے چھیل کرچھوٹی سی چھڑی بنا لی تھی۔ اونچی کلاس کی کچھ لڑکیوں نے اپنے اپنے رومالوں میں نالے سے پکڑی ہوئی چھوٹی چھوٹی بالشت بھر کی مچھلیوں کو دبا رکھا تھا، جنہیں مس ووڈ سے چھپاکر وہ ایک دوسرے کو دکھا رہی تھیں۔

مس ووڈ لڑکیوں کی ٹولی کے ساتھ آگے نکل گئیں۔ میڈوز سے پکی سڑک تک تین چار فرلانگ چڑھائی تھی۔ لتیکا ہانپنے لگی۔ ڈاکٹر مکرجی سب سے پیچھے آ رہے تھے۔ لتیکا کے پاس پہنچ کر وہ ٹھٹک گئے۔ ڈاکٹر نے دونوں گھٹنوں کو زمین پر ٹکاتے ہوئے سر جھکا کر کہا ۔ ”میڈم، آپ اتنی پریشان کیوں نظر آ رہی ہیں؟“اور ڈاکٹر کے ڈرامائی انداز کو دیکھ کر لتیکا کے ہونٹوں پر ایک تھکی سی، ڈھیلی ڈھیلی مسکراہٹ بکھر گئی۔ ”پیاس کے مارے گلا سوکھ رہا ہے اور یہ چڑھائی ہے کہ ختم ہونے میں نہیں آتی۔“

ڈاکٹر نے اپنے کندھے پر لٹکتے ہوئے تھرماس کو اتار کر لتیکا کے ہاتھوں میں دیتے ہوئے کہا ۔ ”تھوڑی سی کافی بچی ہے، شاید کچھ مدد کر سکے۔“

” پکنک میں آپ کہاں رہ گئے ڈاکٹر، کہیں دکھائی نہیں دیئے؟“

” دوپہر بھر سوتا رہا،مس ووڈ کے سنگ۔ میرا مطلب ہے، مس ووڈ پاس بیٹھی تھیں۔ مجھے لگتا ہے، مس ووڈ مجھ سے محبت کرتی ہیں۔“کوئی بھی مذاق کرتے وقت ڈاکٹر اپنی مونچھوں کے کونوں کو چبانے لگتا ہے۔

”کیا کہتی تھیں؟“ لتیکا نے تھرماس سے کافی کو منہ میں انڈےل لیا۔

 ”شاید کچھ کہتیں، لیکن بدقسمتی سے بیچ میں ہی مجھے نیند آ گئی۔ میری زندگی کے کچھ خوبصورت محبت بھرے سیاق و سباق، کم بخت اس کی نیند کی وجہ سے ادھورے رہ گئے ہیں۔“

اور اس دوران جب دونوں باتیں کر رہے تھے، ان کے پیچھے میڈوز اور موٹر روڈ کے ساتھ چڑھتی ہوئی چیڑ اور بانج کے درختوں کی قطاریں شام کے گھرتے اندھیرے میں ڈوبنے لگیں، گویا دعا کرتے ہوئے انہوں نے خاموشی سے اپنے سر نیچے جھکا لیے ہوں۔ انہی درختوں کے اوپر بادلوں میں چیپل کا کراس کہیں الجھا پڑا تھا۔ اس کے نیچے پہاڑوں کی ڈھلانوں پر بچھے ہوئے کھیت بھاگتی ہوئی گلہریوں سے لگ رہے تھے جومانو کسی کی ٹوہ میں ٹھٹک گئے ہوں۔

”ڈاکٹر، ایم ہیوبرٹ پکنک پر نہیں آئے؟“

ڈاکٹر مکرجی ٹارچ جلا کر لتیکا کے آگے آگے چل رہے تھے۔ ”میں نے انہیں منع کر دیا تھا۔“

”کیوں؟“

اندھیرے میں پاو ¿ں کے نیچے دبتے ہوئے پتوں کی چرمراہٹ کے آگے کچھ سنائی نہیں دیتا تھا۔ ڈاکٹر مکرجی نے آہستہ سے کھانسا۔ ”گزشتہ کچھ دنوں سے مجھے شبہ ہوتا جا رہا ہے کہ ہیوبرٹ کے سینے کا درد شاید معمولی درد نہیں ہے۔“ڈاکٹر تھوڑا سا ہنسا، جیسے اسے اپنی یہ سنجیدگی بدمزہ لگ رہی ہو۔

ڈاکٹر نے انتظار، شاید لتیکا کچھ کہے گی۔ لیکن لتیکا خاموشی اس کے پیچھے چل رہی تھی۔ ”یہ میرا محض شک ہے، شاید میں بالکل غلط ہوں، لیکن یہ بہتر ہو گا کہ وہ اپنے ایک پھیپھڑے کا ایکس رے کروا لیں، اس سے کم از کم کوئی وہم تو نہیں رہے گا۔“

” آپ نے ایم ہیوبرٹ سے اس کے بارے میں کچھ کہا ہے؟“

” ابھی تک کچھ نہیں کہا۔ ہیوبرٹ ذرا سی بات پر فکر مند ہو جاتا ہے، اس لیے کبھی جرات نہیں کر پاتا۔“ڈاکٹر کو لگا، اس کے پیچھے آتے ہوئے لتیکا کے پیروں کی آواز اچانک بند ہوگئی ہے۔ انہوں نے پیچھے مڑ کر دیکھا، لتیکا بیچ سڑک پر اندھیرے میںپرچھائیں بنی خاموش اداس کھڑی ہے۔

”ڈاکٹر ۔۔۔“ لتیکا کی آواز بھرائی ہوئی تھی۔

”کیا بات ہے مس لتیکا ، آپ رک کیوں گئی؟“

” ڈاکٹر،کیاایم ہیوبرٹ ۔۔۔؟“

ڈاکٹر نے اپنی ٹارچ کی مدھم روشنی لتیکا پر اٹھا دی ۔اس نے دیکھا لتیکا کا چہرہ ایک دم زرد پڑ گیا ہے اور وہ رہ رہ کر کانپ جاتی ہے۔ ”مس لتیکا ، کیا بات ہے، آپ تو بہت ڈری ہوئی سی معلوم پڑتی ہیں؟“

” کچھ نہیں ڈاکٹر، مجھے ۔۔۔مجھے کچھ یاد آ گیا تھا۔“وہ دونوں پھر چلنے لگے۔ کچھ دور جانے پر ان کی آنکھیں اوپر اٹھ گئیں۔ پرندوں کا ایک جھنڈ ملگجے آسمان میں تکون بناتا ہوا پہاڑوں کے پیچھے سے ان کی طرف آ رہا تھا۔ لتیکا اور ڈاکٹر سر اٹھا کر ان پرندوں کو دیکھتے رہے۔ لتیکا کو یاد آیا، ہر سال موسم سرما کی چھٹیوں سے پہلے یہ پرندے میدانوں کی جانب اڑتے ہیں، کچھ دنوں کےلئے بیچ کے اس پہاڑی اسٹیشن پر بسیرا کرتے ہیں، انتظار کرتے ہیں برفانی دنوں کا، جب وہ نیچے اجنبی،انجانے دیشوں میں اڑ جائیں گے۔

کیا وہ سب بھی انتظار کر رہے ہیں؟ وہ، ڈاکٹر مکرجی ،ایم ہیوبرٹ ، لیکن کہاں کےلئے، ہم کہاں جائیں گے؟

لیکن اس کا کوئی جواب نہیں ملا۔اس اندھیرے میں میڈوز کے آبشار کے شور اور دیودار کے پتوں کی سرسراہٹ کے علاوہ کچھ سنائی نہیں دیتا تھا۔ لتیکا ہڑبڑاکر چونک گئی۔ اپنی چھڑی پر جھکا ہوا ڈاکٹر آہستہ آہستہ سیٹی بجا رہا تھا۔

”مس لتیکا ، جلدی کریں، بارش شروع ہونے والی ہے۔“ہوسٹل پہنچتے پہنچتے بجلی چمکنے لگی تھی۔ لیکن اس رات بارش دیر تک نہیں ہوئی۔ بادل برسنے بھی نہیں پاتے تھے کہ ہواﺅں کے تھپےڑوں سے دھکیل دیئے جاتے تھے۔ دوسرے دن تڑکے ہی بس پکڑنی تھی، اس لئے ڈنر کے بعد لڑکیاں سونے کےلئے اپنے اپنے کمروں میں چلی گئی تھیں۔

جب لتیکا اپنے کمرے میں گئی، تو اس وقت کماﺅ رجمنٹل سینٹر کا بگل بج رہا تھا۔ اس کے کمرے میں کریم الدین کوئی پہاڑی دھن گنگناتا ہوا لیمپ میں گیس پمپ کر رہا تھا۔ لتیکا انہی کپڑوں میں، کشن کو دوہرا کر کے لیٹ گئی۔ کریم الدین نے اچٹتی ہوئی نگاہ سے لتیکا کو دیکھا، پھر اپنے کام میں لگ گیا۔

 ”پکنک کیسی رہی میم صاحب؟“

” تم کیوں نہیں آئے،سبھی لڑکیاں تمہیں پوچھ رہی تھیں؟“ لتیکا کو لگا، دن بھر کی تھکاوٹ آہستہ آہستہ اس کے جسم کی پسلیوں پر چپٹتی جارہی ہے۔ یکایک اس کی آنکھیں نیند کے بوجھ سے جھپکنے لگیں۔

 ”میں چلا آتا تو ہیوبرٹ صاحب کی تیمارداری کون کرتا۔ دن بھر ان کے بستر سے لگاہوا بیٹھا رہا اور اب وہ غائب ہو گئے ہیں۔“ کریم الدین نے کندھے پر لٹکتے ہوئے میلے کچےلے تولیے کو اتارا اور لیمپ کے شیشوں کی گرد پونچھنے لگا۔

 لتیکا کی نیم وا آنکھیں کھل گئی۔ ”کیا ہیوبرٹ صاحب اپنے کمرے میں نہیں ہیں؟“

” خدا جانے، اس حالت میں کہاں بھٹک رہے ہیں۔ پانی گرم کرنے کچھ دیر کےلئے باہر گیا تھا، واپس آنے پر دیکھتا ہوں کہ کمرہ خالی پڑا ہے۔“ کریم الدین بڑبڑاتا ہوا باہر چلا گیا۔ لتیکا نے لیٹے لیٹے چپلوں کو پیروں سے اتار دیا۔

 ہیوبرٹ اتنی رات کو کہاں گئے؟ لیکن لتیکا کی آنکھیں پھر جھپک گئیں۔ دن بھر کی تھکاوٹ نے سب پریشانیوں، سب سوالوں پرکنجی لگا دی تھی،گویا دن بھر آنکھ مچولی کھیلتے ہوئے اس نے اپنے کمرے میں ”دیے“ کو چھو لیا تھا۔ اب وہ محفوظ تھی، کمرے کی فصیل کے اندر اسے کوئی روک نہیں سکتا۔ دن کے اجالے میں وہ گواہ تھی، مجرم تھی، ہر چیز کا اس سے تقاضہ تھا، اب اس تنہائی میں کوئی گلہ نہیں، ملامت نہیں، سبھی کھینچاتانیاں ختم ہو گئی ہیں، جو اپنا ہے، وہ بالکل اپنا سا ہو گیا ہے، جو اپنا نہیں ہے، اُس کا دکھ نہیں، اپنانے کی فرصت نہیں ۔۔۔

 لتیکا نے دیوار کی طرف چہرہ گھما لیا۔ لیمپ کے پھیکی روشنی میں ہوا میں کانپتے پردوں کے سائے ہل رہے تھے۔ بجلی کڑکنے سے کھڑکیوں کے شیشے چمک چمک جاتے تھے، دروازے چٹخنے لگتے تھے، جیسے کوئی باہر سے دھیرے دھیرے کھٹکھٹا رہا ہو۔ کاریڈور سے اپنے اپنے کمروں میں جاتی ہوئی لڑکیوں کی ہنسی،باتوں کے چند لفظ، پھر سب کچھ پرسکون ہو گیا، لیکن پھر بھی دیر تک کچی نیند میں وہ چراغ کا دھیما سا ”سی سی“ کا شور سنتی رہی۔ کب وہ شور بھی خاموشی کا حصہ بن کر خاموش ہو گیا، اسے پتہ نہ چلا۔ کچھ دیر بعد اس کو لگا، سیڑھیوں سے کچھ دبی آوازیں آ رہی ہیں، بیچ بیچ میں کوئی چیخ اٹھتا ہے اور پھر اچانک آوازیں مدہم پڑ جاتی ہیں۔

 ”مس لتیکا ، ذرا اپنا لیمپ لے آئیں۔“کوریڈور کے زینے سے ڈاکٹر مکرجی کی آواز آئی تھی۔

کاریڈور میں اندھیرا تھا۔ وہ تین چار سیڑھیاں نیچے اتری، لیمپ نیچے کیا۔ سیڑھیاں کے جنگلے پر ہیوبرٹ نے اپنا سر رکھ دیا تھا، اس کا ایک بازو جنگلے سے نیچے لٹک رہا تھا اور دوسرا ڈاکٹر کے کندھے پر جھول رہا تھا، جسے ڈاکٹر نے اپنے ہاتھوں میں جکڑ رکھا تھا۔

 ”مس لتیکا ، لیمپ ذرا اور نیچے جھکا دیجئے۔۔ ہیوبرٹ ۔۔ ہیوبرٹ ۔۔ ۔“ڈاکٹر نے ہیوبرٹ کو سہارا دے کر اوپر کھینچا۔ ہیوبرٹ نے اپنا چہرہ اوپر کیا۔ وہسکی کی تیز بو کا جھونکا لتیکا کے سارے جسم کو جھنجھوڑ گیا۔ ہیوبرٹ کی آنکھوں میں لال ڈورے کھنچ آئے تھے، قمیض کا کالر پلٹ گیا تھا اور ٹائی کی گرہ ڈھیلی ہو کر نیچے کھسک آئی تھی۔ لتیکا نے کانپتے ہاتھوں سے لیمپ سیڑھیوں پر رکھ دیا اورخود دیوار کے سہارے کھڑی ہو گئی۔ اس کا سر چکرانے لگا تھا۔

”ان اے بیک لین آف دی سٹی، دیئر اِز اے گرل ہو لوز می۔۔۔“ ہیوبرٹ ہچکیوں کے درمیان گنگنا اٹھتا تھا۔

” ہیوبرٹ پلیز ۔۔۔پلیز۔“ڈاکٹر نے ہیوبرٹ کے لڑکھڑاتے جسم کو اپنی مضبوط گرفت میں لے لیا۔

”مس لتیکا ، آپ لیمپ لے کر آگے چلئے۔“ لتیکا نے لیمپ اٹھایا۔ دیوار پر ان تینوںکے سائے ڈگمگانے لگے۔

”ان اے بیک لین آف دی سٹی، دئیر از اے گرل ہو لوز می۔“ہیوبرٹ ، ڈاکٹر مکرجی کے کندھے پر سر ٹکائے ،اندھیری سیڑھیوں پر الٹے سیدھے پاو ¿ں رکھتا چڑھ رہا تھا۔

”ڈاکٹر، ہم کہاں ہیں؟“ ہیوبرٹ دفعتاً اتنی زور سے چلایا کہ اسکی لڑکھڑاتی آواز سنسان اندھیرے میں کاریڈور کی چھت سے ٹکراکر دیر تک ہوا میں گونجتی رہی۔

” ہیوبرٹ ۔۔۔“ ڈاکٹر کو ایکدم ہیوبرٹ پر غصہ آ گیا، پھر اپنے غصے پر ہی اسے جھنجھلاہٹ سی محسوس ہوئی اور وہ ہیوبرٹ کی پشت تھپتھپانے لگا۔ ”کوئی بات نہیں ہے ہیوبرٹ ڈئیر،تم صرف تھکے ہو۔“ ہیوبرٹ نے اپنی آنکھیں ڈاکٹر پر گڑا دیں، ان میں ایک خوفزدہ بچے کی سی وحشت جھلک رہی تھی، گویا ڈاکٹر کے چہرے سے وہ کسی سوال کا جواب حاصل کر لینا چاہتا ہو۔ ہیوبرٹ کے کمرے میں پہنچ کر ڈاکٹر نے اسے بستر پر لٹا دیا۔ ہیوبرٹ نے بغیر کسی مزاحمت کے خاموشی سے جوتے موزے اتروا دیئے۔ جب ڈاکٹر، ہیوبرٹ کی ٹائی اتارنے لگا، تو ہیوبرٹ ، اپنی کہنی کے سہارے اٹھا، کچھ دیر تک ڈاکٹر کو آنکھیں پھاڑتے ہوئے گھورتا رہا، پھر آہستہ سے اس کا ہاتھ پکڑ لیا۔

 ”ڈاکٹر، کیا میں مر جاو ¿ں گا؟“

” کیسی بات کرتے ہو ہیوبرٹ ۔“ڈاکٹر نے ہاتھ چھڑا کر آہستہ سے ہیوبرٹ کا سر تکیے پر ٹکا دیا۔ ”گڈ نائٹ ہیوبرٹ۔“

 ”گڈ نائٹ ڈاکٹر۔“ ہیوبرٹ نے کروٹ بدل لی۔

”گڈ نائٹ ایم ہیوبرٹ ۔۔۔“ لتیکا کی آواز بھرا گئی۔ لیکن ہیوبرٹ نے کوئی جواب نہیں دیا۔ کروٹ بدلتے ہی اسے نیند آ گئی تھی۔

کاریڈور میں واپس آکر ڈاکٹر مکرجی ریلنگ کے سامنے کھڑے ہو گئے۔ ہوا کے تیز جھونکوں سے آسمان میں پھیلے بادلوں کی پرتیں جب کبھی اکہری ہو جاتیں، تب ان کے پیچھے سے چاندنی بجھتی ہوئی آگ کے دھواں کی مانند آس پاس کی پہاڑیوں پر پھیل جاتی تھی۔

 ”آپ کو ایم ہیوبرٹ کہاں ملے؟“ لتیکا کاریڈور کے دوسرے کونے میں ریلنگ پر جھکی ہوئی تھی۔

 ”کلب کے بار میں ان کو دیکھا تھا، میں نہ پہنچتا تو نہ جانے کب تک بیٹھے رہتے۔“ڈاکٹر مکرجی نے سگریٹ جلائی۔ انہیں ابھی ایک دو مریضوں کے گھر جانا تھا۔ کچھ دیر تک انہیں ٹال دینے کے ارادے سے وہ کاریڈور میں کھڑے رہے۔نیچے اپنے کوارٹر میں بیٹھا ہوا کریم الدین ماﺅتھ آرگن پر کوئی پرانی فلمی دھن بجا رہا تھا۔

”آج دن بھر بادل چھائے رہے، لیکن کھل کر بارش نہیں ہوئی۔“

 ”کرسمس تک شاید موسم ایسا ہی رہے گا۔“کچھ دیر تک دونوں خاموش کھڑے رہے۔ اسکول کے باہر پھیلے لان سے جھینگروں کا مسلسل آتا شور چاروں جانب پھیلی اداسی کو اور بھی زیادہ گھمبیر بنا رہا تھا۔ کبھی کبھی اوپر موٹر روڈ پر کسی کتے کی بلبلاہٹ سنائی پڑ جاتی تھی۔

 ”ڈاکٹر ۔۔۔ کل رات آپ نے ہیوبرٹ سے کچھ کہا تھا میرے بارے میں؟“

” وہی جو سب لوگ جانتے ہیں اور ہیوبرٹ ، جسے جاننا چاہیے تھا، نہیں جانتا تھا۔“ڈاکٹر نے لتیکا کی طرف دیکھا، وہ مذبذب سی ریلنگ پر جھکی ہوئی تھی۔

”ویسے ہم سب میںاپنی اپنی ضد ہوتی ہے، کوئی چھوڑ دیتا ہے، کوئی آخر تک اس سے چپکا رہتا ہے۔“ڈاکٹر مکرجی اندھیرے میں مسکرائے۔ ان کی مسکراہٹ میں خشک سی اکتاہٹ کا اظہار بھرا ہوا تھا۔ ”کبھی کبھی میں سوچتا ہوں مس لتیکا ، کسی چیز کو نہ جاننا اگر غلط ہے تو جان بوجھ کر نہ بھول پانا، ہمیشہ جونک کی طرح اس سے چپٹے رہنا، یہ بھی غلط ہے۔ برما سے آتے ہوئے میری بیوی کی موت ہوئی تھی، مجھے اپنی زندگی بیکار سی لگی تھی۔ آج اس بات کو عرصہ گزر گیا اور جیسا کہ آپ دیکھتی ہیں، میں جی رہا ہوں ،امید ہے کہ کافی عرصہ مزید جیوںگا۔ زندگی بہت دلچسپ لگتی ہے اور اگر عمر کی مجبوری نہ ہوتی تو شاید میں دوسری شادی کرنے میں بھی نہ ہچکچاتا۔ اس کے باوجود کون کہہ سکتا ہے کہ میں اپنی بیوی سے محبت نہیں کرتا تھا، آج بھی کرتا ہوں۔“

” لیکن ڈاکٹر ۔۔۔ ” لتیکا کا گلا رندھ گیا۔

”کیا مس لتیکا ۔۔۔“

”ڈاکٹر ،سب کچھ ہونے کے باوجود وہ کیا چیز ہے جو ہمیں چلائے جاتی ہے، ہم رکتے ہیں تو بھی اپنے ریلے میں وہ ہمیں گھسیٹ لے جاتی ہے۔“ لتیکا کو لگا کہ وہ جو کہنا چاہ رہی ہے، کہہ نہیں پا رہی، جیسے اندھیرے میں کچھ کھو گیا ہے، جو مل نہیں پا رہا، شاید کبھی نہیں مل پائے گا۔

 ”یہ تو آپ کو فادر اےلمنڈ ہی بتا سکیں گے مس لتیکا۔“ ڈاکٹر کی کھوکھلی ہنسی میں ان کا پرانا سنک ابھر آیا۔ ”اچھا چلتا ہوں، مس لتیکا ، مجھے کافی دیر ہو گئی ہے،” ڈاکٹر نے دیاسلائی جلا کرگھڑی کو دیکھا۔ ”گڈ نائٹ، مس لتیکا ۔“

” گڈ نائٹ، ڈاکٹر۔“

ڈاکٹر کے جانے کے بعد لتیکا کچھ دیر تک اندھیرے میں ریلنگ سے لگی کھڑی رہی۔ ہوا چلنے سے کاریڈور میں جمع ہواکہرا اڑ جاتاتھا۔ شام کو سامان باندھتے ہوئے لڑکیوں نے اپنے اپنے کمروں کے سامنے جو پرانی کاپیوں، اخبارات اور ردی کے ڈھیر لگا دیئے تھے، وہ سب کے سب بھی اندھیرے کاریڈور میں ہوا کے جھونکوں سے ادھر ادھر بکھرنے لگے تھے۔

 لتیکا نے لیمپ اٹھایا اور اپنے کمرے کی طرف جانے لگی۔ کاریڈور میں چلتے ہوئے اس نے دیکھا، جولی کے کمرے میں روشنی کی ایک پتلی لکیر دروازے کے باہر کھنچ آئی ہے۔ لتیکا کو کچھ یاد آیا۔ وہ کچھ لمحوں تک سانس روکے جولی کے کمرے کے باہر کھڑی رہی۔ کچھ دیر بعد اس نے دروازہ کھٹکھٹایا۔ اندر سے کوئی آواز نہیں آئی۔ لتیکا نے دبے ہاتھوں سے ہلکا سا دھکا دیا، دروازہ کھل گیا۔ جولی لیمپ بجھانا بھول گئی تھی۔ لتیکا آہستہ آہستہ دبے پاو ¿ں چلتی جولی کے پلنگ کے پاس چلی آئی۔ جولی کا سوتا ہوا چہرہ لیمپ کے پھیکی روشنی میں زرد سا دکھائی دے رہا تھا۔ لتیکا نے اپنی جیب سے وہی نیلا لفافہ نکالا اور اسے آہستہ سے جولی کے تکیے کے نیچے دباکر رکھ دیا۔

٭٭٭

رسپَرِیا

پھنیشورناتھ رینو /عامر صدیقی

ہندی کہانی

…………….

پھنیشورناتھ رینو ۔پیدائش:۴ مارچ ۱۲۹۱ ء، اوراہی ہنگنا، ضلع اراریہ (بہار)۔میدان: کہانی، ناول، رپورتاژ، یادداشتیں۔ناول: میلا آنچل، پرتی پریکتھا، جلوس، دِیرگھتپا، کتنے چوراہے، پلٹو بابو روڈ۔کہانیوں کے مجموعے: ، ٹھمری، اچھے آدمی، وغیرہ۔یادداشتیں:رنجل دھنجل، شرُت اشرت پوروے، آتم پرچیہ، و ن تلسی کی گند، وقت کی شلا پر۔رپور تاژ: نیپالی کرنتی کتھا ،وغیرہ۔انتقال:۱۱ اپریل ۷۷۹۱ ئ۔

…. …. ….

دھول میں پڑے قیمتی پتھر کو دیکھ کرجوہری کی آنکھوں میں ایک نئی چمک جھلملا گئی ۔ اپروپ روپ۔

 چرواہے موہنا چھونڑا کو دیکھتے ہی پنچکوڑی مِردنگیا کی منہ سے نکل پڑا ۔ اپروپ روپ

کھیتوں، میدانوں، باغوں باغیچوں اور گائے بیلوں کے بیچ چرواہے موہنا کی سندرتا۔

 مِردنگیا کی کمزور، بے نور آنکھیں روشن ہو گئیں۔

 موہنا نے مسکرا کر پوچھا،”تمہاری انگلی تو رسپریا بجاتے ٹیڑھی ہو گئی ہے، ہے نہ؟“

”اے۔“بوڑھے مِردنگیا نے چونکتے ہوئے کہا،” رسپریا ؟ ۔۔۔ ہاں ۔۔۔نہیں۔ تم نے کیسے ۔۔۔تم نے کہاں سنا بے ۔۔۔؟“

”بیٹا” کہتے کہتے وہ رک گیا۔پرمان پور میں اس بار ایک برہمن لڑکے کو اس نے لاڈسے ”بیٹا“ کہہ دیا تھا۔ سارے گاو ¿ں کے لڑکوں نے اسے گھیر کر مار پیٹ کی تیاری شروع کردی تھی ،”بہردار ہوکر برہمن کے بچے کو بیٹا کہے گا؟ مارو سالے بڈھے کو گھیر کر۔ ۔۔۔مردنگ پھوڑ دو۔“

 مِردنگیا نے ہنس کر کہا تھا،”اچھا، اس بار معاف کر دو سرکار۔ اب سے آپ لوگوں کو باپ ہی کہوں گا۔“

بچے خوش ہو گئے تھے۔ ایک دو ڈھائی سال کے ننگے لڑکے کی ٹھوڑی پکڑ کر وہ بولا،”کیوں، ٹھیک ہے نہ باپوجی؟“

بچے ٹھٹھا مار کر ہنس پڑے تھے۔

لیکن، اس واقعے کے بعد پھر کبھی اس نے کسی بچے کو بیٹا کہنے کی ہمت نہیں کی تھی۔ موہنا کو دیکھ کر بار بار بیٹا کہنے کی خواہش ہوتی ہے۔

”رسپریا کی بات کس نے بتائی تم سے؟ ۔۔۔بولو بیٹا۔“

دس بارہ سال کا موہنا بھی جانتا ہے کہ پنچکوڑی اَدھ پگلا ہے۔کون اس سے نجات پائے۔ اس نے دور میدان میں چرتے ہوئے اپنے بیلوں کی طرف دیکھا۔

 مِردنگیا، کمل پور کے بابو لوگوں کے یہاں جا رہا تھا۔کمل پور کے نندوبابو کے گھرانے میں بھی مِردنگیا کو دو چار میٹھی باتیں سننے کو مل جاتی ہیں۔ ایک دو وقت کا بھوجن تو بندھا ہوا ہی ہے، کبھی کبھی رس چرچا کتھا بھی یہیں آ کر سنتا ہے وہ۔ دو سال کے بعد وہ اس علاقے میں آیا ہے۔ دنیا بہت تیزی سے بدل رہی ہے۔آج صبح شوبھا مشر کے چھوٹے لڑکے نے تو صاف صاف کہہ دیا ۔

 ”تم جی رہے ہو یا مذاق کر رہے ہومِردنگیا ؟“

 ہاں ، یہ جینا بھی کوئی جینا ہے۔نری بے شرمی ہے، اور مذاق کی بھی حد ہوتی ہے۔پندرہ سال سے وہ گلے میں مردنگ لٹکا کر گاو ¿ں گاﺅں گھومتا ہے،بھیک مانگتا ہے۔دائیں ہاتھ کی ٹیڑھی انگلی مردنگ پر بیٹھتی ہی نہیں ہے، مردنگ کیا بجائے گا۔ اب تو،”دھاتِنگ دھاتِنگ“ی بڑی مشکل سے بجاتا ہے۔ بے تحاشہ گانجے،بھنگ کے استعمال سے گلے کی آواز مضروب ہوگئی ہے۔ مگر مردنگ بجاتے وقت ودیاپتی کی پداولی گانے کی وہ کوشش ضرور کرے گا۔پھٹی دُھنکنی کی جیسی آواز نکلتی ہے، ٹھیک ویسی ہی آواز۔سوں یہ ،سوں یہ۔

پندرہ بیس سال پہلے تک ودیاپتی نام کی تھوڑی پوچھ ہو جاتی تھی۔ شادی بیاہ، یاگی اپنےن، منڈن چھےدن وغیرہ جیسے شبھ کاموں میں ودپتیا منڈلی کا بلاوا ہوتا تھا۔ پنچکوڑی مِردنگیا کی منڈلی نے سہرسہ اور پورنیہ ضلع میں کافی نام کمایا ہے۔ پنچکوڑی مِردنگیاکو کون نہیں جانتا۔ سب جانتے ہیں، وہ ادھ پگلا ہے۔گاو ¿ں کے بڑے بوڑھے کہتے ہیں ۔ ”ارے، پنچکوڑی مِردنگیا کا بھی ایک زمانہ تھا۔“

اِس زمانے میں موہنا جیسا لڑکا بھی ہے، سندر، سلونا اور سریلا۔رسپریا گانے کی درخواست کرتا ہے،”ایک رسپریا گاﺅ نہ مِردنگیا۔“

”رسپریا سنو گے؟ ۔اچھا سناﺅںگا۔ پہلے بتاﺅ، کس نے ۔۔۔“

”ہی اے اے ہی اے اے ۔۔۔ موہنا ، بیل بھاگے۔“ایک چرواہا چلایا،”رے موہنا ، پیٹھ کی چمڑی ادھےڑے گاکرمو۔“

”ارے باپ۔“ موہنا بھاگا۔

کل ہی کرمو نے اسے بری طرح پیٹا ہے۔ دونوں بیلوں کو ہرے ہرے پاٹ کے پودوں کی مہک کھینچ لے جاتی ہے بار بار۔کھٹ مٹھال پاٹ۔

پنچکوڑی نے پکار کر کہا،”میں یہیں درخت کے سائے میں بیٹھا ہوں۔ تم بیل ہانک کر لوٹو۔ رسپریا نہیں سنو گے؟“

 موہنا جا رہا تھا۔ اس نے پلٹ کر دیکھا بھی نہیں۔

ودیاپت ناچ والے رسپریا گاتے تھے۔ سہرسہ کے جوگیندر جھا نے ایک بار ودیاپتی کے بارہ پدوں کی ایک کتاب چھپوائی تھی۔ میلے میں خوب بکری ہوئی تھی رسپریا پوتھی کی۔ وداپت ناچ والوں نے گا گا کر جنپریا بنا دیا تھا رسپریا کو۔

کھیت کے ”آل” پر جھرجامُن کے سائے میں پنچکوڑی مِردنگیا بیٹھا ہوا ہے، موہنا کی راہ دیکھ رہا ہے۔جیٹھ کی چڑھتی دوپہریامیں کام کرنے والے بھی اب گیت نہیں گاتے ہیں۔کچھ دنوں کے بعد کوئل بھی کوکنا بھول جائے گی کیا؟ ایسی دوپہریا میں خاموشی سے کیسے کام کیا جاتا ہے۔ پانچ سال پہلے تک لوگوں کے دل میںانبساط باقی تھا۔پہلی بارش میں بھیگی ہوئی دھرتی کے ہرے ہرے پودوں سے ایک خاص قسم کی خوشبو نکلتی ہے ۔ تپتی دوپہریا میں موم کی طرح گل اٹھتی تھی ۔ رس کی ڈالی۔ وہ گانے لگتے تھے۔بِرہا، چانچر، لگنی۔ کھیتوں میں کام کرتے ہوئے گانے والے گیت بھی، وقت کا خیال کر کے گائے جاتے ہیں۔ رم جھم بارش میں بارہ ماسا، چلچلاتی دھوپ میں بِرہا، چانچر اور لگنی ،

” ہاں رے،ہل جوتے ہلوایا بھیا رے ۔۔۔“

کھرپی رے چلاوے ۔۔۔ مجدور۔

اےہ پنتھے،دھنی موراہے رُُسلی۔

کھیتوں میں کام کرتے ہلواہوں اور مزدوروں سے کوئی بِرہی پوچھ رہا ہے، محتاط لہجے میں ،اس کی روٹھی ہوئی دھنی کو اس راہ سے جاتے دیکھا ہے کسی نے؟ ۔۔۔

اب تو دوپہریایک رنگی کٹتی ہے، گویا کسی کے پاس ایک لفظ بھی نہیں رہ گیا ہے۔

آسمان میں چکر کاٹتے ہوئے چیل نے ٹِنکاری بھری۔ ٹ ۔۔۔ای ۔۔۔ٹِن۔ہِی۔ا۔

 مِردنگیانے گالی دی۔ ”شیطان۔“

اسکو چھوڑ کر موہنا دور بھاگ گیا ہے۔ وہ مشتاق ہوکر انتظار کر رہا ہے۔ جی کرتا ہے، دوڑ کر اسکے پاس چلا جائے۔ دور چرتے ہوئے مویشیوں کے جھنڈوں کی طرف بار بار وہ دیکھنے کی بیکار کوشش کرتا ہے۔سب دھندلا۔

اس نے اپنی جھولی ٹٹول کر دیکھا۔آم ہیں،مُوڑھی ہے۔اسے بھوک لگی۔ پھر موہنا کے سوکھے منہ کی یاد آئی اور بھوک مٹ گئی۔

 موہنا جیسے سندر، شریف لڑکوں کی تلاش میں ہی اسکی زندگی کے سب سے زیادہ دن گزرے ہیں۔وداپت ناچ میں ناچنے والے ”نٹوآ“ کی تلاش کھیل نہیں۔اعلی ذات کے گھر کا پتہ نہیں، پر چھوٹی ذات کے لوگوں کے یہاں موہنا جیسے سندر چہرہ، لوچدار لڑکے ہمیشہ پیدا نہیں ہوتے۔ یہ اوتار لیتے ہیں وقت وقت پر جدا جدا ۔۔۔

مےتھل برہمنوں، کائیستھوں اور راجپوتوں کے یہاں وداپتوالو ںکی بڑی عزت ہوتی تھی۔اپنی بولی ، متھلام میں نٹوآ کے منہ سے ”جنم اودھی ہم روپ نِہارل“سن کر وہ نہال ہو جاتے تھے۔ تو ہر منڈلی کا ”مُول گےن“نٹوآ کی تلاش میں گاو ¿ں گاﺅں بھٹکتا پھرتا تھا۔ ایسا لڑکا، جسے سجا سنوار کرناچ میں اتارتے ہی تماشبین میں سرگوشی کی ایک لہر پھیل جائے۔

”ٹھیک براہمنی کی طرح لگتا ہے۔ ہے نہ؟“

”مدھو کانت ٹھاکر کی بیٹی کی طرح ۔۔۔“

”نا۔ چھوٹی چمپاجیسی صورت ہے۔“

 پنچکوڑی گنی آدمی ہے۔ دوسری دوسری منڈلی میں مُول گےن اور مِردنگیا کی اپنی اپنی جگہ ہوتی ہے۔ پنچکوڑی مُو ل گےن بھی تھا اور مِردنگیابھی ۔ گلے میں مردنگ لٹکا کر بجاتے ہوئے وہ گاتا تھا، ناچتا تھا۔ ایک ہفتے میں ہی نئے لڑکے بھانوری دے کر پنڈال میں اترنے کے قابل ناچ سیکھ لیتے تھے۔

اسے ناچ اور گانا سکھانے میں کبھی مشکل نہیں ہوئی، مردنگ کے خاص ”بول“پر لڑکوں کے پاو ¿ں خود ہی تھرکنے لگتے تھے۔ لڑکوں کے ضدی ماں باپ سے نمٹنا البتہ مشکل بیوپار ہوتا تھا۔ خالص مےتھلی زبان میں اور بھی شہد میں لپیٹ کر وہ پھسلاتا ۔۔۔

”سن کنہیا بھی ناچتے تھے۔ ناچ تو ایک گُن ہے۔ارے، جاچک کہو یا دسدوآری۔ چوری ڈکیتی اور آوارہ گردی سے اچھا ہے، اپنا اپنا ”گن“ دکھا کر لوگوں کو رِجھا کر گزارا کرنا۔“

ایک بار اسے لڑکے کی چوری بھی کرنی پڑی تھی۔بہت پرانی بات ہے۔ اتنی مار لگی تھی کہ ۔۔۔بہت پرانی بات ہے۔

پرانی ہی سہی، بات تو ٹھیک ہے۔

”رسپریا بجاتے وقت تمہاری انگلی ٹیڑھی ہوئی تھی۔ ٹھیک ہے نہ؟“

 موہنا نہ جانے کب لوٹ آیا۔

 مِردنگیا کے چہرے پر چمک لوٹ آئی۔ وہ موہنا کی طرف ٹکٹکی لگا کر دیکھنے لگا۔ آہ یہ گُن وان مر رہا ہے۔ دھیرے دھیرے، گھل گھل کر ۔وہ کھو رہا ہے۔ لال لال ہونٹوں پر بیڑی کی کاجل لگ گئی ہے۔ پیٹ میں تِلّی ہے ضرور۔ ۔۔۔

 مِردنگیا حکیم بھی ہے۔ ایک جھنڈ برابربچوں کا باپ آہستہ آہستہ ایک خاندانی طبیب کی قابلیت حاصل کر لیتا ہے۔تہواروں کے باسی تباسی بھوجنوں کی مار کبھی کبھی بہت بری ہوتی۔ مِردنگیا اپنے ساتھ نمک سلیمانی، چانمار پاچن اور کونین کی گولی ہمیشہ رکھتا تھا۔لڑکوں کو ہمیشہ گرم پانی کے ساتھ ہلدی کی بُکنی کھلاتا۔ پیپل، کالی مرچ، ادرک وغیرہ کو گھی میں بھون کر شہد کے ساتھ صبح شام چٹاتا۔۔۔۔گرم پانی۔

پوٹلی سے موڑھی اورآم نکالتے ہوئے مِردنگیا بولا،” ہاں ، گرم پانی۔ تیری تِلّی بڑھ گئی ہے، گرم پانی پیو۔“

”یہ تم نے کیسے جان لیا؟ فاربس گنج کے ڈاگڈربابو بھی کہہ رہے تھے، تِلّی بڑھ گئی ہے۔ دوا ….”

آگے کہنے کی ضرورت نہیں۔ مِردنگیا جانتا ہے، موہنا جیسے لڑکوں کے پیٹ کی تِلّی ،چتا پر ہی گلتی ہے۔ کیا ہوگا پوچھ کر، کہ دوا کیوں نہیں کرواتے۔

”ماں، بھی کہتی ہے، ہلدی کی بُکنی کے ساتھ روز گرم پانی لو۔ تِلّی گل جائے گی۔“

 مِردنگیا نے مسکرا کر کہا،”بڑی سیانی ہے تمہاری ماں۔“

کیلے کے سوکھے پتلے پر موڑھی اور آم رکھ کر اس نے بڑے پیار سے کہا،”آو ¿، ایک مٹھی کھا لو۔“

”نہیں، مجھے بھوک نہیں۔“

مگر موہنا کی آنکھوں سے رہ رہ کر کوئی جھانکتا تھا، موڑھی اور آم کو ایک ساتھ نگل جانا چاہتا تھا۔ ۔۔۔بھوکا، بیمار،لاچار۔

”آو ¿، کھا لو بیٹا۔رسپریا نہیں سنو گے؟“

ماں کے سوا، آج تک کسی دوسرے شخص نے موہنا کو اس طرح محبت سے کبھی پروسے بھوجن پر نہیں بلایا۔لیکن، دوسرے چرواہے دیکھ لیں تو ماں سے کہہ دیں گے۔ ۔۔۔بھیک کا اناج۔

”نہیں، مجھے بھوک نہیں۔“

 مِردنگیا شرمندہ ہو جاتا ہے۔ اس کی آنکھیں پھر دھندلا جاتی ہیں۔ مِردنگیا نے موہنا جیسے درجنوں بچوں کی خدمت کی ہے۔ اپنے بچوں کو بھی شاید وہ اتنا پیار نہیں دے سکتااور اپنا بچہ۔ ہوں۔ ۔۔۔اپنا پرایا؟ اب تو سب اپنے، سب پرائے۔

” موہنا ۔“

”کوئی دیکھ لے گا تو؟“

”تو کیا ہوگا؟“

”ماں سے کہہ دے گا۔تم بھیک مانگتے ہو نہ؟“

”کون بھیک مانگتاہے؟“ مِردنگیا کی خود داری کو اس بھولے لڑکے نے بلا وجہ ٹھیس پہنچا دی۔ اس کے دل کی جھانپی میں سویا ہوا کنڈلی دار سانپ پھن پھیلا کر پھنکار اٹھا،”اے سالا۔ ماریں گے وہ طمانچہ کہ ۔۔۔“

”اے۔ گالی کیوں دیتے ہو۔“ موہنا نے ڈرتے ڈرتے مذمت کی۔

وہ اٹھ کھڑا ہوا، پاگلوں کا کیا اعتبار۔

آسمان میں اڑتی ہوئی چیل نے پھر ٹِنکاری بھری ۔ ٹ ۔۔۔ای ۔۔۔ٹِن۔ہِی۔ا۔

” موہنا ۔“ مِردنگیا کی آواز گھمبیر ہو گئی۔

 موہنا ذرا دور جا کر کھڑا ہو گیا۔

”کس نے کہا تم سے کہ میں بھیک مانگتا ہوں؟ مردنگ بجا کر،پداولی گا کر، لوگوں کو رجھا کر پیٹ پالتا ہوں۔تم ٹھیک کہتے ہو، بھیک کا ہی اناج ہے یہ۔ بھیک کا ہی پھل ہے یہ۔میں نہیں دوں گا۔تم بیٹھو، میں رسپریا سنا دوں۔“

 مِردنگیا کا چہرہ آہستہ آہستہ پرسکون ہو رہا ہے۔آسمان میں اڑنے والی چیل اب درخت کی ڈالی پر آ بیٹھی ہے۔ ۔۔۔ٹِن۔ٹِن ٹِن ٹِک۔

 موہنا ڈر گیا۔ ایک ڈگ، دو ڈگ ۔۔۔دے دوڑ۔ وہ بھاگا۔

ایک بیگھہ دور جا کر اس نے چلا کر کہا،”ڈائن نے بان مار کر تمہاری انگلی ٹیڑھی کر دی ہے۔ جھوٹ کیوں کہتے ہو کہ رسپریا بجاتے وقت۔۔۔“

”ایں۔ کون ہے یہ لڑکا؟ کون ہے یہ موہنا ؟رمپتیا بھی کہتی تھی، ڈائن نے بان مار دیا ہے۔“

” موہنا ۔“

 موہنا نے جاتے جاتے چلا کر کہا،”کرےلا۔“

اچھا، تو موہنا یہ بھی جانتا ہے کہ مِردنگیا”کرےلا“کہنے سے چڑتا ہے،”کون ہے یہ موہنا ؟“

 مِردنگیا دہشت زدہ ہو گیا۔ اس کے دل میں ایک نامعلوم سا خوف سما گیا۔ وہ تھر تھر کانپنے لگا۔ اس میں کمل پور کے بابوو ¿ں کے یہاں جانے کا جوش بھی نہیں رہا۔ ۔۔۔صبح شوبھا مشر کے لڑکے نے ٹھیک ہی کہا تھا۔

اس کی آنکھوں سے آنسو گرنے لگے۔

جاتے جاتے موہنا ڈنک مار گیا۔ اس کے زیادہ تر شاگردوں نے ایسا ہی سلوک کیا ہے اسکے ساتھ۔ ناچ سیکھ کر پھُر سے اڑ جانے کا بہانہ کھوجنے والے ایک ایک لڑکے کی باتیں اسے یاد ہیں۔

سونما نے تو گالی ہی دی تھی ،”گرگری کہتا ہے، چوٹّا۔“

رمپتیا آسمان کی طرف ہاتھ اٹھا کر بولی تھی۔ ”اے دِنکر۔ گواہ رہنا۔ مِردنگیا نے پھسلا کر میرا سروناش کیا ہے۔ میرے من میں کبھی چور نہیں تھا۔ اے سورج بھگوان۔ اس دانتوں والے کتے کا انگ انگ پھٹ کر۔۔۔“

 مِردنگیا نے اپنی ٹیڑھی انگلی کوہلاتے ہوئے ایک طویل سانس لی۔رمپتیا؟ جودھن گروجی کی بیٹی رمپتیا۔ جس دن وہ پہلے پہل جودھن کی منڈلی میں شامل ہوا تھا ،رمپتیا بارہویں میں پاو ¿ں رکھ رہی تھی۔بال ودھوا، رمپتیا پدوں کا مطلب سمجھنے لگی تھی۔ کام کرتے کرتے وہ گنگناتی ،”نوانوراگنی رادھا،کچھو نانہ مانیہ وادھا۔“

 مِردنگیا ،مو ل گےنی سیکھنے گیا تھا اور گرو جی نے اسے مردنگ تھما دیا تھا۔ آٹھ سال تک تعلیم پانے کے بعد جب گورو جی نے خانہ بدوش پنچکوڑی سے رمپتیا کے چمونا کی بات چلائی تو مِردنگیا سب تال ماترا بھول گیا۔ جودھن گرو جی سے اس نے اپنی ذات پوشیدہ رکھی تھی۔ رمپتیا سے اس نے جھوٹا پریم کیا تھا۔ گرو جی کی منڈلی چھوڑ کر وہ راتوں رات بھاگ گیا۔ اس نے گاو ¿ں آ کر اپنی منڈلی بنائی، لڑکوں کو سکھایا پڑھایا اور کمانے کھانے لگا۔لیکن، وہ مول گےن نہیں ہو سکا کبھی۔ مِردنگیا ہی رہا سبھی دن۔جودھن گرو جی کی موت کے بعد، ایک بار گلاب باغ میلے میں رمپتیا سے اسکی ملاقات ہوئی تھی۔ رمپتیا اسی سے ملنے آئی تھی۔ پنچکوڑی نے صاف جواب دے دیا تھا۔ ”کیا جھوٹ فریب جوڑنے آئی ہے؟ کمل پور کے نندوبابو کے پاس کیوں نہیں جاتی، مجھے الو بنانے آئی ہے۔ نندوبابو کاگھوڑا بارہ بجے رات کو۔۔“

چیخ اٹھی تھی رمپتیا۔“ پانچو۔ ۔۔۔چپ رہو۔“

اسی رات رسپریا بجاتے وقت اس کی انگلی ٹیڑھی ہو گئی تھی۔ مردنگ پر جمنیکا دے کر وہ ابتدائی تال بجانے لگا۔ نٹوآ ، ڈیڑھ ماترا بے تال ہو کر داخل ہوا ،تو اس کا ماتھا ٹھنکا۔ ابتدائی ناچ کے بعد اس نے نٹوآ کو جھڑکی دی ،”اے سالا۔ تھپڑوں سے گال لال کر دوں گا۔“

اور رسپریا کی پہلی کڑی ہی ٹوٹ گئی۔ مِردنگیا نے تال کو سنبھالنے کی بہت کوشش کی۔ مردنگ کی سوکھی چمڑی جل اٹھی، دائیں پورے پر لاواپھر سے پھوٹنے لگا اور نیچے آتے آتے اسکی انگلی ٹیڑھی ہو گئی۔ جھوٹی ٹیڑھی انگلی۔ ۔۔۔ہمیشہ کےلئے پنچکوڑی کی منڈلی ٹوٹ گئی۔ آہستہ آہستہ علاقے سے ودیاپتی ناچ ہی اٹھ گیا۔ اب تو کوئی بھی ودیاپتی کا ذکر بھی نہیں کرتاہے۔دھوپ پانی سے پرے، پنچکوڑی کا بدن ٹھنڈی محفلوں میں ہی پلا تھا ۔ بیکار زندگی میں مردنگ نے بڑا کام دیا۔ بیکاری کا اکلوتا سہارا ۔۔۔ مردنگ ۔

ایک زمانے سے وہ گلے میں مردنگ لٹکا کر بھیک مانگ رہا ہے ۔ دھا تِنگ۔دھا تِنگ۔

وہ ایک آم اٹھا کر چوسنے لگا۔،لیکن، لیکن، ۔۔۔لیکن ۔۔موہنا کو ڈائن کی بات کیسے معلوم ہوئی؟

انگلی ٹیڑھی ہونے کی خبر سن کر رمپتیا دوڑی آئی تھی، گھنٹوں انگلی کو پکڑ کر روتی رہی تھی ،”ہے دِنکر، کس نے اتنی بڑی دشمنی کی؟ اس کا برا ہو۔ ۔۔۔میری بات لوٹا دو بھگوان۔ غصے میں کہی ہوئی باتیں۔ نہیں، نہیں۔ پانچو، میں نے کچھ بھی نہیں کیا ہے۔ ضرور کسی ڈائن نے بان ماردیا ہے۔“

 مِردنگیا نے آنکھیں پونچھتے ہوئے سورج کی طرف دیکھا۔اس مردنگ کو کلیجے سے چپکا کر رمپتیا نے کتنی راتیں کاٹی ہیں۔ مردنگ کو اس نے اپنے سینے سے لگا لیا۔

درخت کی ڈالی پر بیٹھی ہوئی چیل نے اڑتے ہوئے جوڑے سے کہا۔ٹِن۔ٹِن ٹِن ٹِک۔۔

”اے سالا۔“اس نے چیل کو گالی دی۔ تمباکو چنیا کر منہ میں ڈال لی اور مردنگ کے پورے پر انگلیاں نچانے لگا۔ دھری ناگی، دھری ناگی، دھری ناگی دِھنتا۔

پورا جمنِکا وہ نہیں بجا سکا۔ بیچ میں ہی تال ٹوٹ گئی۔

ا ۔ک۔ ہی۔اے۔اے۔اے،ہا۔آآ۔ہ۔ہا۔

سامنے جھڑبیری کے جنگل کے اس پار کسی نے سریلی آواز میں، بڑے اہتمام کے ساتھ رسپریا کی پداولی اٹھائی ۔

”ن۔و۔ ورند۔ون ۔ن۔و۔ن ۔و۔تُر۔گ۔ن، ن ن وکست پھول ۔۔۔“

 مِردنگیا کے سارے جسم میں ایک لہر دوڑ گئی۔ اسکی انگلیاں آپ ہی آپ مردنگ کے پُورے پر تھرکنے لگیں۔ گائے بیلوں کے جھنڈ دوپہر کے اترتے سائے میں آ کر جمع ہونے لگے۔

کھیتوں میں کام کرنے والوں نے کہا،”پاگل ہے۔ جہاں جی چاہا، بیٹھ کر بجانے لگتا ہے۔“

”بہت دن کے بعدلوٹا ہے۔“

”ہم تو سمجھتے تھے کہ کہیں مر کھپ گیا۔“

رسپریا کی سریلی راگنی تال پر آ کر کٹ گئی۔ مِردنگیاکا پاگل پن اچانک بڑھ گیا۔ وہ اٹھ کر دوڑا۔جھڑبیری کی جھاڑیوں کے اُس پار کون ہے؟ کون ہے یہ شدھ رسپریا گانے والا؟ اس زمانے میں رسپریا کا عاشق ۔۔۔؟ جھاڑی میں چھپ کر مِردنگیا نے دیکھا، موہنا مستغرق ہوکر دوسرے پد کی تیاری کر رہا ہے۔ گنگناہٹ بند کر کے اس نے گلے کو صاف کیا۔ موہنا کے گلے میں رادھا آ کر بیٹھ گئی ہے۔کیا بندش ہے۔

”نہ۔وی۔ وہ نینک نی ۔ر۔

آہو۔پلّی بہی تاہی دی ۔ر۔“

 موہنا بے سدھ ہوکر گا رہا تھا۔ مردنگ کی دھن پر وہ جھوم جھوم کر گا رہا تھا۔ مِردنگیا کی آنکھیں اسے ایک ٹک دیکھ رہی تھیں اور اسکی انگلیاں پھرکی کی طرح ناچنے کو مضطرب ہو رہی تھیں۔چالیس سال کاآدھا پاگل زمانے کے بعد جذبات میں ناچنے لگا۔ رہ رہ کر وہ اپنی پھٹی آواز میں پدوں کی کڑی بولتا، پھو نی پھونیہ، سونی سونیہ۔

دھری ناگی دِھنتا۔

”دُوہُو رس ۔۔۔م ۔۔۔یہتنو،گُنے نہیں اور۔

لا گل دُوہک بھنگ ہجور۔“

 موہنا کے آدھے کالے اورآدھے لال ہونٹوں پر نئی مسکراہٹ دوڑ گئی۔ پد ختم کرتے ہوئے وہ بولا،”اس ٹیڑھی انگلی پر بھی اتنی تیزی؟“

 موہنا ہانپنے لگا۔ اسکی چھاتی کی ہڈیاں۔

اف۔ مِردنگیا دھم سے زمین پر بیٹھ گیا ۔ ”کمال۔ کمال۔کس سے سیکھے؟ کہاں سیکھی تم نے پداولی؟ کون ہے تمہاراگرو؟“

 موہنا نے ہنس کر جواب دیا،”سیکھوںگا کہاں؟ ماں تو روز گاتی ہے۔پراتکی، مجھے بہت اچھی طرح یاد ہے، لیکن ابھی تو اس کا وقت نہیں۔“

” ہاں بیٹا۔بے تالے کے ساتھ کبھی مت گانا بجانا۔ جو کچھ بھی ہے، سب چلا جائے گا۔وقت کا بھی خیال رکھنا۔ لو، اب آم کھالو۔“

 موہنا بلا جھجھک آم لے کر چوسنے لگا۔

”ایک اور لو۔“

 موہنا نے تین آم کھائے اور مِردنگیا کے خصوصی اصرار پر دو مٹھی موڑھی بھی پھانک گیا۔

”اچھا، اب ایک بات بتاﺅگے موہنا ۔ تمہارے ماں باپ کیا کرتے ہیں؟“

”باپ نہیں ہے، اکیلی ماں ہے۔ بابو لوگوں کے گھر کُٹائی پسائی کرتی ہے۔“

”اور تم نوکری کرتے ہو۔ کس کے یہاں؟“

” کمل پور کے نندوبابو کے یہاں۔“

”نندوبابو کے یہاں؟“

 موہنا نے بتایا کہ اس کا گھر سہرسہ میں ہے۔ تیسرے سال سارا گاو ¿ں کوسی میا ندی کے پیٹ میں چلا گیا۔ اس کی ماں اسے لے کر اپنے میکے آئی ہے ۔۔۔ کمل پور ۔

” کمل پور میں اپنی ماں کے ماموں رہتے ہیں؟“

 مِردنگیا کچھ دیر تک خاموشی سے سورج کی طرف دیکھتا رہا۔نندوبابو، موہنا،موہنا کی ماں۔

”ڈائن والی بات تمہاری ماں کہہ رہی تھی؟“

” ہاں ۔“

”اور ایک بار سام دےو جھا کے یہاں جنےو میں تم گردھرپٹّی منڈلی والو ںکا مردنگ چھین لیا تھا۔ ۔۔۔بے تالہ بجا رہا تھا۔ ٹھیک ہے نہ؟“

 مِردنگیا کی کھچڑی داڑھی گویا اچانک سفید ہو گئی۔ اس نے خود کو سنبھال کر پوچھا،”تمہارے باپ کا نام کیا ہے؟“

”اجودھاداس۔“

”اجودھاداس؟“

بوڑھا اجودھاداس، جس کے منہ میں نہ بول، نہ آنکھ میں نور۔منڈلی میں گٹھری ڈھوتا تھا۔بِنا پیسے کا نوکر بیچارہ، اجودھاداس۔

”بڑی سیانی ہے تمہاری ماں۔“ایک طویل سانس لے کر مِردنگیا نے اپنی جھولی سے ایک چھوٹا بٹوا نکلا۔ لال پیلے کپڑوں کے ٹکڑوں کو کھول کر کاغذ کی ایک پڑیا نکالی اس نے۔

 موہنا نے پہچان لیا ۔ ”لوٹ؟ کیا ہے، لوٹ؟“

” ہاں ، نوٹ ہے۔“

”کتنے روپے والا ہے؟ پنچ ٹکیا ہے۔یا۔ دس ٹکیا؟ ذرا چھونے دو گے؟ کہاں سے لائے؟“ موہنا ایک ہی سانس میں سب کچھ پوچھ لیا،”سب دس ٹکیا ہیں؟“

” ہاں ،سب ملا کر چالیس روپے ہیں۔“ مِردنگیا نے ایک بار ادھر ادھر نگاہیں دوڑائی، پھر سرگوشی میں بولا،” موہنا بیٹا۔ فاربس گنج کے ڈاگڈر بابو کو دے کر اچھی دوا لکھا لینا۔کھٹامٹھا پرہیز۔گرم پانی ضرور پینا۔“

”روپے مجھے کیوں دیتے ہو؟“

”جلدی رکھ لے، کوئی دیکھ لے گا۔“

 موہنا نے بھی ایک بار پھر چاروں جانب نظر دوڑائی۔ اس کے ہونٹوں کی کاجل اور گہری ہو گئی۔

 مِردنگیا بولا،”بیڑی تمباکو بھی پیتے ہو؟ خبردار۔“

وہ اٹھ کھڑا ہوا۔

 موہنا نے روپے لے لئے۔

”اچھی طرح گانٹھ باندھ لے۔ ماں سے کچھ مت بتانا۔“

”اور ہاں، یہ بھیک کا پیسہ نہیں۔ بیٹا، یہ میری کمائی کے پیسے ہیں۔ اپنی کمائی کے۔۔۔“

 مِردنگیا نے جانے کےلئے قدم بڑھایا۔

”میری ماں کھیت میں گھاس کاٹ رہی ہے۔ چلو نہ۔“ موہنا نے زور دیا۔

 مِردنگیا رک گیا۔ کچھ سوچ کر بولا،”نہیں موہنا۔ تمہارے جیسا گُنوان بیٹا پا کر تمہاری ماں ”مہارانی” ہیں، میں مہابھکاری گھر گھر مانگنے والا ہوں۔ جاچک، فقیر ۔دواسے جو پیسے بچیں، اس کا دودھ پینا۔“

 موہنا کی بڑی بڑی آنکھیں کمل پور کے نندوبابو کی آنکھوںجیسی ہیں۔۔۔

”رے موہنا رے۔ بیل کہاں ہیں رے؟“

”تمہاری ماں پکار رہی ہے شاید۔“

” ہاں ۔ تم نے کیسے جان لیا؟“

”رے موہنارے۔“

ایک گائے نے تال میں تال میں ملا کر اپنے بچھڑے کو بلایا۔

گائے بیلوں کے گھر لوٹنے کا وقت ہو گیا۔ موہنا جانتا ہے، ماں بیل ہانک کر لا رہی ہوگی۔ جھوٹھ موٹھ اسے بلا رہی ہے۔ وہ چپ رہا۔

”جاو ¿۔“ مِردنگیا نے کہا،”ماں بلا رہی ہے۔جاﺅ۔۔۔اب سے میں پداولی نہیں، رسپریا نہیں، نرگُن گاو ¿ں گا۔ دیکھو، میری انگلی شایدسیدھی ہو رہی ہے۔ شدھ رسپریا کون گانا سکتا ہے آج کل؟ ۔۔۔“

”ارے، چلُو من چُلومن سسراریجوے ہو راما،

کی آہو راما،

نَہیرا میں اگیالگایب ری رے ”

کھیتوں کی پگڈنڈی، جھڑبیری کے جنگل کے درمیان سے ہوکر جاتی ہے۔ نرگُن گاتا ہوا مِردنگیا جھڑبیری کی جھاڑیوں میں چھپ گیا۔

”لے۔ یہاں اکیلاکھڑا ہوکر کیا کرتا ہے؟کون بجا رہا تھا مردنگ رے؟“گھاس کا بوجھا سر پر لے کر موہنا کی ماں کھڑی ہے۔

” پنچکوڑی مِردنگیا۔“

”ایں، وہ آیا ہے؟ آیا ہے وہ؟“اس کی ماں نے بوجھ زمین پر پٹکتے ہوئے پوچھا۔

”میں نے اسکی تال پر رسپریا گایا ہے۔ کہتا تھا، اتنا شدھ رسپریا کون گا سکتا ہے آج کل۔اسکی انگلی اب ٹھیک ہو جائے گی۔“

ماں نے بیمارموہنا کو لاڈ سے اپنی چھاتی سے چپکا لیا۔

”لیکن تُو تو ہمیشہ اس کی ٹوکری بھر شکایت کرتی تھی ،بے مان ہے،گرو دروہی ہے، جھوٹا ہے۔“

”ہے تو۔ایسے لوگوں کی سنگت ٹھیک نہیں۔ خبردار، جو اس کے ساتھ پھر کبھی گیا۔ فقیروں، جاچکوں سے ہےل مےل کرکے اپنا ہی نقصان ہوتا ہے۔ ۔۔۔چل، اٹھا بوجھ۔“

 موہنا نے بوجھ اٹھاتے وقت کہا،”جو بھی ہو،گُنی آدمی کے ساتھ رسپریا۔۔“

”چپ۔ رسپریا کا نام مت لے۔“

عجیب ہے ماں۔ جب غصہ کرے گی تو شیرنی کی طرح اور جب خوش ہوتی ہے تو گائے کی طرح ہنکارتی آئے گی اور سینے سے لگا لے گی۔ گھڑی بھر میںخوش،گھڑی بھر میںناخوش ۔۔۔

دور سے مردنگ کی آواز آئی۔ دھا تِنگ۔دھا تِنگ۔

 موہنا کی ماں کھیتوں کی ناہموار منڈیرپر چل رہی تھی۔ ٹھوکر کھا کر گرتے گرتے بچی۔ گھاس کا بوجھا گر کر کھل گیا۔ موہنا پیچھے پیچھے منہ لٹکا ئے آ رہا تھا۔ بولا،”کیا ہوا، ماں؟“

”کچھ نہیں۔“

دھا تِنگ دھا تِنگ۔

 موہنا کی ماں کھیت کی منڈیر پر بیٹھ گئی۔ جیٹھ کی شام سے پہلے جو پُروا چلتی ہے، آہستہ آہستہ تیز ہو گئی ۔مٹی کی خوشبو ہوا میں آہستہ آہستہ گھلنے لگی۔

دھا تِنگ دھا تِنگ۔

” مِردنگیا اور کچھ بولتا تھا، بیٹا؟“ موہنا کی ماں آگے کچھ بول نہ سکی۔

”کہتا تھا، تمہارے جیسا گُنوان بیٹا ۔۔۔“

”جھوٹا، بے ایمان۔“ موہنا کی ماں آنسو پونچھ کر بولی،”ایسے لوگوں کی سنگت کبھی مت کرنا۔“

 موہنا چپ چاپ کھڑا رہا۔

٭٭٭

 وانگ چُو

 بھیشم ساہنی/عامرصدیقی

ہندی کہانی

………………..

بھیشم ساہنی،پیدائش:۸ اگست ۵۱۹۱ ءجائے پیدائش، راولپنڈی (پاکستان)،میدان: کہانی،ایکٹر وغیرہ،اہم کام: کہانیوں کے مجموعے:

بھاگی ریکھا، وانگ چو، پہلا پاٹھ،بھٹکتی راکھ،پٹریاں،شوبھا یاترا،ناول:جھروکے،تمس،میّا داس کی موڑی، بسنتی،وغیرہ،ڈرامے:کبیرا کھڑا بازار میں،ہانُوس،مادھوری،بچوں کا ادب:غلیل کا کھیل،ایوارڈ:پدم بھوشن ،ناول”تمس” پر ساہتیہ اکیڈمی ایوارڈ،سوویٹ لینڈ ایوارڈ سمیت کئی ایوارڈ اور اعزازات سے نوازا گیا ۔انتقال :۱۱ جولائی ۳۰۰۲ ئ

…………….

تبھی دور سے وانگ چُو آتا دکھائی دیا۔ دریا کے کنارے، لال منڈی کی سڑک پر دھیرے دھیرے ڈولتا سا چلا آ رہا تھا۔ گیروی رنگ کا چوغہ پہنے تھا اور دور سے لگتا تھا کہ بدھ مت کے بھکشوﺅں کی ہی مانند اس کا سر بھی گُھٹا ہوا ہے۔ پیچھے شنکرآچاریہ کی اونچی پہاڑی تھی اور اوپر صاف نیلا آسمان۔ سڑک کی دونوں جانب اونچے اونچے سفےدے کے درختوں کی قطاریں۔ لمحے بھر کےلئے مجھے لگا، جیسے وانگ چُو تاریخ کے صفحات سے اترکر آ گیا ہے۔ زمانہ قدیم میں دیس بدیس سے اسی شباہت کے حامل چِیوردھاری بھکشو ، پہاڑوں اور وادیوں کو پھلانگ کر ہندوستان آیا کرتے ہوں گے۔ ماضی کے ایسے ہی تجسس آمیز دھندلکے میں مجھے وانگ چُو بھی چلتا ہوا نظر آیا۔ جب سے وہ سرینگر میں آیا تھا، بدھ مت کی تہذیب کے کھنڈروں اور عجائب خانوں میں گھوم رہا تھا۔ اس وقت بھی وہ لال منڈی کے عجائب گھر سے نکل کر آ رہا تھا، جہاں بدھ دور کے کئی عجائبات رکھے ہیں۔ اسکی ظاہری حالت کو دیکھتے ہوئے لگتا تھا کہ وہ حقیقت میں حال سے کٹ کر ماضی کی ہی کسی صدی میں جی رہا تھا۔

 ”بدھ کے آثار سے ملاقات ہو گئی؟“پاس آنے پر میں نے چٹکی لی۔ وہ مسکرا دیا، ہلکی سی ٹیڑھی مسکراہٹ، جسے میری خالہ زاد بہن ڈیڑھ دانت کی مسکراہٹ کہا کرتی تھی، کیونکہ مسکراتے وقت وانگ چُو کا اوپری ہونٹ صرف ایک جانب سے تھوڑا سا اوپر کو اٹھتا تھا۔

 ”میوزیم کے باہر بہت سی مورتیاں رکھی ہیں۔ میں وہی دیکھتا رہا۔“ اس نے آہستہ سے کہا۔، پھر وہ اچانک جذباتی ہوکر بولا،”ایک مورتی کے صرف پیر ہی بچے ہیں ….“

 میں نے سوچا، آگے کچھ بولے گا، لیکن وہ اتنا جذباتی ہو اٹھا تھا کہ اس کا گلا رندھ گیا اور اس کےلئے بولنا ناممکن ہو گیا۔ ہم ایک ساتھ گھر کی طرف لوٹنے لگے۔

”مہاپران کے بھی پیر ہی پہلے دکھائے جاتے تھے۔“ اس نے کانپتی سی آواز میں کہا اور اپنا ہاتھ میری کہنی پر رکھ دیا۔ اس کے ہاتھ کا ہلکا سا لمس، دھڑکتے دل کی طرح محسوس ہو رہا تھا۔

”ابتدامیں مہاپران کی مورتیاں نہیں بنائی جاتی تھیں نا۔ تم تو جانتے ہو، پہلے اسٹوپے کے نیچے صرف پیر ہی دکھائے جاتے تھے۔ مورتیاں تو بعد میں بنائی جانے لگی تھیں۔“

ظاہر ہے، بدھ کے پاو ¿ں دیکھ کر اسے مہاپران کے پاو ¿ں یاد آگئے تھے اور وہ جذباتی ہو اٹھا تھا۔ کچھ پتہ نہیں چلتا تھا، کون سی بات کس وقت وانگ چُو کوخاموش کردے، کس وقت وہ فضول گو ہونے لگے۔

”تم نے بہت دیر کر دی۔ سب لوگ تمہارا انتظار کر رہے ہیں۔ میں چنارو ںکے نیچے بھی تمہیں تلاش کر آیا ہوں۔“ میں نے کہا۔

 ”میں میوزیم میں تھا ….“

  © ©”وہ تو ٹھیک ہے، پر دو بجے تک ہمیںہبّا کدل پہنچ جانا چاہئے، ورنہ جانے کا کوئی فائدہ نہیں۔“ اس نے چھوٹے چھوٹے جھٹکوں کے ساتھ تین بار سر ہلایا اور قدم بڑھا دیئے۔ وانگ چُو بھارت میں عاشق بنا گھوم رہا تھا۔ وہ مہاپران کی جائے پیدائش لمبینی کی یاترا ننگے پاو ¿ں کر چکا تھا، سارے راستے ہاتھ جوڑے ہوئے۔ جس جس سمت میں مہاپران کے قدم اٹھے تھے، وانگ چُو فریفتہ سااسی سمت میں گھوم آیا۔ سارناتھ میں، جہاں مہاپران نے اپنا پہلا وروچن دیا تھا اور دو ہرن مسحور ہوکر، جھاڑیوں میں سے نکل کر ان کی طرف دیکھتے رہ گئے تھے، وانگ چُو ایک پیپل کے درخت کے نیچے گھنٹوں جھکا ہوا بیٹھا رہا تھا، یہاں تک کہ اسکے بیان کے مطابق اسکے دماغ میں عجیب سے جملے گونجنے لگے تھے اور اسے لگا تھا، جیسے مہاپران کا پہلا وروچن سن رہا ہے۔ وہ اس وارفتگی بھرے تصور میں اتنا گہرا ڈوب گیا تھا کہ سارناتھ میں ہی رہنے لگا تھا۔ گنگا کی دھار کو وہ دسیوں صدیوں پہلے کے دھندلے میں پوتر جل پروا کے روپ میں دیکھتا۔ جب سے سری نگر میں آیا، برف سے ڈھکے پہاڑوں کی چوٹیوں کی طرف دیکھتے ہوئے اکثر مجھ سے کہتا۔

”وہ راستہ لہاسا کو جاتا ہے نا، اسی راستے بدھ گرنتھ تبت میں بھیجے گئے تھے۔“

 وہ اس پہاڑی سلسلے کو بھی پوتر مانتا تھا ،کیونکہ اس پر بچھی پگڈنڈیوں کے راستے بدھ بھکشو تبت کی جانب گئے تھے۔ وانگ چُو چند سالوں پہلے عمر رسیدہ پروفیسر تانشان کے ساتھ بھارت آیا تھا۔ کچھ دنوں تک تو وہ انہی کے ساتھ رہا اور ہندی، انگریزی زبانوں کا مطالعہ کرتا رہا، پھر پروفیسر شان چین لوٹ گئے اور وہ یہیں رکا رہا اور کسی بدھ سوسائٹی سے گرانٹ حاصل کرکے سارناتھ میں آکر بیٹھ گیا۔ پرجوش، شاعرانہ عہد کی زندگی، جو عہدِعتیق کے دل فریب ماحول میںمشغول رہنا چاہتی تھی۔ وہ یہاں حقائق کی تلاش کرنے تھوڑے آیا، وہ تو بدھ عہد کی مورتیوں کو دیکھ کر مسرور ہونے آیا تھا۔ مہینے بھر سے عجائب گھروں کے چکر کاٹ رہا تھا، لیکن اس نے کبھی نہیں بتایا کہ بدھ مت کی کس تعلیم سے اسے سب سے زیادہ ترغیب ملتی ہے۔ نہ تو وہ کسی حقیقت کو پا کر جوش و خروش سے کھِل اٹھتا، نہ اسے کوئی ابہام پریشان کرتا۔ وہ بھگت زیادہ اور متجسس کم تھا۔ مجھے یاد نہیں کہ اس نے ہمارے ساتھ کبھی کھل کر بات کی ہو یا کسی موضوع پر اپنا نقطہ ءنظر پیش کیا ہو۔ ان دنوں میرے اور میرے دوستوں کے درمیان گھنٹوں بحثیں چلا کرتیں، کبھی ملک کی سیاست کے بارے میں، توکبھی مذہب میں بارے میں، لیکن وانگ چُو ان میں کبھی حصہ نہیں لیتا تھا۔ وہ تمام وقت ہولے ہولے مسکراتا ،کمرے کے ایک کونے میں دبک کر بیٹھا رہتا۔ ان دنوں ملک میں ولولوں کا سیلاب سا اٹھ رہا تھا۔ آزادی کی تحریک کون سا رخ اختیار کرے گی۔عملی سطح پر تو ہم لوگ کچھ کرتے کراتے نہیں تھے، لیکن جذباتی سطح پر اس کے ساتھ بہت جڑے ہوئے تھے۔ اس پر وانگ چُو کی غیر جانبداری کبھی ہمیں کچوکے لگاتی، تو کبھی اچنبھے میں ڈال دیتی۔ وہ ہمارے ملک کی سرگرمیوں کے بارے میں ہی نہیں، بلکہ اپنے ملک کی سرگرمیوں کے بارے میں بھی کوئی خاص دلچسپی نہیں لیتا تھا۔ اس سے اس کے اپنے ملک کے بارے میں بھی پوچھو تو مسکراتا سر ہلاتا رہتا تھا۔

کچھ دنوں سے سرینگر کی ہوا بھی بدلی ہوئی تھی۔ کچھ عرصے پہلے یہاں گولی چلی تھی۔ کشمیر کے لوگ مہاراجہ کے خلاف اٹھ کھڑے ہوئے تھے اور اب کچھ دنوں سے شہر میں ایک نئی ہلچل پائی جاتی تھی۔ نہرو جی سرینگر آنے والے تھے اور ان کا استقبال کرنے کےلئے شہر کو دلہن کی طرح سجایا جا رہا تھا۔ آج ہی دوپہر کو نہرو جی سرینگر پہنچ رہے ہیں۔ دریا کے راستے کشتیوں کے جلوس کی شکل میں ان کو لانے کی منصوبہ بندی تھی اور اسی وجہ سے میں وانگ چُو کو تلاش کرتا ہوا ،اس طرف آ نکلا تھا۔ ہم گھر کی طرف بڑھے جا رہے تھے،تبھی اچانک وانگ چُو ٹھٹک کر کھڑا ہو گیا۔

”کیا میرا جانا بہت ضروری ہے؟“

”جیسا تم کہو …. “مجھے دھکا سا لگا۔

ایسے وقت میں، جب لاکھوں لوگ نہرو جی کے استقبال کےلئے جمع ہو رہے تھے، وانگ چُو کا یہ کہنا کہ اگر وہ ساتھ نہ جائے تو کیسا رہے گا، مجھے واقعی برا لگا۔ لیکن پھر خود ہی کچھ سوچ کر اس نے اپنے اصرار کو دوہرایا نہیں اور ہم گھر کی جانب ساتھ ساتھ بڑھنے لگے۔ کچھ دیر بعد ہبّا کدل کے پل کے قریب لاکھوں کی بھیڑ میں ہم لوگ کھڑے تھے ،میں، وانگ چُو اور میرے دو تین دوست۔ چاروں جانب جہاں تک نظر جاتی، لوگ ہی لوگ تھے۔ مکانوں کی چھتوں پر، پل پر، دریا کے ڈھلواں کناروں پر۔ میں بار بار کنکھیو ںسے وانگ چُو کے چہرے کی طرف دیکھ رہا تھا کہ اس کا کیا ردعمل ہے، اور یہ کہ ہمارے دل میں اٹھنے والے ولولوں کا اس پر کیا اثر ہوا ہے۔ یوں بھی یہ میری عادت سی بن گئی ہے، جب بھی کسی بدیسی کے ساتھ میں ہوں۔ تومیں اسکے چہرے کے تاثرات کو پڑھنے کی کوشش کرتا رہتا ہوں کہ ہمارے رسم و رواج، ہماری طرزِ معاشرت کے بارے میں اس کاکیا ردعمل ہوتا ہے۔

وانگ چُو نیم وا آنکھوں سے سامنے کا منظر دیکھے جا رہا تھا۔ جس وقت نہرو جی کی کشتی سامنے آئی، تو جیسے مکانوں کی چھتیں بھی ہل اٹھیں۔ راج ہنس کی شکل والی سفید کشتی میں نہرو جی ،مقامی رہنماو ¿ں کے ساتھ کھڑے ہاتھ ہلا ہلا کر لوگوں کا شکریہ ادا کر رہے تھے۔ اور ہوا میں پھول ہی پھول بکھر گئے تھے۔ میں نے پلٹ کر وانگ چُو کے چہرے کی طرف دیکھا۔ وہ پہلے ہی کی طرح غافل سا سامنے کا منظر دیکھے جا رہا تھا۔

 ”آپ کو نہرو جی کیسے لگے؟“ میرے ایک ساتھی نے وانگ چُو سے پوچھا۔

وانگ چُو نے اپنی ترچھی سی آنکھیں اٹھا کر اسکے چہرے کی طرف دیکھا، پھر اپنی ڈیڑھ دانت کی مسکراہٹ کے ساتھ کہا،”اچّا، بہت اچّا۔“ وانگ چُو معمولی سی ہندی اور انگریزی جانتا تھا۔ اگر تیز بولو، تو اس کے پلے کچھ نہیں پڑتا تھا۔ نہرو جی کی کشتی دور جا چکی تھی، لیکن کشتیوں کا جلوس اب بھی رواں دواں تھا۔

 تبھی وانگ چُو دفعتاً مجھ سے بولا،”میں تھوڑی دیر کےلئے میوزیم میں جانا چاہوں گا۔ ادھر سے راستہ جاتا ہے، میں خود چلا جاو ¿ں گا۔“ اور وہ بغیر کچھ کہے، ایک بار پھر نیم وا آنکھوں سے مسکرایا اور ہولے سے ہاتھ ہلا کر مڑ گیا۔ ہم سب حیران رہ گئے۔ اسے سچ مچ جلوس میں دلچسپی نہیں رہی ہو گی۔ جبھی اتنی جلدی میوزیم کی جانب تنہا چل دیا ہے۔

 ”یار، کس بودم کو اٹھا لائے ہو؟ یہ کیا بات ہے؟ کہاں سے پکڑ لائے ہو اسے؟ © ©“ میرے ایک دوست نے کہا۔

”باہر کا رہنے ہے، اسے ہماری باتوں میں کیسے دلچسپی ہو سکتی ہے۔“ میں نے صفائی دیتے ہوئے کہا۔

 ”واہ، ملک میں اتنا کچھ ہو رہا ہو اور اسے دلچسپی نہ ہو۔“

وانگ چُو اب تک دور جا چکا تھا اور بھیڑ میں سے نکل کر درختوں کی قطار کے نیچے آنکھوں سے اوجھل ہوتا جا رہا تھا۔

 ”مگر یہ ہے کون؟“ ایک دوسرا دوست بولا،”نہ یہ بولتا ہے، نہ چہکتا ہے۔ کچھ پتا نہیں چلتا، ہنس رہا ہے یا رو رہا ہے۔ سارا وقت ایک کونے میں دبک کر بیٹھا رہتا ہے۔“

 ”نہیں، نہیں بڑا سمجھدار آدمی ہے۔ پچھلے پانچ سال سے یہاں پر رہ رہا ہے۔ بڑا پڑھا لکھا آدمی ہے۔ بدھ مت کے بارے میں بہت کچھ جانتا ہے۔“ میں نے پھر اس کی صفائی دیتے ہوئے کہا۔ میری نظر میں اس بات کی بڑی اہمیت تھا کہ وہ بدھ گرنتھ سیکھتاہے اور انہیں سیکھنے کےلئے اتنی دور سے آیا ہے۔

 ”ارے بھاڑ میں جائے ایسی پڑھائی۔ واہ جی، جلوس کو چھوڑ کر میوزیم کی جانب چل دیا ہے۔“

 ”سیدھی سی بات ہے یار۔“ میں نے مزید کہا،”اسے یہاں بھارت کا حال گھسیٹے نہیں لایا، بھارت کا ماضی لایا ہے۔ ہیون تسانگ بھی تو یہاں بدھ گرنتھ ہی سیکھنے آیا تھا۔ یہ بھی سیکھتا ہے۔ بدھ مت میں اسے دلچسپی ہے۔“ گھر لوٹتے ہوئے ہم لوگ سارے رستے وانگ چُو کے متعلق ہی گفتگو کرتے رہے۔ اجے کا خیال تھا، اگر وہ پانچ سال بھارت میں کاٹ گیا ہے، تو اب وہ زندگی بھر یہیں پر رہے گا۔

”اب آ گیا ہے، تو لوٹ کر نہیں جائے گا۔ہندوستان میں ایک بار پردیسی آجائے، تو واپس جانے کا نام نہیں لیتا۔“

  © ©”ہندوستان نامی ملک وہ دلدل ہے کہ جس میں ایک بار باہر کے آدمی کا پاو ¿ں پڑ جائے، تو دھنستا ہی چلا جاتا ہے، نکلنا چاہے بھی تو نہیں نکل سکتا۔“دلیپ نے مذاق میں کہا،”نہ جانے کون سے کنول کے پھول توڑنے کےلئے اس دلدل میں گھسا ہے۔“

”ہمارا ملک ہم ہندوستانیوں کو پسند نہیں، باہر کے لوگوں کو تو بہت پسند ہے۔“ میں نے کہا۔

 ”پسند کیوں نہ ہو گا۔ یہاں تھوڑے میں گزارا ہو جاتا ہے، سارا وقت دھوپ کھلی رہتی ہے، پھر باہر کے آدمی کو لوگ پریشان نہیں کرتے، جہاں بیٹھا ہے وہیں بیٹھا رہنے دیتے ہیں۔ اس پر انہیں آپ جیسے پاگل بھی مل جاتے ہیں، جو ان کی ستائش کرتے رہتے ہیں اور ان کی آﺅبھگت میں مصروف رہتے ہیں۔ تمہارا وانگ چُو بھی یہیں پر مرے گا ۔“

ہمارے یہاں ان دنوں میری چھوٹی خالہ زاد بہن ٹھہری ہوئی تھی، وہی جو وانگ چُو کی مسکراہٹ کو ڈیڑھ دانت کی مسکراہٹ کہا کرتی تھی۔ چلبلی سی لڑکی بات بات پر ٹھٹھولی کرتی رہتی تھی۔ میں نے دو ایک بار وانگ چُو کوکنکھیوں سے اس کی جانب دیکھتے پایا تھا، لیکن کوئی خاص توجہ نہیں دی، کیونکہ وہ سبھی کو کنکھیوں سے ہی دیکھتا تھا۔ پر اس شام نیلم میرے پاس آئی اور بولی،”آپ کے دوست نے مجھے تحفہ دیا ہے۔ پیار سے۔“

 میرے کان کھڑے ہو گئے،”کیا دیا ہے؟“

 ”جھومروں کی جوڑی۔“ اور اس نے دونوں مٹھیاں کھول دیں ،جن میںچاندی کے کشمیری انداز کے دو سفید جھومر چمک رہے تھے۔ اور پھر وہ دونوں جھومر اپنے کانوں کے پاس لے جا کر بولی،”کیسے لگتے ہیں؟“ میں بے حس سا نیلم کی طرف دیکھ رہا تھا۔”اس کے اپنے کان کیسے بھورے بھورے ہیں۔“ نیلم نے ہنس کر کہا۔

 ”کس کے؟“

 ”میرے اس پریمی کے۔“

 ”تمہیں اس کے بھورے کان پسند ہیں؟“

 ”بہت زیادہ۔ جب شرماتا ہے براو ¿ن ہو جاتے ہیں گہرے براو ¿ن۔“ اور نیلم کھلکھلاکر ہنس پڑی۔

 لڑکیاں کیسے اس آدمی کی محبت کا مذاق اڑا سکتی ہیں، جو انہیں پسند نہ ہو۔ یا کہیں نیلم مجھے بنا تو نہیں رہی ہے؟ پر میں اس خبر سے بہت پریشان نہیں ہوا تھا۔ نیلم لاہور میں پڑھتی تھی اور وانگ چُو ،سارناتھ میں رہتا تھا اور اب وہ ہفتے بھر میں سرینگر سے واپس جانے والا تھا۔ اس محبت کی کونپل اپنے آپ ہی جل بھن جائےگی۔

 ”نیلم، یہ جھومر تو تم نے اس سے لے لئے ہیں، اس طرح کی دوستی آخر میں اس کےلئے تکلیف دہ ثابت ہو گی۔ بنے بنائے گا کچھ نہیں۔“

”واہ بھیا، آپ بھی کیسے دقیانوس ہو۔ میں نے بھی چمڑے کا ایک رائٹنگ پیڈ اسے تحفے میں دیا ہے۔ میرے پاس پہلے سے پڑا تھا، میں نے اسے دے دیا۔ جب لوٹے گا تو پریم پتر لکھنے میں اسے آسانی ہو گی۔“

”وہ کیا کہتا تھا؟“

 ”کہتا کیا تھا، تمام وقت اس کے ہاتھ کانپتے رہے اور چہرہ کبھی سرخ ہوتا رہا، کبھی زرد۔ کہتا تھا، مجھے خط لکھنا، میرے خطوں کا جواب دینا۔ اور کیا کہے گا بے چارہ، بھورے کانوں والا۔“

 میں نے غورسے نیلم کی طرف دیکھا، پر اس کی آنکھوں میں مجھے مسکان کے علاوہ اور کچھ دکھائی نہیں دیا۔ لڑکیاں دل کی بات چھپانا خوب جانتی ہیں۔ مجھے لگا، نیلم اسے بڑھاوا دے رہی ہے۔ اس کےلئے تو یہ سارا کھیل تھا، لیکن وانگ چُو ضرور اس بات کا دوسرا ہی مطلب نکالے گا۔ اس کے بعد مجھے لگا کہ وانگ چُو اپنا توازن کھو رہا ہے۔ اسی رات ،جب میں اپنے کمرے کی کھڑکی کے پاس کھڑا ،باہر میدان میں چناروں کی قطار کی جانب دیکھ رہا تھا، تبھی چاندنی میں، کچھ فاصلے پر درختوں کے نیچے مجھے وانگ چُوہوا ٹہلتا دکھائی دیا۔ وہ اکثر رات کو دیر تک درختوں کے نیچے ٹہلتا رہتا تھا۔ پر آج وہ اکیلا نہیں تھا۔ نیلم بھی اس کے ساتھ ٹھمک ٹھمک کر چلی جا رہی تھی۔ مجھے نیلم پر غصہ آیا۔ لڑکیاں کتنی ظالم ہوتی ہیں۔ یہ جانتے ہوئے بھی کہ اس سارے کھیل سے وانگ چُو کی بے چینی بڑھے گی، وہ اسے بڑھاوا دیئے جا رہی تھی۔ دوسرے روز کھانے کی میز پر نیلم پھر اس کے ساتھ ٹھٹھولی کرنے لگی۔ وہ کچن میں سے ایک پتلاسا المونیم کا ڈبا اٹھا لائی تھی۔ اور اس کا چہرہ تپے تانبے جیسا سرخ ہو رہا تھا۔

 ”آپ کےلئے روٹیاں اور آلو بنا لائی ہوں۔ آم کے اچار کی پھانک بھی رکھی ہے۔ آپ جانتے ہیں پھانک کسے کہتے ہیں؟ ایک بار کہو تو پھانک ۔ کہو وانگ چُو جی،پھانک۔“

 اس نے نیلم کی طرف کھوئی کھوئی نظروں سے دیکھا اور بولا،”بانک۔“ ہم سب کھلکھلاکر ہنس پڑے۔

”بانک نہیں،پھانک۔“پھر ہنسی کا چشمہ پھوٹ پڑا۔ نیلم نے ڈبا کھول دیا۔ اس میں سے آم کے اچار کا ٹکڑا نکال کر اسے دکھاتے ہوئے بولی،”یہ ہے پھانک، پھانک اسے کہتے ہیں۔“ اور اسے وانگ چُو کی ناک کے پاس لے جا کر بولی،”اسے سونگھنے پر منہ میں پانی بھر آتا ہے۔ آیا منہ میں پانی؟ اب کہو، پھانک۔“

”نیلم، کیا فضول باتیں کر رہی ہو۔ بیٹھو آرام سے۔“ میں نے ڈانٹتے ہوئے کہا۔ نیلم بیٹھ گئی، پر اسکی حرکتیں بند نہیں ہوئیں۔ بڑے لگاﺅ سے وانگ چُو سے کہنے لگی،”بنارس جا کر ہمیں بھول نہیں جائیے گا۔ ہمیں خط ضرور لکھئے گااورلیکن کسی چیز کی ضرورت ہو توتکلف نہیں کیجئے گا۔“ وانگ چُو الفاظ کے معنی تو سمجھ لیتا تھا، لیکن ان میں چھپے مذاق کو وہ نہیں پکڑ پاتا تھا۔ وہ بہت زیادہ پریشانی محسوس کر رہا تھا۔

”بھیڑ کی کھال کی ضرورت ہو یا کوئی نمدا یااخروٹ ۔۔۔“

 ”نیلم۔“

”کیوں بھیا، بھیڑ کی کھال پر بیٹھ کر گرنتھ سیکھیں گے۔“وانگ چُو کے کان سرخ ہونے لگے۔ شاید پہلی بار اسے احساس ہونے لگا تھا کہ نیلم ٹھٹھولی کر رہی ہے۔ اس کے کان سچ مچ بھورے ہو رہے تھے، جن کانیلم مذاق اڑایا کرتی تھی۔

 ”نیلم جی، آپ لوگوں نے میری بڑی مہمان نوازی کی ہے۔ میں بڑا معترف ہوں۔“ ہم سب خاموش ہو گئے۔ نیلم بھی جھینپ سی گئی۔ وانگ چُو نے لازمی اسکی ٹھٹھولی کو سمجھ لیا ہوگا۔ اس کے دل کو ضرور ٹھیس لگی ہوگی۔ پر میرے ذہن میں یہ خیال بھی اٹھا کہ ایک طرح سے یہ اچھا ہی ہے کہ نیلم کے بارے میں اسکے احساسات بھی بدلیں، ورنہ اسے ہی سب سے زیادہ مصیبت ہوگی۔ شاید وانگ چُو اپنے مقام کو جانتے سمجھتے ہوئے بھی ایک قدرتی اپنائیت کی زد میں آ گیا تھا۔ جذباتی شخص کا خود پر کوئی قابو نہیں ہوتا۔ وہ شکست کھا کر گرتا ہے، تبھی اپنی بھول کو سمجھ پاتاہے۔

 ہفتے کے آخری دنوں میں وہ روز کوئی نہ کوئی تحفہ لے کر آنے لگا۔ ایک بار میرے لئے بھی ایک چوغہ لے آیا اور بچوں کی طرح ضد کرنے لگا کہ میں اور وہ اپنے اپنے چوغے پہن کر ایک ساتھ باہرگھومنے جائیں۔ میوزیم میں وہ اب بھی جاتا تھا، دو ایک بار نیلم کو بھی اپنے ساتھ لے گیا تھا اور واپسی پر ساری شام نیلم بدھ مت سے جڑے نوادرات کا مذاق اڑاتی رہی تھیں۔ میں دل ہی دل میں نیلم کے اس رویے کا خیر مقدم ہی کرتا رہا، کیونکہ میں نہیں چاہتا تھا کہ وانگ چُو کا کوئی خیال ہمارے گھر میں جڑجما پائے۔ ہفتہ گزر گیا اور وانگ چُو ،سارناتھ لوٹ گیا۔ وانگ چُو کے چلے جانے کے بعد اس کے ساتھ میرا رابطہ ویسا ہی رہا، جیسے عموماً ایک واقف کار شخص کے ساتھ رہتا ہے۔ گاہے گاہے کبھی خط آ جاتا، کبھی کسی آتے جاتے شخص سے اس کی اطلاع مل جاتی۔ وہ ان لوگوں میں سے تھا، جو برسوں تک رسمی تعارف کے گھیرے پر ہی ڈولتے رہتے ہیں، نہ گھیرا پھلانگ کر اندر آتے ہیں اور نہ ہی پیچھے ہٹ کر آنکھوں سے اوجھل ہوتے ہیں۔ مجھے اتنی ہی جانکاری رہی کہ اس کی سیدھے اور بندھے بندھائے معمول میں کوئی فرق نہیں آیا ہے۔ کچھ دیر تک مجھے تجسس سا بنا رہا کہ نیلم اور وانگ چُو کے بیچ کی بات آگے بڑھی یا نہیں، لیکن لگا کہ وہ محبت بھی وانگ چُو کی زندگی پر حاوی نہیں ہو پائی۔

 مہینے اور سال گزرتے گئے۔ ہمارے ملک میں ان دنوں بہت کچھ برپا ہورہا تھا۔ آئے دن جلسے ہوتے، بنگال میں قحط پڑا، ”ہندوستان چھوڑو“کی تحریک چلی، سڑکوں پر گولیاں چلیں، بمبئی میں ملاحوں کی بغاوت ہوئی، ملک سے انگریزوں کا اخراج ہوا، پھر ملک کا بٹوارہ ہوا اور تمام وقت وانگ چُو سارناتھ میں ہی بنا رہا ۔ وہ خود سے مطمئن دِکھتا تھا۔ کبھی لکھتا کہ تنترجنجان کا مطالعہ کر رہا ہے، کبھی پتہ چلتا کہ کوئی کتاب لکھنے کی منصوبہ بندی کر رہا ہے۔

 اس کے بعد میری ملاقات وانگ چُو سے دہلی میں ہوئی۔ یہ ان دنوں کی بات ہے، جب چین کے وزیر اعظم چوا ن لائی ہندوستان کے دورے پر آنے والے تھے۔ وانگ چُو اچانک سڑک پر مجھے مل گیا اور میں اسے اپنے گھر لے آیا۔ مجھے اچھا لگا کہ چین کے وزیر اعظم کی آمد کی اطلاع اسے ملی ہے، تو مجھے اسکے رویے پر تعجب ہوا۔ اس کا مزاج ویسے کاویسا ہی تھا۔ پہلے کی ہی طرح ہولے ہولے اپنی ڈیڑھ دانت کی مسکراہٹ بکھیرتا رہا۔ ویسا ہی آلکسی، بے لچک۔ اس دوران اس نے کوئی کتاب یا مقالہ بھی نہیں لکھا تھا۔ میرے پوچھنے پر اس کام میں اس نے کوئی خاص دلچسپی نہیں دکھائی۔ تنترجنجان کا حوالہ دیتے وقت بھی وہ بہت چہکا نہیں۔ دو ایک گرنتھوں کے بارے میں بتاتا رہا، جس سے وہ کچھ اقتباسات لیتا رہا تھا۔ اپنے کسی مضمون کی بات بھی اس نے کی، جس پر وہ آج کل کام کر رہا تھا۔ نیلم کے ساتھ اس کی خط و کتابت چلتی رہی، اس نے بتایا۔ اگرچہ نیلم کب کی بیاہی جا چکی تھی اور دو بچوں کی ماں بن چکی تھی۔

 وقت کی رفتار کے ساتھ ہماری اصل سوچیں بھلے ہی نہ بدلی ہوں، پر ان کی طلب اور بیتابی میں توازن سا آگیا تھا،اب پہلے جیسی جذباتیت نہیں تھی۔وہ بدھ کے پیروں پر اپنی جان نچھاور نہیں کرتا پھرتا تھا۔ لیکن اپنی زندگی سے مطمئن تھا۔ پہلے ہی کی طرح تھوڑا کھاتا، تھوڑا پڑھتا، تھوڑا سفر کرتا اور تھوڑا سا سوتا تھا۔ اور لڑکپن کے ملگجے دور سے کسی انجان دےش میں چنی گئی اپنی شاہراہ ِزندگی پر کچھوے کی چال مزے سے چلتا آ رہا تھا۔ کھانا کھانے کے بعد ہمارے درمیان بحث چھڑ گئی ۔

 ”سماجی طاقتوں کو سمجھے بغیر آپ بدھ مت کو بھی کیسے سمجھ پاو ¿ گے؟ علوم کی ہر شاخ ایک دوسرے سے منسلک ہے، زندگی سے منسلک ہے۔ کوئی چیز زندگی سے الگ نہیں ہے۔ تم زندگی سے الگ ہو کر مذہب کو کس طرح سمجھ سکتے ہو؟ “

کبھی وہ مسکراتا، کبھی سر ہلاتا اور تمام وقت فلسفیوں کی طرح میرے چہرے کی طرف دیکھتا رہا۔ مجھے لگ رہا تھا کہ میرے کہے کا اس پر کوئی اثر نہیں ہو رہا، گویاکسی چکنے گھڑے پر میں پانی انڈیلے جا رہا ہوں۔

 ”ہمارے ملک میں نہ سہی، تم اپنے ملک کی زندگی میں تو دلچسپی لو۔ اتنا جانو سمجھو کہ وہاں پر کیا ہو رہا ہے۔“ اس پر بھی وہ سر ہلاتا اور مسکراتا رہا۔ میں جانتا تھا کہ ایک بھائی کو چھوڑ کر چین میں اس کا کوئی نہیں ہے۔ ۹۲۹۱ ءمیں وہاں پر کوئی سیاسی اتھل پتھل ہوئی تھی، اس میں اس کا گاو ¿ں جلا ڈالا گیا تھا اور سب سگے رشتے دار مر گئے تھے یا بھاگ گئے تھے۔ لے دے کر ایک بھائی بچا تھا اور وہ بیجنگ کے قریب کسی گاو ¿ں میں رہتا تھا۔ برسوں سے وانگ چُو کا رابطہ اس کے ساتھ ٹوٹ گیا تھا۔ وانگ چُو پہلے گاو ¿ں کے اسکول میں پڑھتا رہا تھا، بعد میں بیجنگ کے ایک اسکول میں پڑھنے لگا تھا۔ وہیں سے وہ پروفیسر شان کے ساتھ بھارت چلا آیا تھا۔

 ”سنو وانگ چُو ،ہندوستان اور چین کے درمیان بند دروازے اب کھل رہے ہیں۔ اب دونوں ممالک کے درمیان رابطے قائم ہو رہے ہیں اور اسکی بڑی اہمیت ہے۔تحقیق کا جو کام تم ابھی تک الگ تھلگ کرتے رہے ہو، وہی اب تم اپنے ملک کے موزوں نمائندے کی حیثیت میں کر سکتے ہو۔ تمہاری حکومت تمہارے لئے گرانٹ کا انتظام کرے گی۔ اب تمہیں الگ تھلگ پڑے نہیں رہنا پڑے گا۔ تم پندرہ سال سے زیادہ عرصے سے بھارت میں رہ رہے ہو، انگریزی اور ہندی زبانیں جانتے ہو، بدھ مت گرنتھوں پر تحقیق کرتے رہے ہو، تم دونوں ممالک کے ثقافتی رابطے کی ایک مضبوط کڑی بن سکتے ہو۔“

 اس کی آنکھوں میں ہلکی سی چمک آئی۔واقعی اسے کچھ سہولیات مل سکتی تھیں۔ کیوں نہ ان سے فائدہ اٹھایا جائے۔ دونوں ممالک کے درمیان پائی جانے والی خیر سگالی سے وہ بھی متاثر ہوا تھا۔ اس نے بتایا کہ چند دن پہلے گرانٹ کی رقم لینے جب وہ بنارس گیا، تو سڑکوں پر راستہ چلتے لوگ اسکے گلے مل رہے تھے۔ میں نے اسے مشورہ دیا کہ کچھ وقت کےلئے ضرور اپنے ملک لوٹ جائے اور وہاں ہونے والے سیاسی تبدیلیوں کو دیکھے اور سمجھے ، کیوں کہ سارناتھ میں الگ تھلگ بیٹھے رہنے سے اسے کچھ فائدہ نہیں ہوگا، وغیرہ وغیرہ۔

وہ سنتا رہا، سر ہلاتا رہا اور مسکراتا رہا، لیکن مجھے کچھ معلوم نہیں ہو پایا کہ اس پر کوئی اثر بھی ہوا ہے یا نہیں۔ تقریبا ًچھ ماہ بعد اس کا خط آیا کہ وہ چین جا رہا ہے۔ مجھے بڑا اطمینان محسوس ہوا۔ اپنے ملک میں جائے گا تو دھوبی کے کتے والی اس کی حیثیت ختم ہو جائےگی، کہیں کا ہو کر تو رہے گا۔ اس کی زندگی میں نئی ولولہ انگیزی آئے گی۔ اس نے لکھا کہ وہ اپنا ایک ٹرنک سارناتھ میں چھوڑے جا رہا ہے ،جس میں اس کی کچھ کتابیں اور تحقیق کے کاغذات وغیرہ رکھے ہیں،کیونکہ برسوں تک ہندوستان میں رہ چکنے کے بعد وہ اپنے آپ کوہندوستان کا ہی شہری مانتا ہے اور وہ جلد ہی واپس لوٹ آئے گا اور پھر اپنا تحقیقی کام کرنے لگے گا۔ میں دل ہی دل ہنس دیا، ایک بار اپنے ملک میں گیا تولوٹ کر یہاں نہیں آنے کا۔

 چین میں وہ تقریباً دو سال تک رہا۔ وہاں سے اس نے مجھے بیجنگ کے قدیم شاہی محل کا پوسٹ کارڈ بھیجا، دو ایک خط بھی لکھے، پر ان سے اسکی حیثیت کے بارے میں کوئی خاص جانکاری نہیں ملی۔ ان دنوں چین میں بھی بڑا جوش و خروش اٹھ رہا تھا، بڑا ولولہ تھا اور اس و لولے کی لپیٹ میں لگ بھگ سبھی لوگ تھے۔ زندگی نئی کروٹ لے رہی تھی۔ لوگ کام کرنے جاتے تو ٹولیاں بنا کر، گاتے ہوئے، سرخ پرچم ہاتھ میں اٹھائے ہوئے۔ وانگ چُو سڑک کے کنارے کھڑا انہیں دیکھتا رہ جاتا۔ اپنے شرمیلے مزاج کی وجہ سے وہ ٹولیو ںکے ساتھ گاتے ہوئے جا تو نہیں سکتا تھا، لیکن انہیں جاتے دیکھ کر حیران سا کھڑا رہتا،مانو کسی دوسری دنیا میں پہنچ گیا ہو۔ اسے اپنا بھائی تو نہیں ملا، لیکن ایک پرانا استاد ، دور پار کی اسکی خالہ اور دو ایک واقف کار ضرور مل گئے تھے۔ وہ اپنے گاو ¿ں گیا۔ گاو ¿ں میں بہت کچھ بدل گیا تھا۔ اسٹیشن سے گھر کی طرف جاتے ہوئے اس کا ایک ساتھی اس سے کہنے لگا۔

”وہاں، اس درخت کے نیچے، زمیندار کی تمام دستاویزات، تمام کاغذات جلا ڈالے گئے تھے اور زمیندار ہاتھ باندھے کھڑا رہا تھا۔“

 وانگ چُو نے بچپن میں زمیندار کا بڑا ساراگھر دیکھا تھا، اس کی رنگین کھڑکیوں اسے ابھی بھی یاد تھیں۔ دو ایک بار زمیندار کی بگھی کو بھی قصبے کی سڑکوں پر جاتے دیکھا تھا۔ اب وہ گھر گاﺅںانتظامیہ کامرکز بنا ہوا تھا اور بہت کچھ بدلا ہوا تھا۔ پر یہاں پر بھی اس کےلئے ویسی ہی صورتحال تھی جیسی ہندوستان میں رہی تھی۔ اس کے دل میں بشاشت نہیں اٹھتی تھی۔ دوسروں کا جوش اس کے دل پر سے پھسل پھسل جاتا تھا۔ وہ یہاں بھی تماشائی ہی بنا گھومتا تھا۔

 شروع شروع کے دنوں میں اس کی آوبھگت بھی ہوئی۔ اپنے پرانے ٹیچر کے بلاوے پر اسے اسکول میں مدعو کیا گیا۔ ہندوستان،چین ثقافتی تعلقات کی اہم کڑی کے روپ میں اس کی قدردانی بھی کی گئی۔ وہاں وانگ چُو دیر تک لوگوں کو ہندوستان کے بارے میں بتاتا رہا۔ لوگوں نے طرح طرح کے سوال پوچھے، رسم و رواج کے بارے میں،تیرتھوں، میلوں ٹھیلوں کے بارے میں، وانگ چُو صرف ان سوالات کا اطمینان بخش جواب دے پاتا، جن کے بارے میں ہندوستان میں رہتے ہوئے بھی وہ کچھ نہیں جانتا تھا۔

 کچھ دنوں بعد چین میں ”بڑی چھلانگ” کی مہم زور پکڑنے لگی۔ اس گاو ¿ں میں بھی لوگ لوہا جمع کر رہے تھے۔ ایک دن صبح اسے بھی ردی لوہا بٹورنے کے لئے ایک ٹولی کے ساتھ بھیج دیا گیا تھا۔ دن بھر وہ لوگ بڑے فخر سے دکھادکھا کر لا رہے تھے اور مشترکہ ڈھیر پر ڈال رہے تھے۔ رات کے وقت آگ کے لپلپاتے شعلوں کے درمیان اس ڈھیر کو پگھلایا جانے لگا۔ آگ کے ارد گرد بیٹھے لوگ انقلابی گیت گا رہے تھے۔ تمام لوگ ایک آواز میں کورس میں حصہ لے رہے تھے۔ اکیلا وانگ چُو منہ دبائے بیٹھا تھا۔

 چین کے ماحول میں دھیرے دھیرے کشیدگی سی آنے لگی اور ایک جھٹپٹا سا چھانے لگا۔ ایک روز ایک آدمی نیلے رنگ کا کوٹ اور نیلے ہی رنگ کی پتلون پہنے اس کے پاس آیا اور اسے اپنے ساتھ گاﺅں انتظامیہ کے مرکز میں ساتھ لے گیا۔ راستے بھر وہ آدمی خاموش ہی رہا۔ مرکز میں پہنچنے پر اس نے پایا کہ ایک بڑے سے کمرے میں پانچ افراد کی ایک ٹیم میز کے پیچھے بیٹھی اس کی راہ دیکھ رہی ہے۔ جب وانگ چُو ان کے سامنے بیٹھ گیا، تو وہ باری باری اس کی ہندوستان میں موجودگی کے بارے میں پوچھنے لگے،

 ”آپ وہاں کتنے سالوں تک رہے؟“

”وہاں پر کیا کرتے تھے؟ “

”کہاں کہاں گھومے؟ “ وغیرہ وغیرہ۔

 پھر بدھ مت کے بارے وانگ چُو کے تجسس کے بارے میں جان کر ان میں سے ایک شخص بولا،”تم کیا سوچتے ہو، بدھ مت کی فکری بنیاد کیا ہے؟“

سوال وانگ چُو کی سمجھ میں نہیں آیا۔ اس نے آنکھیں میچیں۔”مادہ پرستی کے نقطہ نظر سے تم بدھ مت کو کیسے جانتے ہو؟“

سوال پھر بھی وانگ چُو کی سمجھ میں نہیں آیا، لیکن اس نے بدبداتے ہوئے جواب دیا،”انسان کی روحانی ترقی کے لئے اس کے سکھ اور امن کے لئے بدھ مت کی راہ بہت اہم ہے۔ مہاپران کے اپدیش ۔۔۔“ اور وانگ چُو بدھ مت کے آٹھ اپدیشوں کی تشریح کرنے لگا۔ وہ ابھی اپنا بیان ختم بھی نہیں کر پایا تھا کہ وزیر کی کرسی پر بیٹھے گہرائی میں جھانکتی آنکھوں والے ایک شخص نے بات کاٹ کر کہا،”ہندوستان کی غیر ملکی پالیسی کے بارے میں آپ کیا سوچتے ہیں؟“

وانگ چُو مسکرایا ،اپنی ڈیڑھ دانت کی مسکراہٹ، پھر بولا،”آپ معززین اس سلسلے میں زیادہ جانتے ہیں۔ میں تو عام سا بدھ مت کا محقق ہوں۔ پر ہندوستان بڑا قدیم ملک ہے۔ اس کی ثقافت امن اور انسانی خیر سگالی کی ثقافت ہے۔ “

”نہرو کے بارے میں تمہارا کیا خیال ہے؟“

 ”نہرو کو میں نے تین بار دیکھا ہے۔ ایک بار تو ان سے باتیں بھی کی ہیں۔ ان پر مغربی سائنس کا اثر ہے، لیکن قدیم ثقافت کے وہ بھی بڑے پرستار ہیں۔“ اس کے جوابات سنتے ہوئے کچھ رکن پھر سر ہلانے لگے، کچھ کے چہرے تمتمانے لگے۔ پھر طرح طرح کے آڑھے تیڑھے سوالات پوچھے جانے لگے۔ انہوں نے محسوس کیا جہاں تک حقائق کا اور بھارت کے موجودہ زندگی کا سوال ہے، وانگ چُو کی معلومات ادھوری اور مضحکہ خیز ہیں۔

 ”سیاسی اعتبار سے تو تم صفر ہو۔ بدھ مت کے تصورات کو بھی سوشیالوجی کی نظر سے تم دیکھ نہیں سکتے۔ نہ جانے وہاں بیٹھے کیا کرتے رہے ہو۔ پر ہم تمہاری مدد کریں گے۔“

تفتیش گھنٹوں تک چلتی رہی۔ پارٹی حکام نے اسے ہندی پڑھانے کی نوکری دے دی، ساتھ ہی بیجنگ کے میوزیم میں ہفتے میں دو دن کام کرنے کی بھی اجازت دے دی۔ جب وانگ چُو پارٹی دفتر سے لوٹا تو تھکا ہوا تھا۔ اس کا سر گھوم رہا تھا۔ اپنے ملک میں اس کا دل جم نہیں پایا تھا۔ آج وہ اور بھی زیادہ اکھڑا اکھڑا محسوس کر رہا تھا۔ چھپر کے نیچے لیٹا تو اسے اچانک ہی ہندوستان کی یاد ستانے لگی۔ اسے سارناتھ کی اپنی کوٹھری یاد آئی، جس میں دن بھر بیٹھا پوتھی پڑھاکرتا تھا۔ نیم کا گھنا درخت یاد آیا جس کے نیچے کبھی کبھار سستایا کرتا تھا۔ یادوں کا سلسلہ طویل ہوتا گیا۔ سارناتھ کی کینٹین کا رسوئیا یاد آیا، جو ہمیشہ پیار سے ملتا تھا، ہمیشہ ہاتھ جوڑ ے”کہو بھگوان“ کہہ کرملاکرتا تھا۔ ایک بار وانگ چُو بیمار پڑ گیا تھا تو دوسرے روز کینٹین کا رسوئیا ،اپنے آپ اس کی کوٹھری میں چلا آیا تھا ۔

”میں بھی کہوں، چینی بابو چائے پینے نہیں آئے، دو دن ہو گئے۔ پہلے آتے تھے تو درشن ہو جاتے تھے۔ ہمیں خبر کی ہوتی بھگوان، تو ہم ڈاکٹر بابو کو بلا لاتے، میں بھی کہوں، بات کیا ہے۔“

پھر اس کی آنکھوں کے سامنے گنگا کا کنارہ آیا ،جس پر وہ گھنٹوں گھوما کرتا تھا۔ پھر اچانک منظر بدل گیا اور کشمیر کی جھیل آنکھوں کے سامنے آ گئی اور پیچھے ہمالیہ پہاڑ، پھر نیلم سامنے آئی، اس کی کھلی کھلی آنکھیں، موتیوں سی جھلملاتی دانتوں کی قطاریں۔ اس کا دل بے چین ہو اٹھا۔ جیسے جیسے دن گزرنے لگے، بھارت کی یاد اسے اور زیادہ پریشان کرنے لگی۔ وہ پانی میں سے باہر پھینکی ہوئی مچھلی کی طرح تڑپنے لگا۔ سارناتھ کے وِہار میں سوال جواب نہیں ہوتے تھے۔ جہاں پڑے رہو، پڑے رہو۔ رہنے کےلئے کوٹھری اور کھانے کا انتظام وِہار کی جانب سے تھا۔ یہاں پر نئے نقطہ نظر سے دھرم گرنتھوں کو پڑھنے اور سمجھنے کے لئے اس میں صبر نہیں تھا، تجسس بھی نہیں تھا۔ برسوں تک ایک معمول پر چلتے رہنے کی وجہ سے وہ تبدیلی سے کتراتا تھا۔

 اس اجلاس کے بعد وہ دوبارہ خود میںسمٹنے لگا تھا۔ کہیں کہیں اسے ہندوستان مخالف جملے سننے کو ملتے۔ اچانک وانگ چُو بہت تنہا محسوس کرنے لگا اور اسے لگا کہ زندگی حاصل کرنے کےلئے اسے اپنے لڑکپن کے اسی ”کھلی آنکھوں والے خواب“ میں پھر سے لوٹ جانا ہوگا، جب وہ بدھ بھکشو بن کر بھارت کی سیر کا تصور کرتا تھا۔ اس نے اچانک بھارت واپسی کی ٹھان لی۔ لوٹنا آسان نہیں تھا۔ بھارتی سفارت خانے سے تو ویزا ملنے میں مشکل نہیں ہوئی، لیکن چین کی حکومت نے بہت سے اعتراضات اٹھائے۔ وانگ چُو کی شہریت کا سوال تھا اور کئی دیگر سوال تھے۔ لیکن بھارت اور چین کے تعلقات ابھی تک بہت بگڑے نہیں تھے، اس لئے بالآخر وانگ چُو کو بھارت واپسی کی اجازت مل گئی۔ اس نے دل ہی دل تہیہ کر لیا کہ وہ بھارت میں ہی اب زندگی کے دن کاٹے گا۔ بدھ بھکشو ہی بنے رہنا اس کی قسمت تھی۔

 جس روز وہ کلکتہ پہنچا، اسی روز سرحد پر چینی اور بھارتی فوجیوں کے درمیان تصادم ہوا تھا اور دس بھارتی فوجی ہلاک ہو گئے تھے۔ اس نے پایا کہ لوگ گھور گھورکر اس کی طرف دیکھ رہے ہیں۔ وہ اسٹیشن کے باہر ابھی نکلا ہی تھا کہ دو سپاہی آکر اسے پولیس اسٹیشن میں لے گئے اور وہاں گھنٹے بھر ایک افسر اسکے پاسپورٹ اور کاغذوں کی جانچ پڑتال کرتا رہا۔

”دو برس پہلے آپ چین گئے تھے۔ وہاں جانے کا کیا مقصد تھا؟“

”میں بہت برسوں تک یہاں رہتا رہا ہوں، کچھ وقت کےلئے اپنے ملک جانا چاہتا تھا۔“

پولس افسر نے اسے سر سے پیر تک دیکھا۔ وانگ چُو پراعتماد تھا اور مسکرا رہا تھا،وہی ٹیڑھی سی مسکراہٹ۔

 ”آپ وہاں کیا کرتے رہے؟“

”وہاں ایک کمیون میں میں کھیتی باری کی ٹولی میں کام کرتا تھا۔“

”مگر آپ تو کہتے ہیں کہ آپ بدھ گرنتھ پڑھتے ہیں؟“

”ہاں، بیجنگ میں ایک ادارے میں ہندی پڑھانے لگا تھا اور بیجنگ میوزیم میں مجھے کام کرنے کی اجازت مل گئی تھی۔“

”اگر اجازت مل گئی تھی تو آپ اپنے ملک سے بھاگ کیوں آئے؟“ پولیس افسر نے غصے میں کہا۔

وانگ چُو کیا جواب دے؟ کیا کہے؟”میں کچھ وقت کےلئے ہی وہاں گیا تھا، اب لوٹ آیا ہوں۔“

 پولس افسر نے دوبارہ سر سے پاو ¿ں تک اسے گھورکر دیکھا، اس کی آنکھوں میں شک اتر آیا تھا۔ وانگ چُو عجیب سا محسوس کرنے لگا۔ بھارت میں پولیس حکام کے سامنے کھڑے ہونے کا اس کا یہ پہلا تجربہ تھا۔ اس سے ضامن کے لئے پوچھا گیا، تو اس نے پروفیسر تان شان کا نام لیا، پھر گرودیو کا، لیکن دونوں مر چکے تھے۔ اس نے سارناتھ کے ادارے کے منتری کا نام لیا، شانتی نکیتن کے پرانے دو ایک ساتھیوں کے نام لئے، جو اسے یاد تھے۔ سپرنٹنڈنٹ نے تمام نام اور پتے نوٹ کر لئے۔ اس کے کپڑے کی تین بار تلاشی لی گئی۔ اس کی اس ڈائری کو رکھ لیا گیا، جس میں اس نے اقتباسات اور تبصرے لکھ رکھے تھے اور سپرنٹنڈنٹ نے اس کے نام کے آگے تبصرہ لکھ دیا کہ اس آدمی پر نظر رکھنے کی ضرورت ہے۔

 ریل کے ڈبے میں بیٹھا، تو مسافر گولی اسکینڈل پرگفتگو کر رہے تھے۔ اسے بیٹھتے دیکھ کر سب خاموش ہو گئے اور اس کی طرف گھورنے لگے۔ کچھ دیر بعد جب مسافروں نے دیکھا کہ وہ تھوڑی بہت بنگالی اور ہندی بول لیتا ہے، تو ایک بنگالی بابو اچک کر اٹھ کھڑے ہوئے اور ہاتھ جھٹک جھٹک کر کہنے لگے،”یا تو کہو کہ تمہارے دیش والو ں نے دھوکہ کیا ہے، نہیں تو ہمارے ملک سے نکل جاو ¿ ۔۔نکل جاو ¿۔۔ نکل جاو ¿۔“ ڈیڑھ دانت کی مسکراہٹ جانے کہاں اوجھل ہو چکی تھی۔ اس کی جگہ چہرے پر کرب اتر آیا تھا۔دہشت زدہ اور خاموش وانگ چُو خاموشی بیٹھا رہا۔ کہے بھی تو کیا کہے؟ گولی اسکینڈل کے بارے میں جان کر اسے بھی گہرا دھکا لگا تھا۔ اس جھگڑے کی وجہ کے بارے میں اسے کچھ بھی واضح طور پر معلوم نہیں تھا اور وہ جاننا چاہتا بھی نہیں تھا۔ ہاں ، سارناتھ میں پہنچ کر وہ واقعی جذباتی ہو اٹھا۔ اپنا بیگ رکشہ میں رکھے جب وہ آشرم کے قریب پہنچا تو کینٹین کا رسوئیا سچ مچ لپک کر باہر نکل آیا ۔

 ”آگئے بھگوان۔ آگئے میرے چینی بابو۔ بہت دنوں بعددرشن دیے۔ ہم بھی کہیں، اتنا عرصہ ہو گیا چینی بابو نہیں لوٹے۔ اور کہیے، سب کُشل منگل ہے؟ آپ یہاں نہیں تھے، ہم کہیں کہ جانے کب لوٹیں گے۔ یہاں پر تھے تو دن میں دو باتیں ہو جاتی تھیں، بھلے آدمی کے درشن ہو جاتے تھے۔ اس سے بڑا پُنیہ کیا ہوتا ہے۔“

 اور اس نے ہاتھ بڑھا کر بیگ اٹھا لیا،”ہم دیں پیسے، چینی بابو۔“ وانگ چُو کو لگا،جیسے وہ اپنے گھر پہنچ گیا ہے۔”آپ کاٹرنک، چینی بابو، ہمارے پاس رکھا ہے۔منتری جی سے ہم نے لے لیا۔ آپ کی کوٹھری میں ایک دوسرے سجن رہنے آئے تو ہم نے کہا کوئی فکر نہیں، یہ ٹرنک ہمارے پاس رکھ جائیے اور چینی بابو، آپ اپنا لوٹا باہر ہی بھول گئے تھے۔ ہم نے منتری جی سے کہا، یہ لوٹا چینی بابو کا ہے، ہم جانتے ہیں، ہمارے پاس چھوڑ جائیے۔“

وانگ چُو کا دل بھر بھر آیا۔ اسے لگا، جیسے اس کی ڈانواڈول زندگی میں توازن آ گیا ہے۔ ڈگمگاتی زندگی کی گاڑی دوبارہ مستحکم رفتار سے چلنے لگی ہے۔ منتری جی بھی پیار سے ملے۔ پرانی جان پہچان کے آدمی تھے۔ انہوں نے ایک کوٹھری بھی کھول کر دی، لیکن گرانٹ کے بارے میں کہا کہ اس کے لئے دوبارہ کوشش کرنی ہوگی۔

وانگ چُو نے پھر سے کوٹھری کے بیچوں بیچ چٹائی بچھا لی، کھڑکی کے باہر وہی منظر دوبارہ ابھر آیا۔ کھوئی ہوئی مخلوق اپنے مقام پر واپس لوٹ آئی۔ تبھی مجھے اس کا خط ملا کہ وہ ہندوستان لوٹ آیا ہے اور دوبارہ جم کر بدھ گرنتھوں پر تحقیق کرنے لگا ہے۔ اس نے یہ بھی لکھا کہ اسے ماہانہ گرانٹ کے بارے میں تھوڑی فکر ہے اور اس سلسلے میں، میں اگر بنارس میں اگر فلاں آدمی کو خط لکھ دوں، تو گرانٹ ملنے میں مدد ہوگی۔

 خط پاکر مجھے کھٹکا ہوا۔ کون سا سراب اسے دوبارہ واپس کھینچ لایا ہے؟ یہ لوٹ کیوں آیا ہے؟ اگر کچھ دن اور وہاں رہتا تو اپنے لوگوں کے درمیان اس کا من لگنے لگتا۔ پر کسی کی سنک کا کوئی علاج نہیں۔ اب جو واپس آیا ہے، تو کیا چارہ ہے۔

 میں نے ”فلاں“ جی کو خط لکھ دیا اور وانگ چُو کی گرانٹ کا چھوٹا موٹا انتظام ہو گیا۔ پر لوٹنے کے دس ایک دن بعد وانگ چُو ایک دن صبح چٹائی پر بیٹھا ایک گرنتھ پڑھ رہا تھا اور بار بار اس کا مزہ لے رہا تھا،تبھی اس کی کتاب پر کسی کا سایہ پڑا۔ اس نے نظر اٹھا کر دیکھا، تو پولیس کا ایس ایچ او کھڑا تھا، ہاتھ میں ایک فارم اٹھائے ہوئے۔ وانگ چُو کو بنارس کے بڑے پولیس اسٹیشن میں بلایا گیا تھا۔ وانگ چُو کا من خدشات سے بھر اٹھا تھا۔ تین دن کے بعد وانگ چُو بنارس کے پولیس کے برآمدے میں بیٹھا تھا۔ اسی کے ساتھ بینچ پر بڑی عمر کا ایک اور چینی شخص بیٹھا تھا، جو جوتے بنانے کا کام کرتا تھا۔ آخر کاربلاوا آیا اور وانگ چُو چک اٹھا کر بڑے افسر کی میز کے سامنے جا کھڑا ہوا۔

 ”تم چین سے کب لوٹے؟“

وانگ چُو نے بتا دیا۔

 ”کلکتہ میں تم نے اپنے بیان میں کہا کہ تم شانتی نکیتن جا رہے ہو، پھر تم یہاں کیوں چلے آئے؟ پولیس کو پتہ لگانے میں بڑی پریشانی اٹھانی پڑی ہے۔“

 ”میں نے دونوں مقامات کے بارے میں کہا تھا۔شانتی نکیتن تو میں صرف دو دن کے لئے جانا چاہتا تھا۔“

”میں ہندوستان میں رہنا چاہتا ہوں …. © ©“ اس نے پہلے کا جواب دہرا دیا۔

”جو لوٹ آنا تھا، تو گئے کیوں تھے؟“

یہ سوال وہ بہت بار پہلے بھی سن چکا تھا۔ جواب میں بدھ گرنتھوں کا حوالہ دینے کے علاوہ اسے کوئی اور جواب نہیں سوجھ پاتا تھا۔ بہت لمبا انٹرویو نہیں ہوا۔ وانگ چُو کو ہدایت کی گئی کہ ہر مہینے کے پہلے پیر کو بنارس کے بڑے پولیس اسٹیشن میں اسے آنا ہوگا اور اپنی حاضری لکھوانی ہوگی۔

وانگ چُو باہر آ گیا، پر اداسی سی محسوس کرنے لگا۔ مہینے میں ایک بار آنا کوئی بڑی بات نہیں تھی، لیکن وہ اس کی سیدھی زندگی میں رکاوٹ تھی، دخل اندازی تھی۔ وانگ چُو دل ہی دل اتنی افسردگی محسوس کر رہا تھا کہ بنارس سے لوٹنے کے بعد کوٹھری میں جانے کی بجائے وہ سب سے پہلے اس سنسان پوتر مقام پر جا کر بیٹھ گیا، جہاں صدیوں پہلے مہاپران نے اپنا پہلا پروچن دیا تھااور دیر تک بیٹھا غور کرتا رہا۔ بہت دیر بعد اس کا دل پھر سے ٹھکانے پر آنے لگا اور دل میں پھر سے احساس کی ترنگیں اٹھنے لگیں۔

 لیکن وانگ چُو کو چین نصیب نہیں ہوا۔ چند دن بعد اچانک چین اورہندوستان کے درمیان جنگ چھڑ گئی۔ ملک بھر میں جیسے طوفان اٹھ کھڑا ہوا۔ اسی روز شام کو پولیس کے کچھ افسران ایک جیپ میں آئے اور وانگ چُو کو حراست میں لے کر بنارس چلے گئے۔ حکومت یہ نہ کرتی، تو اور کیا کرتی؟ حکومت والوں کو اتنی فرصت کہاں کہ بحران کے وقت خوش دلی اور خیر سگالی کے ساتھ دشمن کے ایک ایک شہری کی حیثیت کی جانچ پڑتال کرتے پھریں؟ دو دنوں تک دونوں چینیوں کو پولیس اسٹیشن کی ایک کوٹھری میں رکھا گیا۔ دونوں کے درمیان کوئی بات بھی مشترک نہیں تھی۔ جوتے بنانے والا چینی سارا وقت سگریٹ پھونکتا رہتا اور گھٹنوں پر ہاتھ ٹکائے بڑبڑاتا رہتا، جبکہ وانگ چُو اداس اور نڈھال سا دیوار کے ساتھ پیٹھ لگائے بیٹھا ،خلا میں دیکھتا رہتا۔

 جس وقت وانگ چُو اپنی پوزیشن کو سمجھنے کی کوشش کر رہا تھا، اسی وقت دو تین کمرے چھوڑ کر پولیس سپرنٹنڈنٹ کی میز پر اس کی چھوٹی سی پوٹلی کی تلاشی لی جا رہی تھی۔ اسکی غیر موجودگی میں پولیس کے سپاہی کوٹھری میں سے اس کا ٹرنک اٹھا لائے تھے۔ سپرنٹنڈنٹ کے سامنے کاغذوں کا پلندہ رکھا تھا، جس پر کہیں پالی میں، تو کہیں سنسکرت زبان میں اقتباسات لکھے تھے۔ لیکن بہت سا حصہ چینی زبان میں تھا۔ صاحب کچھ دیر تک تو کاغذوں کو الٹتے پلٹے رہے، روشنی کے سامنے رکھ کر ان میں لکھی کسی خفیہ زبان کو ڈھونڈتے بھی رہے، آخر میں انہوں نے حکم دیا کہ کاغذوں کے پلندے کو باندھ کر دہلی کے حکام کے پاس بھیج دیا جائے، کیونکہ بنارس میں کوئی آدمی چینی زبان نہیں جانتا تھا۔ پانچویں دن جنگ بند ہو گئی، لیکن وانگ چُو کو سارناتھ واپسی کی اجازت ایک ماہ کے بعد ملی۔ چلتے وقت جب اسے اس کا ٹرنک دیا گیا اور اس نے اسے کھول کر دیکھا، تو سکتے میں آ گیا۔ اسکے کاغذات اس میں نہیں تھے، جس پر وہ برسوں سے اپنے تبصرے اوراقتباسات لکھتا رہا تھا اور جو ایک طرح سے اس کا سرمایہ تھے۔ پولیس افسر کے کہنے پر کہ انہیں دہلی بھیج دیا گیا ہے، یہ سن کر وہ سر سے پیر تک کانپ اٹھا تھا۔

 ”وہ میرے کاغذات آپ مجھے دے دو۔ ان پر میں نے بہت کچھ لکھا ہے، وہ بہت ضروری ہیں۔“

اس پر افسر بے رخی سے بولا،”مجھے ان کاغذوں کا کیا کرنا ہے، آپ کے ہیں، آپ کو مل جائیں گے۔“ اور اس نے وانگ چُو کو چلتا کیا۔ وانگ چُو اپنی کوٹھری میں لوٹ آیا۔اپنے کاغذوں کے بغیر وہ ادھ مرا سا ہو رہا تھا۔ نہ پڑھنے میں دل لگتا، نہ کاغذوں پر نئے اقتباس اتارنے میں۔ اور پھر اس پر سخت نگرانی بھی رکھی جانے لگی تھی۔ کھڑکی سے تھوڑا ہٹ کر نیم کے درخت کے نیچے ایک آدمی روز بیٹھا نظر آنے لگا۔ ڈنڈا ہاتھ میں لئے وہ کبھی ایک کروٹ بیٹھتا، کبھی دوسری کروٹ۔ کبھی اٹھ کر ڈولنے لگتا۔ کبھی کنویں کی منڈیر پر جا بیٹھتا، کبھی کینٹین کی بنچ پر آ بیٹھتا ، کبھی دروازے پر جا کھڑا ہوتا۔ اس کے علاوہ اب وانگ چُو کو مہینے میں ایک بار کی جگہ ہفتے میں ایک بار بنارس میں حاضری لگوانے جانا پڑتا تھا۔

تبھی مجھے وانگ چُو کا خط ملا۔ ساری تفصیلات دینے کے بعد اس نے لکھا کہ بدھ وِہار کا منتری تبدیل کر دیا اور نئے منتری کو چین سے نفرت ہے اور وانگ چُو کو ڈر ہے کہ گرانٹ ملنا بند ہو جائےگی۔ دوسرے، کہ میں جیسے بھی ہو سکے، اس کے کاغذوں کو بچا لوں۔ جیسے بھی بن پڑے، انہیں پولیس کے ہاتھوں سے نکلوا سارناتھ میں اس کے پاس بھجوا دوں۔ اور اگر بنارس کے پولیس اسٹیشن میں فی ہفتہ پیش ہونے کے بجائے اسے مہینے میں ایک بار جانا پڑے تو اس کے لئے آسان ہو جائے گا، کیونکہ اس طرح مہینے میں تقریبا دس روپے آنے جانے میں لگ جاتے ہیں اور پھر کام میں دل ہی نہیں لگتا، سر پر تلوار ٹنگی رہتی ہے۔

وانگ چُو نے خط تو لکھ دیا، لیکن اس نے یہ نہیں سوچا کہ مجھ جیسے آدمی سے یہ کام نہیں ہو پائے گا۔ ہمارے یہاں کوئی کام بغیر جان پہچان اور سفارش کے نہیں ہو سکتا۔ اور میرے تعارف کا بڑے سے بڑا آدمی میرے کالج کا پرنسپل تھا۔ پھر بھی میں کچھ ایک پارلیمنٹ اراکین کے پاس گیا، ایک نے دوسرے کی طرف بھیجا، دوسرے نے تیسرے کی طرف۔ گھوم پھر کے میں لوٹ آیا۔ یقین دہانیاں تو بہت ملیں، پر سب یہی پوچھتے ۔

 ”وہ چین کو گیا تھاتو وہاں سے واپس کیوں آیا؟“

یا پھر پوچھتے۔”گزشتہ بیس سال سے تحقیق ہی کر رہا ہے؟“

 جب میں اس کے قلمی نسخوں کا ذکر کرتا، توسب یہی کہتے،”ہاں، یہ تو مشکل نہیں ہونا چاہئے۔“ اور سامنے رکھے کاغذ پر کچھ نوٹ کر لیتے۔ اس طرح کی یقین دہانیاں مجھے بہت ملیں۔سبھی سامنے رکھے کاغذ پر میری سفارش نوٹ کر لیتے۔ پر سرکاری کام کے راستے، مایاجال کے معمے کی طرح ہوتے ہیں اور ہر موڑ پر کوئی نہ کوئی شخص تمہیں تمہاری حیثیت کا احساس کراتا رہتا ہے۔ میں نے جواب میں اسے اپنی کوششوں کی مکمل تفصیل بتائی، یہ بھی یقین دلایا کہ میں پھران لوگوں سے ملوںگا، پر ساتھ ساتھ میں نے یہ بھی تجویز دی کہ جب حالات بہتر ہو جائیں، تو وہ اپنے ملک واپس لوٹ جائے، اس کے لئے یہی بہتر ہے ۔

 خط سے اس کے دل کی کیا حالت ہوئی، میں نہیں جانتا۔ اس نے کیا سوچا ہوگا؟ لیکن ان کشیدگی کے دنوں میں جب مجھے خود چین کے رویے پر غصہ آ رہا تھا، میں وانگ چُو کی پوزیشن کو بہت ہمدردی کے ساتھ نہیں دیکھ سکتا تھا۔ اس کے بعد ایک خط آیا۔ اس میں چین واپس جانے کا کوئی ذکر نہیں تھا۔ اس میں صرف گرانٹ کی بات کی گئی تھی۔ گرانٹ کی رقم اب بھی چالیس روپے ہی تھی، لیکن اسے پیشگی اطلاع دے دی گئی تھی کہ سال ختم ہونے پر اس پر دوبارہ غور کیا جائے گا کہ وہ ملتی رہے گی یا بند کر دی جائے گی۔

تقریباً سال بھر بعد وانگ چُو کو ایک پرزہ ملا کہ تمہارے کاغذ واپس کئے جا سکتے ہیں، تم پولیس اسٹیشن آکر انہیں لے جا سکتے ہو۔ ان دنوں وہ بیمار پڑا تھا، لیکن بیماری کی حالت میں بھی وہ گرتاپڑتا بنارس پہنچا۔ لیکن اس کا ہاتھ ایک تہائی کاغذ لگے۔ پوٹلی اب بھی ادھ کھلی تھی۔ وانگ چُو کو پہلے تو یقین نہیں آیا، پھر اس کا چہرہ زرد پڑ گیا اور ہاتھ پیر کانپنے لگے۔اس پر ایس ایچ او بے رخی کے ساتھ بولا،”ہم کچھ نہیں جانتے۔ انہیں اٹھاﺅ اور یہاں سے لے جاو ¿ ورنہ ادھر لکھ دو کہ ہم لینے سے انکار کرتے ہیں۔“

 کانپتی ٹانگوں سے وانگ چُو پوٹلی بغل میں دبائے لوٹ آیا۔ کاغذوں میں صرف ایک مکمل مضمون اور کچھ تبصرے بچے تھے۔ اسی دن سے وانگ چُو کی آنکھوں کے سامنے دھول اڑنے لگی تھی۔ وانگ چُو کی موت کی خبر مجھے مہینے بھر بعد ملی، وہ بھی بدھ وہار کے منتری کی جانب سے۔ مرنے سے پہلے وانگ چُو نے زور دیا تھا اس کا چھوٹا سا ٹرنک اور اس کی گنی چنی کتابیں مجھے پہنچا دی جائیں۔ عمر کے اس حصے میں پہنچ کر انسان بری خبریں سننے کا عادی ہو جاتا ہے اور وہ دل پر گہرا صدمہ نہیں کرتیں۔ میں فوراً سارناتھ نہیں جا پایا، جانے میں کوئی تک بھی نہیں تھی، کیونکہ وہاں وانگ چُو کا کون بیٹھا تھا، جس کے سامنے افسوس کا اظہار کرتا، وہاں تو صرف ٹرنک ہی رکھا تھا۔ پر کچھ دنوں بعد موقع ملنے پر میں گیا۔

منتری جی نے وانگ چُو کے بارے میں خیر سگالی کے الفاظ کہے، ”بڑا نیک دل آدمی تھا، حقیقی معنوں میں بدھ بھکشو تھا۔“ وغیرہ وغیرہ۔ میرے دستخط لے کر انہوں نے ٹرنک دیا ،جس میں وانگ چُو کے کپڑے تھے، وہ پھٹاپرانا چوغہ تھا جو نیلم نے اسکی احسان مندی میں دیا تھا۔ تین چار کتابیں تھیں، پالی اور سنسکرت کی چٹھیاں تھیں، جن میں کچھ میری، کچھ نیلم کی رہی ہوں گی، اورکچھ دیگر لوگوں کی۔ ٹرنک اٹھائے میں باہر کی طرف جا رہا تھا ،تبھی مجھے اپنے پیچھے قدموں کی آہٹ ملی۔ میں نے مڑ کر دیکھا، کینٹین کا رسوئیا بھاگتا چلا آ رہا تھا۔ اپنے خطوط میں اکثر وانگ چُو اس کا ذکر کیا کرتا تھا۔

 ”بابو آپ کو بہت یاد کرتے تھے۔ میرے ساتھ آپ کا بہت ذکر کرتے تھے۔ بہت بھلے آدمی تھے۔“ اور اس کی آنکھیں ڈبڈبا گئیں۔ تمام دنیا میں شاید یہی اکلوتا انسان تھا، جس نے وانگ چُو کی موت پر دو آنسو بہائے تھے۔

”بڑی بھولی طبیعت تھی۔ بیچارے کو پولیس والوں نے بہت پریشان کیا۔ شروع شروع میں تو چوبیس گھنٹے کی نگرانی رہتی تھی۔ میں اس حوالدار سے کہوں، بھیا، تو کیوں اس بیچارے کو پریشان کرتا ہے؟ وہ کہے، میں تو ڈیوٹی کر رہا ہوں۔“

میں ٹرنک اور کاغذوں کا پلندہ لے آیا ہوں۔ اس پلندے کا کیا کروں؟ کبھی سوچتا ہوں، اسے شائع کرا ڈالوں۔ پر نامکمل کتاب کو کون چھاپے گا؟ بیوی روز بگڑتی ہے کہ میں گھر میں کچرا بھرتا جا رہا ہوں۔ دو تین بار وہ پھینکنے کی دھمکی بھی دے چکی ہے، پر میں اسے چھپاتا رہتا ہوں۔ کبھی کسی فریم میں رکھ دیتا ہوں، کبھی پلنگ کے نیچے چھپا دیتا ہوں۔ پر میں جانتا ہوں کسی دن یہ بھی گلی میں پھینک دیے جائیں گے۔

٭٭٭

ہنساجائے اکیلا

مارکنڈییہ /عامر صدیقی

ہندی کہانی

………………..

مارکنڈییہ، پیدائش: ۵ مئی، ۰۳۹۱ ءبرائی گاو ¿ں،ضلع جونپور ، اتر پردیش۔میدان:شاعری، کہانی، ناول، تنقید۔اہم کام:ناول: اگن بیج، سیمل کے پھول ،کہانیوں کے مجموعے:پان پھول، مہوے کا پیڑ، ہنسا جائے اکیلا، سہج اور شبھ، بھودان، ماہی، بیچ کے لوگ اور ہلی یوگ، شاعری کا مجموعہ:سپنے تمہارے تھے ، تنقید: کہانی کی بات ،وغیرہ۔ ان کی کہانیوں کا انگریزی، روسی، چینی، جاپانی، جرمنی وغیرہ میں ترجمہ ہو چکا ہے۔ انتقال: ۷۱ مارچ ،۰۱۰۲ ئ۔

…………

وہاں تک تو سب ساتھ تھے، لیکن اب کوئی بھی دو ایک ساتھ نہیں رہے تھے۔ دَس کے دَس الگ الگ کھیتوں میں اپنی پنڈلیاں کھجلاتے، ہانپ رہے تھے۔

”سمجھاتے سمجھاتے عمر گزر گئی، پر یہ مٹی کا مادھو ہی رہ گیا۔ سسرا ملیں، تو کَس کر مرمت کر دی جائے آج۔“ بابااپنے پھوٹے ہوئے گھٹنے سے خون پونچھتے ہوئے ٹھٹھا لگاکر ہنستے تھے۔ پاس کے کھیت میں پھنسے مگنُو سنگھ ہنسی کے مارے لوٹ پوٹ ہوتے ہوئے ان کے پاس پہنچے۔

”پکڑا تو نہیں گیا سسرا؟ باپ رے۔۔ بھیا، وہ سب کے سب آ تو نہیں رہے ہیں؟“ اور وہ لپک کر چار قدم بھاگے، پر بابا کے ہٹیلے پن نے انہیں روک لیا۔ دونوں آدمی خاموشی سے ادھر ادھر دیکھنے لگے۔ ساون بھادوں کی کالی رات، رِم جھم بوندیں پڑ رہی تھیں۔

”کا کیا جائے، راستہ بھی تو چھوٹ گیا۔ پتہ نہیں کہاں ہیں، ہم لوگ۔“

”کسی مینڈ پر چڑھ کر، ادھر ادھر دیکھا جائے۔ میرا تو گھٹنا پھوٹ گیا ہے۔“

”بُڑھوا حقہ کیسے پٹخ کے دوڑا تھا۔“

”ارے بھیا، کچھ نہ پوچھو۔“ مگنو ہو ہوکر کے ہنسنے لگے۔ اسی بیچ گانے کی آواز سنائی پڑی۔

ہنسا جائے اکیلا، ای دےِہیا نہ رہی۔

مل لے، دھو لے، نہا لے، کھا لے

کرنا ہو سو کر لے،

 ای دےِہیا۔۔۔۔۔۔

دس ایک بیگھے کے چاروں جانب، اندھیرے اور خوف میں دھنسی ہوئی پوری منڈلی سمٹ آئی۔ چہرے کسی کے نہیں دکھائی پڑے، پر ہنسی کے مارے سب کا پیٹ پھول رہا تھا۔ اسی بیچ تھُوک گھونٹنے کی سی آواز کرتا ہوا، وہ آیا اور زور سے ہنسنے لگا۔

”ہو گئی غلطی بھیا۔ میں کا جانوں کہ مہریاہے۔ سمجھا، تم میں سے کوئی رک گیا ہے۔“

مگنو نے کہا،”سراُو، سانڈ ہو رہے ہو، اب مرد ، میہریا میں بھی تمہیں بھید نہیں دکھائی پڑتا؟“

”ناہیں، بھایہ، جب ٹھوکر کھا کر گرنے کو ہوئے نہ، میں نے سہارے کے لئے اسے پکڑ لیا۔ پھر جو معلوم ہوا، توہکا بکا گیا۔ تبھی بُڑھوا نے ایک لاٹھی جما دی۔ خیر کہو نکل بھاگا۔“ اس نے جھک کر اپنی ٹانگوں پر ہاتھ پھیرا۔نیچے سے اوپر تک جھڑبیری کے کانٹے چبھے ہوئے تھے۔

”سسرے کو بیچ میں کر لو۔“ بابا نے کہا۔

مگنو کہنے لگے،”چلو میہرا رُو کو تو چھو لیا، سسرے کی قسمت میں لکھی تو ہے نہیں۔“

اسے لوگ ہنسا کہتے ہیں، کالا چٹھا بہت تگڑا آدمی ہے۔ اسکے بھاری چہرے میں مٹر سی آنکھیں اور آلو سی ناک، اس کی شخصیت کے پھیلاﺅ کو بہت محدود کر دیتی ہیں۔ چھاتی پر اگے ہوئے بال، کسی بھِینٹ پر اگی ہوئی گھاس کا احساس کراتے ہیں۔ گھٹنے تک دھوتی اور مارکِین کا دُگجی گمچھا اس کا پہناوا ہے۔ ویسے اس کے پاس ایک دوہرا کرتا بھی ہے، پر وہ موقعے جھونکے یا ٹھاری کے دنوں میں ہی نکالتا ہے۔کرتا پہن کر نکلنے پر، گاو ¿ں کے لڑکے اسی طرح اس کا پیچھا کرنے لگتے ہیں، جیسے کسی بھالو کا ناچ دکھانے والے مداری کا۔

”ہنسا دادا دلہا بنے ہیں دلہا۔“ اور ننھے ننھے چوہے کی طرح اس کے جسم پر رینگنے لگتے ہیں۔ کوئی چٹکیاں کاٹتا ہے، کوئی کان میں پوری کی پوری انگلی ڈال دیتا ہیں۔ کوئی لکڑی کے ٹکڑے سے ناک کھجانے لگتا ہے، تو کوئی اس کی بڑی بڑی چھاتیوں کو منہ میں لے کر، ہنسا مائی، ہنسا مائی، کا نعرہ لگانے لگتا ہے۔ اسی بیچ ایک موٹا سوٹا آ جاتا ہے، وہ ہنسا کے کندھے سے سٹا کر رکھ دیا جاتا ہے اور ہنسا دو ایک بار اس پر انگلیاں دوڑا کر، الاپ بھرتے بھرتے رک کر کہتا ہے،”بس نہ۔“

لڑکے چلا پڑتے ہیں،”نہیں، دادا۔ اب ہو جائے۔“ کوئی ٹانگوں سے لٹک جاتا ہے، تو کوئی ہاتھ سے۔ پھر وہ مگن ہو کر گانے لگتا ہے،”ہنسا جائے اکیلا، ای دےِہیا نہ رہی۔“

اس دن بارہ بجے رات کو گاو ¿ں لوٹ کر، ہنسا سیدھا بابا کے دالان آیا۔ لالٹین جلائی گئی۔ ہنسا اپنی پنڈلیوں میں دھنسے جھڑبیری کے کانٹوں کو نکالنے لگا۔ جیسے جاڑے میں چِلّر پڑ جاتے ہیں، اسی طرح ہنسا کی ٹانگ میں کانٹے گڑے تھے۔

بابا نے کہا،”کہاں جائے گا ٹھوکنے پکانے اتنی رات کو، یہیں دو روٹی کھا لے۔“ اورپھرجب جھڑبےریوں کے کانٹے دیکھے، تو انہیں جیسے آج پہلی بار ہنسا کے اندر موجود زندگی کی جھلک دکھائی دی۔ ،اتنی کھیتی باڑی، ایسا گھر دوآر، پر ایک میہرا رو کے بغیر بلّے کی طرح گھومتا رہتا ہے۔ بابا اٹھ کر ہنسا کی پنڈلیوں سے کانٹے چننے لگے۔

اسے رتوندھی کا روگ ہے۔ اسی لیے رات کو وہ گاو ¿ں سے باہر نہیں جاتا۔ وہ تو مجگوا ںکا دنگل تھا ،جو اسے کھینچ لے گیا۔ بابا سرتاج ہیں پہلوانوں کے ، بھلا کیوں نہ جاتے۔ سورج ڈوب گیا وہیں، چلے تو اندھیرا گھِرآیا تھا۔ پانچ میل کا راستہ تھا۔ ہنسا، دس لوگوں کی ٹولی کے درمیان چل رہا تھا۔ کئی بار اس کے پاو ¿ں لوگوں سے لڑے، تو لوگوں نے گالیاں دیں اور اسے پیچھے کر دیا۔ ہنسا گالیوں کا برا نہیں مانتا۔ وہ بہت سارے کام گالی سننے کےلئے ہی کرتا ہے۔ گاو ¿ں کے بوڑھوںبزرگوں کی اس دعا سے اسے موہ ہے۔

وہ پیچھے پیچھے آ رہا تھا۔ راستے میں ایک گاو ¿ں آیا تو گلیوں کے گھماﺅ پھراﺅ میں وہ ذرا پیچھے رہ گیا۔ ایک جھونپڑی کے آگے ایک بوڑھا بیٹھا حُقّی گرمائے تھا۔ اُسکی جوان بہو کسی کام سے باہر آئی تھیں، دس آدمیوں کی لمبی قطار دیکھ کر برابر میں کھڑی ہو گئی۔ پھر ہنسا کے آگے سے وہ نکل جانے کو ہوئی، تو اتفاق سے ہنسا کے پاو ¿ں اس سے لڑ گئے اور اندھیرے میں گرتے گرتے وہ ہنسا کے بازوﺅں میں آ گئی۔ بہو چیخ اٹھی۔ بوڑھا حُقّی پھینک کر ڈنڈا لیے دوڑا۔ لیکن ہنسا نکل گیا۔ دوسرا ڈنڈا اُسکی بہو کی ہی پیٹھ پر پڑا۔ یہ گئی، وہ گئی اور ساری منڈلی رات کے اندھیرے میں کھو گئی۔ سب کی آنکھیں ساتھ دے رہی تھیں، پر ہنسا ،کھائیوں،خندقوں پر گرتاپڑتا، بھاگتا رہا۔

بابا کانٹے بِینتے جا رہے تھے۔ ہنسااپنی مٹروں سی آنکھوں سے بار بار دیکھتا۔مگر بھالو کے سے بالوں میں دھنسے کانٹے ہاتھ کو تومل جاتے، پر آنکھیں نہ تلاش پاتیں۔ رہ رہ کر راستے کا وہ واقعہ اس کے سامنے ناچ جاتا۔ کیا سوچتی ہوگی بیچاری؟ اور وہ بابا کی طرف دیکھنے لگا۔

”بڑی چوک ہو گئی، بھیا۔ سمجھو، نکل بھاگے کسی طرح، نہیں تو جانے کا کہتی دنیا؟ ہمیں تو یہی سوچ کر اور لاج لگ رہی تھی کہ تم بھی ساتھ تھے۔ “

”ارے، یہ کیا کہا ہے، ہنسا۔“

”یہی کہ آپ کے ساتھ ایسے لوگ رہتے ہیں۔ کتنا چھوٹاگاو ¿ں ہے۔ کتنی ہنسائی ہوگی ۔“

ہنسا کبھی کوئی بات سوچتا نہیں پر آج بار بار اس کا دماغ الجھ جاتا تھا۔ اگر بھیا چاہیں تو ۔۔۔

اسی درمیان آجی پوڑیاں تھال میں پروسے باہر آئیں۔ ہنساہڑبڑا کر اٹھ گیا۔ بہت دن بعد بھوُ جی کو دیکھا تھا۔ رات نہ ہوتی، تو وہ باہر کیوں آتی۔ اس نے سلام کیا۔ تھال تھامنے ہی جا رہا تھا کہ انہوں نے مذاق کر دیا،

”کہیں ڈڑوار ڈاکے رہے کا ببُوا، جو کانٹے وِنایہ رہا ہے۔“

”کچھ نہ کہو بھوُجی۔ ”ہنسا کہہ ہی رہا تھا کہ بابا بولا اٹھے،” پھنسی گیا تھا ہنسوا آج، وہ تو خیر مناو ¿، بچ گیا، نہیں وہ پڑتی کہ یاد کرتا۔ ایک عورت کو اِس نے۔۔۔“

”اب ہنسی ٹھٹھولی چھوڑ کر، بیاہ کرو۔ جب تک بدن کڑا ہے دنیا جہان ہے، نہیں تو روٹی کے بھی لالے پڑ جائیں گے۔ کہتے کیوں نہیں اپنے بھیا سے؟ گونگے بہرے، کتے بلی سب کا تو بیاہ رچاتے رہتے ہیں، پر تمہارا دھیان نہیں کرتے۔ کھیت باری، جگہ، زمین سب تو ہے۔“

بابا کچھ نہیں بولے، لگا سیندھ پر دھرے گئے ہوں۔آجی جانے لگیں، تو بابا نے تیل بھیجنے کو کہا۔ تیل کی کٹوری لے کر ہنسا بابا کے پےتانے جا بیٹھا۔

”اپنے پیروں میں لگاﺅ نہ ہنسا۔ درد کم ہو جائے گا۔“

”غضب کہتے ہو، بھیا۔ ارے لگایا بھی ہے کبھی تیل۔“ اور بابا کی موٹی ران پر جھک گیا۔

”منوں تیل پی گئیں یہ رانیں۔ کتنے تو تیل ہی لگا کر پہلوان ہوگئے ۔“ ہنسا کہنے لگا۔

بابا خاموش پڑے رہے۔ اوربتی سے لڑتی ہوئی لالٹین میں گل پڑ گیا تھا، دھوئیں سے اس کا شیشہ سیاہ پڑ چکا تھا اور کالک اوپر اڑنے لگی تھی۔

ہنسا اٹھا اور بتی بجھا کر لیٹ گیا۔

بھوُجی کی بات ہنسا کے کانوں میں گونج رہی تھی، جب تک بدن کڑا ہے۔ ۔۔۔ ہنسا نے کروٹ لیتے لیتے بوڑھے کے ڈنڈے کی چوٹ کا ہاتھ سے اندازہ لیا اور بڑبڑانے لگا،”جان بجھ کر تو کچھ نہیں دیکھتے۔ یہ رَتوندھی نے ہی سالی جون کرائی۔“ اس نے ادھر ادھر آنکھیں چلائیں، پر کچھ نہیں،سب مٹمیلا،دھندلا۔

پالا پڑے چاہے پتھر، کام سے خالی ہوکر ہنسا، بابا کے پاس ضرور آئے گا۔ کبھی دیس بدیس کی بات، کبھی مہابھارت،رامائن کی بات۔ لیکن ”گنھی مہتما“کی بات میں اسے بڑا مزہ آتا تھا۔ کسی نے اسے سمجھا دیا ہے کہ گاندھی جی اوتاری شخصیت تھے۔

اس دن دالان میں کوئی نہیں تھا۔ شام کا وقت تھا۔ بابا کی چارپائی کے پاس بورسی میں گوبری سلگ رہی تھی۔ جانور من مارے اپنی ناندوں میں منہ گاڑے تھے۔ رم جھم پانی برس رہا تھا۔ کلُوا پیروں سے پولی زمین کھود کر،سکڑی مارے پڑا تھا۔ بیچ بیچ میں جب چونٹیاں کاٹتیں، تو وہ کوں،کوں کرکے، پیروں سے گردن کھجانے لگتا۔ اسی وقت ایک آدمی پانی سے لت پت، کیچڑ میں اپنی سائیکل کو کھینچتاآیا اور جیسے ہی سائیکل کھڑی کرکے دالان میں گھسنے لگا، ہنس نے کہا،”جے ہند، گنیش بابو۔“

”جے ہند ہنسا بھائی، جے ہند۔“

اس نے اپنے جھولے سے نوٹسو ںکا پلندا نکال کر، بابا کے آگے رکھ دیا۔ ہنسا بابا کی گوڑواری بیٹھ گیا۔ بابا نوٹس پڑھ کر بولے،”کیسے ہو گا، برکھابُونی کا دن ہے۔“

ہنسا کچھ سمجھ نہیں سکا۔ جب اس کا پیٹ پھولنے لگا، تو وہ بول بیٹھا،”کا ہے بھیا۔“

”کوئی سوشیلابہن آج یہاں گاندھی جی کا سندیسہ سنانا چاہتی ہیں۔ ضلع کمیٹی کا نوٹس ہے۔“

”کا لکھا ہے نوٹس میں۔“ ہنسا منہ با کر انہیں دیکھتے ہوئے بولا،” تنی بانچ دو، بھیا۔ گونئی بھی نہ ہو گی۔“

”ارے وہی، جاگا ہو بلموآ گاندھی ٹوپی والے ۔۔۔“

ہنسا نے کھونٹی پر ٹنگی ڈھولک اتار کر گلے میں لٹکا لی اور ایک طرف پڑے پھٹے جھنڈے کو لے کر ڈنڈے میں ٹانگ لیا۔ دو بار ڈھولک پیٹی۔ پھر، ”جاگا ہو بلموآ گاندھی ٹوپی والے آیہ گے لیں …. ٹوپی والے آیہ گے لیں ۔۔۔“گا کر، ڈھولک پر دھڑم۔دھڑم گھم ´ گھم ،دھڑھم۔ دھڑام گھم گھم۔ منٹوں میں ہی پچاسوں لڑکے آ لگے۔ چل پڑا ہنسا کا جلوس۔

”سسّلا کی گونئی، جَونے میں بیر جواہری کی کہانی ہے ۔۔۔۔“

”دل کی دل لڑکا بچہ سب ۔۔۔بولو، بولو، گنھیں بابا کی جے۔“

اور پھر،جاگا ہو بلموآ ۔۔۔اور ہنسا کی ڈھولک گمکتی رہی۔ لمحے بھر میں ہی جیسے سارے گاو ¿ں کو ہنسا نے جگا دیا ہو۔ جدھر سے دیکھو، لوگ چلے آرہے ہیں۔ لڑکے گاندھی بابا کو کیا جانیں، ان کے لئے تو ہنسا ہی سب کچھ تھا۔ ایک ان کے آگے جھنڈا تان کر کہتا،”بولو، ہنسا دادا کی ۔۔۔“

کچھ کہتے۔”جے“، اور کچھ ”چھے“، پھر زور کی ہنسی چاروں جانب چھا جاتی۔

کچھ بوڑھے ناک پھلاتے ہوئے، سُرتی کی نسوار لے، اپنی ستلیوں کے ڈھےرے پرچکر دے کر کہتے،”مل گیا سسرا کو ایک کام۔ گنھی بابا کا گایک کاہے نہیں ہو جاتا۔کونو کانگریسی جات کجات میہرا رُو مل جاتی۔ گنھی کا کوئی وچار تھوڑے ہے، چمار سیار کو چھوا،چھرکا تو کھاتے ہیں۔“

ہنسا کو فرصت نہیں ہے۔ بابو صاحب کا تخت اور بابو رام کی چمکتی ہوئی چادر تو آنا ہی چاہئے۔ بابا خاموشی بیٹھے ہیں۔ دھیرے دھیرے گاو ¿ں سمٹتا آ رہا ہے۔ دالان برتا جا رہا ہے۔ اندھیرے کی گاڑھی چادر پھیلتی جا رہی ہے۔ رم جھم پانی برس رہا ہے۔ چار لالٹےنےں جل رہی ہیں۔

”بلا تو لیا پانی بُونی میں۔ ہلہ بھی پورا مچا دیا۔ پر ٹہریں گی کہاں سوشیلاجی؟ کچھ کھانا پینا ۔۔۔“

”آنے پر دیکھ لیں گے۔ اپنا گھر تو خالی ہی ہے۔ کھانے کی بھی فکر نہ کرو۔ گھی ہے ہی، پوڑی ووڑی بن جائے گی۔“ کہتا ہوا ہنسا باہر نکلا۔

ہنسا سنبھل سنبھل کر چل رہا تھا ،اندھیرے کی وہی دھندلاہٹ، وہی مٹمےلاپن۔ آخر وہ کیا کرے کہ اسے دکھائی پڑنے لگے۔ وہ ایک بچے کی مدد سے کسی طرح بابو صاحب کے دالان کے سامنے پہنچ گیا۔ پہاڑ سے تخت کو سر پر کپڑا رکھ کر، اٹھا لیا اور کسی طرح رےنگتارےنگتا بابا کے دالان آ پہنچا۔ بابا بہت بگڑے،”سسرا مرنے پر لگا ہے۔“

ہنسا کو یہ جان کر بڑی خوشی ہوئی کہ سوشیلاجی آ گئی ہیں۔ وہ بابا کے پاس بیٹھ کر، ان کی باتیں بڑے دھیان سے پینے لگا۔

 سوشیلاجی، ہنسا کے ٹھیک سامنے بیٹھی تھیں۔ لالٹین جل رہی تھی، پر وہ دیکھ نہیں پاتا تھا کہ وہ کیسی ہیں۔ آواز توکڑی ہے اور یہ گنے کے تازہ رس سی مہک کہاں سے آ رہی ہے؟ ہنسا کھو گیا۔ سوشیلاکا سال بھر پہلے کا گانا۔” جاگا ہو بلموآ گاندھی ٹوپی والے آیہ گے لیں۔۔۔۔“اس کے ہونٹوں پر تھرک اٹھا۔ سانولا سانولا سا رنگ تھا، لمبا چھریرابدن، روکھے روکھے سے بال اور تیز آنکھیں۔ کیسا اچھا گاتی تھی۔ ہنسا سوچتا رہا۔

اسی بیچ کیرتن پروچن ہو گیا۔ سوشیلاجی نے بھاشن بھی دیا اور ساری گرام کنڈلی، بن وِدھا کے بھارت دیش، دن دن ہے تیری خواری رے۔“ گنگناتی واپس جانے لگی۔ ہنسا کھویا سا بیٹھا رہا۔ کنھجڑی کی ڈَم ڈَم اور جھانجھ کی جھنکار اس کے کانوں میں گونجتی رہی۔ سوشیلاکی سریلی آواز اسکے دل کو چھیدتی رہی اور دنگل کا شام والا واقعہ بھی اسے بار بار دھیان میں آتا رہا۔ ،دیکھو تو ان آنکھوں کی جو نہ کرا دے کم۔ اس کی رگوں میں خون کی جھنجھناہٹ بھر جاتی۔ اچانک۔”گنھی مہاتما کی ۔۔“ سن کر، وہ چونک پڑا اور زور سے چیخ پڑا۔”جے ۔۔جے ۔۔۔“

بہت رات گزر چکی ہے۔ ہنسا کے گھر میں پوڑیاں چھاننے کی تیاری ہو رہی ہے۔ آٹا گوندھا جا رہا ہے۔ ترکاری کٹ رہی ہے۔ آگ جل رہی ہے۔ لیکن اندر کے کمرے کی بھنڈرِیا سے گھی کون نکالے؟ ہنسا وہیں، یہاں وہاں ڈولتا ہے۔ اس کی آنکھیں سوشیلا جی کی آواز کا پیچھا کر رہی ہیں۔ سوشیلاجی کبھی کبھی ہچکچاہٹ میں پڑتی ہیں، پر ہنسا کے چےڑے سینے پر اُگے ہوئے بالوں کے جنگل میں وہ کھو جاتی ہیں۔ کتنا مضبوط آدمی ہے۔ لیکن ہنسا کے آگے وہ چھایا ماتر ہیں، جس کا بس روپ نہیں ہے آگے، اور سب کچھ ہیں۔ ،میٹھی میٹھی، تھکن بھری آواز اور ڈال کے تازہ پھل جیسی مہک۔ وہ بڑا خوش ہے۔ ایک عورت کے رہنے سے گھر کیسا ہو جاتا ہے۔ کتنا اچھا لگتا ہے۔وہ سوچ ہی رہا ہے کہ گھی کی مانگ ہوتی ہے۔ ہنسا اٹھتا ہے۔ پر چارپائی سے ٹھوکر کھا کر گر پڑتا ہے۔ سوشیلاجی دوڑ کر اسے اٹھاتی ہیں۔ ہنسا مارے لاج کے ڈوب جاتا ہے۔

”دھت، تیری آنکھوں کی۔“ اور وہ جلدی سے اٹھ کھڑا ہوتا ہے۔

 سوشیلاجی اس کا ہاتھ پکڑے تھیں،”چوٹ تو نہیں آئی۔“

حیلے کے ساتھ آنکھیں مل ملا کر ہنسا، ہنستا ہے۔ اسکے رونگٹے ابھر آئے ہےں، اس کا کلیجہ دھڑکنے لگتا ہے۔

کہار کہتا ہے،”ہنسا دادا کو رتونھی ہیں، رتونھی۔“

”رتوندھی۔ تو بتاﺅ، کہاں ہے گھی؟ میں چلتی ہوں، ساتھ۔“

مینکا کے کندھے پر ہے وشوا متر کے اُلمب باہو۔ ساون کی اندھیاری اور بادلوں کی رم جھم۔ بیچ بیچ میں ہوا کا سرد جھونکا۔ دونوں آنگن پار کرتے بوندوں میں بھیگتے ہیں۔ پیچھے سے آواز آتی ہے، ”لالٹین دوں؟“

”ایک ہی تو ہے رہنے دو، کام چل جائے گا۔“

گھر کی اندھیری بھنڈرِیا ۔ دونوں بھٹکتے ہیں۔ ہنسا کچھ بتاتا ہے۔ سوشیلاجی کچھ سناتی ہے۔ آنکھ کچھ دیکھتی ہے۔ ہاتھ کچھ ٹٹولتے ہیں۔

بہرحال، پتہ نہیں کہاں کیا ہے؟

اندھیرے میں جیسے آنکھ، تیسے بے آنکھ۔ دونوں کو سہارا چاہئے۔ کبھی وہ لڑھکتا ہے، کبھی وہ لڑھکتی ہیں اور دونوں روشن ہو جاتے ہیں،ایک دم روشن۔

صبح کتوں کی جھاﺅںجھاﺅں کے بیچ، کارواں آگے بڑھ گیا۔ بیلوں کی گھنٹیاں ٹنٹنائیں، بھُجنگے بولے اور بابا نے اٹھ کر اپنا چھپّن پتری والا بانس کا چھاتا چھُٹھایا اور تال کی طرف چل پڑے، نیرُوآہی ہو رہی تھی۔

راستے میں مگنو سنگھ مل گئے،”لگ گئی پارہنسوا کی ناﺅ۔“

”کیا ہوا؟“

”کچھ نہ پوچھو، بھیا۔ تمہیں خبر ہی نہیں، سارے گاو ¿ں میں رات ہی خبر پھیل گئی۔ یہ سسرا دُوآرے بٹھانے لائق نہیں ہے۔ کہتے تھے کہ کوئی رانڈ ریوا ،ڈال دو اس کے گلے۔ کل رات بابو صاحب کے یہاں پنچایت ہوئی۔ طے ہوا کہ اب سبھا سوسائٹی کی چَےکی، گاو ¿ں میں نہیں دھری جائے گی۔ عورت صورت کا بھاشن یہاں نہیں ہونے پائے گا۔ بہو بیٹیوں پر خراب اثر پڑتا ہے۔بات یہ ہے بھیا کہ راجا صاحب اوٹ لڑ رہے ہیں،کانگریس کے خلاف۔ بابو صاحب اُنکو اوٹ دلانا چاہتے ہیں۔ آپکے خوف سے کچھ کہہ تو سکتے نہ تھے۔ اب موقع ملا ہے۔“

”کیسا موقع؟“ بابا جھنجھلا کر بولے۔

آگے آکر انکے چھاتے کے نیچے کھڑے ہو گئے۔ بولے،”الٹ دیا ہنسوا نے کل رات۔“

”کیا مطلب؟“

”سچ مانو، کھانا پینا نہیں ہوا۔ جب بہت دیر ہونے لگی، تو بنگا نے لالٹین لے کر دیکھا، اور باہر نکل کر، سارے گاو ¿ں میں ڈھنڈورا پیٹ دیا۔“

ابھی تو سرپر ،سامان لے کر، گھاٹ تک پہنچانے گیا ہے۔“ بابا چپ چاپ آگے بڑھ گئے۔ اس طرح کی بات سن کر برداشت کرنا ان کے لئے مشکل ہے، پر نہ جانے کیوں انہیں ہنسی آ رہی تھی۔ تبھی دور ہنسا کی بھاری آواز سنائی دی۔

،جگ بےلھمَولو جلوم کئلُو نندی۔۔۔جگ ۔۔برمہا کے موہلُو،وشنو کے موہلُو،شِو جی کے نچیا نچےلو موری نندی۔۔ جگ۔۔۔

بابا کھڑے تھے۔ ہنسا دھیرے دھیرے قریب آ گیا۔ اندھیرا چھٹ گیا تھا۔ ہنسا ڈر گیا۔ کےسے کھڑا ہوں بھیا کے سامنے، کیسے؟ کچھ دیر دونوں خاموش رہے۔ بابا نے دیکھا، ہنسا کے ہاتھوں میں کھدر کے کچھ کپڑے تھے، پر اسکی نگاہ نیچے زمین میں دھنسی تھی۔

”ہنسا۔“ بابا بڑی کڑی آواز میں بولے،”جہاں پہنچ گئے ہو، وہاں سے واپس نہیں آنا ہوگا۔“

”بھیا، بوٹی بوٹی کٹ جاو ¿ں گا، پر یہ کیسے ہو سکتا ہے۔“

ہنسا جانے لگا، تو بابا نے کہا،”گھر جا کر سیدھا سامان باندھے آنا۔آج مچھری پکڑواﺅںگا، وہیں کھاوا پر بنے گی۔“

”اچھا، بھیا۔“ کہہ کر ہنسا اپنی بٹن سی آنکھوں کو پونچھتا ہوا چلا گیا۔

گاو ¿ں میں چناﺅ کی دھوم مچی تھی۔ بابو صاحب کانگریس کی مخالفت کر رہے تھے۔ انکے درختوں پر اشتہار ٹانگ دیئے جاتے، تو ان کے آدمی اکھاڑ دیتے۔ کسان بلوائے جاتے، انہیں دھمکایا جاتا۔کھیت نکال لینے کی، جانوروں کو ہنکوا دینے کی باتیں کہی جاتیں اور ہنسا، سوشیلاکی کہانی کا پرچار کیا جاتا، بھرشٹ ہیں سب۔ ان کا کوئی دین دھرم نہیں ہے۔ گنھی تو تیلی ہے۔ اور ہنسا اب پورا رضاکار بن گیا ہے۔ کھدر کا کرتا دھوتی اور ہاتھ کی لمبی لاٹھی میں ترنگا۔ بغل میںبگل لٹکائے رہتا ہے اور وہ باپو کے سندیش کی پرچی بانٹتا پھرتا ہے۔

”بابو صاحب جو کہیں مان لو۔ پوڑی مٹھائی راجا کے تمّو میں کھاﺅں۔ خرچہ خوراک بابو صاحب سے لو اور موٹر میں بیٹھو۔ لیکن کانگریس کا بکسا یاد رکھو۔ وہاں جا کر، کھانا پینا بھول جاو ¿؟کانگریس تمہارے راج کے لئے لڑتی ہے۔ بے دخلی بند ہوگی۔ چھوت چھات بندہوگا۔جنتا کا راج ہوگا۔ ایک بار بولو، بولو گنھیں مہاتما کی جے۔جے ۔“

گھر گھر میں، گلے گلے میں ، سوشیلاکے رسیلے گانوں کی دھنیں گونجنے لگیں۔ گاو ¿ں کے بچے، ہنسا دادا کے پیچھے، ہاتھوں میں اخبار پر رنگ کرکے بنائی جھنڈیاں لیے ادھر سے ادھر چکر لگایا کرتے تھے۔

انہی دنوں گاو ¿ں میں رام لیلا ہونے کو تھی۔ بابو صاحب کی پارٹی کے رام لکشمن بنے تھے۔ پر راون بننے والا کوئی نہیں ملتا تھا۔ لوگ کہتے، راون بننے والا مر جاتا ہے۔ کوئی تیار نہ ہوتا تھا۔ بابا دشمی کے مالک تھے۔ ہنسا کیسے برداشت کرتا کہ لیلا خراب ہو۔

اوپر سے سوشیلاجی، لیلا ختم ہونے پر بھاشن کرنے والی تھیں۔ ہنسا سوچنے لگا، کیا ہو؟اچانک لڑکوں نے تالیاں بجائیں اور ہنسا دادا کو گھیرا لیا۔ جلدی جلدی کالا چوغہ راون کے گلے میں ڈال دیا گیا۔ سر پر پگڑی باندھ کر دس منہ والا چہرہ، ہنسا دادا نے پہن لیا۔ ہاتھ میں تلوار لی اور گرج کر بولے،”میں راون ہوں کہاں ہے ڈُشٹ رام؟“

ایک بچے نے اپنی چھڑی میں لگا ہوا ترنگا جھٹ دشانن کے سر پر کھونس دیا اور سب لوگ زور سے ہنسنے لگے۔ اسی ہجوم میں سے کسی نے چلا کر کہا،”گنھیں مہاتما کی جے ۔۔۔۔“

راون بھاشن دینے لگا،”بھائیوں، رام راجا تھا۔ دیکھو، چھوٹی ذات کا کوئی کبھی رام نہیں بننے پائے۔ راکشس سب بنتے ہیں۔ براہِم، کالو، بھلُئی، پھےّدر، سب کی پالٹی ہے، ہماری۔ یہ جنتا کی لڑائی ہے۔ بول دو دھاوا۔“ اور ہنسا ہاتھ پاو ¿ں ہلاتا آگے کو چل پڑا۔ پیچھے پیچھے ساری راکشسی سَینا۔ کسانوں کے بندر بنے لڑکے بھی اپنا چہرہ لگائے، جنتا کی پارٹی میں شامل ہو گئے۔ رام بیچارے اکیلے بیٹھے رہ گئے۔ رامائن بند ہو گئی۔ تیواری چِلانے لگا، پر کون سنتا ہے۔

”گنھیں مہاتما کی جے۔“

بابا ہنسی کے مارے لوٹ پوٹ ہو رہے تھے۔ ان سے کچھ کہتے ہی نہیں بنتا تھا۔ راکشسی سَینا کے سیاہی میں رنگے منہ اور ہاتھوں میں ترنگے جھنڈے دیکھ کر، لوگ رام کے لئے خریدی گئی مالائیں، ہنسا کے ہی اوپر پھینکنے لگے۔

اسی بیچ سوشیلا جی تیر کی طرح بھیڑ میں گھسیں،”کون بنا ہے راون؟ کیا ترنگا اسی لیے ہے؟“ انہوں نے ہاتھ سے چہرے کو پونچھ دیا۔ اچانک ہنسا کو دیکھ کر، وہ پسینے پسینے ہو گئیں۔

”یہ رضاکار ہو۔ بدنام کرتے ہو جھنڈا۔ بند کرو یہ سارا تماشا، ہونے دو رام لیلا ٹھیک طریقے سے۔“

سبھی لوگ اپنی جگہوں پر لوٹ گئے۔ بابا خاموش کھڑے تھے۔ سوشیلا جی اپنا جھولا سنبھالے ،انکے برابر آ کھڑی ہوئیں۔

جنگ چلتی رہی۔نقارے اور ڈھول بجتے رہے۔ سنٹھے کے رنگے ہوئے تیر چھوٹتے رہے۔ پر راون مرے، تو کیوں مرے۔کمانیں بار بار ٹوٹتیں۔ بار بار کہا جاتا،”سو جاو ¿۔“ پر کون سنتا ہے۔ ہنسا کی فوج کیوں ہارے؟

اسی وقت لکشمن کو زمین سے ٹھوکر لگی۔ وہ لڑھک پڑے۔ ان کاتاج گر گیا۔ آگے پیچھے دوڑتے دوڑتے رام کو چکر آ گیا اور ان کو قے ہونے لگی۔ سارے میلے میں شور مچ گیا،”جیت گئی جنتا کی فوج۔ ہنسا دادا کی پالٹی ایسے ہی ووٹ جیت لے گی۔“

ادھر دن رات سشیل جی کھنجڑی بجاتی، گھومتی رہتیں اور رات ہنسا کے گھر واپس آتیں۔

دوسری جماعت کے لوگوں نے چٹھیا ںبھجوائیں۔ ،سوشیلاجی کو یہاں سے بلا لیا جائے۔ عوام پر برا اثر پڑ رہا ہے۔چناﺅ کے دو دن پہلے انہیں نوٹس ملا کہ وہ باپو کے آدرشوں کو توڑ رہی ہیں، اس لیے انہیں کام سے الگ کیا جاتا ہے۔

وہ ہنس پڑی تھیں،ایشورنے شوہر سے الگ کیا اور اب باپو کے نقلی چیلے انہیں جنتا سے الگ کرنا چاہتے ہیں۔

انکی کھنجڑی اور زور سے بجنے لگی۔ ان کا سُر اور تیز ہو گیا۔چناﺅ کے دو دن رہ گئے۔ سوشیلاجی بیمار پڑ گئیں۔ ہنسا کے گھر میں ان کا ڈیرہ لگا تھا۔ وہ بخار کی جلن سہہ رہی تھیں، پر کسی کو اپنے پاس بیٹھنے نہیں دیتی تھیں۔ رات جب ہنسا لوٹتا، تو وہ اس سے کہتیں،”تم سناو ¿ اپنا بھجن۔“ ہنسا بغیر کچھ سوچے وچارے گانے لگتا۔

”ہنسا جائے اکیلا، ای دےہیا نہ رہی۔۔۔۔“ پھر پرچار کی خبریں لے کر، وہ اسکے بالوں بھرے سینے میں منہ چھپا لیتیں۔

چناﺅ کا دن آ گیا، لیکن سوشیلاجی بستر سے نہیں اٹھیں۔ کسانوں کی جے جے کار کرتی ہوئی ٹولیاں گزرتیں، تو وہ اپنے بستر میں تڑپ کر رہ جاتیں۔ ہنسا انہیں بہت روکتا، پر وہ اٹھ کر ان سے ملتیں۔ بابا بہت سمجھاتے، پر نہ مانتیں۔چناﺅ کے دن ڈولی میں اٹھا کر وہ پولنگ پر لے جائی گئیں۔ وہیں درخت کے نیچے بیٹھے بیٹھے انہیں کئی بار چکر آیا اور بیہوش ہوئیں۔

اوٹ پڑتا رہا۔ کسان راجا صاحب کے کیمپ میں کھانا کھاتے، انکی موٹر میں آتے، پر اوٹ ڈالتے کانگریس کے بکسے میں۔ انہیں سوراج ملے گا، انہیں آزادی ملے گی، یہی سب سوچتے تھے۔

تیسرے پہر زور کی بارش آئی۔ سوشیلاجی چھایا میں جاتے جاتے بھیگ گئیں۔ بابا نے انہیں ڈولی میں بیٹھا کر، گھر بھیج دیا۔چناﺅ چلتا رہا۔

ہنسا ماضی کی طرح کام میں جٹا تھا۔ بہت دیر پر کبھی اسے سوشیلاکی یاد آتی، تو دل کو دبا کر پھر پرچی بانٹنے لگتا۔ بہت کم اوٹ راجا کے بکسے میں گرے۔ شام ہو گئی۔ راجا کا تنبو ہارے ہوئے ملازمین سے بھر گیا۔

ہنسا انہیں دیکھ کر جانے کیوں غضب سے جل رہا تھا۔ اسے بار بار سوشیلاکی یاد آ رہی تھی۔

”بھیا، کچھ اور ہونا چاہئے۔“

”مجھے چلے جانے دو، ہنسا۔“

اور پچیس تیس لوگ درانتی لے کر راجا صاحب کے تنبوکی رسیوں کے پاس کھڑے ہو گئے۔ کون جانے کیوں کھڑے ہیں۔ ہنسا نے جیت کا بگل پھونکا اور ساراتنبو ایک منٹ میں زمین پر تھا۔ زور کا شور مچا۔ کسانوں نے جے جے کار کی اور لوگ اپنے گھروں کو واپس چلے گئے۔

سشیلاجی کو نمونیا ہو گیا۔ ان کی سانس پھنس گئی۔ بابا رات دن ان کے پاس بیٹھے رہے۔ ہنسا نے زمین آسمان ایک کر دیا، پر فائدہ نہ ہوا۔ وہ بار بار مہاتما جی کا نام لیتیں، ہنسا سے اپنا بھجن سنتیں اور آنکھیں بند کر لیتی۔

چناﺅ کا نتیجہ سنایا گیا، تو نیتا لوگ موٹر پر چڑھ کر سوشیلاجی سے معافی مانگنے آئے۔ پر سوشیلاجی نے منہ پھیر لیا، جیسے وہ کہتی ہوں، میں تمہارے کارنامے جانتی ہوں۔ اور ہنسا اٹھ کر باہر چلا گیا۔

آخرکار ایک دن سوشیلاجی کی سانس بند ہو گئی۔ ہائے مچ گئی۔ بچے پھوٹ پھوٹ کر رونے لگے۔ ہنسا نے بکری کےلئے پتے توڑنے والی لگُی میں ترنگا ٹانگ کر، ہاتھ اوپر اٹھا لیا اور اپنا بگل پھونکنے لگا۔ اسکی ہنسی لوگوں کے ذہنوں میں خوف پیدا کرنے لگی پر وہ ہنستا رہا۔

آج تک، گنہیں مہاتما، جواہرلال اورجنتاکی فوج، ٹھیک تین لفظ وہ جانتا ہے۔ لڑکے اب بھی اسے اسی طرح گھیرے رہتے ہیں۔ پر پہاڑ سے تخت کواٹھا نہیں سکتا۔ ہاں ، اٹھا کر لے جانے والوں کو دیکھ کر وہ زور زور سے ہنستا ہے اور گھنٹوں ہنستا رہتا ہے۔

اسکے کھیت میں گھاس اگی ہے۔ مکان گر گیا ہے۔ پرلگّی میں پھٹا ترنگا اور سوشیل کا دیا ہوا بگل اب بھی ٹنگا رہتا ہے۔ کبھی کبھی وہ گندے کاغذ دیواروں پرچپکاتا پھرتا ہے اور کبھی سارے گاو ¿ں کی گلیاں صاف کر آتا ہے۔

آزادی ملی، تو اسے روپے ملے۔ سیاسی معذور تھا، وہ۔ پر وہ روپیوں کی گڈی لے کر ہنستا رہا، اور پھر انہیں گاو ¿ں کی دیواروں میں ایک ایک کر ٹانگ آیا۔

دو بار لوگ اسے آگرے لے گئے۔ پر کچھ ہی دنوں بعد پھر ”ہنسا جائے اکیلا“ کی آواز گاو ¿ں کی فضاﺅں میں گونجنے لگتی۔ اب بھی کبھی کبھی وہ آزادی لینے کی قسمیں کھاتا ہے۔ اسکے تمتماتے ہوئے چہرے کی نسیں تن جاتی ہیں اور وہ اپنا بگل پھونکتا ہوا، کبھی دھان کے کھیتوں، کبھی اِیکھ اور مکئی کے کھیتوں کی مےڑو ںپر گھومتا ہوا، گایا کرتا ہیں ۔۔۔

٭٭٭